یہ ہجوم رنگ و نکہت ، تیرے حسین اشارے 

مری سو آرزوئیں کہیں جاگ اٹھیں نہ پیارے 

ہیں بھری بہار میں بھی ، مری زیست کے سہارے 

وہی بھولی بسری یادیں وہی گمشدہ نظارے 

یہ بہار نور و نغمہ ، وہی ہم ، وہی شب غم 

وہی صبح کا تصور ، وہی ڈوبتے ستارے

ہے نوید موسم گل ترا نغمہ تبسم 

تری نبض کی حرارت مری آہ کے شرارے 

مرے دل کی دھڑکنوں کو ابھی رائیگاں نہ سمجھو 

ابھی ہوش میں ہے شبنم ، ابھی جاگتے ہیں تارے 

ہوئے منتشر جو تارے چنے دامن سحر نے 

جو بکھر گئے ہیں سپنے انھیں کون اب سنوارے 

کہیں ہم تو کون مانے کہ ہیں اپنے قاتلوں میں 

وہی حسن و ناز والے وہی مہرباں ہمارے 

از قلم زوار حیدر شمیم

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *