main ne zindagi guzardi kisi ki dastak k intezar me

میں نے زندگی گزاردی کسی کی دستک کے انتظار میں …
ایک امر وہ میرے دروازے پہ گزار کے پلٹ گیا …

میں نے چاہا بہت کہ دیکھ لے وہ مڑ کے مجھے کبھی
میں پکارتا رہا اسے پھر پکار کے پلٹ گیا

نا واسطہ رکھنا تھا جبھی رابطہ بڑھایا نہیں
میں نے جب بڑھائے قدم وہ پاس آ کے پلٹ گیا

ہم کلام ہوئے ہم راز ہوئے ہم خیال بھی ہوتے مگر
مجھے خود سا نہ کر سکا تو مرے جیسا ہو کے پلٹ گیا

جان لینے کے شوق میں جاننے والے مرے اجنبی ہوئے
مرے احباب میں انجان تھے لوگ وہ یہ جان کے پلٹ گیا

میں ہجوم تھا اپنا مگر تنہائی میں اسکا ہی تھا
مرے ہجوم میں شامل تو ہوا میری تنہائی میں آ کے پلٹ گیا

main ne zindagi guzardi kisi ki dastak k intezar me…

ek umar wo mery darwazy pe guzaar k palat gaya…

mainy chaha boht k dekh le wo mur k mujhay kabi..

.main pukarta reha usay phr pukar k palat gaya.

..na wasta rekhna tha jabi rabta berhaya nahi…

me ne jab berhaye qadam wo pass aa k palat gaya…

humkalam hoe hum raaz hoe hum khayal b hotay mager

…mujhe khud sa na ker saka meray jesa ho k palat gaya…

jaan lenay k shoq main jannay walay meray ajnabi hue.

..meray ahbab me anjaan thay log wo yeh jaan k palat gaya

…Main hajoom tha apna mager main tanhai me uska hi tha..

.mery hajoom me shamil hoa meri tanhai me aa k palat gaya…

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *