ghuncha o gul nay subah say paiyay chand tabassum chand adaain

غنچہ و گل نے صبح سے پایے چند تبسم چند ادائیں 

میرے ذہن میں بھی لہرایے چند تبسم چند ادائیں 

اپنی نظر اور وہ رخ زیبا صرف جنوں ہے ایسی تمنا 

ہم تو ہیں آنکھوں  میں بسایے چند تبسم چند ادائیں 

کردے معاف اے روٹھنے والے ، ہم نہ تھے گل کو دیکھنے والے 

گل نے ترے مکھڑے سے چرایے چند تبسم چند ادائیں 

انکو دیکھے ہوگی مدت آنکھوں میں محفوظ ہیں اب تک 

چند اشارے چند کنایے چند تبسم چند ادائیں 

یونہی نہ تھیں یہ آنکھیں جنکو بھیگی بھیگی دیکھ رہے ہو 

کل تھے انہیں آنکھوں میں سمایے چند تبسم چند ادائیں 

اف یہ آل صبح گلستان یائے یہ شام سوز فراواں 

ہائے وہ جن راس نہ آئے چند تبسم چند ادائیں 

پھر ہوں اسی محفل میں غزل خواں، ساری فضا ہے رقصاں رقصاں 

نام پہ مرے اس نے لوٹائے چند تبسم چند ادائیں 

ہم نے شمیم اس دل کو سنبھالا دے کے فریب تازہ بہ تازہ

حاصل سوز عشق بتائے چند تبسم چند ادائیں 

از قلم زوار حیدر شمیم

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *