ہمیں سے یہ گلزار پھولے پھلے ہیں 
ہمیں پر خزاؤں کے   پہرے لگے ہیں 

کوئی رہبری میرے کس کام آتی 
مری منزلیں منزلوں سے پرے ہیں 


امنگوں پہ آیی بہار اور گئی بھی
مگر زخم دل ہیں کہ ابھی بھی ہرے ہیں 


ہمیں کم مذاق عمل کہنے والے
ہمیں راہ میں راہنما مل گیے ہیں 


کہاں ہم کہاں تم کہاں وہ زمانے 
مگر دل اب بھی بڑے آسرے ہیں 


نہیں گل تو کانٹوں سے دامن سجا لو 
کہ یہ بھی بہاروں کے پالے ہوئے ہیں  


از قلم زوار حیدر شمیم

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *