girti hue ek dewar e shehar ro ro youn pukaari thi…
maira qasoor nahi tha koi mjh main eent kachi thi…

mujh se lipati k bail boli khokhli ho rehi ho tum ander se…
dab gae mery bojh se aaj ,sun uski tau jar sachi thi…

mery saye main dunya k sataye jandaar kae kurlatay thay…
sunti thi chup rehti thi main dardo se kae basi rachi thi…

wo kora kerkat jo mujh pe phainka, jantay ho aziz boht tha mjhe
chun k bhar lety thay pait wo bacho k liye maas machi thi…

kitna royii mujhse lipat k sarak pe bechti thi phool jo…
majboor si masoom se wo tau choti se ek bachi thi…

kisi ki aankh ka tara tha mery samne khoon me tar hua…
jab us k lahoo k chentay ayay mujh me qayamat si aik machi thi…

main dhay rehi thi un bato se mujh pe jo tum likh jatay thay…
ab gir gae hun tau heran ho hotay meri halat tau achi thi…

az qalam Vaiza Zaidi aka Hajoom E tanhai

گرتی ہوئی ایک دیوار شہر رو رو یوں پکاری تھی۔۔
میرا قصور نہیں تھا کوئی مجھے میں اینٹ کچی تھی۔۔۔

مجھ سے لپٹی کے بیل بولی کھوکھلی ہو رہی ہو تم اندرسے۔۔۔
دب گئ میرے بوجھ سے آج ،سن اسکی تو جڑ سچی تھی۔۔

میرے سائے میں دنیا کے ستائے جاندار کئی کرلاتے تھے۔۔
سنتی تھی چپ رہتی تھی میں دردوں سے کئی بسی رچی تھی۔۔

وہ کوڑا کرکٹ جو مجھ پر پھینکا ، جانتے ہو عزیز تھا بہت مجھے۔۔
چن کر بھر لیتے تھے پیٹ وہ بچوں کیلئے ماس مچھی تھی۔۔

کتنا روئی مجھ سے لپٹ کر سڑک پر بیچتی تھی پھول جو۔۔
مجبور سی معصوم سی وہ تو چھوٹی سی ایک بچی تھی۔۔

کسی کی آنکھ کا تارا تھا میرے سامنے خون میں تر ہوا
جب اسکے لہو کے چھینٹے آئے مجھ میں قیامت سی ایک مچی تھی

میں ڈھے رہی تھی ان باتوں سے مجھ پر جو تم لکھ جاتے تھے۔
اب گر گئی ہوں تو حیران ہو ہوتے کہ میری حالت تو اچھی تھی۔۔

از قلم واعظہ زیدی المعروف ہجوم تنہائی۔۔

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *