جو ہو تخریب انجام ایسی تعمیر جہاں کیوں ہو 

نہ لرزے جس سے خود بجلی وہ مرا آشیاں کیوں ہو 

ہم ایک دن خود بہ فیض جذب دل منزل کو جالیں گے

کوئی گم کردہ منزل رهنمایے کارواں کیوں ہو 

زمین کی گردشیں بھی جب مٹا سکتی ہیں انسان کو 

بتا اے خالق کونین دور آسمان کیوں ہو 

ہمیں تم کو بے شک جور کے قابل بنایا ہے 

بجا کہتے ہو پھر شکوہ نہ ہو کچھ لب پہ ہاں کیوں ہو 

خجل ہوں ان خیالوں سے جو لب پر لا نہیں سکتا 

نہ ہو جب ازن گویائی تو پھر منہ میں زباں کیوں ہو 

کہو ذوق دل آزاری تمہارا خیر سے تو ہے 

شمیم خستہ دل پر آج اتنے مہربان کیوں ہو

از قلم زوار حیدر شمیم

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *