مختصر افسانہ
کباڑ خانہ 
آج کباڑ خانے کی صفائی کی پرانے کپڑے نکالے کچھ برتن کچھ ردی لحافوں کو نکالا دھوپ لگوا لوں اچانک ہی موسم بدلے گا ایک پرانا گتے کا ڈبہ ملا کچھ پرانی کتابیں تصویریں کاغذ اور ایک خاص کتاب 
یونہی کتاب کھولی شور مچ گیا
کچھ یادیں بوکھلائیں 
کچھ لفظ چیخ پڑے
کسی کم سن کے ٹوٹے خواب تھے
جنکی کرچیاں دل میں آن کھبیں
گھبرا کر بند کر دی
بھلا ایسا بھی کہیں ہوتا ہے
کچھ پڑھ کر دل روتا ہے
میری توبہ جو آیندہ اپنی پرانی ڈائری کھولی
جلدی سے ڈبہ بند کیا لحاف بیچ دونگی یہ ردی کو دھوپ لگوا لوں یہ اففف کیا کہہ رہی ہوں توبہ بہت کام ہیں
یہ برتن ۔۔۔۔اف ۔۔۔۔۔ برتن اٹھا لوں

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *