وہ جیسا بھی ہے چمن ہے چمن کو کچھ نہ کہو 
مرا وطن ہے یہ ، میرے وطن کو کچھ نہ کہو


نہ دیکھا جائے مرا دکھ تو پھیر لو نظریں 

تبسم سمن و نسترن کو کچھ نہ کہو 

ہے حکم دار مرے شکوہ جفا کا جواب 

وہ کم سخن ہے مرے کم سخن کو کچھ نہ کہو 

خدا کو طعنہ دو  تخلیق اہرمن پہ ضرور 

مگر خدا کیلیے اہرمن کو کچھ نہ کہو 

لہو کے گھونٹ پیو خوبی نسب کہو 

خزاں نصیب بہار چمن کو کچھ نہ کہو 

جو تشنہ ہیں وہ رہیں سیر جو ہیں اور پئیں

یہی چالان ہے یہاں کا چالان کو کچھ نہ کہو 

شمیم مرا فسانہ سنو سنو ، نہ سنو 

مگر مجھے مرے طرز سخن کو کچھ نہ کہو  



از قلم زوار حیدر شمیم

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *