وہ جو تھے بھی دل لرزاں کے سہارے ڈوبے 

پھر سحر ہونے کو آیی ہے ستارے ڈوبے 

ڈوبنا ہی ہے تو موجوں سے ذرا چھیڑ رہے

مفت الزام رہے گا جو کنارے ڈوبے

داغ دل اب تک اسی شان سے تابندہ ہے 

کتنے خورشید و قمر کتنے ستارے ڈوبے 

تم کو ساحل پہ کھڑے رہ کے ہوا کیا حاصل

خیر ہم آرزوے خام کے مارے ڈوبے 

صبح ہوتی ہے کہ تاریکی شب جیت گئی

آج کچھ اور ہی انداز سے ستارے ڈوبے 

مجھ سے ہنس ہنس کے نہ کر بات کہ  جی ڈرتا ہے 

مرے آگے گل خاندان کے نظارے ڈوبے 

غم ایمان، غم فردا ، غم دوراں، غم دل 

میے گلرنگ کی ایک بوند میں سارے ڈوبے  


از قلم زوار حیدر شمیم

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *