نیت ہو ڈوبنے کی ، تو امکان نئے نئے 

اٹھتے ہیں ساحلوں سے بھی طوفان نئے نئے 

وحشت نئی نئی ، کبھی ارماں نئے نئے 

دل ہے تو دل بہلنے کے ساماں نئے نئے 

پیمانے ریزہ ریزہ ، خرابے کھنڈر کھنڈر 

اب ہیں بھری بہار کے عنوان نئے نئے 

ہاں یہ مقام ہے کہ چلیں چارہ گر کے پاس

دل ڈھونڈتا ہے درد کے ساماں نئے نئے 

غیروں کی دشمنی ہے بڑی عامیانہ چیز 

میری خرابیوں کے ہیں عنوان نئے نئے 

پینے کے بعد حضرت واعظ کا زور نطق

جسے ہوئے ہیں آج مسلمان نئے نئے 

ایک ترک  عشق پر ہی نہیں داستاں تمام  

دل ہے تو ٹوٹنے کے بھی امکان نئے نئے 

پھولوں کا شوق اور خار و شرار و برق 

ہمراہ درد آئے ہیں درماں نئے نئے

مستی بھری گھٹا نہ سہی ابر غم سہی

ارماں بہ خیر زیست کے ساماں نئے نئے 

آوارہ نکہتیں کبھی پابند خوش نوا 

کھلتے ہیں گل بنام بہاراں نئے نئے 

دشمن کا دل جلے کہ ہمارا لہو شمیم 

ہم ہیں تو روشنی کے بھی ساماں نئے نئے 

از قلم زوار حیدر شمیم

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *