تم سے پہلے کبھی شکوہ تھا نہ اب ہے کوئی 

میں جو برباد ہوا ہوں اسکا تو سبب ہے کوئی 

ہنس تو دیتے ہیں کئی جاننے والے ہم پر 

ورنہ مڑ کر بھی نہ دیکھیں تو عجب ہے کوئی 

آج پھر گم خرابات سے رقصندہ دلی 

آج پھر شہر میں تقریب طرب ہے کوئی 

اور ہیں جن کو مرے غم سے سروکار نہیں 

سن ترے آنکھ چرانے کا سبب ہے کوئی 

کوئی کھائے نہ ترس ہاتھ دعا کو اٹھے 

دوست جھجکے یہ سمجھ کر کہ طلب ہے کوئی 

پرسش حال ہے یا مجھ کو گمان گزرا ہے 

تم ہو ے ہمدمو یا خواب طرب ہے کوئی 

یہ سر آشفتہ سا ‘ وارفتہ سا ‘ گم سم سا شمیم 

یہ منجملہ ارباب ادب ہے کوئی 

از قلم زوار حیدر شمیم

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *