suspense stories in urdu,suspense stories in urdu ,horror poetry in urdu,short urdu horror stories urdu poetry, urdu shayari, sad poetry in urdu love poetry in urdu jaun elia allama iqbal poetry poetry in urdu 2 lines urdu shayri sad poetry in urdu 2 lines ahmad faraz ghalib shayari attitude poetry in urdu sad quotes in urdu funny poetry in urdu romantic poetry in urdu allama iqbal shayari best poetry in urdu bewafa poetry sad shayari urdu islamic poetry in urdu barish poetry poetry in urdu attitude ghalib poetry allama iqbal poetry in urdu attitude quotes in urdu poetry in urdu text deep poetry in urdu sad poetry in urdu text love shayari urdu ghazal in urdu urdu poetry in urdu text mirza ghalib shayari love poetry in urdu romantic urdu shayari on life rekhta shayari jaun elia poetry iqbal shayari deep lines in urdu sad love poetry in urdu urdu poetry sms best shayari in urdu death poetry in urdu funny shayari in urdu dosti poetry in urdu father quotes in urdu birthday poetry in urdu poetry status eid poetry Hajoom e tanhai poetry, Vaiza zaidi poetry, jaun elia shayari, urdu poetry text copy, attitude poetry in urdu 2 lines text, urdu shayari in english, shero shayari urdu, munafiq poetry, mirza ghalib poetry, romantic shayari in urdu, allama iqbal ki shayari, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, poetry in urdu 2 lines attitude, john elia sad poetry, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, john elia shayari, 2 line urdu poetry copy paste, dukhi poetry, heart touching quotes in urdu, mohsin naqvi poetry, beautiful poetry in urdu, udas poetry, friendship poetry in urdu, muhabbat poetry, urdu sher, one line quotes in urdu, dosti shayari urdu, sad poetry status, narazgi poetry, judai poetry, ghalib shayari in urdu, faiz ahmad faiz shayari, barish poetry in urdu, urdu one line caption copy paste, wasi shah poetry, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, urdu poetry status, islamic poetry in urdu 2 lines, jon elia poetry, funny poetry in urdu for friends, attitude shayari in urdu, allama iqbal poetry in urdu for students, Zawwar haider poetry, mohabbat shayari urdu, jaun elia sad poetry, sad poetry sms, urdu poetry written, urdu novels,urdu novels, urdu poetry, urdu afsanay, urdu statuses, urdu shayari, sad poetry in urdu, love poetry in urdu, poetry in urdu 2 lines, urdu shayri, sad poetry in urdu 2 lines, ahmad faraz, romantic poetry in urdu, best poetry in urdu, bewafa poetry, sad shayari urdu, barish poetry, poetry in urdu text, deep poetry in urdu, sad poetry in urdu text, love shayari urdu, ghazal in urdu, urdu poetry in urdu text, love poetry in urdu romantic, urdu shayari on life, deep lines in urdu, sad love poetry in urdu, urdu poetry sms, best shayari in urdu, very sad poetry in urdu images, novels in urdu pdf, urdu books, bewafa poetry in urdu, best urdu novels, urdu poetry text copy, urdu shayari in english, shero shayari urdu, romantic shayari in urdu, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, 2 line urdu poetry copy paste, famous urdu novels, beautiful poetry in urdu, udas poetry, muhabbat poetry, urdu sher, barish poetry in urdu, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, ahmed faraz poetry, mohabbat shayari urdu, sad poetry sms, urdu poetry written, love poetry in urdu romantic 2 line, attitude poetry in urdu text, heart touching poetry in urdu, sad ghazal in urdu, 2 line urdu poetry romantic sms, ahmad faraz poetry, poetry about life in urdu, urdu words for poetry, urdu poetry copy paste, urdu poetry in english, ahmad faraz shayari, bewafa shayari urdu, love poetry in urdu 2 lines, urdu ghazal poetry, poetry in urdu 2 lines deep sad lines in urdu, faraz shayari, urdu words for shayari, urdu sad poetry sms in urdu writing, dard poetry, happy poetry in urdu, urdu love poetry for her, faraz poetry, ali zaryoun shayari, shayari in urdu words, very sad shayari urdu, ishq poetry in urdu, urdu shayari images, 2 lines poetry, new poetry in urdu, urdu poetry in hindi, urdu poetry lines, one line poetry in urdu, poetry on beauty in urdu, one line poetry in urdu text, muskurahat poetry, sad poetry in urdu 2 lines without images, mohabbat poetry in urdu, nice poetry in urdu, best love poetry in urdu, muhabbat poetry in urdu, best lines in urdu, deep love poetry in urdu, beautiful shayari in urdu, urdu sad poetry sms, Novel urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, islamic books urdu, udas naslain pdf, urdu poetry books, urdu novel online reading, jasoosi digest, novel novels in urdu, urdu audio books, top urdu novels, romance novel best novels in urdu, wasif ali wasif books pdf, urdu language books pdf, tahir javed mughal novels, urdu digest pdf, naseem hijazi books, best books to read in urdu, ashfaq ahmed books pdf, dastak novel, a hameed novels, psychology books in urdu, bano qudsia novels, pakeeza anchal romantic novel, pyasa sawan novel, free urdu novels, anchal digest novels, raqs bismil nove,l urdu poetry books pdf, new novel 2021 in urdu, urdu novels 2021, love story novel in urdu, urdu history books, raja gidh read online, jasoosi novel, urdu love novels list, pakistani novels in urdu, urdu historical novels, romance novel famous urdu novels list, romance novel urdu novels list urdu poetry, urdu shayari, sad poetry in urdu love poetry in urdu jaun elia allama iqbal poetry poetry in urdu 2 lines urdu shayri sad poetry in urdu 2 lines ahmad faraz ghalib shayari attitude poetry in urdu sad quotes in urdu funny poetry in urdu romantic poetry in urdu allama iqbal shayari best poetry in urdu bewafa poetry sad shayari urdu islamic poetry in urdu barish poetry poetry in urdu attitude ghalib poetry allama iqbal poetry in urdu attitude quotes in urdu poetry in urdu text deep poetry in urdu sad poetry in urdu text love shayari urdu ghazal in urdu urdu poetry in urdu text mirza ghalib shayari love poetry in urdu romantic urdu shayari on life rekhta shayari jaun elia poetry iqbal shayari deep lines in urdu sad love poetry in urdu urdu poetry sms best shayari in urdu death poetry in urdu funny shayari in urdu dosti poetry in urdu father quotes in urdu birthday poetry in urdu poetry status eid poetry Hajoom e tanhai poetry, Vaiza zaidi poetry, jaun elia shayari, urdu poetry text copy, attitude poetry in urdu 2 lines text, urdu shayari in english, shero shayari urdu, munafiq poetry, mirza ghalib poetry, romantic shayari in urdu, allama iqbal ki shayari, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, poetry in urdu 2 lines attitude, john elia sad poetry, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, john elia shayari, 2 line urdu poetry copy paste, dukhi poetry, heart touching quotes in urdu, mohsin naqvi poetry, beautiful poetry in urdu, udas poetry, friendship poetry in urdu, muhabbat poetry, urdu sher, one line quotes in urdu, dosti shayari urdu, sad poetry status, narazgi poetry, judai poetry, ghalib shayari in urdu, faiz ahmad faiz shayari, barish poetry in urdu, urdu one line caption copy paste, wasi shah poetry, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, urdu poetry status, islamic poetry in urdu 2 lines, jon elia poetry, funny poetry in urdu for friends, attitude shayari in urdu, allama iqbal poetry in urdu for students, Zawwar haider poetry, mohabbat shayari urdu, jaun elia sad poetry, sad poetry sms, urdu poetry written, urdu novels,urdu novels, urdu poetry, urdu afsanay, urdu statuses, urdu shayari, sad poetry in urdu, love poetry in urdu, poetry in urdu 2 lines, urdu shayri, sad poetry in urdu 2 lines, ahmad faraz, romantic poetry in urdu, best poetry in urdu, bewafa poetry, sad shayari urdu, barish poetry, poetry in urdu text, deep poetry in urdu, sad poetry in urdu text, love shayari urdu, ghazal in urdu, urdu poetry in urdu text, love poetry in urdu romantic, urdu shayari on life, deep lines in urdu, sad love poetry in urdu, urdu poetry sms, best shayari in urdu, very sad poetry in urdu images, novels in urdu pdf, urdu books, bewafa poetry in urdu, best urdu novels, urdu poetry text copy, urdu shayari in english, shero shayari urdu, romantic shayari in urdu, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, 2 line urdu poetry copy paste, famous urdu novels, beautiful poetry in urdu, udas poetry, muhabbat poetry, urdu sher, barish poetry in urdu, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, ahmed faraz poetry, mohabbat shayari urdu, sad poetry sms, urdu poetry written, love poetry in urdu romantic 2 line, attitude poetry in urdu text, heart touching poetry in urdu, sad ghazal in urdu, 2 line urdu poetry romantic sms, ahmad faraz poetry, poetry about life in urdu, urdu words for poetry, urdu poetry copy paste, urdu poetry in english, ahmad faraz shayari, bewafa shayari urdu, love poetry in urdu 2 lines, urdu ghazal poetry, poetry in urdu 2 lines deep sad lines in urdu, faraz shayari, urdu words for shayari, urdu sad poetry sms in urdu writing, dard poetry, happy poetry in urdu, urdu love poetry for her, faraz poetry, ali zaryoun shayari, shayari in urdu words, very sad shayari urdu, ishq poetry in urdu, urdu shayari images, 2 lines poetry, new poetry in urdu, urdu poetry in hindi, urdu poetry lines, one line poetry in urdu, poetry on beauty in urdu, one line poetry in urdu text, muskurahat poetry, sad poetry in urdu 2 lines without images, mohabbat poetry in urdu, nice poetry in urdu, best love poetry in urdu, muhabbat poetry in urdu, best lines in urdu, deep love poetry in urdu, beautiful shayari in urdu, urdu sad poetry sms, novel urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, islamic books urdu, udas naslain pdf, urdu poetry books, urdu novel online reading, jasoosi digest, novel novels in urdu, urdu audio books, top urdu novels, romance novel best novels in urdu, wasif ali wasif books pdf, urdu language books pdf, tahir javed mughal novels, urdu digest pdf, naseem hijazi books, best books to read in urdu, ashfaq ahmed books pdf, dastak novel, a hameed novels, psychology books in urdu, bano qudsia novels, pakeeza anchal romantic novel, pyasa sawan novel, free urdu novels, anchal digest novels, raqs bismil nove,l urdu poetry books pdf, new novel 2021 in urdu, urdu novels 2021, love story novel in urdu, urdu history books, raja gidh read online, jasoosi novel, urdu love novels list, pakistani novels in urdu, urdu historical novels, romance novel famous urdu novels list, romance novel urdu novels list urdu poetry, urdu shayari, sad poetry in urdu love poetry in urdu jaun elia allama iqbal poetry poetry in urdu 2 lines urdu shayri sad poetry in urdu 2 lines ahmad faraz ghalib shayari attitude poetry in urdu sad quotes in urdu funny poetry in urdu romantic poetry in urdu allama iqbal shayari best poetry in urdu bewafa poetry sad shayari urdu islamic poetry in urdu barish poetry poetry in urdu attitude ghalib poetry allama iqbal poetry in urdu attitude quotes in urdu poetry in urdu text deep poetry in urdu sad poetry in urdu text love shayari urdu ghazal in urdu urdu poetry in urdu text mirza ghalib shayari love poetry in urdu romantic urdu shayari on life rekhta shayari jaun elia poetry iqbal shayari deep lines in urdu sad love poetry in urdu urdu poetry sms best shayari in urdu death poetry in urdu funny shayari in urdu dosti poetry in urdu father quotes in urdu birthday poetry in urdu poetry status eid poetry Hajoom e tanhai poetry, Vaiza zaidi poetry, jaun elia shayari, urdu poetry text copy, attitude poetry in urdu 2 lines text, urdu shayari in english, shero shayari urdu, munafiq poetry, mirza ghalib poetry, romantic shayari in urdu, allama iqbal ki shayari, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, poetry in urdu 2 lines attitude, john elia sad poetry, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, john elia shayari, 2 line urdu poetry copy paste, dukhi poetry, heart touching quotes in urdu, mohsin naqvi poetry, beautiful poetry in urdu, udas poetry, friendship poetry in urdu, muhabbat poetry, urdu sher, one line quotes in urdu, dosti shayari urdu, sad poetry status, narazgi poetry, judai poetry, ghalib shayari in urdu, faiz ahmad faiz shayari, barish poetry in urdu, urdu one line caption copy paste, wasi shah poetry, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, urdu poetry status, islamic poetry in urdu 2 lines, jon elia poetry, funny poetry in urdu for friends, attitude shayari in urdu, allama iqbal poetry in urdu for students, Zawwar haider poetry, mohabbat shayari urdu, jaun elia sad poetry, sad poetry sms, urdu poetry written, urdu novels,urdu novels, urdu poetry, urdu afsanay, urdu statuses, urdu shayari, sad poetry in urdu, love poetry in urdu, poetry in urdu 2 lines, urdu shayri, sad poetry in urdu 2 lines, ahmad faraz, romantic poetry in urdu, best poetry in urdu, bewafa poetry, sad shayari urdu, barish poetry, poetry in urdu text, deep poetry in urdu, sad poetry in urdu text, love shayari urdu, ghazal in urdu, urdu poetry in urdu text, love poetry in urdu romantic, urdu shayari on life, deep lines in urdu, sad love poetry in urdu, urdu poetry sms, best shayari in urdu, very sad poetry in urdu images, novels in urdu pdf, urdu books, bewafa poetry in urdu, best urdu novels, urdu poetry text copy, urdu shayari in english, shero shayari urdu, romantic shayari in urdu, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, 2 line urdu poetry copy paste, famous urdu novels, beautiful poetry in urdu, udas poetry, muhabbat poetry, urdu sher, barish poetry in urdu, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, ahmed faraz poetry, mohabbat shayari urdu, sad poetry sms, urdu poetry written, love poetry in urdu romantic 2 line, attitude poetry in urdu text, heart touching poetry in urdu, sad ghazal in urdu, 2 line urdu poetry romantic sms, ahmad faraz poetry, poetry about life in urdu, urdu words for poetry, urdu poetry copy paste, urdu poetry in english, ahmad faraz shayari, bewafa shayari urdu, love poetry in urdu 2 lines, urdu ghazal poetry, poetry in urdu 2 lines deep sad lines in urdu, faraz shayari, urdu words for shayari, urdu sad poetry sms in urdu writing, dard poetry, happy poetry in urdu, urdu love poetry for her, faraz poetry, ali zaryoun shayari, shayari in urdu words, very sad shayari urdu, ishq poetry in urdu, urdu shayari images, 2 lines poetry, new poetry in urdu, urdu poetry in hindi, urdu poetry lines, one line poetry in urdu, poetry on beauty in urdu, one line poetry in urdu text, muskurahat poetry, sad poetry in urdu 2 lines without images, mohabbat poetry in urdu, nice poetry in urdu, best love poetry in urdu, muhabbat poetry in urdu, best lines in urdu, deep love poetry in urdu, beautiful shayari in urdu, urdu sad poetry sms, Novel urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, islamic books urdu, udas naslain pdf, urdu poetry books, urdu novel online reading, jasoosi digest, novel novels in urdu, urdu audio books, top urdu novels, romance novel best novels in urdu, wasif ali wasif books pdf, urdu language books pdf, tahir javed mughal novels, urdu digest pdf, naseem hijazi books, best books to read in urdu, ashfaq ahmed books pdf, dastak novel, a hameed novels, psychology books in urdu, bano qudsia novels, pakeeza anchal romantic novel, pyasa sawan novel, free urdu novels, anchal digest novels, raqs bismil nove,l urdu poetry books pdf, new novel 2021 in urdu, urdu novels 2021, love story novel in urdu, urdu history books, raja gidh read online, jasoosi novel, urdu love novels list, pakistani novels in urdu, urdu historical novels, romance novel famous urdu novels list, romance novel urdu novels list urdu poetry, urdu shayari, sad poetry in urdu love poetry in urdu jaun elia allama iqbal poetry poetry in urdu 2 lines urdu shayri sad poetry in urdu 2 lines ahmad faraz ghalib shayari attitude poetry in urdu sad quotes in urdu funny poetry in urdu romantic poetry in urdu allama iqbal shayari best poetry in urdu bewafa poetry sad shayari urdu islamic poetry in urdu barish poetry poetry in urdu attitude ghalib poetry allama iqbal poetry in urdu attitude quotes in urdu poetry in urdu text deep poetry in urdu sad poetry in urdu text love shayari urdu ghazal in urdu urdu poetry in urdu text mirza ghalib shayari love poetry in urdu romantic urdu shayari on life rekhta shayari jaun elia poetry iqbal shayari deep lines in urdu sad love poetry in urdu urdu poetry sms best shayari in urdu death poetry in urdu funny shayari in urdu dosti poetry in urdu father quotes in urdu birthday poetry in urdu poetry status eid poetry Hajoom e tanhai poetry, Vaiza zaidi poetry, jaun elia shayari, urdu poetry text copy, attitude poetry in urdu 2 lines text, urdu shayari in english, shero shayari urdu, munafiq poetry, mirza ghalib poetry, romantic shayari in urdu, allama iqbal ki shayari, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, poetry in urdu 2 lines attitude, john elia sad poetry, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, john elia shayari, 2 line urdu poetry copy paste, dukhi poetry, heart touching quotes in urdu, mohsin naqvi poetry, beautiful poetry in urdu, udas poetry, friendship poetry in urdu, muhabbat poetry, urdu sher, one line quotes in urdu, dosti shayari urdu, sad poetry status, narazgi poetry, judai poetry, ghalib shayari in urdu, faiz ahmad faiz shayari, barish poetry in urdu, urdu one line caption copy paste, wasi shah poetry, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, urdu poetry status, islamic poetry in urdu 2 lines, jon elia poetry, funny poetry in urdu for friends, attitude shayari in urdu, allama iqbal poetry in urdu for students, Zawwar haider poetry, mohabbat shayari urdu, jaun elia sad poetry, sad poetry sms, urdu poetry written, urdu novels,urdu novels, urdu poetry, urdu afsanay, urdu statuses, urdu shayari, sad poetry in urdu, love poetry in urdu, poetry in urdu 2 lines, urdu shayri, sad poetry in urdu 2 lines, ahmad faraz, romantic poetry in urdu, best poetry in urdu, bewafa poetry, sad shayari urdu, barish poetry, poetry in urdu text, deep poetry in urdu, sad poetry in urdu text, love shayari urdu, ghazal in urdu, urdu poetry in urdu text, love poetry in urdu romantic, urdu shayari on life, deep lines in urdu, sad love poetry in urdu, urdu poetry sms, best shayari in urdu, very sad poetry in urdu images, novels in urdu pdf, urdu books, bewafa poetry in urdu, best urdu novels, urdu poetry text copy, urdu shayari in english, shero shayari urdu, romantic shayari in urdu, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, 2 line urdu poetry copy paste, famous urdu novels, beautiful poetry in urdu, udas poetry, muhabbat poetry, urdu sher, barish poetry in urdu, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, ahmed faraz poetry, mohabbat shayari urdu, sad poetry sms, urdu poetry written, love poetry in urdu romantic 2 line, attitude poetry in urdu text, heart touching poetry in urdu, sad ghazal in urdu, 2 line urdu poetry romantic sms, ahmad faraz poetry, poetry about life in urdu, urdu words for poetry, urdu poetry copy paste, urdu poetry in english, ahmad faraz shayari, bewafa shayari urdu, love poetry in urdu 2 lines, urdu ghazal poetry, poetry in urdu 2 lines deep sad lines in urdu, faraz shayari, urdu words for shayari, urdu sad poetry sms in urdu writing, dard poetry, happy poetry in urdu, urdu love poetry for her, faraz poetry, ali zaryoun shayari, shayari in urdu words, very sad shayari urdu, ishq poetry in urdu, urdu shayari images, 2 lines poetry, new poetry in urdu, urdu poetry in hindi, urdu poetry lines, one line poetry in urdu, poetry on beauty in urdu, one line poetry in urdu text, muskurahat poetry, sad poetry in urdu 2 lines without images, mohabbat poetry in urdu, nice poetry in urdu, best love poetry in urdu, muhabbat poetry in urdu, best lines in urdu, deep love poetry in urdu, beautiful shayari in urdu, urdu sad poetry sms, novel urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, islamic books urdu, udas naslain pdf, urdu poetry books, urdu novel online reading, jasoosi digest, novel novels in urdu, urdu audio books, top urdu novels, romance novel best novels in urdu, wasif ali wasif books pdf, urdu language books pdf, tahir javed mughal novels, urdu digest pdf, naseem hijazi books, best books to read in urdu, ashfaq ahmed books pdf, dastak novel, a hameed novels, psychology books in urdu, bano qudsia novels, pakeeza anchal romantic novel, pyasa sawan novel, free urdu novels, anchal digest novels, raqs bismil nove,l urdu poetry books pdf, new novel 2021 in urdu, urdu novels 2021, love story novel in urdu, urdu history books, raja gidh read online, jasoosi novel, urdu love novels list, pakistani novels in urdu, urdu historical novels, romance novel famous urdu novels list, romance novel urdu novels list kdrama urdu, Desi kimchi, Desi kdrama fans, Urdu kdrama, Urdu web, Kdrama maza, Korean masti, korean dramas, kdrama, k drama, best korean drama, korean drama 2020, korean drama 2021, kdrama 2021 best kdrama, korean series, kdramas to watch, korean drama website, kdrama website, netflix korean drama, asian drama, best korean drama 2020, top korean drama, new korean drama 2021, best korean drama 2021, best kdrama 2020, best kdrama to watch, best korean drama on netflix, best korean series, best kdrama 2021, kdrama netflix, k drama urdu, www korean drama, watch korean drama, best k dramas on netflix, netflix korean drama 2021, best kdrama on netflix, new korean drama, www kdrama, k drama 2021, korean series on netflix, netflix korean drama 2020, top 10 korean drama, top kdrama, top korean drama 2020, k dramas to watch, 2021 korean drama, korean drama series, best korean series on netflix, new kdrama 2021, 2020 kdrama, 2020 korean drama, 2021 kdrama, k drama netflix, best k drama to watch, romance kdrama, k drama 2020, new korean drama 2020, latest korean drama 2021, korean dramas to watch, top korean drama 2021, watch kdrama, korean tv series, highest rated korean drama, korean drama in hindi, korean drama shows, top kdrama 2021, new kdrama, watch asian drama, popular korean drama, kdrama online, latest korean drama, korean drama online, korean netflix series, korean tv shows, korean shows, must watch kdrama, korean shows on netflix, famous korean dramas, romance korean drama, top kdrama 2020, most popular korean drama, korean series 2021, must watch korean drama, new kdrama 2020, best romance kdrama, popular kdrama, good kdramas, korean drama in hindi dubbed, korean series 2020, kdramas 2020, best korean shows on netflix, korean drama 2021 netflix, top k dramas, top rated korean drama, watch kdrama online, korean romance, top korean series, netflix k drama, good korean dramas, latest kdrama 2021, most watched korean drama, top 10 kdrama, famous kdrama, all in korean drama, best k drama 2020, urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, pakeeza anchal, l online reading, pakeeza anchal novel online reading, urdu novel bank, urdu novel platform, yaar zinda sohbat baqi, desi story urdu,urdu web novel salam korea **Salam Korea: Aik aisa rishta jo aap ko kore aur pakistan ki saqafat se aashna karaye ga.** (Salam Korea: A relationship that will introduce you to the culture of Korea and Pakistan.)

Salam korea
by vaiza zaidi
قسط 35

کلاس لیکر وہ باہر نکلا تو شام کے دھندلے سائے سیول پر چھا رہے تھے۔ ہلکی ہلکی بارش شروع ہو چکی تھی۔ اس نے اپنے گردن کے گرد لپٹے اسکارف کو درست کیا۔ اور ٹیرس سے نیچے جانے والی سیڑھیوں کی طرف مڑا۔ تبھی خیال آیا تو پلٹ کر دیکھنے لگا۔ ریلنگ پر ایک بڑا سا کمبل نما جیکٹ دھرا تھا جس پر۔برف کے ننھے ننھے ذرے جمع ہو رہے تھے۔ جیکٹ جانا پہچانا لگا تھا اسے۔ اس نے گہری سانس لیتے ہوئے آگے بڑھ کر جیکٹ اٹھا لیا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹریفک شدید سڑک طویل راستہ آج ہیون بھی خلاف معمول خاموش تھا۔ وہ سچ مچ اسکے برابر بیٹھی اونگھ گئ تھی۔ گاڑی رکی تھی جب اسکی آنکھ کھلی۔یا شائد ویسے ہی نیند پوری ہونے پر آنکھ کھلی تھی۔
اللہ و اکبر اللہ و اکبر۔ لا الہ الااللہ۔۔
نہیں اذان کی آواز تھی۔ بہت تیز نہیں تھی مگر واضح تھی۔ ختم ہو رہی تھی۔
اس نے سیدھا ہوتے اردگرد نظر دوڑائی تو باہر اندھیرا چھا چکا تھا۔گاڑی شائد کسی تفریحی مقام کے احاطے میں پارکنگ ایریا میں رکی ہوئی تھی۔
گاڑی بند کیئے نشست کی پشت سے سر ٹکائے آرام دہ حالت میں بیٹھا تھا۔ چہرے پر سنجیدگی سامنے ونڈ اسکرین پر نگاہ جمی ہیون کسی گہری سوچ میں گم تھا۔ اتنی گہری سوچ تھی کہ اسکے اٹھنے کا اسے احساس ہی نہ ہوا۔
اس نے شرمندہ سا ہوتے ہوئے پکارا
ہیون۔
آں دے۔ وہ چونک کر سیدھا ہوا۔
اٹھ گئیں تم؟ نیند پوری ہوئی۔
وہ یونہی پوچھ رہا تھا مگر وہ اچھی خاصی شرمندہ ہوگئ۔
آئیم سوری۔ تم نے کہیں گھومنے جانا تھا اور میں سو گئی۔ اٹھا دیتے مجھے؟ ایک تو تمہاری گاڑی کی نشست ہی اتنی آرام دہ ہے بندہ ذرا سا سر ٹکائے غافل ہو جاتاہے۔
خالصتا اریزہ کا انداز شرمندہ بھی ہورہی تھی ساتھ الزام اسکی گاڑی پر لگا دیا۔
بہر حال اٹھا دینا چاہیئے تھا تمہیں جانے کتنی دیر ہوگئی۔
اس نے موبائل میں وقت دیکھتے پھر ٹوکا۔ گھڑی نے اگلا جھٹکا دیا اسے۔چیخ ہی پڑی
کیا پونے سات میں تین گھنٹے سوتی رہی۔ حد ہے۔

تم بہت گہری نیند سو رہی تھیں مجھے اٹھانا مناسب نہیں لگا۔۔ اسکینگ کا ارادہ تھا یقین کرو گوانگانگ دو ریزورٹ کے پارکنگ لاٹ سے گاڑی واپس نکال کے لایا ہوں۔
ہیون محظوظ سے انداز میں بتا رہا تھا۔
اریزہ کی بچی۔ وہ اپنے سر پر ہاتھ مار کر بولی۔ رات گئے ہوپ کے ساتھ طویل بیٹھک کا یہی نتیجہ نکلنا تھا۔ بہر حال نیند پوری ہو گئ تھی۔
مجھے جگا دینا چاہیئے تھا۔
اسکینگ میں کوئی خاص دلچسپی نہ تھی مگر یوں ہیون کی گاڑی میں دوسری بار اتنی طویل نیند لینا اسے خاصا شرمندی کر گیا تھا کیا سوچتا ہوگا۔
چلیں؟۔۔
ہیون نے گاڑی کا دروازہ کھولتے ہوئے چلنے کا اشارہ کیا وہ سر ہلا کر دروازہ کھول کر باہر نکل آئی۔
یہ کونسی جگہ ہے؟
باہر ہوا خاصی سرد تھی اسے تو لگا بوندا باندی بھی ہو رہی ہے۔ اس نے جھر جھری سی لی۔
سر پرائز ہے خود ہی چل کر دیکھ لو
ہیون بے نیاز بنا ۔ اس نے بھی کندھے اچکا دیئے۔ پارکنگ انہیں نسبتا فاصلے پر ملی تھی۔ ذیلی سڑک پر ہیون کے ہم قدم چلتے وہ گردن گھما گھما کر دیکھ رہی تھی آتے جاتے لوگ سڑک کی چہل پہل سامنے کھلی مارکیٹ کی رونقیں ۔کرسمس کی تیاریاں عروج پر تھیں مارکیٹ میں جا بجا سینٹا کے لباس میں چلتے پھرتے لوگ اشتہار بانٹ رہے تھے کہیں کرسمس ٹری سجا کھڑا تھا وہ بہت شوق سے رونقیں دیکھ رہی تھی ہیون چلتے چلتے رکا۔ وہ بھی رک گئ۔
تم غلط جگہ دیکھ رہی ہو۔ پیچھے مڑ کر دیکھو۔ ہیون نے کہا تو وہ نا سمجھتے ہوئے گول گھوم گئ۔
وہ عربی طرز تعمیر کی بڑی سی عمارت تھی۔ سبز روشنی سے سجے دومینار گنبد۔ جس پر بڑا سا اللہ و اکبر لکھا ہوا تھا۔
اس نے حیرانگی سے مڑ کر اسے دیکھا۔
ہم مسجد آئے ہیں ؟
اریزہ کے حیرانگی سے پوچھنے پر وہ ہنس دیا۔
ہاں۔ چلو تو سہی اندر۔
ہیون کے کہنے پر وہ کندھے اچکا کر ساتھ چل پڑی۔
اسے بالکل اندازہ نہیں تھا کہ سیول شہر میں جامع مسجد بھی ہوگی۔
یہ اٹیوان ہے یہاں کافی سارے مسلمانوں کے ریستوران بھی ہیں۔
ہیون اسکی معلومات عامہ میں اضافہ کر رہا تھا۔
وہ سر ہلاتی اسکے پیچھے چل رہی تھی۔ شائد فیصل مسجد کی طرح کا کوئی تفریحی مقام ہے یہ۔۔ کوئی مشہور مسجد یا۔۔ وہ بہت غور سے دیکھ رہی تھی۔ سیڑھیاں چڑھ کر اوپر مسجد کا احاطہ شروع ہو رہا تھا۔ کچھ چندی آنکھوں والے کچھ افریقی النسل سر پر ٹوپی سجائے شائد نماز پڑھنے اوپر جا رہے تھے وہ ایک طرف ہو کر راستہ دینے لگی۔
ہیون اپنی جھونک میں آگے بڑھ رہا تھا کہ احساس ہوا وہ کہیں پیچھے رک گئ ہے۔ وہ واقعی سیڑھیوں کے اختتام پر ایک جانب کھڑی ہو کر سر اٹھا کر مسجد کی عمارت کو دیکھ رہی تھی۔
ہلکی ہلکی بوندا باندی شروع ہو چکی تھی۔ کئی قطرے اسکے چہرے پر آن گرے تھے۔
کیا ہوا چلو نا نماز کا وقت ہو رہا ہےنا تمہاری؟
ہیون نے پاس آکر کہا تو وہ یوں دیکھنے لگی جیسے اسکے سر پر سینگ اگ آئے ہوں۔
تم یہاں مجھے اسلیئے لائے ہو کہ میں نماز پڑھ سکوں؟
وہ حیرانگئ سے مرنے کو تھی جیسے۔ ہیون نے سر ہلایا۔
لڑکیاں مسجد جا کر نماز نہیں پڑھتی ہیں۔ اس نے سر پیٹ لیا جیسے۔۔
جانتا ہوں۔ مسلمان لڑکے او رلڑکیاں الگ الگ عبادت کرتے ہیں ادھر لڑکیوں کیلئے الگ انتظام ہے۔
اس نے دور راہداری کی جانب اشارہ کیا۔ جہاں ایک بورڈ لگا ہوا تھا جس میں کورین میں کوئی ہدایات وغیرہ لکھی تھیں۔
میں سب معلومات لیکر آیا ہوں۔ تم جائو نماز پڑھ لو میں یہاں تمہارا انتظار کرتا ہوں یا بلکہ ایسا کرتا ہوں میں بھی اندر پریئیر کر آتا ہوں۔ ٹھیک ہے۔
ہیون اسے آج شائد حیران کر کرکے ہی مارنے والا تھا۔
تم کونسی پرئیر کروگے؟ نماز پڑھوگے؟ اریزہ کو سمجھ نہیں آرہا تھا اسکے دماغ میں کیا چل رہا ہے۔
ہیون ہنس دیا۔
مجھے نماز کہاں آتی ہے مگر خدا تو ہر عبادت گاہ میں ایک جیسا ہی ہوتا ہے۔ میں اندر جا کر ہاتھ جوڑ کر پرئیر کر لوں گا جیسے تم نے چرچ میں ہاتھ ایسے کرکے دعا مانگئ تھی۔
ہیون نے دعا کرنے کے انداز میں ہاتھ پھیلاکر سمجھایا۔ اسکے نزدیک یہ کوئی بڑی بات نہ تھی۔ اریزہ کے وہم و گمان میں بھی نہ تھا کہ اس دن چرچ میں سر ڈھانک کر اس نے جو دعائیں مانگی تھیں اسکو کسی نے نا صرف نوٹ کیا تھا بلکہ اسکا بدلہ اتارنے پر تل گیا تھا۔ مسجد میں ہتھیلیآں جوڑ کر پرئیر کرنے کو تیار ہیون ۔۔۔ اسے سمجھ نہ آیا کہ اسکی معصومیت پر ہنسے یا اپنا سر پیٹ لے۔
کیا سوچ رہی ہو؟
ہیون نے اسکی آنکھوں کے سامنے چٹکی بجائی۔
ہم باہر چل کر بات کرتے ہیں۔
بہر حال وہ مسجد کے احاطے میں کھڑے تھے۔ اسے یہاں اسکی غلط فہمی دور کرنا بھی بے ادبی لگا تھا۔
وہ سنجیدگی سے کہہ کر پلٹی
اریزہ۔ رکو ۔۔ مجھے ضروری بات کرنی ہے تم سے۔۔
ہیون نے اسکا ہاتھ تھام کر روکا۔
وہ بیزار ہوئئ۔
نیچے چلتے ہیں نا۔ بارش بھی ہونے لگی ہے اب تو۔

نہیں یہیں بات کرنی ہے۔
اس نے لمحہ بھر سوچ کر گہری سانس لیکر کہہ دیا۔
میں ایک اعتراف کرنا چاہتا ہوں۔ میں آج تمہیں یہاں اسی لیئے لیکر آیا ہوں۔
وہ رکا تھا۔ اسکی سنجیدگی اسکا انداز اریزہ ٹھٹک کر اسکا چہرہ دیکھنے لگی۔ اسکے صبیح چہرے پر سنجیدگی نے ڈیرے ڈال رکھے تھے۔یقینا کوئی اہم بات تھی۔
ایسی کیا بات۔۔
کھد بد تو ہو رہی تھی ۔ اریزہ نے دھیرے سے کہہ کے اپنا ہاتھ چھڑانا چاہا
اریزہ میں جو بھی کہنے جا رہا ہوں اس میں کوئی لگی لپٹی نہیں ہے۔ جو میرے دل میں ہے بنا سوچے میں کہہ ڈالنا چاہتا ہوں۔ اس نے گہری سانس لیکر اریزہ کی آنکھوں میں جھانکا۔
اس دن چرچ میں تمہیں دیکھ کر مجھے ایک الگ سا احساس ہوا تھا۔ میں نہیں جانتا تھا وہ کیا احساس تھا۔۔ تم پرئیر کر رہی تھیں مگر تم اتنی مختلف اور مقدس سی لگی تھیں مجھے کہ میرا دل لمحہ بھر کو جیسے تھم سا گیا تھا۔ تمہیں دیکھنا تمہیں جاننا چاہتا تھا تب میں۔
اریزہ اپنا ہاتھ چھڑانا بھول گئ تھی۔ موسم نے کروٹ لے لی تھئ۔ بوندا باندی تیز پھوار میں بدلتی جا رہی تھی۔
اور پھر دھیرے دھیرے یہ احساس اتنا الگ اتنا انوکھا رخ اختیار کر گیا ہے کہ اسکا اعتراف میں آج یہاں کرنا چاہتا ہوں۔ تمہاری مقدس ترین عبادت گاہ میں کہ۔
وہ سانس لینے رکا۔۔ اریزہ کی سانس رک سی گئ۔
اریزہ تم مجھے بہت اچھی لگنے لگی ہو۔
رواں انگریزی بولتے بولتے وہ ایکدم اردو پر اتر آیا تھا۔
اریزہ میں تمہیں پسند کرتا ہوں۔ بلکہ۔
اس نے ذرا سا وقفہ لیا۔
میں تم سے محبت کرنے لگا ہوں۔
اس نے ان دو جملوں کو بولنے کی بہت مشق کی تھی۔ جبھی بالکل اٹکے بنا ایکدم کہہ ڈالا تھا۔
بجلی نہیں کڑکی تھی۔ بادل نہیں گرجے تھے۔ مگر شور ایکدم سے اتنا بڑھا تھا کہ اسے جیسے اسکی سنائی ہی نہ دی۔ نہیں سن تو لی تھی مگر سمجھ نہیں آئی تھی۔
اریزہ بنا پلک جھپکائے اسے دیکھتی جا رہی تھی۔
کیا اس نے وہی کہا ہے جو اس نے سنا ہے۔
اریزہ میں تم سے محبت کرنے لگا ہوں ۔۔ جھنچا۔
ہیون نے جھنچا پر زو ردے کر کہا تھا۔۔
آہش۔ مجھے جھنچا کا اردو معنی بھی یاد کرنا چاہیئے تھا۔
اس نے اپنی کوتاہی کا اعتراف کیا۔ وہ اعتراف کرکے جیسے ہوائوں میں اڑتا محسوس کر رہا تھا خود کو۔ ایکدم ہلکا پھلکا۔ اسکے چہرے پر اب بشاشت سی آرہی تھی۔ بارش اتنی تیز برس رہی تھی ان پر مگر ان دونوں کو اس بارش کا کوئی اثر نہیں تھا۔
آدل ۔۔۔۔
کسی نے بہت نرمی سے انہیں پکارا تھا۔ اریزہ جیسے ہوش میں آئی تھی۔۔ ہیون آواز کی سمت مڑ کر دیکھنے لگا۔ باریش چندی آنکھوں والے وہ آہجوشی مہربان سی مسکراہٹ سجائے انہیں دیکھ رہے تھے۔
بارش ہو رہی ہے آئو اندر آجائو۔۔۔ ۔ وہ یہی سمجھے تھے کہ شائد بارش سے پناہ لینے وہ اندرصحن میں چلے آئے ہیں۔
ہیون نے انکو جواب دینے کیلئے منہ کھولا تھا ۔ اریزہ تیزی سے پلٹ کر سیڑھیاں اترنے لگی۔
ہیون دھیرے سے سر جھکا کر انکو کوریائی انداز میں الوداع کرتا اسکے پیچھے بھاگا تھا۔
تیز برستی بارش اسے بری طرح بھگو گئ تھی۔ اسکی آنکھوں میں شائد بارش کا پانی چلا گیا تھا اتنی جلنے لگی تھیں کہ۔ اس نے سڑک پر آکر جیسے اندھوں کی طرح ادھر ادھر دیکھا۔ کیا کرنا تھا اسے ؟ اسکا۔ذہن مائوف ساہورہا تھا۔
اریزہ شا۔
ہیون بھاگتا ہوا اسکے پیچھے آیا۔۔۔
کیا ہوا؟
وہ اسکے یوں بھاگ آنے کی وجہ پوچھنا چاہتا تھا۔
مجھے گھر جانا ہے۔
اسکے آواز بھرائی ہوئی تھی شدید سردی سے ہونٹ کانپ رہے تھے۔ سرخ آنکھوں کو رگڑتی وہ بمشکل بول پائی تھی۔
ادھر حلال ریستوران ہیں چلو کچھ۔۔
وہ اشارہ کرتے ہوئے بتا رہا تھا اس نے بے تابی سے بات کاٹ دی
مجھے نہیں کھانا ۔ تم نے کھانا ہے تو جائو میں ٹیکسی۔
بجلی ایکدم زو رسے کڑکی تھی وہ جھری جھری سی لیکر کر رہ گئ۔
چلو میں ڈراپ کر دیتا ہوں۔
ہیون نے بحث نہیں کی۔ اریزہ بری طرح بھیگ گئ تھی او رجتنی وہ نازک مزاج تھی یہ بارش یہ سردی اسکا مزاج برہم کرچکی تھی۔
یقینا یہ موسم موافق نہیں تھا۔ یہ موسم اسے ہمیشہ کوئی کسک ہی دیکر جاتا ہے۔ وہ قنوطیت سے سوچتا اسکے ہمراہ قدم اٹھا رہا تھا۔ اریزہ کا چہرہ مکمل طور پر بھیگا ہوا تھا ناک سرخ ہو رہی تھی شائد آنکھیں بھی۔ وہ چاہ کر بھی اسکے چہرے کے تاثرات سے اسکے جواب کا اندازہ نہیں لگا پایا تھا۔ گاڑی کے قریب آنے تک وہ گا ہے بگا ہے اسکے چہرے پر نگاہ ڈالتا آیا تھا۔گاڑی انلاک کرکے وہ اسکے لیئے دروازہ کھولنے بڑھا تھا مگر وہ تیزی سے خود ہی دروازہ کھول کر اندر بیٹھ گئ تھی۔ وہ خاموشی سے آکر ڈرائیونگ سیٹ پر بیٹھ گیا۔ راستہ بھر ان دونوں میں مزید کوئی بات نہ ہو سکی۔ گاڑی رکتے ہی وہ بنا اسکی جانب دیکھے تیزی سےبیگ اٹھائے اتر کر اندر عمارت میں گھس گئ تھی۔
دروازہ بند نہیں ہوا تھا۔ اسے اتر کر اسکی جانب کا دروازہ بند کرنا پڑا تھا۔ اسکے ہر طرح کے ردعمل کو گھنٹوں سوچا تھا وہ یوں کہے گی تو یوں وہ یوں کرے گی تو ایسا کہوں گا۔ مگر آج کی بارش اسکے لیئے سب سے غیر متوقع صورت حال کو پیدا کر گئ تھی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اپارٹمنٹ میں پہنچی تو اند رسب بتیاں بند تھیں۔
اریزہ نہیں آئی ابھی تک؟
وہ سوچتی ہوئی جوتے لابی میں بدلتی ہوئی کمرے میں چلی آئی۔ لائٹ جلا کر بیڈ پر بیگ اچھالا دھم سے بستر پر بیٹھئ۔ پھر ایک دم اچھل کر اٹھ کھڑی ہوئی گرتے گرتے بچئ۔ دل اچھل کر حلق میں آگیا تھا۔
کم چاگیا۔۔
بیڈ پر اریزہ آڑی ترچھی بلکہ اوندھی پڑی تھی۔ کمبل سر تک تانے وہ اسکے منہ پر بیگ اچھالتی ٹانگوں پر بیٹھ گئ تھی۔۔وہ کسمساتی ہوئی سیدھی ہو رہی تھی کمبل منہ تک تانے۔
تم اندھیرا کیئے لیٹی تھیں؟ تم تو اندھیرے سے ڈرتی نہیں ہو؟
اس نے آگے بڑھ کر اسکے چہرے سے کمبل ہٹا تے ہوئے پوچھا۔
سرخ چہرہ سوجا ہوا سرخ آنکھیں۔
کیا ہوا طبیعت ٹھیک ہے؟ وہ بے ساختہ فکر مند سی ہو کر جھک کر اسکا ماتھا چھونے لگی۔ تپ رہا تھا۔
بخار ہو رہا ہے۔
اسکے رندھے ہوئے گلے سے بمشکل آواز نکلی۔۔
رو رہی ہو؟
اسکے انداز میں حیرت تھی۔ اور شائد فکر بھی۔ اریزہ نے بمشکل سر ہلایا۔
کیوں؟ وہ اسکے پاس آبیٹھی۔
گھر والے یاد آرہے ہیں۔
اس نے خود ہی اندازہ لگایا۔ اریزہ چپ چاپ اسے دیکھتی رہی۔
فون کر لو۔ ہوپ شائد سچ مچ اسکی فکر کر رہی تھی۔
اسکی آنکھیں پھر بھرنے لگیں
میرا فون ٹوٹ گیا ہے۔ وہ دوبارہ رو پڑی تھی۔
میرے فون سے کر لو۔
ہوپ اور کیا کہتی اپنا فون بیگ سے نکال کر اسکی جانب بڑھانے لگی۔
تم نے اتنی زور سے بیگ مار دیا منہ پر لگا ہے میرے۔
اسے غصہ آگیا تھا۔
آئیم سوری۔جان کے نہیں مارا۔۔۔ ہوپ آسکے ردعمل پر تھوڑی حیران ہوئی مگر فوری معزرت کی۔
میں نے کب کہا کہ جان کے مارا ہے تم نے۔ ایک تو اتنی سردی میں بارش میں بھیگتی آئی بخار چڑھ گیا کھانا بھئ نہیں کھایا اوپر سے تم نے اتنا بھاری بیگ اٹھا کے منہ پردے مارا۔ حد ہوتی ہے۔ ایسا کرتا ہے کوئی؟
وہ جھلا کے اٹھ بیٹھی۔ اتنی شکایتیں کرتے مزید رونا آچکا تھا۔ رو رو کر بین کرتی اریزہ ہوپ نے چند لمحے اسے گھورا پھر تھک کے بولی۔
کیا کہہ رہی ہو؟ انگلش میں تو بولو۔
کچھ نہیں کہہ رہی میں۔
اس نے بے دردی سے آنسو پونچھتے اپنا چہرہ رگڑ لیا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صبح ایسی روشن تھی جیسے گزرے دن بارش کی بوند تک نہ برسی ہو۔ مطلع صاف نرم گرم دھوپ۔ رات کے ابر باراں کا نام و نشان تک نہیں۔۔۔ اریزہ نے رشک سے گلاس ڈور سے ناک چپکاتےٹیرس میں پھیلی دھوپ کو دیکھا۔ ۔ مگ کے گرد دونوں ہاتھوں کی ہتھیلیاں پھیلائےگرم کافی کی گرماہٹ اپنے یخ ہوتے ہاتھوں میں محسوس کی۔
اس وقت موبائل پاس ہوتا تو یقینا اس وقت کوئی بلاگ پوسٹ کرتی۔
اس نے بشاشت سے سوچا۔ کافئ ختم کرکے اس نے گردن موڑ کر گھڑی پر وقت دیکھا تو چونک کے سیدھی ہوئی۔ نو بجنے والے تھے ۔۔ ہوپ کے جاب پر جانے کا وقت ہوا چاہتا ہے۔ وہ اسے اٹھانے کی نیت سے کمرے میں آئی۔ بیڈ کرائون سے ٹیک لگائے وہ خاصی الرٹ سی بیٹھی غیر آرامدہ حالت میں سو رہی تھی۔
اس پرنظر پڑتے اسے رات کا منظر یاد آیا۔ بخار رات کو بڑھتا ہی گیا تھا۔ اس پرغنودگی طاری ہونے لگی تھی۔ ہوپ نے ہی اسے دودھ کے ساتھ دوا کھلائی اور پھر سر پر ٹھنڈے پانی کی پٹیاں رکھتی رہی۔ رات کو جتنی بار بھی آنکھ کھلی اس نے ہوپ کو خود پر فکرمندی سے جھکے پایا۔ جانے کب سوئی اور اسکے اس خیال کی ہی وجہ سے صبح وہ مکمل تازہ دم اٹھی تھی۔ ہوپ چہرے سے بے نیاز اور تھوڑی سی کڑخت دکھائی دینے والی کتنی ہمدرد و نرم سی طبیعت رکھتی تھی۔ گوارا اسے دیکھتی تو یقینا ہکا بکا رہ جاتی اسے سوچ کے ہنسی آگئ ۔ تبھئ ہوپ کسمساتی ہوئی سیدھی ہوئی۔
آہ۔ اسکی ایک ہی رخ پر بیٹھے گردن اکڑ گئی تھی شائد۔اٹھتے ہی کراہتے ہوئے گردن سہلانے لگی۔
گڈ مارننگ۔ اس نے آگے بڑھ کر تپاک سے صبح کا سلام بھیجا۔
وہ گردن اٹھا کر اسے گھورنے لگی۔ اسکی طبیعت بالکل بشاش لگ رہی تھی۔ چہرے پر کل کے بخار کے آثار تو تھے جنہیں مٹانے کیلئے اس وقت غیر ضروری بشاشت کا مظاہرہ کیا جا رہا تھا۔
کیسی طبیعت ہے تمہاری؟
اس نے کڑے تیور سے پوچھا تھا۔
ٹھیک ہوں ایکدم فٹ۔۔ وہ باقائدہ گول گھومی۔
رات کو ٹھیک ٹھاک پریشان کیا ہے تم نے ۔۔ ایک سو تین بخار تھا تمہیں۔ ہوپ نے جتایا۔
جانتی ہوں۔ اور تم نے میری خوب خدمت کی ہے اسکے صلے میں ملتا ہے تمہیں آج میری جانب سے پرتکلف ناشتہ۔ ٹوسٹ فرائی انڈہ اور پین کیک۔سب تیا رکیا ہے جلدی سے فریش ہو کر آئو مل کر ناشتہ کرتے ہیں۔
اس نے لہک لہک کر کہا ہوپ اسے گھورتی رہی
اسکی طبیعت واقعی ٹھیک ہوچکی تھی شائد۔
کاش کوئی ایپ ہوتی جس سے میں ترجمہ کر سکتی رات کو جو تم کہتی رہی ہو اپنی زبان میں اسکا۔
ہوپ سستی سے بیڈ سائیڈ پر پیر لٹکائے پیر سے ٹٹول کر چپل تلاشتے ہوئے کہہ رہی تھی۔
میں بول رہی تھی؟ ایک تو میں بخار میں بڑبڑانا کب چھوڑوں گی۔
وہ دانت پیس کر رہ گئ۔
کیا کہہ رہی ہو۔ ہوپ نے گھورا
شکر ادا کر رہی ہوں کہ تم اردو نہیں جانتیں۔
اس نے کندھے اچکا کر چڑایا۔
اردو نہیں جانتی مگر تمہیں جان گئ ہوں ۔ ہوپ اسے جتانے والے انداز میں کہہ رہی تھی۔
مطلب؟ اریزہ گڑبڑائئ۔
ہوپ مسکرا دی۔
میں فریش ہوکر آتی ہوں۔
وہ اپنی گردن سہلاتی باتھ روم میں گھس گئ۔ پندرہ بیس منٹ بعد وہ صرف نہا کر نہیں جانے کیلئے تیار ہو کر آئی۔ تب تک وہ ناشتہ میز پرسجائے گہری سوچ میں گم بیٹھی اسکا انتظار کر رہی تھی۔ اسے حیرت ہوئی۔ اسے لگا تھا وہ ناشتہ ختم کر چکی ہوگئ
اس نے اسکے کھوئے انداز کو بغو ردیکھا پھر اسکے سامنے کرسی کھینچ کر بیٹھ گئ وہ متوجہ نہ ہوئی تو اسے میز پر ٹھونگا لگا کر جگانا پڑا۔
ناک ناک۔ واپس آجائو اگاشی۔
اس نے جان کے ہنگل میں کہا۔
دے۔ وہ چونکی تھی مگر ظاہر نہیں کیا۔
فورا اٹھی اور کافی میکر سے کافی نکال لائی۔ ہوپ ٹوسٹ اور انڈہ لیکر ناشتہ شروع کر چکی تھی۔ اس نے
پین کیک اورکافی کا بھاپ اڑاتا مگ اسکی جانب بڑھایا۔
تم نے آج جانا ہے کلاس لینے؟ ہوپ نے نوالہ لیتے ہوئے یونہی پوچھا۔
ہاں۔ اسکا جواب مختصر تھا۔
چھٹئ کر لو بخار تھا تھکن مت لو۔ ہوپ کی فکر پر وہ مسکرا کر رہ گئ۔
ٹھیک ہوں میں۔
ہوپ کندھے اچکا کر ناشتہ ختم کرنے لگی۔ اریزہ کو پھر حرارت سی محسوس ہو رہی تھی۔ جبھئ ناشتہ کیا نہیں جا رہا تھا۔ہوپ نے ایک نظر اسے دیکھا پھر سوچ کربولی۔
اچھا سنو میرا موبائل رکھ لو۔ جب تک تم نیا نہیں لیتیں۔
اسکی پیشکش پر وہ منہ کھول کر رہ گئ۔
میرے موبائل پر پاسورڈ نہیں ہوتا اور مجھے سارا دن اسکو بند کرکے لاکر میں ہی رکھنا ہے تم استعمال کر لینا۔۔۔
اس نے صرف کہا نہیں بلکہ اپنا موبائل میز پرسے پھسلا کر اسکی جانب بڑھا بھی دیا تھا۔ میز کی چکنی سطح پر وہ پھسلتا ہوا اریزہ کے پاس آیا تھا۔
نہیں مجھے نہیں چاہیئے ایسی بھی کوئی خاص ضرورت نہیں ہے مجھے۔ شکریہ تمہارا۔
وہ پورے خلوص سے کہہ رہی تھی۔ موبائل اٹھا کر اسکی جانب بڑھایا۔ ۔ ہوپ نے ایسے دیکھا جیسے کہہ رہی ہو جانتی نہیں ہوں نا میں جیسے تمہیں۔۔اسکا ہاتھ چھو کر پیچھے کرتے ہوئے بولی۔
جس دن سے میں آئی ہوں تمہیں اس مشین کے بنا بیٹھے نہیں دیکھا۔ مجھے حیرت ہے تم دو دن سے زندہ کیسے ہو اسکے بغیر؟
ہوپ اور طنز کے بنا بات کر لے۔ وہ بھنائی۔۔
تم تو جیسے صرف ہفتے میں ایک دن باری لگا کر استعمال کرتی ہو خود بھی تو جب گھر آتی ہو مستقل موبائل میں ہی لگی ہوتی ہو۔
ہاں تو سارا دن موقع نہیں ملتا گھر آکر ہی استعمال کرنے کا وقت ملتا ہے اس پر بھی مجھے اسکی اتنی عادت نہیں ہے کہ اسکے بنا رہ نہ سکوں۔
ہوپ نے مزید اسکا دل جلایا۔
مجھے بھئ عادت ڈالنی ہے۔ شکریہ
اریزہ نے موبائل بڑھایا وہ تھامنے کی بجائے اسکے ہاتھ کو ہی دیکھتئ رہی ۔۔ یہ بد تہزیبی سمجھی جاتی ہے کوریا میں ایک ہاتھ سے چیز تھمانا ازراہ احترام کورین کسی کو کوئی چیز پکڑاتے وقت دوسرے ہاتھ سے اپنی کلائی چھو لیتے ہیں تھامنے کیلئے بھی دونوں ہاتھ بڑھانا پسند کیا جاتا ہے۔ وہ جتا رہی تھی نگاہوں سے۔۔ اس نے ہونٹ بھینچ کر بائیں ہاتھ سے اپنے دائیں ہاتھ کی کلائی چھوئی۔
تم مجھ پر اپنے سب کورین ثقافت کے دائو پیچ آزمایا کرو۔
وہ کہے بغیر نہ رہ سکی۔
تم کورین کیوزین پر بھی آجائوگئ دیکھنا ایکدن۔ ہوپ کھلکھلائئ
جب تک اس میں پورک نہ ہو۔
اریزہ نےاضافہ کیا۔
جو بھی ہے۔ بنتی جا رہی ہو آدھی کورین ذیادہ وقت نہیں لگے گاپورک پر بھی آجائوگی ۔
ہوپ کا انداز سادہ تھا اسے جانے کیوں اکساتا ہوا لگا۔
پورک کھانے کا تعلق ثقافت نہیں مزہب سے ہے اور ثقافت اپنائئ جا سکتی ہے مزہب چھوڑا نہیں جا سکتا۔۔ میں کوریا میں رہ سکتی ہوں کورین بولنا سیکھ سکتی ہوں کورین ثقافت کی تعظیم کر سکتی ہوں ، کورینز کے ساتھ دوستی کر سکتی ہوں مگر بات مزہب کی ہو تو سب ہیچ ہے میرے لیئے۔
وہ جوش میں بولتی چلی گئ پھر احساس ہوا۔چند لمحے چپ ہی رہ گئ ۔ سٹپٹا کرسر جھکالیا۔ اپنے بالوں میں انگلیاں پھنسا کر دونوں کہنیاں میز پر ٹکادیں۔ خود کو پرسکون کرنے کی کوشش۔۔
اریزہ کا سخت لہجہ پھر اسکے بالکل مخالف ردعمل ہوپ نے تعجب سے اسکی شکل دیکھی۔
تم کل کلاس کے بعد کہاں گئ تھیں؟
اسکے سوال پر اریزہ نے سر اٹھا کر اسکو دیکھا۔ وہ جواب طلب نظروں سے دیکھ رہی تھی۔
ویئے اوو( کیوں) اسکے منہ سے پھسلا
ایسے ہی کافی worked up ہو کر آئی ہو۔
وہ حسب عادت صاف گوئی سے بولی۔
وہ میں۔ اس نے جواب دینا چاہا تھا مگر ہوپ کرسی پیچھے کرتی اٹھ کھڑی ہوئئ
جانے دو میں تمہاری ماں نہیں ہو جسکو جواب دینا ضروری ہو تمہارے لیئے۔ خیر فون نہیں چاہیئے؟
وہ بات بدل گئ فون دکھاکر پوچھنے لگئ۔
نہیں۔ اس نے سہولت سے انکار کیا وہ کندھے اچکا کر بیگ ٹھیک کرنے لگی۔
آج میں دیر سے آئوں شائد۔ مجھے کہیں جانا ہے۔ ہوپ نے اسے قصدا بتایا تھا۔ اریزہ نے سرہلا دیا۔
ہوپ اسے خدا حافظ کہتی چلی گئ۔ اس نے گھڑی دیکھی پھر جلدی جلدی سب برتن سنک میں ڈالتی تیار ہونے چلی گئ۔ جلدی مچانے کا نتیجہ تھا معمول سے آدھا گھنٹہ قبل وہ تیار ہو کر باہر بھی نکل آئی۔
تیز تیز قدم اٹھاتے وہ گلی سے شاہراہ تک نکل آئی تو سکھ کا سانس لیا۔ روز کا آنا جانا تھا کب تک وہ ہیون پر پیرا سائیٹ بن کر انحصار کرتی۔ کوٹ کی جیبوں میں ہاتھ گھسائے وہ شاداں تھی اپنی کامیابی پر۔ پہلی گلی دوسری سڑک پھر دائیں مڑنا۔
وہ چلتے چلتے رک گئ۔ یہاں سے دائیں ہی مڑنا تھا مگر وہ راستہ اسے مانوس نہیں لگا تھا۔ اس نے گردن گھما کر دیکھا ۔۔ یہاں تک تو اسے یاد تھا راستہ مگر آگے؟ ہیون کے ساتھ آتے جاتے اس نے کبھی راستے پر دھیان ہی نہ دیا تھا یا وہ واقعی اتنی احمق تھی کہ روز آنے جانے کے باوجود اسے راستہ یاد نہ ہوا تھا۔۔۔
آگے جانے کا راستہ نہ آتا ہو تو عقل کا تقاضا ہوتا ہے واپس مڑ جانا مگر اریزہ کو اتنی عقل ہوتی تو یہاں بیچ راستے پر پریشان کھڑی ہوتی۔۔
ہیون حسب معمول مقررہ وقت پر اسکےاپارٹمنٹ کے باہر کھڑا اطلاعی گھنٹی بجا رہا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چند لمحے احمقوں کی طرح ادھر ادھر تکنے کے بعد اس نے ہار مان لی تھی۔
اخیر احمق ہو تم اریزہ۔ اتنے دن میں ایک موڑ تک یاد نہیں رہ سکا تمہیں۔ ہیون تمہارا ڈرائور نہیں ہے روز تمہیں بچوں کی طرح لانے لے جانے کی ذمہ داری نبھائے۔
اس نے خود کو ڈانٹے سچ مچ خود کو سر پر خاصی زور دار چپیڑ لگا دی تھی۔ آگے جانا یقینا بے وقوفی ہوتی سو ہونٹ کاٹتے واپسی کا سفر اختیار کیا۔ ایک گلی پیچھے مڑ کر داخلی سڑک سے اہم شاہراہ اور بس اسٹاپ۔ دھوپ تیز تھی مگر اسے اچھی لگ رہی تھی ۔ وہ مرے مرے قدموں سے چلتی آئی اور بس اسٹاپ پر لگے اسٹینڈ پر آبیٹھی۔
ذیادہ نہ سہی ایک دو گھنٹے کافی ہوں گے کسی کا انتظار ختم کرنے کیلئے۔
اس نے یہی سوچا تھا۔ اور سکون سے شیشے کی دیوار سے سر ٹکا کر بس اسٹاپ پربس سے اترتے چڑھتے لوگوں کو تکنے لگی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کم سن نے گہری سانس لی پھر جانچتی نگاہوں سے اسکا عزم و ہمت کی پیمائش کرنی چاہی۔ اسکی درخواست کم دھونس اسے خاصی ناقابل عمل لگ رہی تھی۔
تو کیا میں سمجھوں کہ آپ میری مدد کریں گے؟
اس سے کم سن کی طویل خاموشی برداشت نہ ہوسکی تو پوچھ لیا۔ وہ منتظر نظروں سے دیکھ رہی تھی۔
کم سن اسے یونہی غور سے دیکھتا رہا۔ وہ اسکی نگاہوں سے ٹھیک ٹھاک الجھ رہی تھی۔ وہ کسی ٹھرکی کی ٹٹولتی نگاہیں نہیں تھیں مگر پرسوچ اور کھنگال لینے والی ضرور تھیں۔
اٹس اوکے اگر یہ آپکے لیئے مشکل ہے تو ٹھیک ہے۔ میں چلتی ہوں۔
وہ مایوس ہو کر اٹھ کھڑی ہوئی۔ اس وقت وہ کم سن کے دفتر میں اسکے مقابل ہی تھی۔ کم سن نے ہونٹ بھینچ لیئے۔
بیٹھو۔
اس نے مختصرا کہا۔ وہ بے یقینی سے دیکھتی ایکدم خوش ہوگئ تھی۔ جھٹ سے بیٹھ گئ۔ کم سن نے انٹرکام پر اپنے فائنانس ایگزیکیٹیو ایچ آر جمع پرسنل اسسٹنٹ کو بلایا۔
یہ ہماری نئی ملازمہ ہیں ۔ انکو آفس ورک میں کہیں ایڈجسٹ کرلو۔
اس نے خالص ہنگل میں کہا تو اسکے پی اے کی آنکھیں ابلنے لگیں۔۔
مگر سر فی الحال کوئی جگہ خالی نہیں مارکیٹنگ ٹیم پلاننگ سب پر ہائیرنگ ہو چکی ہے۔ سب سے بڑھ کر ہمارا بجٹ اتنا نہیں ہے کہ ایک اور گھوسٹ ملازم ہائر کرلیں۔پہلے ہئ وہ اریزہ شاہ اتنے دن سے چھٹی پر ہے اسکا فون بھی بند جا رہا ہے۔ اسکی پورے چار دن کی تنخواہ کٹنئ چاہیئے۔ ویسے۔
سنتھیا بغور ان دونوں کی گفتگو سن رہی تھی مگر پھر بھی ٹھیٹھ سیول کے لہجے میں بولتے پی اے کے شور و غو غا سے کوئی درست اندازہ لگانے میں ناکام رہی۔
اریزہ۔
اسکو بس یہی نام سمجھ آیا گفتگو میں۔ مگر اریزہ کا کیا ذکرکچھ اور کہا ہوگا اس نے سر جھٹکا۔
اسکا فون ٹوٹ گیا ہے نیا لیتے ہی رابطہ کرے گی۔
کم سن کا اطمینان دیکھنے لائق تھا۔
پھر بھی سر اس لڑکی کو کیوں رکھنا ہے وہ تو چلو آپکی اور ہیون سر کی دوست ہے۔
وہ بے بسی سے بولا۔
یہ اس لڑکی کی دوست ہے۔ وجہ کافی نہیں؟
کم سن کی بات پر وہ لاجواب ہوگیا تھا۔
کم سن اس سے مخاطب ہوا۔
تم انکے ساتھ جائو یہ تمہیں کام وغیرہ سمجھا دیں گے اور فی الحال تم دوسری والی بات پر غور کرنا ۔۔
مجھے فائنانشل سیکیورٹی چاہیئے بس میں اتنی کمزور نہیں کہ اپنا خیال خود نہ رکھ سکوں۔
وہ مضبوط لہجے میں کہتئ اٹھ کھڑی ہوئی
کم سن نے سر ہلا یا پھر دوبارہ ہنگل میں اپنے پی اے کو ہدائیتیں دینے لگا
انکو لے جائو اور جو کام سپرد کرنے لگو سمجھا دینا اور تھوڑا اپنی انگریزی کو ہوا لگادینا اسکو ہنگل سمجھ نہیں آتی۔
ایک اور انگریزنی ۔ وہ منہ بنا کر رہ گیاپھر مئودب سا ہو کر اسکو اپنے ساتھ چلنے کا اشارہ کرنے لگا۔
چلیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تین سے چار گھنٹے گزار کر وہ تھکےتھکے قدموں سے چلتی ہوئی گھر واپس آئی۔ جسمانی سے ذیادہ ذہنی تھکن نے نڈھال کردیا تھا۔ حسب عادت دروازہ بند کرکے وہ سیدھا اندر جانے لگی پھر خیال آیا تو الٹے قدموں واپس ہوئی جوتے بدلے۔ کندھے سے بیگ اتارتی اندر آئی تو ایکدم لائونج کی بتی جل اٹھی تھی۔ سامنے ہی بلیک اپر بلیک جینز میں ملبوس ہیون کھڑا مسکرا رہا تھا۔ وہ ششدر سی رہ گئ
کہاں تھیں؟ دو گھنٹے سے انتظار کر رہا ہوں تمہارا۔
وہ ایک چھوٹا سا کارڈ کا بیگ اسکی جانب بڑھاتے ہوئے خوشگوار سے انداز میں پوچھ رہا تھا۔
وہ اتنی حیران ہوئی تھی کہ کچھ بول ہی نہ پائی۔ اسکی حیرت بھانپ کر وہ خود ہی صفائی دینےلگا۔
صبح آیا تمہیں لینے کافی دیر ناک کرتا رہاپھرتمہاری اکیڈمی گیا تم وہاں بھی نہیں تھیں تو ہوپ کو فون کیا اس نے بتایا کہ بخار تھا رات تمہیں۔تم دروازہ بھی نہیں کھول رہی تھیں تو مجبورا گوارا سے لاک کوڈ پوچھا مگر تم تو یہاں تھیں ہی نہیں۔ طبیعت ٹھیک ہے اب تمہاری؟
اس نے روانی میں پوچھتے اسکی پیشانی چھونے کو ہاتھ بڑھایا وہ چونک کے دو قدم پیچھے ہوئی۔
آنیا۔ میں ٹھیک ہوں بس ذرا باہر تک گئ تھی۔
اچھا۔ اس نے فورا ہاتھ پیچھے کرلیا۔۔اور شاپر اسکی جانب بڑھانے لگا
یہ لو۔
یہ کیا؟ وہ سوالیہ ہوئی
تمہارے لیئے فون۔گوارا سے بات بھی کر لینا وہ کافی پریشان ہو رہی تھی دو دن سے تم سے کوئی رابطہ نہیں ہوا تو۔۔
اسکی کیا ضرورت تھی۔۔ وہ شرمندہ ہوگئ۔
میں لے لیتئ خود ہی۔
ہاں تو لینا تو تھا ہی اسی لیئے میں لے آیا۔
اسکا انداز لاپروا سا تھا
مگر مجھے یہ لینا اچھا نہیں لگ رہا۔ پہلے ہی تمہارے بہت احسان ہوچکے ہیں مجھ پر۔ اب اور نہیں۔ تم یہ واپس لے جائو
اس نے دو ٹوک انداز میں کہا تھا۔ اسکا انداز خاصا سخت تھا اتنا کہ ہیون کی مسکراہٹ پھیکی پڑگئ
مگر میں یہ تمہارے لیئے ہی لایا ہوں۔ تمہارا فون ٹوٹ
اس نے اصرار کرنا چاہا
ہاں تو میرا فون ٹوٹاہے مجھے جب لینا ہوگا میں لے لوں گی۔ تمہیں فکر مند ہونے کی ضرورت نہیں۔
اسکے اتنے بدلحاظ انداز میں کہنے پر وہ چند لمحے خاموش ہی ہوگیا۔ اریزہ کو بھی اپنے رویئے کی سختی کا احساس ہوا۔
تم خفا ہو مجھ سے؟ اسکو یہی سمجھ آسکا۔ سو سہولت سے اسکی سب بدتمیزیاں نظرانداز کرکے پوچھنے لگا۔
نہیں۔ اس نے کترا کر اسکے برابر سے ہو کر نکل جانا چاہا۔
وہ گھوم کر اسکے سامنے آکھڑا ہوا ۔ اسکو موبائل کا شاپر تھماتے اسکی آنکھوں میں جھانک کر بولا۔
تم میرے کل کے روکھے پھیکے اعتراف پر غصے میں ہونا؟
نہیں۔۔ اس نے فورا اسکی غلط فہمی دور کرنی چاہی اس نے مسکرا کراسکے کندھوں پر ہاتھ رکھے۔
اریزہ میں ایسا ہی ہوں۔ مجھے دل سے اعتراف کرنا تھا سادہ اور عام فہم مگر سچے الفاظ سے ۔ میں نے جو محسوس کیا وہ تمہارے گوش گزار کیا۔ تمہیں پتہ ہے
میں نے بہت سوچا تھا میں اپنے جزبات کا اظہار کہاں کیسے کروں۔کسی پر فضا مقام پر ستاروں بھری رات میں کسی اونچے ریستوران میں ڈھیر پھولوں اور کینڈل لائٹ ڈنر کے ساتھ پر وہ تو سب ہی کرتے ہیں۔ اور تم۔۔ جو لڑکی میرے ساتھ چلتے اپنے گرد ونواح پر نگاہ بھی نہ ڈالتی ہو اسکو ان چیزوں سے متاثر نہیں کیا جاسکتا ہے ہے نا۔ مجھے یہی لگا تھا بڑے سے بڑے ارینجمنٹس بھی شائد تمہیں پسند نہیں آتے۔۔۔صحیح کہہ رہا ہوں نا۔۔
وہ اسکی نگاہوں میں جھانکتے تائید طلب کر رہا تھا۔وہ جیسے کسی ٹرانس کی کیفیت میں اسکئ سب باتیں سن رہی تھی۔۔
کل تو موقع نہ مل سکا تم بھاگ آئیں۔ مگر آج میں تمہارا ہر شکوہ دور کر دوں گا۔
اس نے مسکر کر کہتے ہوئے جیب سے ایک بے حد قیمتی انگوٹھئ نکال کر اسکی جانب بڑھاتے ہوئے سوال کیا تھا
اریزہ تم میری بنو گئ؟
ہیرے کی جگر جگر کرتی انگوٹھی کی روشنی ذیادہ تھی یا ہیون کی آنکھوں میں دمکتے ستارے وہ اندازہ نہ لگا پائی۔ کسی فلمی ہیرو کی طرح زرا سا سر خم کیئے اسکی جانب جی جان سے متوجہ ہو کروہ اسکے جواب کا منتظر تھا۔
جیسے اسے ایکدم ہوش سا آیا۔ وہ دو قدم پیچھے ہوئی
مجھے نہیں سمجھ آرہی تم کیا کہہ رہے ہو۔ تمہیں کوئئ ضرورت نہیں ایسا کچھ کرنے کی اور کچھ کہنے کی بھی۔ ہم دوست ہیں صرف۔ بہت اچھے دوست نا اس سے ذیادہ کچھ نہیں۔
اسکا انداز قطیعت بھرا تھا۔اس کےرواں اور سخت لہجے نے اس کے سر پر جیسے بم پھوڑا تھا۔ وہ جہاں کا تہاں کھڑارہ گیا تھا۔ وہ یوں اچانک بنا سوچے سختی سے انکار کردے گی یہ اسکے وہم و گمان میں بھی نہ تھا۔
تم کیا کہہ رہی ہو؟
بمشکل اسکے منہ سے نکلا تھا۔ اسکے چہرے پر زلزلے کی سی کیفیت تھی۔
ہیون ہم بہت اچھے دوست ہیں ہم ساری زندگی اچھے دوست رہیں گے بس۔ اس سے ذیادہ ہم کچھ نہیں ہو سکتے۔
اس نے قطیعت سے کہا۔
تم نے کبھی میرے بارے میں نہیں سوچا ؟
ہیون کی آواز جیسے کسی کنوئیں سے آئی تھی۔
ہرگز نہیں۔
اریزہ کا انداز مزید دو ٹوک ہو چلا تھا۔
اب سوچ لو۔
وہ ہمت نہیں ہارنا چاہتا تھا شائد۔ اریزہ اسکو کوئی جھوٹی امید نہیں دینا چاہتی تھی۔
اسکی ضرورت نہیں مجھے۔ میں نے کبھئ تمہارے بارے میں نا ایسے سوچا نہ سوچنے کا ارادہ ہے۔ اس بات کو یہیں ختم کردو۔ اور۔ یہ بھی ۔۔
موبائل کا شاپر واپس کرتے ہوئے وہ مزید بھی کچھ کہتئ۔ ہیون سے مزید وہاں کھڑا رہنا محال ہوا وہ اسکے پاس سے ہو کر سیدھا باہر نکلتا چلا گیا۔
ہیون۔ یہ ۔۔
وہ موبائل واپس کرنا چاہتی تھی پکارتی اسکے پیچھے بھی بھاگی پر وہ رکا نہیں۔ دروازہ بند ہوگیا تھا۔ وہ وہیں رک کر ہونٹ کاٹنے لگی۔ کچھ بھی تھا وہ بے حد اچھا دوست تھا اسکے ساتھ بہت اچھا وقت گزرا اور اگر وہ کرسچن نہ ہوتا تو شائد۔
یہ کیا سوچ آئی تھی اسے۔
فون کی کڑخت سی بیل بجی تھی وہ بری طرح اچھل پڑی۔ ڈبے میں سے فون بج رہا تھا۔ اس نے ڈبہ نکال کر کھولا۔نیا سامسنگ کا ماڈل اسکے ہاتھ میں تھا۔ اور فون بک اپڈیٹڈ تھی۔
گوارا کالنگ انگریزی میں لکھا آرہا تھا۔
اس نے فون سوائپ کرکے کان سے لگایا
ہیلو۔
اریزہ؟ اوہ۔خدایا کیسی ہو کہاں تھی اتنا پریشان ہوگئ تھی میں جب ہیون نے بتایا تم گھر میں نہیں طبیعت ذیادہ خراب ہوگئ تھی کیا؟
گوارا کا لگاتار بلا تکان بولنا غماز تھا وہ کتنی پریشان رہی ہے اسکے لیئے۔ آخر کار اسکو ایک اچھی سہیلی مل گئ تھی۔ ایک اچھی سہیلی چھن جانے کے بعد۔۔
کیا ہوا یوبو سیو؟ اریزہ؟
اسکی جانب سے جواب نہ ملنے پر گوارا مزید اتائولی ہوچکی تھی۔
ہوں۔ اریزہ بمشکل ہوں کر سکی۔ اسکی آنکھوں سےآنسو ہی اتنے پھسلے چلے آرہے تھے۔ اس نے بےدردی سے آنکھیں مسل ڈالیں۔
ایک دوست ملتا ہے ایک چھن جاتا ہے اچھا مزاق بنا ہوا ہے زندگی میں۔
اس نے تپ کر سوچا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اپنے کمرے میں حقیقتا باولا ہوا بیٹھا تھا۔دونوں ہاتھوں میں سر تھامے بے بسی کی تصویر۔ اسکا فون برابر میں ہی پڑا مستقل جل بجھ کر رہا تھا۔ بجتی رنگ ٹون گوشی وون میں بالکل قابل برداشت نہیں تھی ۔ سب کمرے مختصر اور ایک دوسرے سے جڑے ہوئے تھے سو اس نے موبائل سائلنٹ کر رکھا تھا۔ پھر بھی گا ہے بگا ہے وہ نگاہ ڈال۔لیتا تھا۔ پاکستان سے آنے والے فون وہ اٹھا نہیں سکتا تھا اور اگر پولیس اسٹیشن سے فون آتا تو نا اٹھانے پر مسلئہ بن جاتا۔ سنتھیا کی بدولت سیکس اوفنڈر کے چارج تک لگ چکے تھے فورسڈ ابارشن اور اب اسکی گمشدگی اسکو قاتل بھئ ثابت کر سکتی تھی۔
اف۔۔ اسکا دل کر رہا تھا اپنے بال وال نوچ لے۔ سوچ بھی نہیں سکتا تھا کبھی سنتھیا اسکےلیئے اتنا بڑا درد سر بن جائے گی۔
وہ بے چین سا ہو کر اٹھ کھڑا ہوا ۔ کمرے میں چلنے پھر نے کی جگہ نہیں تھی پھر بھی بے چینی میں اس نے اس مختصر جگہ میں بھی کئی چکر کاٹ لیئے تبھی اسکے دروازے پر دستک ہوئی۔
اس نے فورا دروازہ کھولا توسامنے دو پولیس اہلکار کھڑے تھے۔
یو آر انڈر اریسٹ۔۔
ٹوٹی پھوٹئ انگریزی اسے لگا تھا سننے میں غلطی ہوئی ہے۔
دے؟؟؟۔
اسکے ہنگل میں پوچھنے پر اس بار گہری سانس لیتے ہوئے اہلکاروں نے دہرایا۔۔
آپکے خلاف اپنی گرل فرینڈ کو اغوا اور حبس بیجا میں رکھنے کا پرچہ درج ہوا ہے ہم آپکو گرفتار کرنے کیلئے آئے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ہائے تھکی تھکی سی کمرے میں آکر بستر پر گر گئ۔ پھر ایکدم چونک کے اٹھ کر دیکھنے لگی۔ اسکے کمرے کی حالت بدلی ہوئی تھی۔ ایک ایک چیز سمٹ کر اپنی جگہ پر پہنچ چکی تھی۔ بستر پر کمبل تہہ ہوا رکھا تھا اسکی کتابیں سلیقے سے ڈیسک پر سجی تھیں۔ دوسرا بیڈ بھی سمٹا ہوا تھا۔ بے شکن چادر۔
وہ تیر کی طرح اٹھی اور جھٹ سے ملحقہ باتھ روم کا دروازہ کھولا اندر سے باہر نکلتی لڑکی کی اس سے ٹکر ہوتے ہوتے بچئ تھی۔
ہائش۔ اس نے جیسے سکھ کا سانس لیا۔ اور واپس مڑگئ۔
جائو میں نہا چکی۔
اسے یہی لگا تھا کہ شائد اس نے باتھ روم جانا ہے جبھی اتنی تیزی میں نکلی ہے۔
یہ سب تم نے کیا ہے؟
جی ہائے نے کمر پر ہاتھ رکھتے یوں پوچھا تھا جیسے اثبات میں جواب ملنے پر گریبان ہی پکڑ لے گی۔
ہاں کیوں؟ سنتھیا گڑبڑائئ۔
بےکار میں زحمت کی۔ سوہایا آئے گئ اسکا دوبارہ پہلے سے بھئ برا حال ہو جائے گا۔
وہ دھپ سے اپنے بیڈ پر گرتے ہوئے بولی۔
کب آئے گئ؟
سنتھیا اسی میں اٹک گئ۔ تولیہ سے بال خشک کرتے ہوئے ہاتھ رک سے گئے تھے۔
کرسمس کے بعد ہی ظاہر ہے۔ اگلے سمسٹر سے آئے گی سب میری طرح بے گھر تھوڑی ہوتے کہ چھٹیاں بھی ہاسٹل میں گزاریں۔
وہ بیزاری سے بیڈ پر اینڈ رہی تھی ۔ ایک انگڑائی دوسری بار اسٹریچنگ ۔ تیسری بار اسے جتاتی نگاہ سے دیکھا۔
ابھی تو دن ہیں کچھ ۔ میں تب تک انتظام کر لوں گی۔
سنتھیا کو یک گونہ اطمینان ہوا۔
ویسے تمہاری تو روم میٹ گوارا ہوا کرتی تھی۔ تب یہ کمرہ بھی صاف ستھرا ہوا کرتا تھا۔
اس نے طائرانہ نگاہ کمرے پر ڈالتے ہوئے جتایا۔
اس وقت بھئ گوارا یہاں کم کم ہی رہتی تھی جبھی صاف ہوتا تھا کمرہ میں صرف اپنا حصہ صاف رکھتی ہوں باقی کمرے سے الغرض رہتی ہوں۔
جی ہائے کا جواب عجیب ضرور تھا مگر اس سے ایسے ہی جواب کی امید تھئ اسے۔ وہ لیٹے لیٹے ہی اسٹریچنگ کر رہی تھی۔ سنتھیا نے پہلو بدل لیا۔ فضا میں بیڈ کی چرچراہٹ کی بے ہنگم آواز گونج رہی تھی۔
تم نے پیسوں کے انتظام کا کہا تھا کچھ ہوا؟
اس نے کافی دیر ہمت کرنے کے بعد جھجکتے ہوئے نظر چرا کر پوچھا تھا۔
جی ہائے کی ورزش کرتی ٹانگیں رکیں۔ پھر اچھل کر سیدھی ہو بیٹھئ۔
گئی تھی آہبوجی کے لاکر سے اپنی ماں کے زیورات لینے مگر وہاں انکا لاڈلا لے پالک بیٹھا تھا چوکیداری پر آج آہموجی سے مانگنے گئ تو انہوں نے لمبے چوڑے مجبوریوں کے قصے سنا دیئے۔اپنے لیئے ایک پیسہ ان دونوں سے مانگنا حرام سمجھا ہے میں نے مگر تمہاری وجہ سے ۔۔۔
آئم سوری۔
سنتھیا نے شرمندگی سے سر جھکا لیا۔ ببل چباتی جی ہائے نے جگالی چھوڑ کر فرصت سے اسکا چہرہ تکا۔ یہ وہی بندی تھی جس کا غصہ ناک پر دھرا رہتا تھا اور نخرا آسمان پرہوا کرتا تھا۔ بدلتا ہے رنگ آسمان کیسے کیسے۔۔
اس نے مزید کچھ بھی کہنے کا ارادہ ترک کرکے ہونٹ بھینچ لیئے۔
میں آج کم سن سے ملنے گئ تھی۔ اس نے مجھے جاب دے دی ہے۔بہت ذیادہ نہیں مگر۔۔
ابھی اس نے اتنا ہی کہا تھا کہ جی ہائے نے حیرت سے چیخ مار دی
کم سن؟ وہ کنگلا؟ وہ کونسی جاب دے رہا ہے تمہیں اسے تو اسکے بھائیوں نے لات مار کر گھر سے نکالا تھا کتنے عرصے ہیون نے خرچہ اٹھا یا ہے اسکا۔
میں یہ سب نہیں جانتی مگر وہ اب ایک ایڈورٹائزینگ ایجنسی چلا رہا ہے اس نے مجھے اپنا کارڈ دیا تھا۔
وہ اسکے پریقین انداز میں کہنے پر سٹپٹا سی گئ۔ جھٹ اپنے پرس سے کارڈ نکال کر اسکی جانب بڑھایا۔ جی ہائے پرسوچ سے انداز میں کارڈ میں اندراج تفصیل پڑھ رہی تھئ اسکے ذہن و دل میں جھکڑ چلنے لگے۔ کیا پتہ وہ اس کمپنی کا ملازم ہی ہو مگر کم از کم دفتر وفتر اصلی ہی تھا اور وہاں۔۔ پر سب انتظام نیا ہی تھا ۔ اسے شک گزرنے لگے۔ کہیں وہ کسی دھوکے کا شکار تو نہیں ہونے لگی۔
ہاں ایجنسی تو اسی کی ہے۔ ہیون نے ہی مدد کی ہوگی ۔
جی ہائے نے کارڈ واپس تھمایا تواسکی جان میں جان آئی۔
ویسے اچھا لڑکا ہے شریف تم فالتو میں گھبرا گئیں۔
اس نے سنتھیا کا گھبرانا نوٹس کر لیا تھا۔
کچھ کھایا ہے تم نے؟
وہ اب فکر کر رہی تھی۔ سنتھیا نے نفی میں سر ہلادیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کارڈ چھوڑ کر تو گئ۔تھی کیفے چلی جاتیں۔ ہمارا میس چھٹیوں میں محدود ہوجاتا ہے بند نہیں ہوتا اکثر غیر ملکی چھٹیوں میں گھر جانے کی بجائے یہاں چھوٹی موٹی نوکری کرنے کو ترجیح دیتے ہیں۔ تو انکی سہولت کیلئے کچن کھلا ہی رہتا ہے۔
وہ سیڑھیاں اترتے ہوئے بتا رہی تھی۔ سنتھیا خاموشی سے اسکے ہم قدم تھی۔ میس پہنچ کر اسے نے آٹو میٹڈ اسکینر میں کارڈ دو مرتبہ چھوایا تھا۔ کورین بیف اسٹیک نوڈلز سوپ سادہ ابلے چاول سبزیوں کا اچار اور دو تین طرح کی چٹنیاں سلاد۔ اسکی بھوک چمک اٹھی تھی۔ وہ کافی تیزی اور رغبت سے کھانے لگی تھی۔ جی ہائے اپنا کھانا چھوڑ کر اسے دیکھ رہی تھی۔ اسکے منہ سے نوڈلز پھسل کر پیالے میں گرے تو اس نے جلدی سے پانی کا گلاس بھر کر اسکی۔جانب بڑھایا۔ سنتھیا شرمندہ سی ہوگئ۔ کیا سوچتی ہوگی وہ۔ مگر اسے یا تو بالکل بھوک محسوس نہیں ہوتی تھی یا لگتا تھا پوری دنیا کھا جائے تو بھی پیٹ نہیں بھرے گا۔
وہ ایک سانس میں پورا گلاس پی گئی۔
تمہیں اچھی خوراک اور آرام کی ضرورت ہے ۔ تمہیں دیکھ کر کوئی اندھا بھی بتا سکتا ہے کہ تم غذائی کمی کا شکار ہو۔ تم پاکستان واپس چلی جائو کم ازکم تمہارے پیرنٹس تمہارا خیال تو رکھیں گے۔
جی ہائے نے پورے خلوص سے مشورہ دیا تھا۔ سنتھیا کے حلق میں نوالے اٹکنے لگے۔
وہ اس بچے کو کبھی دنیا میں نہیں آنے دیں گے۔ بدنامی کا خوف انہیں مجھے کھو دینے کے خوف سے ذیادہ ہوگا۔ پاپا بیوروکریٹ ہیں ایسا کوئی اسکینڈل انکی ساکھ کوکتنا نقصان پہنچا سکتا ہے۔۔۔۔ اس سے بہتر
وہ سوچ کے رہ گئ۔ جی ہائے کو افسوس سا ہوا اسے یقینا یہ مشورہ نہیں دینا چاہیئے تھا اگر وہ واپس جا سکتی ہوتی تو جا چکی ہوتی۔ اسے دوسرا خیال آیا۔
تم اریزہ سے مدد نہیں مانگتیں؟ وہ تو کافئ امیر ہے نا؟
وہ جواب طلب نگاہوں سے دیکھ رہی تھی۔
میں تم پر ذیادہ دن بوجھ نہیں بنوں گی۔ مجھے اندازہ ہے تمہارے اوپر میرا بار۔۔
اس نے ابھی اتنا ہی کہا تھا جی ہائے نے بات کاٹ دی۔
فارگیٹ اٹ۔ میرے اتنے خرچے نہیں دوسرا میں قومی سطح پر جمناسٹکس کرتی ہوں میری اسپانسرشپ بڑی ہے۔ یہ سب میرے لیئے مسلئہ نہیں ہاں تم پریگننٹ ہو تمہارے ریگولر چیک اپس ہوں گے دوائیں سپلیمنٹس بھی تو چاہیئے ہوں گے اسکے لیئے خاصی رقم درکار ہوگی تمہیں پھر اس بچے کو پالوگی کیسے؟ تمہیں ایڈون کی بات مان لینی چاہیئے تھئ۔
بس کرو۔اس نے زور سے چمچ ٹرے پر پٹخا۔۔
جسے دیکھو اس بچے کو مارنے کا مشورہ دینے چلا آتا۔ ایک جان میرے اندر پل رہی ہے ایک نئی زندگی ۔ تم لوگ دیکھ نہیں سکتے تو اسکا یہ مطلب نہیں کہ یہ کچھ نہیں ہے۔ یہ انسان ہے میرے تمہاری طرح کا۔ اسکو مارنا اتنا آسان لگتا ہے؟
وہ ایکدم غضبناک ہوگئ تھی۔ اسکا چہرہ سرخ ہوگیا تھا تنفس بھی تیز ہوگیا تھا۔
ریلیکس۔ جی ہائے نے اسکا ہاتھ تھاما۔وہ ہاتھ چھڑاتی اٹھ کھڑی ہوئی۔
میں تمہاری فکر میں کہہ رہی تھی۔ بیانئے۔ گاڈ ایسے بھی لوگ ہیں دنیا میں جو بچہ ابھی دنیا میں آیا نہیں اسکے لیئے لڑ رہی ہو لوگ تو اپنی پلی پلائی جوان ہوتی اولاد کو دھتکار دیتے ہیں۔ جانے د واب بیٹھ بھی جائو۔
اسکی معزرت بھی اسکا غصہ ٹھنڈا نہیں کر پا رہی تھی۔
میں جلد اپنا انتظام کر لوں گی ۔ تم نے میری جتنی بھی مدد کی ہے اسکا احسان میں نہیں اتار سکتی پھر بھی دل سے شکریہ ادا کرتی ہوں تمہارا۔
اسکی بات پر جی ہائے مسکرا دی۔
آننیانگ؟ جی ہائے ہیئر۔ ایم ناٹ اریزہ۔
اس نے جتاتے ہوئے دونوں ہاتھ ویو کیئے۔
میں جھوٹے منہ بھئ کسی کو دوست کہہ دوں تو نبھاتی ہوں۔ شکریہ مت اداکرو بیٹھ کر کھانا ختم کرو۔
اس نے پیار بھری دھونس جمائی۔ وہ پھر بھی نہ بیٹھی تو اسکا ہاتھ پکڑ کر اسے زبردستی بٹھایا۔
گاڈ تمہارا ٹیمپرامنٹ ایک الگ ہی چیز ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پانی پر بازو کا وار کرکے اسے پیچھے دھکیلتے پیروں سے لہروں کو چیرتے اس نے پول کے کتنے چکر کاٹ ڈالے تھے۔ اسکی تیراکی کی رفتار غیر معمولی تھی۔ پول کے گرد لگی نشستوں پر دو چار اور لوگ بھی تھے ۔پول میں مگر وہ اکیلا تھا اتنئ سخت سردی میں تیراکی کرنا کسی نارمل انسان کا کام تھا بھی نہیں۔۔کسی نے اسے ٹوکا بھی تھا مگر وہ ان سنی کیئے خود کو یونہی تھکاتا رہا ۔ یہاں تک کہ بازو شل سے ہوگئے۔ یہ پہلی بار تھا سوئمنگ بھئ اسکا انتشار کم نہ کرسکی۔ وہ تھک کر نڈھال ہو کر پول سے باہر نکل آیا۔ باتھ گائون لپیٹتا وہ پول کے ساتھ سجی آرم دہ کرسی پر آگرا
کم سن اسکے برابر والی آرام دہ کرسی پر نیم دراز تھا۔ اسے دیکھ کر سیدھا ہو بیٹھا۔پانی کی بوتل اسکی جانب بڑھا دی
ہیون بوتل تھام کر چند لمحے اسے دیکھتا ہی رہا۔ اسکے بازو اتنے شل ہو چکے تھے کہ لگتا تھا بوتل اٹھا کر منہ تک نہ لے جا سکے گا۔کم سن نے سر جھٹکا اور آگے بڑھ کر بوتل خود پکڑ کر اسے پانی پلانے لگا۔ پیاس اتنی محسوس ہو رہی تھی کہ جیسے سارا پول بھی ختم کرلے تو پیاس نہ بجھے۔ وہی ہوا جس کا ڈر تھا اسے اچھو ہوا تھا اتنا زو رسے کہ جیسے پھیپھڑوں تک پانی چلا گیا ہو۔ بری طرح کھانستے وہ دیکھتے ہی دیکھتے چہرہ لال ہوگیا۔ کم سن نے اسکی پیٹھ سہلائی کندھے دبائے تب جا کر کچھ سکون ہوا۔اسکی آنکھیں پہلے ہی پانی میں رہنے سے سرخ ہو رہی تھیں ۔
کیا ہوا ہے؟ کوئی بات ہوئی ہے ہیون؟
کم سن پوچھے بنا نہ رہ سکا۔ وہ قصدا سر جھکائے بیٹھا تھا۔ انڈورپول تھا ماحول جدید ٹیکنالوجی سے انہوں نے گرم کر رکھا تھا پانی بھی ٹھنڈا نہیں تھا پھر بھی دسمبر یوں پاگلوں کی طرح تیراکی کرنے والا مہینہ نہیں تھا۔ وہ کانپ نہیں رہا تھا مگر اسکے جسم کا رواں رواں کھڑا ہوا تھا۔
تم یہاں کیسے ؟ میں نے تو تمہیں نہیں بلایا تھا؟
اس نے الٹا سوال کیا۔ کم سن نے گہری سانس لی۔
تمہارے پول مینجر نے کال کی تھی تم پر پھر تیراکی کا بھوت سوار ہوا ہے۔ پول تو تیار کردیا مگر مجھے بھی فون کردیا۔ کلائنٹ کے ساتھ میٹنگ چھوڑ کر بھاگا آیا ہوں۔ اور شکر ہے ۔۔
ہیون نڈھال سا ہو کر چکرایا تھا وہ بولتے بولتے بات ادھوری چھوڑ کر لپکا اسکو کندھے سے لگا کر گرنے سے بچایا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سوئٹ کھلوا کروہ اسے سہارا دے کر اندر لا یا تھا۔اسکا جسم بری طرح ٹوٹ رہا تھا۔ مینجر انکے ہمراہ تھا ساتھ ٹرالی گھسیٹ کر لاتا ویٹر بھئ۔ اسکے لیئے کھانے پینے کی چیزیں اعضاء کو پرسکون کرنے والی دیسی دوا سے لیکر ہلکی پھلکی شراب تک سجی تھی۔ یہ پورا جم خانہ لی گروپ کا تھا۔ کئی منزلہ عمارت میں سب سے نیچے پول تھا اس سے اوپر والی منزل پر بار اور پھر اس سے اوپر مہمان خانہ۔ سب سے اوپر گھر کی طرز پر یہ سویٹ بنے ہوئے تھے۔ لی گروپ کے تجارتی وفود کو یہیں ٹھہرایا جاتا تھا۔ یہ سویٹ اکثر ان دونوں کے استعمال میں ہی رہتا تھایا ہیون اگر پارٹی رکھتا تو اسکے مہمانوں کے۔ ہیون کو بیڈ پر لٹا کر اس نے مینجر او رویٹر کو شکریئے کے ساتھ واپس بھیج دیا تھا۔ ہیون نے کہنی اپنی آنکھوں پر ٹکا لی اسکی آنکھوں میں شدید جلن ہو رہی تھی۔
اب بتائوگے کیا ہوا ہے تمہیں؟ کیا پریشانی ہے؟
کم سن اسکی فکر میں ہلکان ہو رہا تھا۔ اسکے لیئےپینے والی دوا کا گلاس پکڑے سرہانےکھڑا منت کرنے والے انداز میں پوچھ رہا تھا۔
کچھ نہیں۔
وہ قصدا مسکرانے کی کوشش کرتا سیدھا ہوا اور اسکی تسلی کیلئے بنا چوں چراں کیئے دوائی کا گلاس بھی منہ کو لگا لیا۔
کم سن نے اسے دیکھا پھر اٹھ کر اسکے اتارے ہوئے کپڑوں کی تلاشی لینے لگا۔ ہیون نے ہونٹ بھینچ لیئے۔
اس نے اسکے اپر کی جیب کی تلاشی لی تو ایک انگوٹھی کیس مٹھئ میں آگیا۔ اس نے جھٹ نکال کر کھولا اندر بے حد قیمتی انگوٹھئ جگمگا رہی تھی۔
یہ۔ اس نے حیرت سے ہیون کو دیکھا۔۔۔ انگوٹھئ، ہیون ، لڑکی۔۔
اس کے ذہن نے تیزی سے کڑیاں ملائیں۔
تم پرپوزکر رہے ہو ؟ کسے؟ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اریزہ کو؟
اس کی حیرت دیدنی تھئ۔ ہیون کے چہرے پر پھیکی سی مسکراہٹ در آئی۔
کرچکا ہوں۔۔۔
اس نے لحظے بھر کا وقفہ لیا۔ کم سن کا منہ کھلا کا کھلا رہ گیا مگر ابھئ ایک او رحیرت کا جھٹکا باقی تھا لگنا۔
اور اس نے انکاربھی کردیا۔
ہیون نے جملہ پورا ادا کیا اسکے ہاتھ سے انگوٹھی چھوٹ کر گرتے گرتے بچی۔
دے( کیا)؟ ویئو؟(کیوں)؟۔۔
اسکی حیرت کی انتہا نہ رہی۔ وہ سوچ بھئ نہیں سکتا تھا کوئی لڑکی ہیون کو انکار کر سکتی ہے۔
میں فرینڈ زونڈ کردیا گیا ہوں۔
وہ ہلکے پھلکے انداز میں کہہ کر ہنسا تھا مگر اسکی آنکھوں سے آنسو پھسل آئے۔ کم سن تڑپ کر اسکے پاس آبیٹھا۔
کیا مطلب؟ ایسے کیسے۔
وہ کہتی ہے اس نے کبھی میرے بارے میں نہیں سوچا۔
ہیون کا گلا رندھ سا گیا۔
تو اب سوچ لے۔ ایسے کیسے کوئی منہ پر انکار کرسکتی ہے؟۔۔
کم سن شاکڈ تھا۔ ہیون خود پر قابو پا رہا تھا۔ اسےلگ رہا تھا وہ کچھ بولا تو شائد ضبط ٹوٹ جائے گا۔
میں بات کروں اس سے؟
اسے دکھ ہو رہا تھا۔ ہیون کو اسکے خلوص پر پیار آگیا۔
کیا بات کروگے ؟ وہ استہزائیہ ہنسا۔۔
یہی کہ۔
کم سن کو سمجھ نہ آیا کیا کہے۔پھر کچھ نہ کچھ سوجھ گیا
تم دونوں دوست ہو اچھی انڈر اسٹنڈنگ ہے تم دونوں میں ہو سکتا ہے وہ ابھی لائٹلی لے رہی ہو۔ ابھی وہ انوالو نہیں ہے پر ہو تو سکتی ہے۔ تم خوش شکل ہو خوش مزاج ہو ، خوش اطوار ہو اچھے گھرانے سے تعلق ہے تمہارا۔ وہ پاکستان سے آئی ہے اسے اندازہ نہیں ہوگا ابھی تمہارے بارے میں سب سے بڑھ کر اسے کیا پتہ لی گروپ کیا بلا ہے؟
وہ اسکا دل بڑھانا چاہ رہا تھا مگر اسکی اس کوشش کا بالکا الٹا اثر ہوا۔
لی گروپ اپنے تعارف کا حصہ نہیں بنانا مجھے۔ میں پچھلے بارہ تیرہ سالوں سے خود کو باور کراتا آیا ہوں ایک دن مجھے اپنے اوپر سے لی کا ٹیگ ہٹاناہے۔ اگر اسے پیسے سے متاثر ہونا ہے تو مجھے ایسی لڑکی نہیں چاہیئے اپنی زندگئ میں۔ میں ہیون ویدا الیکسی ہوں بس ۔
وہ ایکدم اتنا بھڑک اٹھا تھا کہ کم سن چپ ہوگیا۔
اچھا فی الحال تم شانت رہو۔ بلکہ تھوڑی دیر آرام کرو۔
اس نے زبردستی اسکو کندھے سے پکڑ کر لٹا دیا۔
ہیون ذہنی طور پر اتنا منتشر تھا کہ مزاحمت بھی نہ کرسکا۔چپ چاپ لیٹ گیا۔
کم سن احتیاط سے انگوٹھی کو کیس میں واپس رکھ کر بند کرنے لگا کہ خیال آیا انگوٹھی نکال کر چٹکی میں دبا کرغور سے دیکھنے لگا۔ آنکھوں کو خیرہ کردینے والا دمکتا ہیرا وائٹ گولڈ میں سجا تھا۔ انگوٹھی اپنی بناوٹ سے ہی نہایت انمول اور قیمتی دکھائی دیتی تھی۔کیس کوریا کے سب سے مشہوربرانڈ کا تھا۔
کوئی لڑکی اس انگوٹھی کو منع کر سکتی ہے؟ اسکو حیرت ہو رہی تھی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ دو گھنٹے بے خبر سوتا رہا تھا پھر بھی ذہن بوجھل تھا۔ کم سن اسکو سلا کر خود چلا گیا تھا۔۔ وہ دوا کے زیر اثر سویاتھا آنکھ کھلی تو چند لمحے سمجھ بھی نہ آیا کہ کہاں ہے۔ فون چیک کیا تو پانچ چھے آہبوجی کی مسڈ کالز پڑی۔ تھیں۔ لمبا چوڑا پیغام بھی تھا جسے اس نے پڑھنے کی زحمت نہ کی۔ یقینا انکے پی اے نے ہی بھیجا ہوگا۔وہ بمشکل چکراتے سر کو سنبھالتے گاڑی جم خانہ میں ہی چھوڑ کر۔ٹیکسی سے گھر آیا تھا۔ گھر میں داخل ہوتے ہی اسے آہبوجی کا ایک اور پیغام ملا تھا۔ فورا اسٹڈی میں آئو کچھ بات کرنی ہے ۔ وہ انکے پی اے کو دیکھ کر رہ گیا اس نے مزاج بھانپتے ہوئے ہونٹ بھینچے اور فوری منظر سے غائب ہونے میں بہتری سمجھی۔ ہیون اس وقت کسی نئے شوشے کا سامنا نہیں کرنا چاہتا تھا مگر قسمت میں یہی لکھا تھا شائد۔ وہ تھکے تھکے قدموں سے انکی اسٹڈی میں چلا آیا۔ ہلکی سی دستک پر اسے اندر آنے کی اجازت فورا مل گئ۔
آئو ہیون آئو یہ میرا بیٹا ہے ہیون۔
آہبوجی سامنے ہی صوفے پر دراز تھے اسے دیکھ کر جس خوشگوار انداز میں بولے اسے اپنی خیریت مشکوک لگنے لگی۔ اسکا اندازہ غلط نہیں تھا۔ ان کے مقابل صوفے پر ٹانگ پر ٹانگ تکلف سے رکھے گلابی گھٹنوں تک کے مغربی لباس میں ملبوس دوشیزہ براجمان تھی۔
اتنے پرتپاک انداز میں اسی سے تعارف کرایا گیا تھا۔
ہیون یہ سارا ہیں ایمرلڈ گروپ کے ڈائریکٹر یوسانگ ہو کی اکلوتئ بیٹئ۔ حال ہی میں امریکہ سے ایم بی اے کی تعلیم مکمل کرکے آئی ہے۔اور سارا یا یہ ہیون ہے اسکو میں امریکہ سے ہی ایم۔۔
اس سے قبل وہ پھر اپنا من پسند دکھڑا روتے اس نے بات کاٹ کرسلام کر دیا ۔
ہیلو۔
ہیلو ۔ اس نے بھئ مسکرا کر جواب دیا۔۔۔
تم لوگ بیٹھ کر باتیں کرو میں ذرا ایک ضرور فون کرکے آتا ہوں۔
آہبوجی یقینا ان کو پرائیویسی دینے کیلئے بہانہ بنا کر اٹھے تھے۔ وہ اس طرح کی انکی کئی کوششیں ناکام بنا چکا تھا جبھی اس بار اسے سرپرائز دیا گیا تھا۔ پچھلی کوششوں کے برعکس اس وقت سب سے غلط موقع تھا۔ وہ انکو کہنا چاہتا تھا کہ وہ تھکا ہوا ہے ابھی آیا ہے مگر انہوں نے کچھ ذیادہ ہی پھرتی دکھائئ۔
آپ کیا پڑھ رہے ہیں؟
سارا نے بات برائے بات پوچھا تھا۔ وہ خشک ہوتے لبوں کو بھینچتا ہوا اسکے مقابل بیٹھ گیا۔
ماس کمیونیکشنز اینڈ میڈیا سائنسزمیرا میجر ہے۔
اس نے مختصر جواب دیا تھا۔ سارا ذرا سا ہنسی پھر صوفے کی پشت سے سر ٹکا دیا۔ اور تھوڑا سا ریلیکس ہو کر بیٹھ گئ۔
سو تم انجان ہو اس ارینج ڈیٹ سےیا مجھ سے ذیادہ بیزار ہو انکل نے تو پچھلے آدھے گھنٹے سے مجھے یوں انتظارکرایا تھا جیسے تم اس ڈیٹ کیلئے پارلر سے تیا رہو کر آرہے ہو۔ پر تمہیں دیکھ کر لگتاہے کسی سے تازہ تازہ بریک اپ کرکے آرہے ہو۔ وہ کیا کہتے ہیں۔۔۔
رومیو۔۔۔
اسکی ہنگل پر امریکی لہجہ چڑھا ہوا تھا۔۔ خالص امریکیوں کی طرح بے تکلفی سے وہ اس پر جملے چست کیے جا رہی تھی۔اسکا اندازہ کمال کا تھا۔ اسکی جان جل گئ سو ناگواری سے ٹوک دیا۔
معاف کرنا ہماری پہلی ملاقات ہے ہمیں گفتگو میں آپ جناب کا لحاظ قائم رکھنا چاہیے۔۔
اسکا جواب سارا کیلئے غیر متوقع تھا پھر وہ قہقہہ لگا کر ہنس دی۔
بیان۔ در اصل امریکہ میں رہ کر مجھ سے غیر ضروری کوریائی ادب آداب کا لحاظ رکھنا مشکل لگتا ہے ویسے تم مجھ سے چھوٹے ہی ہوگے ایک دو سال۔ تو برا مت مانو۔ وہ کندھے اچکا کر اٹھ کھڑی ہوئی۔
بیٹھے بیٹھے تھک گئ میں۔
دو مہینے میں چوتھی ڈیٹ ہے میری۔۔۔ نرو پر آرہا ہے میری بھی۔ ۔ جا نے یہ کوریائی والدین کب ان گھسے پٹے طریقوں سے ڈیٹس ارینج کروانا چھوڑیں گے۔ لائک میں ابھی تو آئی ہوں اتنی جلدی کیا ہے۔
وہ دونوں ہاتھ ہلاہلا کر بہت انداز سے ٹہل رہی تھی۔ اپنے سنگل صوفے سے اٹھ کر بولتے ہوئے ا س نے مختصر سا چکر لگایا پھر صوفے کی پشت پر کہنیاں ٹکا کر اس کو بغور دیکھنے لگی۔
سو کیا ارادے ہیں ؟
ہوں۔ ؟ ہیون چونک کر دیکھنے لگا وہ اسکا مطلب سمجھ نہیں سکا تھا۔
اس ڈیٹ کیلئے کیا فیڈ بیک دوں میں؟
ہیون نگاہ کا زاویہ پھیرکر رہ گیا۔ سارا نے اسکا انداز محسوس کیا۔ پھر جیسے لطف لیتے ہوئے سر ہلایا۔
گڈ ۔ تم مجھ سے بھی ذیادہ بیزار دکھائی دیتے ہو۔۔
خیر۔ وہ گھوم کر اسکے مقابل تکلف سے آن بیٹھی۔ٹانگ پر ٹانگ جماتے ہوئے تسلی سے بولی۔ ہیون نا سمجھنے والے انداز میں اسے دیکھنے لگا۔
یہ سب اسے جتانے کا مطلب ؟ اگر نہیں ہی کہنا ہے تو جائے کہے اسکو کیوں جتا رہی ہے؟
سنو۔۔ میری پچھلی تینوں ڈیٹس میں تم سب سے ذیادہ ہینڈسم ہو۔ اور بولتے بھی کم ہو۔گاڈ لاسٹ ڈیٹ میں تو میں نے گن کر چار جملے بولے تھے بس۔
وہ ذرا سا ہنسئ۔
لانگ اسٹوری کٹ شارٹ۔ مجھے تم اچھے لگے ہو ۔ اگر میں اچھا فیڈ بیک دوں تو ہمارے پیرنٹس کم از کم ہمارے لیئے مزید کوئی نئی ڈیٹ ارینج نہیں کریں گے۔
اسکی بات اب ہیون کو سمجھ آئی تھی۔۔ وہ کھلکھلا دی
لک میرا ابھی شادی وادی کا کوئی موڈ نہیں۔ اور لگتا ہے تمہارا بھئ نہیں ہےنا۔
تو؟ ہیون نے پیشانی پر کئی بل ڈال لیئے تھے۔
تو ڈیل؟
وہ اپنا مرمریں ہاتھ اسکی جانب بڑھارہی تھی۔
ہیون نے لحظہ بھر کو سوچا پھر ہاتھ بڑھا دیا۔۔
ڈیل۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گنگشن فون پر بات کر رہی تھی جب ہوپ ایکدم بنا اجازت کمرے کا دروازہ کھول کر اندر داخل ہوئی۔ وہ چونکی مگر اسکو سر کے اشارے سے آنیانگ کہا۔ وہ اسکے مقابل کرسی گھسیٹ کر بیٹھ گئ۔
دے آں۔ دے۔ دے۔ اس نے جلدی جلدی بات ختم کرکے فون کریڈل پر رکھا۔
کیسی ہو ہوپ بڑے دن بعد آئیں۔۔
وہ ازلی مشفق انداز میں پوچھ رہی تھی۔
تو آپکو یاد ہے میں بڑے دنوں بعد آئی ہوں۔ پھر کوئی ہے خیر خبر۔ اب اگر آپ کے پاس مجھے بتانے کیلئے کچھ نہیں تو میں آئیندہ کبھی آپکو تنگ کرنے نہیں آئوں گی۔ اگر کچھ ہے جو آپ بتا سکیں تو مزید چھپانے کی ضرورت نہیں آپکو۔
ہوپ نے بلا تمہید پوچھا بلکہ تقریر جھاڑ دی۔ وہ اسکی ٹال مٹول سے تنگ آچکی تھئ اسے لگتا تھا گنگشن کے پاس کوئی خبر ہے جو جان کے وہ اس سے چھپا رہی ہے۔ افسوس کی بات یہی تھی کہ واقعی گنگشن ایسا ہی کر رہی تھی ابھئ بھئ اسکے اٹل انداز کو دیکھ کر بھی سچ بتانے کی ہمت کرنا جوکھم تھا اسکے لیئے۔ ۔ وہ گہری سانس لیکر کرسی کی پشت سے سر ٹکا گئ۔ چند لمحے لفظ جوڑتی رہی جملہ بناتئ رہی اسکی ہچکچاہٹ ہوپ اسکے چہرے سے پڑھ سکتی تھی۔ اتنے دنوں میں وہ خود کو بارہا باور کرا چکی تھی کہ اچھی خبرکا ملنا اسکے لیئے مشکل ہے۔مگر لاکھ سمجھانے کے باوجود وہ اس خبر کے خوف سے دل ہی دل میں لرز اٹھی تھی۔ اسکو اپنی دھڑکنیں جیسے سنائئ دے رہی تھیں۔
جو بھی اطلاع ہے بتا دیں۔
اس نے بے تابی سے کہا۔
تمہاری ماں چین سے شمالی کوریا واپس جب بھجوائی گئ تھئ تو تمہاری صرف سب سے چھوٹی بہن اسکے ہمراہ تھی۔ تمہاری دوسری بہن کیمپ سے بھاگنے کی کوشش میں اندھی گولی کا شکار ہوگئ۔ اسکی لاش بھی چینی حکام نے شمالی کوریا بھجوا۔۔۔
چھوٹی توزندہ ہے نا؟ اب تو خیر وہ بھی بڑی ہوگئ ہوگی اور ماں؟؟؟
اس نے بے تابئ سے بات کاٹی۔ زندہ رہ جانے والوں کی خبر کا ملنا مرجانے والوں کی خبر سے اہم تھا۔ پانچ بہن بھائیوں میں سے چار بھاگے تھے تین پہنچ پائے تھے چین اور اب ان میں سے بھی ایک اب نہیں رہا تھا۔
گنگشن نے ترحم بھری نگاہ سے اسکو دیکھا۔وہ جتنی بھی بے نیاز بن جائے کسی کے زندہ بچ جانے کی امید اسکو زندگی کی گاڑی گھسیٹنے پر مجبور رکھتی تھی۔ ۔ لیکن جھوٹی امید کب تک ساتھ نبھا سکتی ہے۔ چونکہ اب اسکے پاس ہر تفصیل موجود تھی اس نے مزید حقائق پر پردہ ڈالنا مناسب نہ سمجھا۔ اس نے نگاہ چرائی ۔۔ یہ سب سے مشکل ہوتا تھا اسکے لیئے کسی کو اسکے پیاروں کی دائمی جدائی کی خبر دینا۔
ہم نے انکا بھی پتہ کروانے کی کوشش کی۔ مگر کوئی اچھی خبر نہیں مل سکی۔ تمہاری والدہ بہت بیمار تھیں ان سے اتنی جسمانی مشقت نہ ہوسکی اور وہ تین سال قبل کیمپ میں ہی انتقال کر گئیں۔
گنگشن نے بہت مشکل سے یہ چند جملے سوچ سوچ کر ادا کیئے تھے۔ ہوپ کا رنگ بالکل سفید پڑگیا تھا جیسے کاٹو تو بدن میں لہو نہیں۔ وہ ساکت سی بیٹھی گنگشن کی شکل دیکھ رہی تھی۔گنگشن نے گہری سانس لیتے ہوئے اپنی دراز سے ایک فائل نکال کر اسکی جانب بڑھا دی۔
اس فائل میں تمام تفصیلات ہیں۔ تمہاری دوسری بہن بھی کیمپ کی سختیوں کا شکار ہوگئ۔
ہوپ نے جھپٹ کر وہ فائل لی تھی او رتیزی سے صفحے پلٹے۔ سرکاری کاغذات کیمپ میں جمع کرتے وقت جو تصاویر لی جاتی تھیں ریکارڈ کیلیے وہ آخر میں لاش کی۔تصویر تاکہ کوئی بھولا بسرا لواحقین میں سے پوچھنے آئے تو ثبوت دیا جا سکے۔ اسکی ماں کی کئی تصاویر تھیں ۔ چینی حکام نے واپس بھجواتے وقت جو تصاویر و کاغذات بنائے وہ بھی موجود تھے اور آخر میں۔۔
اس نے تکلیف سے آنکھیں میچ لیں۔ تصو رکی آنکھ سے بارہا اس منظر کو دیکھا تھا تب بھی جو چہرہ بنتا تھا اس پر اتنی زردی نہیں کھنڈی تھی اتنا بڑھاپا نہیں تھا اتنے چہرے پر زخم نہیں تھے۔ اس کی آنکھیں جل رہی تھیں مگر حیرت انگیز طور پر اسکی آنکھ سے آنسو نہ نکلا۔ اس نے سب کاغذ پلٹے پھر فائل بند کردی۔
اس میں میری بہن نہیں ہے؟۔۔

گنگشن باقائدہ اٹھ کر اسکے پاس آئی اسکے کندھے پر ہاتھ رکھ کر تسلی دینےلگی۔
بچوں کا اتنا ریکارڈ نہیں ملتا ہاں تمہاری ماں کی ایک تصویر ہے اس میں جو وہ ایک مٹی کے ڈھیر کے پاس اکڑوں بیٹھی ہے۔ کسی فوجی نے یہ تصویر ایک چینی اخبار کو بیچی تھی۔ اس کا تراشہ ہے اس میں۔ قوی امکان یہی ہے وہ ننھی قبر۔۔۔
ہوپ نے سر ہلایا کئی آنسو اسکے گالوں پرپھسل آئے۔ گنگشن نے اسکاسر اپنے ساتھ لگا لیا۔
صبر کرو ۔۔ تم بہت بہادر ہو ۔ تم زندگی سے لڑ کر جینا جانتی ہو۔ خدا ایسے لوگوں کو تنہا نہیں چھوڑتا۔
وہ دھیرے دھیرے اسکا سر تھپک رہی تھیں۔۔۔
ہوپ کو لگتا تھا اسکی آنکھیں خشک ہو چکی ہیں مگر اس وقت ایک بار پھر سیل رواں جاری ہوا تھا۔ ضبط کے سب بندھن ٹوٹے تھے وہ گنگشن کی بانہوں میں بکھر کر رودی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوپ ابھئ تک نہیں آئی تھی پورے اپارٹمنٹ کی ایک ایک بتی جلا کروہ اپنے لیئے خوب سارے فرائز تک کر کمرے میں آئی۔ بیڈ پر آلتی پالتی مار کر بیٹھتے ہوئے موبائل اٹھا لیا۔ موبائل نا چاہتے ہوئے بھی اسکو استعمال کرنا پڑا تھا۔ بمشکل دو دن دو ررہی تھی فون سے ۔ ہیون نے اسکا پرانا کنکشن بحال نہیں کروایا تھا اب نیا نمبر تھا۔چند ہی نمبر سیو تھے گوارا ، ہوپ، ہیون ، کم سن یعنی جتنے ہیون کے پاس تھے۔ دو دن سے صارم سے بات نہیں ہوئی تھی یقینا وہ پریشان ہو رہا ہوگا۔ صارم کا فون نمبر تو اسے منہ زبانی یا دتھا اسی کو کال ملادی۔
ہیلو۔ انجان نمبر سو اسکا انداز محتاط تھا۔
ہائے۔ اسے بھی شرارت سوجھی بن بن کر بولی۔
صارم سے بات ہوسکتی ہے؟
نہیں صارم تو دبئی ہوتا ہے اب یہ میرے پاس ہوتا ہے نمبر۔۔خیر اسے چھوڑیں آپ بتائیں کہاں مر گئیں تھیں ؟ دو دن سے فون ملا ملا کر تھک گیا خالو بھی پریشان ہو رہے تھے۔
وہ بھی ایک کائیاں تھا فورا پہچان گیا۔ کان کھینچنے والے انداز میں پوچھنے لگا۔
وہ میرا فون ٹوٹ گیا تھا۔
اسے بتانا پڑا۔
ٹوٹ گیا تھا کیسے؟
وہ حیران ہوا۔
تم اپنا سر تڑوالو مگر فون کو کچھ نہ ہونے دو یہ انہونی کیسے ہوئی؟
بس وہ گر گیا تھا سڑک پر گاڑی گزر گئ اس پر سے۔
اس نے سچ بتایا وہ آگے سے بری طرح پریشان ہوگیا
خالی فون کیسے گر گیا؟ تم بھی تو جڑی ہوگی اس سے ؟ ایکسیڈنٹ ہوا کیا؟ تم ٹھیک ہو؟
ارے بابا بالکل ٹھیک ہوں فون گر گیا تھا روڈ پر میں ٹھیک ہوں خیریت سے ہوں فکر نہ کرو
وہ تسلی دے رہی تھی مگر اسے تسلی ہوئی نہیں۔
کال فورا بند کردی۔ چند لمحوں کے بعد ویڈیو کال تھی۔
دیکھ لو کر لو تسلی بالکل ٹھیک ٹھاک خیریت سےہوں۔ آئو تم بھی چپس کھالو۔
وہ قصدا چڑانے کو اسے چپس دکھا دکھا کر کھا رہی تھی۔
کوئی نہیں ریگولر جم لگا رہاہوں چپس مہینے ہورہے دیکھے بھی نہیں اور تم اتنے چپس کھا رہی ہو پھر پہلے جیسی ہوجائوگی ۔
وہ چھیڑنے سے باز نہ آیا۔۔ اس نے زبان چڑائی
چلو شکر ہے ون پیس میں ہی لگ رہی ہو۔۔ نیا فون خود لیا ہے؟ کہاں سے پیسے آئے؟
اب اس کا تفتیشی موڈ آن ہوچکا تھا۔
ہیون نے لا کر دیا ہے۔۔
اسکی آواز کم سے کم ہوتی گئ
ایک اور احسان چڑھا لیا ابھی اسکواکیڈمی فیس وغیرہ بھی نہیں دی ہےنا؟
پیسے بھجوائے تم نے؟ وہ شرمندگئ مٹانے کو اسے آنکھیں دکھانے لگی
بھجوا دیئے ہیں جائو اپنا اکائونٹ چیک کرو۔ اور جاب چھوڑی کہ نہیں خالو خفا ہو رہے تھے اس سے کہو جاب چھوڑے پڑھائی پر دھیان دے بس
ہوں صبح چیک کرتی ہوں موبائل تھا کہاں پاس جو مجھے پتہ لگتا اچھا یہ نمبر سیو کرلینا۔
وہ فرصت سے چپس اڑا رہی تھی۔
او ریہ تم اکیلی ہو اپارٹمنٹ میں۔؟ سہیلیاں کہاں ہیں تمہاری۔ ہمیشہ تمہارے پس منظر میں مرغیوں کی کٹاک کٹاک کی آواز آتئ رہتی ہے آج بڑی خاموشی ہے۔
صارم آنکھیں مٹکا مٹکا کر کمرے کے باقی منظر کو گھور رہا تھا۔
ڈیلے باہر گر جائیں گے آنکھیں مت پھاڑو۔
اس نے ٹوک دیا۔
گوارا گائوں گئ ہوئی ہے بتایا تو تھا اور ہوپ ابھی واپس نہیں لوٹی۔
تم ڈر ور نہیں رہیں کمال ہے؟
وہ خود آرام سے لائونج میں کائوچ پر دراز ٹی وی دیکھ رہا تھا اسے ڈرانے پر تل گیا۔ ایکدم چونک کے سیدھا ہوا
یہ تمہارے پیچھے کالا کالا کیا ہے۔
اس نے اتنے وثوق سے کہا کہ وہ فورا گھبرا کر پیچھے مڑ کر دیکھنے لگی۔
صارم کا قہقہہ بلند ہوا تھا او راسکا پارہ چڑھا تھا
کمینے ہو تم لعنتی۔ سچ مچ میں اکیلی ہوں اور تم ڈرا رہے ہو۔
وہ بولتے بولتے روہانسی ہوگئ۔ تبھی داخلی دروازے کے کھلنے اور بند ہونے کی آواز آئی۔ اسکا دل دھڑ دھڑ کرنے لگا۔سانس رک سی گئ۔ اسکے تاثرات دیکھ کر صارم بھی سیدھا ہو بیٹھا
کیا ہوا کون ہے؟
کوئی آرہا ہے ۔۔
اس کے منہ سے سرسراتی ہوئی آواز نکلی
ڈھیلے قدموں کی چاپ کمرے کے کھلے دروازے تک آئی او ر ہوپ کا ہیولا نمودار ہوا۔
کیا ہوا اریزہ کون ہے؟
اریزہ آنکھیں پھاڑےسانس روکے بھونچکا سی سامنے دیکھ رہی تھی صارم کو سچ مچ گھبراہٹ ہونے لگی
اریزہ۔۔۔ اریزہ ٹھیک ہو تم کون آیا ہے؟
ہوپ ۔ اس نے آرام سے آنکھیں مٹکا کر کندھے اچکائے
صارم دانت پیس کر رہ گیا۔ وہ خود کھلکھلا کر ہنس دی۔
بہت زہر ہو تم۔ اس نے غصے میں فون بند کردیا
ارے۔ اسکےاتنے شدید ردعمل کا اندازہ نہیں تھا مگر ہنسی بھی بہت آرہی تھی۔ ہاتھ چکنے تھے اس نے دوبارہ ڈائل کرنا چاہا مگر فون کی لائٹ بند ہوگئ اس نے موبائل رکھ دیا۔
ہوپ دروازے میں ایستادہ چہرے پر مضمحل سی مسکراہٹ سجائےاسے ہی دیکھ رہی تھی۔
آننیانگ۔ اس نے ہاتھ ہلایا۔ اسے دیکھ کر اتنے خطرناک تاثرات دیئے تھے ازالہ ضروری تھا۔
آئو چپس کھالو ابھی بنائے ہیں گرم گرم ہیں۔ آج تو لیٹ نہیں ہو گئیں تم۔
وہ خیر مقدمی انداز میں بلا رہی تھی۔
ہوپ تھکی تھکی سی لگ رہی تھی۔ اسکی آفر کو اشارے سے منع کرتی آکر اپنی دراز کھول کر ڈائری نکالنے لگی۔
اریزہ کندھے اچکا کر چپس کی۔طرف متوجہ ہوگئ۔
یہ خط گنگشن انی کو دے دینا۔
اس نے ڈائری میں سے ایک موڑا ہوا کاغذ نکال کر اسکی جانب بڑھایا۔
کیا ہے یہ؟
اسکے ہاتھ چکنے تھے سو اسی سے پوچھنے لگی۔
کچھ خاص نہیں بس اعتراف ہے۔ تم سے ملنے آئی تھی میں۔ شکریہ ادا کرنے تم نے دل سے دعا کی تھی شائد میرے لیئے۔ قبول ہوگئ۔
کونسی دعا۔
وہ پلیٹ سائیڈ میں کرکے سائیڈ ٹیبل سے ٹشو رول اٹھا کر ہاتھ صاف کرنے لگی۔
تم نے نماز میں دعا کی تھی نا میرے گھر والوں کی اطلاع مل جائے ۔
آہاں۔ اسے یاد آیا۔
تو مل گئ؟ سب ٹھیک ہیں نا۔ وہ خوش ہو کر پوچھ رہی تھی۔ اپنی دعائوں کی قبولیت پر یقین تو تھا مگر اتنی جلدی پر خوشی بھی بہت ہوئی۔
مبارک ہوبہت بہت۔۔ میں بہت خوش ہوں تمہارے لیئے۔
وہ بیڈ سے اتر کر بھاگئ آئی آکر اس سے لپٹ گئ۔ ہوپ جو اسکی غلط فہمی دور کرنے کیلئے لب وا کیے تھی ہونٹ بھینچ گئ۔ وہ بچوں کی طرح خوش ہو رہی تھی اسکے لیئے ہوپ نے اسکی محبت کو دل سے محسوس کیا تھا۔ اس وقت غیر ارادی طو رپر اسکے بازو اریزہ کے گرد بندھ گئے تھے۔
ٹریٹ لوں گئ میں۔
اریزہ ا س سے الگ ہوتے ہوئے ٹریٹ کی فرمائش کررہی تھی۔ ہوپ نے سوچا پھر اپنا پرس اسکی جانب بڑھا دیا
آج ہی تنخواہ ملی ہے سب تمہاری۔ اپنی مرضی کی ٹریٹ لے لینا۔
اریزہ سر کھجانے لگی۔
میرا یہ مطلب بھی نہیں تھا۔ ہم دونوں باہر چلیں گے اکٹھے کل چلتے ہیں ۔ مجھے بھی اپنے پیسے وصولنے ہیں واپسی پر اچھا سا لنچ کریں گے تم ایسا کرو کل چھٹی کر لو۔
کل تو میں یہاں نہیں ہوں گی۔ تم میری جانب سے یاد سے ٹریٹ لے لینا اچھا۔
وہ زبردستی اسکے ہاتھ میں پرس تھما کر بولی۔ اریزہ کے چہرے پر پیار سے ہاتھ رکھا۔
اچھا میں چلتی ہوں بائے۔ اپنا خیال رکھنا۔
وہ اسکے برابر سے ہو کر نکلتی چلی گئ۔
کہاں جا رہی ہو ابھی تو آئی ہو۔
اس نے پکار کر پوچھا مگر جواب نہ ملا ۔ اپارٹمنٹ کا دروازہ کھلا اور بند بھی ہوگیا۔ اس نے کندھے اچکا کر بیڈ پر پڑے اس پرچے کو دیکھا۔ ہنگل میں لکھا تھا وہ ابتدائی ہنگل پڑھ سکتی تھی مگر اسکی لکھائی سمجھنا مشکل تھا۔ اس نے تھوڑی سی کوشش کے بعد ہار مان لی۔
تبھی فون کی بیل بج اٹھی۔ اسکا موبائل نہیں تھا یہ۔ ہوپ کے پرس میں سے جل بجھ ہوتی روشنی آرہی تھی۔ اس نے اسکا موبائل نکالا انی کالنگ لکھا تھا۔
ہیلو۔
اس نے فون اٹھایا گنگشن چونکیں۔یوبوسیو کی بجائے ہیلو؟؟؟
کون؟ ۔۔۔
میں اریزہ ۔ اس نے بتایا تو وہ پریشان ہوگئیں
ہوپ کہاں ہے اریزہ؟
ابھی باہر گئ ہے۔
اس نے بتایا تو وہ چپ ہوگئیں پھر خیال آیا تو پوچھنے لگیں۔
اسکی طبیعت کیسی ہے رو تو نہیں رہی ذیادہ؟
نہیں کیوں اسکی طبیعت خراب ہے؟
اس نے الٹا سوال کیا۔ وہ شائد ڈرائیو کر رہی تھیں ٹریفک کا شور آرہا تھا۔
نہیں۔۔لیکن وہ پریشان تو ہوگی ظاہر ہے صدمہ اتنا بڑا ہے۔۔ بس اسکا خیال رکھنا مجھے اسکی طرف سے پریشانی ہورہی تھئ میں نے سوچا فون کرلوں بلکہ میں آرہی ہوں ابھی وہیں ہی۔
صدمہ؟ اریزہ سوالیہ ہوئی
کیسا صدمہ؟
اس نے تمہیں نہیں بتایا ؟ وہ مصروف انداز میں بول رہی تھیں۔
اسکی فیملی پوری ختم ہوگئ ہے۔ اسکی والدہ بہنیں بھی۔ بہت دکھی ہو رہی تھی وہ۔ خیریت سے گھر پہنچ تو گئ نا مجھے فکر تھی کہ۔۔۔
اریزہ کے ہاتھ میں موبائل کانپا تھا۔ چند دن قبل کے جملے کانوں میں گونجے ۔
بس انکی اطلاع کا انتظار کر رہی ہوں جی کر۔ اگر زندہ ہوئے تو انکو بلانے کا خرچہ اٹھانے کیلئے پیسہ پیسہ جوڑ رہی ہوں۔ اور اگر۔
وہ جملہ ادھورا چھوڑ کر چپ ہوگئ۔
اور اگر؟ اریزہ اسکی جانب مکمل مڑ کر پوچھنے لگی۔
ہوپ نے اسکو ہمہ تن گوش دیکھا تو مسکرا دی

اس نے اضطراری انداز میں دیکھا بیگ اسکا یہیں تھا موبائل یہیں پڑا تھا پھر وہ کہاں او رکیوں گئ تھی؟
اور اگر وہ مر چکے ہوئے تو ایک فلور اوراوپر چڑھوں گی اور وہاں سے۔۔۔
اسکے ہاتھوں سے طوطے اڑگئے تھے۔ حواس باختہ سی ہو کرموبائل وہیں پھینک کر وہ بھاگی۔ جوتے پہننے کا بھی وقت نہیں تھا اس وقت وہ گھر کے چپلوں میں اپارٹمنٹ سے باہر نکلی تو پھسل سی گئ۔ پیر سے چپل نکل گئ مگر اسے ہوش نہ تھا۔ پوری راہداری خالی تھی سب سے اوپر جانے والی سیڑھیاں لفٹ کے بالکل سامنے تھیں۔ وہ تیزی سے دو دو کرکے سیڑھیاں پھلانگتی گئ۔ عین اسی وقت لفٹ کا دروازہ کھلا تھا۔۔ سب سے اوپر ٹیرس سا بنا ہوا تھا۔ اسکا دروازہ نیم وا تھا۔ اس نے پورا کھولا تو سامنےملگجا اندھیرا تھا ۔۔
ہوپ وہ پوری طاقت سے پکارنا چاہ رہی تھی مگر سامنے کا منظر دیکھ کر اسکی آواز گھٹ گئ۔ ہوپ ریلنگ کو پار کیئے ریلنگ تھامے کھڑی تھی جیسے اگلے کسی بھی لمحے کود جائے گی۔ چھت پر وینٹی لیٹر لگے تھے پائپ بھی تھے۔۔
ہ۔۔ہو۔۔۔ ہوپ۔ اس نے پکارا مگر اپنی آواز خود بھی نہ آسکی۔ وہ بھاگ کر اسے روکنا چاہ رہی تھی کہ اندھیرے میں کسی پائپ سے الجھ کر گر گئ۔ گھٹنے میں بہت زور کی چوٹ آئی اور ہلکی سی آواز بھی ۔ ہوپ نے گردن گھما کر پیچھے مڑ کر دیکھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کم سن نے اسکی شکل دیکھی اسکا چہرہ بالکل سپاٹ تھا۔
مجھے تمہیں نہیں لانا چاہیئے تھا بیان مگر یہ مسلئہ اتنا گمبھیر تھا کہ مجھے لگا تمہیں بتانا چاہیئے۔ یون بن بھی گائوں گیا ہوا ہے اور۔۔
ہیون نے اسے تادیبئ نگاہوں سے دیکھا تو وہ چپ کرگیا۔ لفٹ آہستہ آہستہ اوپر چڑھ رہی تھی۔
دروازہ کھلا تو ہیون کو سیڑھیوں پر کوئی آہٹ سی محسوس ہوئی ۔ وہ یونہی رک کر دیکھنے لگا۔
کیا ہوا ؟ کم سن نے مڑ کر پوچھا تو وہ سر جھٹکتا اسکے پیچھے چلا آیا۔ اپارٹمنٹ کا دروازہ نیم وا تھا کم سن حیرت سے دیکھتا بیل بجاتا اندر داخل ہوگیا ہیون اپنی دھن میں آرہا تھا کہ چپل سے الجھ گیا اسے چڑ کر دیوار کے ساتھ لگاتے خود بھی اندر چلا آیا۔ کم سن پورے اپارٹمنٹ میں پکارتا پھر رہا تھا۔
اریزہ؟ ہوپ
اپارٹمنٹ کی ایک ایک بتی جل رہی تھی۔
کہاں گئیں دونوں یوں گھر کھلا چھوڑ کر۔ کم سن حیران ہورہا تھا۔
ٹیرس میں ہوں گی۔ ہیون نے کہا تو وہ سر ہلاتا ٹیرس کی طرف بڑھ گیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔ہوپ۔ آندے۔ ہوپ رک جائو پلیز ایسا مت کرو۔
بھرائے گلے سے بے تابئ سے پکارتی وہ اپنا گھٹنا سہلاتی لڑکھڑاتی جتنی تیزی سے بلکہ بھاگ سکتی تھی بھاگ کر اسکے پاس آئی۔ وہ حیرت سے منڈیر پر کھڑی اسکو دیکھ رہی تھی۔ ریلنگ کے آگے بھی اتنی کگر تھی کہ ہوپ آرام سے اسکی جانب مڑ کر ریلنگ تھامے کھڑی تھی۔
ہوپ حیرت سے اسکی شکل دیکھ رہی تھی
تم یہاں کیا کر رہی ہو۔
اریزہ نے آگے بڑھ کر اسکے ہاتھوں پر ہاتھ رکھے
پلیز ہوپ یہ حرکت مت کرو خد اکیلئے ادھر آئو
وہ اسکو بازو سے تھام کر روک دینا چاہتی تھی۔ ہوپ نے کسمساکر خود کو چھڑانا چاہا
میں نے تمہیں بتایا تو تھا اب میرے پاس جینے کی کوئی وجہ نہیں ہے۔ تم نے ناحق زحمت کی۔
جینے کی وجہ یہی کافی ہے کہ تم زندہ ہو۔ پلیز ہم بات کرتے ہیں نا ہوپ۔
وہ روہانسی ہو رہی تھی۔
اب بہت دیر ہو گئ ہے۔ اس نے یکدم اپنے دونوں ہاتھ ریلنگ سے ہٹا دیئے وہ سر کے بل نیچے جانے کو تھی کگر سے اسکا توازن بگڑا اریزہ کے پاس لمحہ بھر تھا فیصلے کو پوری مضبوطی سےآگےبڑھ کر اس نے اسکا ہاتھ تھام لیا۔ جھٹکا لگا تھا ہوپ کے پیروں تلے سے کگر نکلی تھی اسکا وجود ہوا میں معلق ہوا اریزہ بھی اسکے پورے وزن کے ساتھ نیچے ہوئی ریلنگ اسکی پسلیوں پر کھب رہی تھی ۔
پاگل ہوئی ہو کیا۔ ہوپ چلائی۔
چھوڑو میراہاتھ بے وقوف لڑکی تم بھی گروگی میرے ساتھ۔
نہیں تم میرا ہاتھ مضبوطی سے پکڑو یہ سوچ کر کہ اس وقت اگر تم نے میری مدد نہ کی تو میں بھی تمہارے ساتھ بے موت ماری جائوں گئ۔
تم پاگل ہوگئ ہو۔
ہوپ غصے سے چلائی۔ مگر اریزہ کا ارادہ اٹل تھا وہ اسے چھوڑنے کو تیار نہ تھی۔
تم کیوں اپنی زندگی کی دشمن بنی ہو ؟ تمہارے اپنے ہیں گھر ہے دوست ہیں میرے لیئے خود کو مشکل میں مت ڈالو تم مجھے اب نہیں واپس کھینچ سکتیں۔
ہوپ کا بس نہیں تھا اسکا گلا دبا دے۔ اتنئ بے وقوفی
ہاں مگر تمہیں چھوڑوں گی بھی نہیں۔
اسکے انگلیوں پر کھرنڈ تھا اتنی مضبوط گرفت نے زخم تازہ کردیئے تھے۔ ہوپ اپنا ہاتھ اسکے ہاتھوں سے پھسلتا محسوس کر رہی تھی مگر وہ بے وقوف اسے بچانے کو خود بھی آدھی لٹکی ہوئی تھی
بائیسویں منزل اوپر ہوا میں معلق وہ جانتی ہوا کا دبائو اسکی اس کوشش کو جلد ناکام بنا دے گا۔ اسکا ہاتھ چھٹ جائے گا مگر اسکا ہاتھ چھٹنے پر وہ خود بھی اپنا توازن کھو بیٹھے گی او رشائد اسکے ساتھ وہ بھی نیچے آرہے۔
مگر احمق اریزہ کو اپنی ذرہ فکر نہ تھی الٹا گڑگڑا رہی تھی۔
ہوپ پلیز دوسرے ہاتھ سے بھی تھامو مجھے خدا کا واسطہ۔
ہوپ کوشش کرو۔
وہ اپنے دونوں ہاتھوں سے اسکا ہاتھ تھامے تھئ ۔ اسکی آنکھوں سے گرتے آنسو ۔۔ ہوپ کی ساری بے چینی و دکھ کا جیسے مداوا ہورہا تھا۔
ہوپ میں بھی گر جائوں گئ میری خاطر کوشش کرو اوپر آنے کی پلیز۔
وہ منتیں کر رہی تھی۔
ہوپ کو زندگئ میں پہلی بار احساس ہوا تھا ۔انسان انسانوں سے جڑے ہوئے ہیں کسی نہ کسی طرح آپکی زندگی آپ کو دوسرے کسی انسان کی زندگی سے جوڑے ہوئے ہے۔ اسکے خون کے رشتے سب ختم ہوچکے تھے اب یہ اپنائیت دوستی لگائو جو بھی تھا اریزہ سے ایک نیا تعلق جڑ گیا تھا۔ افسوس اس تعلق کا احساس اسے اپنی زندگی کے آخری لمحوں میں ہوا تھا۔ اریزہ کا ہاتھ اسکے ہاتھ سے چھٹ رہا تھا کوئی چپچپاہٹ سی اسکے ہاتھ کو پھسلا رہی تھی۔ اریزہ بری طرح روتے چلاتے اسے پکار رہی تھی ہاتھ پکڑنے کو کہہ رہی تھی ۔ آخری لمحوں کا کتنا پیارا منظر تھا کوئی اسکے لیئے رو رہا تھا خالصتا اسکے لیئےپکار رہا تھا اسکو ۔۔
وہ مسکرادی شائد آخری بار۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ختم شد
جاری ہے

kesi lagi apko salam korea ki yeh qist? rate us below

Rating
“>> » Home » Urdu Novels » Salam Korea » Salam Korea Episode 35

    By Syeda Vaiza Zaidi

    Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

    Leave a Reply

    Your email address will not be published. Required fields are marked *