koi gham bala ka ho ya nayee koi museebat ho…کوئی غم بلا کا ہو یا نیئی کوئی مصیبت ہو …

کوئی غم بلا کا ہو یا نیئی کوئی مصیبت ہو …
ہنس ہنس کے میں سہتا ہوں رونا بھی نہیں آتا …


شب بھر خوابوں میں دیکھا ہے بس تم کو ….
مجھے ٹھیک سے تو شاید سونا بھی نہیں آتا ….


تجھ کو بھلا دوں یوں صورت بھی نہ یاد رہے …..
مجھے ایسا تو کوئی جادو ٹونا بھی نہیں آتا ….


بھیگتی سی پلکیں ہوں یا ویران میری آنکھیں ….
بےدرد سا غم دل مجھے سہنا بھی نہیں آتا ….


مجھ سے ہے شکایات اس کو کچھ شکوے بھی بے اعتنائی کے
مجھے تو اپنی صفائی میں کچھ کہنا بھی نہیں آتا ….


بچھڑ کے اسے تو میں ذرا سا یاد بھی نہ آیا ..
اپنا تو بنانا دور مجھے اسکا ہونا بھی نہیں آتا …


مجھے ڈھونڈنے نکلو گے پاؤگے یہیں مجھ کو ….
بڑی سی اس دنیا میں مجھے کھونا بھی نہیں آتا ….


پل پل کاٹا ہے پچھتاووں میں ہجوم تم نے ….
گزاردی زندگی تم نے تنہا تمہیں جینا بھی نہیں آتا….

koi gham bala ka ho ya nayee koi museebat ho...
huns huns k main sehta houn rona b nahi aata...

shab bhar khawabo main dekha hay bus tumko....
mujhy theek se tau shayad sona b nahi aata....

tujhko bhula doun youn sorat b na yaad rehay.....
mujhay aisa tau koi jadoo tona b nahi aata....

bheegti si pakain houn ya weraan meri ankhain....
baydard sa gham e dil mujhy sehna b nahi ata....

mujhse ha shikayat us ko kuch shikway b bayaitnai k...
mujhy tau apni safai main kuch kehna b nahi aata....

bichar k usay tau main zara sa yaad b na aya....
apna tau bunana door uska hona b nahi aata..

mjhay dhondnay niklo gay paogay yeheen mujhko....
bari si is dunya main mjhe khona b nahi aata....

pal pal kata hay pachtawoun main hajoom tum nay....
guzardi zindagi tumnay tanha tmhain jeena b nahi aata....

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *