خود سے خفا ہوں میں میرا میں مٹ نہیں پاتا
لکھتا ہوں توخود تحریر میں ، میں سمٹ نہیں پاتا


خود کو سمجھتا ہوں میں نہ جانے کیا کیا
بڑھ چکا ہوں خود پرستی میں آگے میں پلٹ نہیں پاتا


دنیا خاک اڑا  گزری مجھ پر میں بت بنا کھڑا رہا
خود کو ٹھوکر ہوں خود مارتا اورمیں رپٹ نہیں پاتا


ہر روز نیے موضوع کا امتحان لیتی ہے زندگی
نصاب دنیا کا نہ جان سکا کیسےمیں بھلا رٹ پاتا


راستے میرے بھی وہی تھے پیچھا تھوڑی تھا کرتا
ٹاکرا ہو ا اس سے بھی میں سامنے سے کیسے ہٹ پاتا


اندھیرا چھٹا تو جانا یہ اکیلا رہ گیا ہوں میں
رونا آیا  رو بھی نہ سکا خود سے کیسے لپٹ پاتا


میرے گرد لوگ جمع ہوئےیوں تقسیم کر گیے مجھے
میں تنہائی کا دلدادہ بھلا  ہجوم سے کہاں نمٹ پاتا

ازقلم ہجوم تنہائی

18 oct 2014

“>> » Home » Zauq e sukhan urdu shayari » Hajoom E Tanhai » Khud se khafa houn main

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *