Salam Korea
by Vaiza Zaidi
قسط 26

urdu poetry,
urdu shayari,
sad poetry in urdu
love poetry in urdu
jaun elia
allama iqbal poetry
poetry in urdu 2 lines
urdu shayri
sad poetry in urdu 2 lines
ahmad faraz
ghalib shayari
attitude poetry in urdu
sad quotes in urdu
funny poetry in urdu
romantic poetry in urdu
allama iqbal shayari
best poetry in urdu
bewafa poetry
sad shayari urdu
islamic poetry in urdu
barish poetry
poetry in urdu attitude
ghalib poetry
allama iqbal poetry in urdu
attitude quotes in urdu
poetry in urdu text
deep poetry in urdu
sad poetry in urdu text
love shayari urdu
ghazal in urdu
urdu poetry in urdu text
mirza ghalib shayari
love poetry in urdu romantic
urdu shayari on life
rekhta shayari
jaun elia poetry
iqbal shayari
deep lines in urdu
sad love poetry in urdu
urdu poetry sms
best shayari in urdu
death poetry in urdu
funny shayari in urdu
dosti poetry in urdu
father quotes in urdu
birthday poetry in urdu
poetry status
eid poetry
Hajoom e tanhai poetry,
Vaiza zaidi poetry,
jaun elia shayari,
urdu poetry text copy,
attitude poetry in urdu 2 lines text,
urdu shayari in english,
shero shayari urdu,
munafiq poetry,
mirza ghalib poetry,
romantic shayari in urdu,
allama iqbal ki shayari,
heart touching poetry in urdu 2 lines sms,
poetry in urdu 2 lines attitude,
john elia sad poetry,
sad poetry sms in urdu 2 lines text messages,
john elia shayari,
2 line urdu poetry copy paste,
dukhi poetry,
heart touching quotes in urdu,
mohsin naqvi poetry,
beautiful poetry in urdu,
udas poetry,
friendship poetry in urdu,
muhabbat poetry,
urdu sher,
one line quotes in urdu,
dosti shayari urdu,
sad poetry status,
narazgi poetry,
judai poetry,
ghalib shayari in urdu,
faiz ahmad faiz shayari,
barish poetry in urdu,
urdu one line caption copy paste,
wasi shah poetry,
most romantic love poetry in urdu,
khamoshi poetry,
love poetry in urdu text,
sad poetry sms in urdu 2 lines,
sad poetry in urdu 2 lines about life,
urdu poetry status,
islamic poetry in urdu 2 lines,
jon elia poetry,
funny poetry in urdu for friends,
attitude shayari in urdu,
allama iqbal poetry in urdu for students,
Zawwar haider poetry,
mohabbat shayari urdu,
jaun elia sad poetry,
sad poetry sms,
urdu poetry written,

urdu novels,urdu novels,
urdu poetry,
urdu afsanay,
urdu statuses,
urdu shayari,
sad poetry in urdu,
love poetry in urdu,
poetry in urdu 2 lines,
urdu shayri,
sad poetry in urdu 2 lines,
ahmad faraz,
romantic poetry in urdu,
best poetry in urdu,
bewafa poetry,
sad shayari urdu,
barish poetry,
poetry in urdu text,
deep poetry in urdu,
sad poetry in urdu text,
love shayari urdu,
ghazal in urdu,
urdu poetry in urdu text,
love poetry in urdu romantic,
urdu shayari on life,
deep lines in urdu,
sad love poetry in urdu,
urdu poetry sms,
best shayari in urdu,
very sad poetry in urdu images,
novels in urdu pdf,
urdu books,
bewafa poetry in urdu,
best urdu novels,
urdu poetry text copy,
urdu shayari in english,
shero shayari urdu,
romantic shayari in urdu,
heart touching poetry in urdu 2 lines sms,
sad poetry sms in urdu 2 lines text messages,
2 line urdu poetry copy paste,
famous urdu novels,
beautiful poetry in urdu,
udas poetry,
muhabbat poetry,
urdu sher,
barish poetry in urdu,
most romantic love poetry in urdu,
khamoshi poetry,
love poetry in urdu text,
sad poetry sms in urdu 2 lines,
sad poetry in urdu 2 lines about life,
ahmed faraz poetry,
mohabbat shayari urdu,
sad poetry sms,
urdu poetry written,
love poetry in urdu romantic 2 line,
attitude poetry in urdu text,
heart touching poetry in urdu,
sad ghazal in urdu,
2 line urdu poetry romantic sms,
ahmad faraz poetry,
poetry about life in urdu,
urdu words for poetry,
urdu poetry copy paste,
urdu poetry in english,
ahmad faraz shayari,
bewafa shayari urdu,
love poetry in urdu 2 lines,
urdu ghazal poetry,
poetry in urdu 2 lines deep
sad lines in urdu,
faraz shayari,
urdu words for shayari,
urdu sad poetry sms in urdu writing,
dard poetry,
happy poetry in urdu,
urdu love poetry for her,
faraz poetry,
ali zaryoun shayari,
shayari in urdu words,
very sad shayari urdu,
ishq poetry in urdu,
urdu shayari images,
2 lines poetry,
new poetry in urdu,
urdu poetry in hindi,
urdu poetry lines,
one line poetry in urdu,
poetry on beauty in urdu,
one line poetry in urdu text,
muskurahat poetry,
sad poetry in urdu 2 lines without images,
mohabbat poetry in urdu,
nice poetry in urdu,
best love poetry in urdu,
muhabbat poetry in urdu,
best lines in urdu,
deep love poetry in urdu,
beautiful shayari in urdu,
urdu sad poetry sms,

novel

urdu adab,
urdu digests,
raja gidh,
urdu novels list,
raqs e bismil novel,
novels in urdu pdf,
urdu books,
best urdu novels,
famous urdu novels,
free urdu digest,
naseem hijazi,
best urdu novels list,
raja gidh pdf,
urdu books library,
new urdu novels,
jangloos,
list of urdu books,
urdu story books,
bano qudsia books,
pdf urdu books,
famous urdu novels list,
best pakistani novels in urdu,
urdu stories pdf,
naseem hijazi novels,
urdu novels online,
udaas naslain,
best urdu novels pdf,
latest urdu novels,
short novels in urdu,,
romantic story urdu,
urdu best books,
best urdu books to read,
pakeeza anchal online reading,
ismat chughtai books,
urdu digest novels,
urdu books online,
urdu literature books,
islamic books urdu,
udas naslain pdf,
urdu poetry books,
urdu novel online reading,
jasoosi digest,
novel novels in urdu,
urdu audio books,
top urdu novels,
romance novel best novels in urdu,
wasif ali wasif books pdf,
urdu language books pdf,
tahir javed mughal novels,
urdu digest pdf,
naseem hijazi books,
best books to read in urdu,
ashfaq ahmed books pdf,
dastak novel,
a hameed novels,
psychology books in urdu,
bano qudsia novels,
pakeeza anchal romantic novel,
pyasa sawan novel,
free urdu novels,
anchal digest novels,
raqs bismil nove,l
urdu poetry books pdf,
new novel 2021 in urdu,
urdu novels 2021,
love story novel in urdu,
urdu history books,
raja gidh read online,
jasoosi novel,
urdu love novels list,
pakistani novels in urdu,
urdu historical novels,
romance novel famous urdu novels list,
romance novel urdu novels list


سلام دوستو۔کیا آپ سب بھی کورین فین فکشن پڑھنے میں دلچسپی رکھتے ہیں؟
کیا خیال ہے اردو فین فکشن پڑھنا چاہیں گے؟
آج آپکو بتاتی ہوں پاکستانی فین فکشن کے بارے میں۔ نام ہے Desi Kimchi ..
دیسئ کمچی آٹھ لڑکیوں کی کہانی ہے جو کوریا میں تعلیم حاصل کرنے گئیں اور وہاں انہیں ہوا مزیدار تجربہ۔۔کوریا کی ثقافت اور بودوباش کا پاکستانی ماحول سے موازنہ اور کوریا کے سفر کی دلچسپ روداد
پڑھ کر بتائیے گا کیسا لگا۔ اگلی قسط کا لنک ہر قسط کے اختتام میں موجود یے۔۔
اDesi Kimchi seoul korea based Urdu web travel Novel ALL EPISODES LINKS
salam korea episode 26

گنگشن نونا اور اسے آج ایڈمن صاحب سب بتا دینا چاہتے تھے۔گنگشن کا ذہن این جی او کے نئے ایونٹ میں الجھا تھا تو وہ کسی اور ہی کے خیال میں الجھا تھا اتنا کہ سامنے سے پیر پٹخ کر آتی اس لڑکی کو دیکھ کر بھی اسے اسی کسی کا ہی خیال ذہن میں کوندا تھا۔ پروٹوکول کی وجہ سے وہ اپنے خیال کئ تصدیق کیلئے جا نہ سکا۔ گنگشن انی اور چار دیگر اسٹاف ارکان کے ساتھ وہ سیدھا اس ایڈور ٹائزنگ کمپنی کے مالک کے دفتر میں آئے تھے۔ انکی کیمپین کو وہ خود ذاتی طور پر دیکھ رہے تھے کیوں؟ وجہ نئی چھوٹی کمپنی۔ اگلا بندہ اٹھ کے سیٹ سے کھڑا ہوگیا تھا۔
آننیانگ ہاسے او۔ نونا۔۔
آننیانگ تم یہاں کیا کر رہے ہو؟ یونی کیوں نہیں گئے؟
حسب عادت نونا نے جھاڑنا شروع کردیا۔ کم سن کان دبا کر مسکراتے ہوئے سب اسٹاف کو جانے کا اشارہ کرتا ہوا انہیں اپنے آفس کے ایک جانب لگے صوفوں کے پاس لے آیا۔

نونا اب یہ نہیں تعلیم مکمل کرتا آپ کچھ بھی کر لیں۔
ہایون نے صوفے پر اطمینان سے بیٹھتے ہوئے کہا۔
آنی ۔۔ نونا میں پڑھوں گا پکا آج کل تو یونیورسٹی میں مڈز کے بعد کی بریک ہے۔ آپ بتائیں کیا پیئیں گی
نونا مسکرا دیں۔
کھانا کھاتے ہیں اکٹھے۔ میری لنچ کے بعد میٹنگ ہے سو وقت کم ہے۔۔ جلدی سے آرڈر کرو۔
دے۔ کم سن فورا سر ہلاتا اٹھا اور اپنے انٹرکام سے آرڈر کرنے لگا۔
ہایونا تم نے انکی ایڈورٹائزمنٹ کا پروپوزل فائنل کیا تھا نا دیکھ لینا۔ اسکی ٹیم سے بھئ مل لینا۔
نونا کو کام یاد آنے لگے۔
جانے دیں۔ یہ اسکا پہلا پراجیکٹ ہے یقینا جان لڑا دے گا مجھے اتنا دماغ لگانے کی کیا ضرورت۔
ہایون کا جواب نپا تلا تھا۔ کم سن پر نگاہ جمائے وہ بہت پیار سے اسے دیکھ رہا تھا جیسے اسکی صلاحیتیوں پر پورا یقین ہو۔نونا مسکرا دیں پھر کچھ یاد آیا تو اپنے بیگ سے کچھ نکالنے لگیں۔کم سن فون بند کرکے انکے پاس ہی چلا آیا۔
کم سنا بہت خوبصورت سیٹ اپ ہے تمہارا۔ تم نے اچھا فیصلہ کیا اپنی آبائئ زمین بیچ کر اس کاروبار کو شروع کرنے کا مگر میرا مشورہ یہی ہے پڑھائی ادھوری نہ چھوڑنا سمجھے۔
وہ بڑے پن سے نصیحت کر رہی تھیں وہ مسکرا کر سر ہلا کر رہ گیا۔
اچھا یہ تمہارا کارڈ ۔۔
انہوں نے نوید مسرت کے الفاظ سے سجا منگنی کی دعوت کا کارڈ نکال کر اسکی جانب بڑھایا
آپ نے ضائع ہی کیا کارڈ نونا اس نے تو آنا ہی تھاویسے بھی میرے ساتھ۔
ہایون نے کہا تو نونا ہنس پڑیں۔ پھر شرارت بھرے انداز میں بولیں۔
ہاں ہے تو گھر کی بات مگر سی ای او صاحب بن چکے ہیں یہ اب انکو پروٹوکول تو دینا پڑے گا۔
نونا آپکے کے لیئے تو ہمیشہ میں چھوٹا بھائی ہی رہوں گا
کم سن جھینپ سا گیا۔
یہ تو ہے۔ ہایون کے سب دوستوں کے کارڈز اپنی نگرانی میں بھجوائے ہیں۔ خاص کراسکی گرل فریںڈ کو تو خود اپنے ہاتھوں سے کارڈ دیا ہے۔
اسکی بات پر ہائون تو ہایون کم سن بھی آنکھیں پھاڑ کر دیکھنے لگا۔
تم کیا سمجھے مجھے پتہ نہیں میں ۔ نونا محظوظ انداز میں مسکرائیں۔
اس نے وعدہ بھی کیا ہے کہ آئے گی۔۔۔ بلکہ گوارا سے بھی کہا ہے اسے ضرور لیکر آئے۔ اجنبئ تو نہیں وہ میرے لیئے مگر ۔اپنی گرل فرینڈ کی حیثیت سےاسے ضرور مجھے ملوانا۔ سمجھے
انکی بات پر ہایون کے چہرے پر واضح خوشی دوڑی تھی۔
کم سن بھی مسکرا دیا۔
نونا کا فون آنے لگا تو وہ معزرت کرتی اٹھ گئیں۔کم سن اچھل کر اسکے برابر میں آن بیٹھا۔
یہ کب ہوا مجھے کیوں نہیں بتایا۔
کوئی نہیں ہوا ایسے ہی نونا اندازے لگا رہی ہیں۔
ہایون نے دامن بچانا چاہا
درست اندازے۔ کم سن نے جتایا تو وہ ہنس دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کھانا وانا کھا کر نونا تو اٹھ کر چلی گئیں یہ دونوں دفتر میں ہی رہے۔کم سن کی ایڈورٹائزنگ کی ٹیم نے اپنا پلان سلائیڈز پر دکھایا جسے کم سن دلچسپی سے جبکہ وہ بیزاری سے دیکھتا رہا۔
ہم فری سیمپلنگ اور ٹیسٹنگ کا ایونٹ بھی آرگنائز کر رہے ہیں۔ مختلف مارٹس اور شاپنگ سینٹرز میں ایک ایک ٹیم بھیجیں گے۔جو بچوں کو متاثر کرنے کیلئے مختلف چھوٹے چھوٹے گیمز کھلائیں گے انعام میں انکو سیریل کے سیمپلز دیئے جائیں گے۔
اسکا ٹیم لیڈر بتا رہا تھا۔کم سن نے فورا ٹوکا۔
اتنی فری سیمپلنگ کریں گے تو لوگوں کو خریدنے پر مجبور کیسے کریں گے۔ اس کا بجٹ کٹ کریں۔مشہور سب مارٹس کی بجائے لی گروپ کے زیر انتظام مارٹس اور مالز کو بس اس میں شامل کریں۔ بلکہ جو آل ریڈی ایونٹ چل رہے ان میں ہی یہ سب ایڈجسٹ کریں۔
کم سن نے انکی پوری دو سلائیڈ مسترد کی تھیں۔دونوں سٹپٹا کر دیکھنے لگے۔
ہایون نے گردن گھما کر دیکھا۔
کیوں منع کر رہا ہے؟ کرنے دے جو کر رہے ہیں۔
تمہارے باپ کا پیسہ لگارہے ہیں اس لیئے منع کر رہا ہوں جوتمہیں منع کر نا چاہیئے تھا
ہایون نے گردن کھجائی پھر کندھے اچکا دیے۔ پوری میٹنگ میں وہ مزید کچھ نہ بولا۔
ابھی سارا سیٹ اپ چھوٹا تھا سو یہ میٹنگ سی ای او صاحب کے کمرے میں ہی ہوئی۔ پراجیکٹر بھی اسی ایک کونے میں لگا تھا۔
ٹیم لیڈر اٹھ کر گئے تو ایچ آر والا بندہ اٹھ آیا۔ ادھیڑ عمر انکل آتے ہی رونے لگے۔ ہایون نے ناٹ اگین والے انداز میں دیکھا۔
سر ہمیں اپنی کمپنی کے اشتہارات پر مزید پیسہ خرچنا چاہیئے۔ ٹیم لیڈر نے پروموشنل کیمپین کیلئے 25 افراد مانگے تھے ہمیں سی وی ہی پانچ موصول ہوئے جن میں سے چار کو تو ہم نے رکھ لیا ہے ۔ مگر سر نئی کمپنی پر پارٹ ٹائمر بھی بھروسہ نہیں کر رہے ابھی۔
خوش شکل اور نوجوان لوگ بھرتی کیئے ہیں نا۔
کم سن نے سرسری سے انداز میں کہتے فائل تھامی
وہ چندی آنکھوں والے انکل سر جھکا گئے۔
اپنی کمپنی کے پارٹ ٹائمرز کی فہرستیں بھجوادیتا ہوں۔ انکو استعمال کرلو۔
ہایون کا مفت مشورہ۔
ایم ڈی صاحب آپکے والد آپکی ان نوازشوں کے صلے میں آپکو امریکہ اور میری کمپنی کو پاتال میں بھجوا کر دم لیں گے۔
کم سن ہلکے پھلکے انداز میں کہہ کر سی ویز الٹنے پلٹںے لگا۔ دو ادھیڑ عمر شکل سے عادی بدمعاش لگتے تھے دو ہائی اسکولر تھے۔
ریجئکٹ کسے کیا ہے؟
کم سن نے سرسری سا پوچھا۔
جب ان سب کو رکھ لیا ہے تو اسے بھی رکھ لینا تھا۔
انکل نے فائل کے صفحے پلٹ کر آخری سی وی دکھایا
اب یہ ریکوروٹمنٹ والے کام کیوں کر رہے ہو سی ای او ہو ان آہجوشی پر چھوڑو نا جو جسے رکھیں جسے نکالیں۔ تم ایک ایک سی وی دیکھا کروگے
ہایون اسکے ساتھ باہر جانا چاہ رہا تھا جبکہ کم سن ایک کے بعد ایک کام نکال کر نمٹانے میں لگا تھا
ظاہر ہے یہی سب کریں گے مگر تم بھول رہے ہو میری بے بی کمپنی ہے ۔ ایچ آر کا الگ ڈیپارٹمنٹ ہے ہی نہیں میرا ۔ آہجوشی اورمیں ہی ایک ایک بندہ سوچ سمجھ کر رکھ رہے ہیں۔
ہایون کو بتا کر اس نے آخری سی وی دیکھا پھر ہایون کو۔
اسکو کیوں نہیں رکھا اتنی تو پیاری سی ہے۔
کم سن کا انداز واضح بدلا تھا آہجوشی سٹپٹا گئے
وہ یہ فارن اسٹوڈنٹ ہے انکو آوقات کار او راجازت کا بھی مسلئہ ہوتا ہے اور۔۔
ہایون اس سی وی کو دیکھو اورتم فیصلہ کرو ہم اسے رکھیں نہ رکھیں۔
کم سن نے فائل اسکی جانب بڑھا دی۔ہایون حیران ہوا مگر تھام لی۔ سی وی پڑھتے ہی ٹون بدل گئ۔ حاکمانہ انداز میں بولا۔
جو بھی مسلئہ ہو اسکو رکھیں۔
مگر سر بہت مسلئے ہوتے ہیں اس طرح کے طلباء کو ہنگل تک تو ڈھنگ سے آتی نہیں ہے۔
سیکھ لے گی۔کم سن ہائیر ہر۔
ہایون تیز ہو کر بولا۔
کم سن نے ٹھنڈی سانس لی۔
اب تو کلائینٹ کی سفارش ہے پراجیکٹ بھی انکا۔رکھ لیں اسکو۔
مگر سر۔۔۔ آہجوشی نے پھر کہنا چاہا تو اس بار ہایون ڈپٹ کر بولا۔
سی ای او کی سفارش ہے آپ ٹال نہیں سکتے۔
آہجوشی نے گردن جھکا لی اور سلام کرکے نکل گئے نکلتے ہوئے بڑ بڑا رہے تھے۔ سی ای او کی سفارش ہے وہ بھی ایک معمولی سیلز گرل رکھنے کیلئے تھیبا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھیبا۔۔ تھیبا۔ یہ دیکھو اریزہ
گوارا بھاگی بھاگی آئی تھی۔ وہ کچن میں کھڑی اپنے لیئے کافی بنا رہی تھی اسکے ایکدم سے پیچھے آکر شور کرنے پر چونک کے مڑی۔
کیا ہوا ؟ اسکے پوچھنے پر گوارا نے موبائل اسکرین اسکے سامنے کردی۔
اسکی اور ایڈون کی ریستوران کی ویڈیو چل رہی تھی۔
یہ ٹرینڈنگ پر نمبر ون چل رہی ہے۔ اور نیچے کمنٹ دیکھو تمہارے اور ایڈون کے کپل کی تعریفوں کے پل باندھ رہے سب۔ اتنی گوری لڑکی اتنے کالے لڑکے کے ساتھ۔ محبت واقعی وجود رکھتی ہے۔ او ریہ کمنٹ دیکھو۔
وہ جزباتی ہوئی پڑی اسکرال کرکے نیچے دکھا رہی تھی۔ سب ہنگل میں کمنٹس تھے۔ اس نے بیزاری سے پیچھے کیا۔
میں اور ایڈون کبھی کپل نہیں تھے نا ہوسکتے ہیں کبھی۔
جانتی ہوں۔گوارا نے منہ بنایا۔۔
مگر ایڈون سے اس نے جب پوچھا کہ تم اسکے نامجا شنگو ( بوائے فرینڈ کا ہنگل لفظ) ہوتو وہ مسکرا کر دے کہہ رہا ہے۔
یہ بندہ ٹھیک ہی نہیں ہے جبھی تمہاری سہیلی ہر وقت مرچیں چباتی رہتی ہے۔
گوارا کا تجزیہ کتنا درست تھا۔ اسے لگتا تھا سنتھئا اور اسکے بئیچ کی سردمہری دوسروں کو اگر محسوس بھی ہوئی ہوگی تو وجہ نہیں پتہ ہوگئ۔ اسکا منہ اتر سا گیا۔
دفع کرو اسے۔ گوارا اسے اداس دیکھ ہی نہیں سکتی تھی۔
چلو ہم کپڑے منتخب کریں ہم نونا کی منگنی میں کیا پہنیں ۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ بھئ پہن لوں گی نونا کیا ضرورت ہے اس شاپنگ کی۔ نونا نے ایک بے حد خوبصورت آسمانی میکسی ڈریس اس سے لگایا تووہ منت بھرے انداز میں کہہ اٹھی۔
ہرگز نہیں۔ وہاں ایک سے ایک حسین اور طرحدار لڑکی آئے گی تمہیں ان سے مقابلے پر ہرگز بھی کم نہیں لگنا چاہئے۔ ہر لڑکے کی نظر نہ سہی مگرکم ازکم جس لڑکے کی نظر تم پر ٹھہرے وہ ہٹا نہ پائے۔
نونا اپنے مخصوص اندا زمیں کہہ کر شرارت سے مسکائیں۔
تمہارے لیئے لنچ کرتے ہی بھاگم بھاگ آئی ہوں۔ اور تم نخرے کر رہی ہو جائو سیدھی طرح اسکو پہن کر دکھائو مجھے۔
وہ اب بڑی بہنوں والے رعب سے بولیں۔تو ہوپ کو تھامنا پڑا۔
جتنی دیر میں وہ تیار ہو کر آئی وہ جلدی جلدی دو تین فون سن چکی تھیں۔ ابھی بھئ بات کر رہی تھیں اسے دیکھا تو بات بھول گئیں ۔ وہ میکسی اسکے جسم پر پوری فٹ تھئ۔ وہ بے حد دبلی ہونے کے باوجود اچھی لگ رہی تھی۔ اسنے بال مخصوص انداز میں جوڑا بنا رکھے تھے جو کام کے دوران اسکے لیئے بہتر رہتے مگر اس وقت وہ جوڑا بھی اچھا لگا
تھیبا تم تو پری لگ رہی ہو۔ وہ فون پر خدا حافظ کہتی اسکی جانب لپک کر آئیں۔ ہوپ جھینپ کر خود کو آئینے میں دیکھنے لگیں۔قیمتی لباس نے واقعی اسکی شخصیت کو نکھار ڈالا تھا۔
صحیح کہتے ہیں لباس انسان کے پر ہوتے ہیں۔ اب تم پرواز بھرنے کیلئے بالکل تیار ہو۔
انہوں نے محبت سے کہتے اسکے بال سنوارے۔
مگر اڑان بھرنے کیلئے منزل کا تعین بھی تو ضروری ہوتا ہے نا۔ خالی سفر صرف تکان دیتا ہے۔
اسکا قنوطئ پن باز نہ آیا۔ اسکی اثر انگیز شخصیت کے کسی کونے میں چھپ کر بیٹھا بھی ایکدم پوری شخصیت پر حاوی ہو چلا تھا۔ وہ چپ سی رہ گئیں۔
ہوپ مسکرا دی۔
شکریہ انی۔ میں اپکے احسانوں تلے دبتی جا رہی ہوں مگر مجھے۔ وزن بالکل نہیں محسوس ہوتا۔۔ اسکی پیمنٹ میں خود کروں گی۔۔ میرے پاس پیسے ہیں۔
اس نے کہا تو وہ مزید اصرار ترک کر گئیں۔ وہ مڑی تو انہوں نے گہری سانس لیکر دل سے دعا دی اسے۔
میری دعا ہے تم اپنی زندگی کا ایک بہتر رخ بھی دیکھنے کے قابل ہو جائو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسکا ذہن دھیرے دھیرے بیدار ہوا تھا۔ پپوٹے اتنے بھاری ہو رہے تھے کہ کوشش کرنی پڑی کھولنے کیلئے۔ اس نے کسمسا کر اپنے بھاری ہوتے سر کو تھامنا چاہا تو کسی نے اسکا بازو تھام کر کچھ ٹوکا۔ اجنبی آواز ناقابل فہم الفاظ۔
اس نے آنکھیں کھولیں تو چندی آنکھوں والی نرس کا مسکراتا چہرہ سامنے تھا۔
کین چھنا آگاشی؟
وہ جانے کیا پوچھ رہی تھی۔
اس نے پھر اٹھنا چاہا۔
ڈرپ لگی ہوئی ہے لڑکی۔ احتیاط کرو۔ اس بازو کو نہ اٹھائو۔
اسکا بازو بیڈ سے لگائے اس نے ہنگل میں کہا تھا۔ پھر جب احساس ہوا کہ اسکی بات وہ سمجھ نہیں پارہی تو مڑ کر اسٹول پر بیٹھے اونگھتے ایڈون سے بولی
محترم انکو اپنئ زبان میں بتائیں۔
ایڈون آواز پر فورا نیند بھگاتا اٹھ کھڑا ہوا۔
اسکا ایک بازو نرس کی مضبوط گرفت میں تھا وہ دوسرے بازو سے سہارا لیکر اٹھ بیٹھی۔نرس نے جلدی سے اسکی پشت پر تکیہ لگایا۔
لیٹی رہو۔ ڈرپ لگی ہوئی ہے تمہیں۔۔
وہ فورا اٹھ کے اسکے پاس آیا تھا۔
کیا ہوا مجھے؟
اسے یاد نہیں آیا وہ یہاں کیسے کیوں آئی ؟
تمہیں یاد نہیں؟ وہ الٹا پوچھنے لگا۔
کیسی طبیعت ہے۔ اس کا انداز معمول سے ذیادہ نرم تھا۔
اس نے سر ہلایا۔
ٹھیک ہوں میں۔۔۔
اسکے ہونٹ خشک ہو رہے تھے بمشکل بول پائی۔
پانی۔
ایڈون نے سائیڈ ٹیبل سے پانی کی بوتل اٹھاکر دی تو وہ کئی گھوںٹ بنا سانس لیئےحلق میں اتارتی چلی گئ۔ لگ رہا تھا برسوں سے پیاسی ہے۔
آپ انکو کچھ کھلائیں پلائیں۔ تاکہ ہم مزید دوا دے سکیں۔
نرس مطمئن ہو کر تاکید کرتی چلی گئ۔
شکر ہے ۔تم نے تو مجھے ڈرا دیا تھا۔
ایڈون گہری سانس لیتا اسکے بیڈ پر ٹکتے ہوئے بولا۔
ساری رات ہوش نہیں آیا تمہیں۔ ان لوگوں نے نیند کی دوا تک نہیں دی پھر بھی تم سوتی رہیں۔ مجھے سخت پریشانی ہورہی تھی۔ کیا۔کھائو گئ؟ سیب کاٹ کر دوں؟
وہ نا سمجھنے والے انداز میں دیکھتی رہی پھر ایک خیال سا کوندا۔۔
تت تم۔ مجھے یہاں کیوں لائے ہو؟ کیا ہوا مجھے۔۔۔
ایڈون نے سائیڈ ٹیبل سے چھری اور سیب اٹھایا اور اسکے لیئے کاٹنے لگا۔
بھول گئ ہو کیا اپنی حالت؟ یہ لو کھائو
اس نے ایک پھانک اسکی جانب بڑھائی
اس نے ذہن پر زور دیا تو جو پہلا خیال ذہن میں آیا اتنا روح فرسا تھا کہ وہ وحشت زدہ سی ہوگئ۔
میں اسپتال میں ہوں۔۔ مم میں کیوں اسپتال میں ہوں۔
اس نے پریشان سا ہو کر خود کو ٹٹولا۔۔
۔ تم نے ۔ مجھے سے پوچھے بنا ہمارا بچہ۔۔۔۔۔نہیں ایسا نہیں ہو سکتا۔ وہ نفی میں سر ہلا رہی تھی۔
۔۔ تم ایسا کیسے کر سکتے ہو۔ تم نے مار دیا اسے۔۔وہ ایکدم بپھر کر چلائی۔
اس نے اپنا کنولا لگا ہاتھ بھلا کر ایڈون کا گریبان پکڑ لیا۔
بولو۔ تم نے ابارشن کروادیا نا۔ کیسے کر سکتے ہو تم ایسا۔ تم نے ۔۔ کیوں کیا۔
کیا ہوگیا ہے پاگل ہوگئ ہو۔ خون نکل رہا ہے تمہارا
وہ گھبرا گیا۔ اسکی ڈرپ نکل گئ تھی خون تیزی سے بہہ نکلا تھا مگر اسکو کسی تکلیف کا احساس نہیں تھا جنونی کیفیت میں اسے جھنجھوڑنے لگی۔
نکلنے دو مجھےتم جواب دوتم کون ہوتے ہو اسے مارنے والے۔ منع کیا تھا نا۔تم نے کیوں کیا ایسا۔
اس نے دیوانہ وار اس پر ہاتھ چلائے تھے۔
وہ بے ربط بول رہی تھی اور رو پڑی تھی۔ ایڈون سن سا رہ گیا ۔
وہ ہاتھا پائی بھی نہ کرسکی ایک زور دار چکر آیا تھا اسے۔
ہوش کرو سنتھیا۔ وہ اسکی حالت سے خود بری طرح گھبرا گیا۔ اس کے ہاتھ سے چھری چھوٹ گئ۔اسکو تھامنا چاہا اس نے نفرت سے جھٹکا۔
مر نے دو بلکہ مجھے بھئ مار دو تمہارا مسلئہ میں ہوں۔ یہ بچہ مسلئہ نہیں تھا۔ تم مجھ سے محبت ہی نہیں کرتے تمہیں اس سے بھی محبت نہیں تھی۔ ۔۔ اس نے لپک کر چھری اٹھائی۔ ایڈون نے اسکے دونوں ہاتھ تھام لیئے۔تبھئ شائد شور سن کر دروازہ کھول کر تیزی سے نرس اور ڈاکٹر اندر آئے تھے۔ اندر کا منظر دیکھ کر وہ تیر کی طرح ایڈون کی جانب بڑھے۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایڈون اسکو سہارا دے کراسکے کمرے تک لایا تھا۔
وہ اتنی شرمندہ تھی کہ ایڈون کو دیکھ بھی نہ پا رہی تھی۔۔ اس نے شاپر میز پر رکھا اور خاموشی سے دروازہ کھول کر جانے لگا۔
ایڈون۔
اس نے پکار تو لیا وہ رک بھی گیا مگر سمجھ نہ آئی اب کیا کہے۔ معزرت کرے ۔۔
ایڈون چند لمحے اسکے بولنے کا انتظار کرتا رہا پھر مڑکر دیکھنے لگا وہ اس سے نظر نہ ملا سکی۔
میں آج چھٹی کروں گا۔ اپنے کمرے میں ہی ہوں تھوڑا آرام کرلوں پھر آئوں گا تم بھی تھوڑا آرام کرلو۔
اسکی شرٹ خون سے بھری تھی۔۔۔ وہ نظریں جھکا کر سر ہلا کر رہ گئ۔ وہ دروازہ بند کرتا چلا گیا تو گہری سانس لیکر وہ سیدھی لیٹ گئ۔۔
اسکے ذہن میں رات کا منظرجزئیات سے روشن ہوا تھا۔۔
ویڈیو دیکھنے کے بعد غصے سے پاگل ہوتے ہوئے وہ چند لمحے خود پر قابو پانے کی کوشش کرتی رہی ۔ پھر فیصلہ کرکے اٹھی ۔۔
رات کا دوسراپہر شروع ہونے کو تھا یقینا اب تک ایڈون واپس آچکا ہوگا وہ صبح تک کا انتظار نہیں کر سکتی تھی اتنے غصےمیں۔ تن فن کرتی تیزی سے کمرے سے نکلی اور سیدھا جا کر ایڈون کا دروازہ پوری قوت سے بجا دینا چاہا مگر دماغ سائں سائیں کرنے لگا۔ ایک ہلکی دستک سی پڑ سکی۔ اس نے پوری جان لگا کر دروازہ کھٹکایا دو ضرب ہی میں اسکی بس ہونے لگی اسکو یاد نہیں تھا کہ اسکے منہ سے لفظ نکل رہے تھے یا آواز ڈوب گئ تھی۔
دروازہ کھولو ایڈون۔ ایڈون باہر نک۔۔ لو۔۔
اسکے ہفت اقلیم نگاہوں کے سامنے گھوم گئے۔ کمرے لیپ ٹاپ پر کام کرتا نامانوس دستک پر منہ بنا کر اٹھا اور دروازہ کھول دیا وہ اسکی نگاہوں کے سامنے ہوش و خرد سے بےگانہ ہو کر گری تھی۔ اسے سنبھالنے کو لپکتے بھی اسکا سر دیوار سے جا لگا تھا۔۔
آخری منظر جو اسے یاد تھا وہ ایڈون کا دروازہ کھول کر اپنی جانب بڑھتے دیکھا بس۔
اسکا بئ پی بہت ہائی ہوگیا تھا۔ بروقت اسپتال پہنچنے کی وجہ سے وہ نقصان سے بچ گئ تھی۔۔ اسکے جزباتی پن نے اسکی طبیعت پر تو جو اثر ڈالا سو ڈالا انکوتھانے میں رپورٹ بھی کردیا گیا تھا۔پولیس اہلکار اسکا اسپتال میں بیان لیکر گئے ۔ اب اسکو خراش بھی اگر پہنچتی تو ایڈون دھر لیا جاتا۔ پولیس نے ہزار سوال کرکے مطمئن ہونے کے بعد اسکی جان بخشی کی تھئ۔تو ڈاکٹرنے لمبی چوڑی احتیاط بتائی تھی۔ ساتھ ہی حسب توفیق ایڈون کی کھنچائی بھی کی تھی۔ ایڈون ایک لفظ اپنی صفائئ میں نہیں بولا تھا۔ وہ اتنی شرمندہ تھی کہ معزرت بھئ نہ کرسکی۔
اس وقت بھی بحر شرمندگی میں غرق لیٹی یہی سب سوچے گئ۔
اسکا فون بج اٹھا تھا۔ بیڈ کے کنارے پڑا۔ اس نے اٹھا کر دیکھا تو امی کالنگ۔ ماں کی کال اسے نعمت غیر مترقبہ لگی تھی۔ فورا فون اٹھایا اورخود بھی اٹھ بیٹھی
ہیلو۔ اسکی آواز سنتے ہی وہ بولتی چلی گئیں
کیسی ہو بیٹا۔ طبیعت تو ٹھیک ہے نا۔ میرا اتنا دل گھبرا رہا تھا رات سے فون کررہی ہوں۔ ایڈون سے بات کی تو اس نے کہا تم سو رہی ہو طبیعت تو ٹھیک ہے نا تمہاری۔؟ اتنی دیر سے سو رہی تھیں؟
سوال پہ سوال بے تابئ پریشانی۔ ماں کا دل تھا خبر ہوگئ تھی شائد۔ اسکی آنکھیں بھرنے لگیں۔
خوامخواہ فکر کرتی ہیں۔ٹھیک ہوں میں۔ بالکل۔
کھا پی رہی ہو نا ڈھنگ سے ؟ آواز سے تو ٹھیک نہیں لگ رہیں۔ نزلہ ہورہا ہے؟ آواز بیٹھی بیٹھی لگ رہی ہے۔
وہ اسکی توجیہہ سے بالکل مطمئن نہ ہوئیں۔
ہاں تھوڑا موسم بدلا ہے تو شائد۔ تھوڑا گلے میں۔۔
اسکو دل چاہا وہ ماں کے گلے لگ جائے۔ کئی آنسو اسکے گالوں پر پھیلتے چلے گئے۔ اس سے جملہ مکمل نہ ہوسکا۔
دیکھا۔ وہ فورا بولیں۔
۔ مجھے پتہ تھا۔ آئیسکریم کھائی ہوگی؟ گلا بند ہوگیا نا ؟ فورا ڈاکٹر کو دکھائو بخار ہو جاتا ہے ایک تو تمہیں معمولی۔نزلا زکام میں بھی۔ سوپ بنا کر پیئو۔ تمہارے پاپا بتا رہے تھے وہاں موسم بہت ٹھنڈ ہو چکا ہے۔
وہاں ٹھنڈ پڑی۔
بمشکل دھیمی آواز میں وہ بول پائی۔
کہاں یہاں تو ابھی پنکھے چل رہے ہیں۔ اچھا سنو یخنی پیو خود تو کیا بنائوگئ بازار میں انسٹنٹ ساشے ملتے ہوں گے وہ بنا کر پی لو۔۔ بلکہ اریزہ سے بات کرائو میں اس سے کہتی ہوں تم مت نکلنا ٹھنڈ میں باہر ایڈون سے کہو ڈاکٹر کے ہاں لے جائے
گئ تھئ ڈاکٹر کے پاس ابھی آئی ہوں۔۔۔۔۔
اس نے تسلی دینا چاہی۔وہ اور پریشان ہوگئئں۔
تم تو آسانی سے ڈاکٹر کے پاس جانے کو بھی تیار نہیں ہوتیں
کیا ہوا ہے ذیادہ طبیعت خراب ہوگئ ہے؟ بخار ہے؟
امی آپ بہت یاد آرہی ہیں۔۔۔ آئی مس یو امی۔ ۔
وہ بات کاٹ کر بولی۔ اسکی آواز بھرائی ہوئی تھی۔ کوئی اور وقت ہوتا تو شائد ڈانٹ پڑ جاتی مگر اس وقت اسکے لہجے میں کچھ ایسا تھا کہ وہ ٹھٹھک گئیں۔
تم ٹھیک تو ہو نا بیٹا۔ آجائو واپس وہاں اکیلا رہنا مشکل ہو رہا ہے تو۔
نہیں آسکتی امی۔ وہ سسکیاں لے کر روپڑی۔
ارے رو کیوں رہی ہو بیٹا۔ اریزہ سے بات کرائو میری وہ بتائے گی تم مجھے نہیں بتا رہی ہو نا اپنی طبیعت۔
وہ بےتحاشا پریشان ہو گئیں۔وہ چند لمحے بے آواز روئے گئ۔ امی بے قرار سی ہوگئیں۔
کیا ہوا بیٹا ؟ پریشانی ہے کوئی ؟ کوئی بات ہے تو بتائو ؟ کسی نے کچھ کہا ہے؟ ایڈون سے جھگڑا ہوا۔
نہیں امی۔ اسے انکو اطمینان دلانے کیلئے خود پر قابو پانا پڑا
بس وہ طبیعت خراب تھئ او رآپکا فون آگیا بس تھوڑا جذباتی۔۔
اس نے سسکی بمشکل روکی۔
ہاں میرا دل بے چین تھا۔ مستقل تمہاری طرف دھیان جا رہا تھا۔ وہی ہوا طبیعت خراب تھی تمہاری۔۔
انکو اپنے اندازے کی درستگی پر ناز ہو رہا تھا تو سنتھیا کو حیرت ہورہی تھی۔
آپ کو میری فکر ہو رہی تھی ۔
اس کے انداز میں حیرت تھئ امی برا مان گئیں۔
پریشان تھی میں۔ ماں کے دل کو خبر ہو جاتی ہے جب اسکے بچے پر کوئی پریشانی بیماری آئی ہو تو۔ ماں کے دل کو بے چینی لاحق ہو جاتی ہے جب تم خود ماں بنوگی نا تو پتہ چلے گا۔ایک ماں کے دل کی دھڑکن بچے کے ساتھ ہی جڑی ہوتی ہے۔ ماں ہونا آسان بات تھوڑی ہے۔ اپنی زندگی تو بس عورت ماں بننے سے قبل تک جیتی ہے اسکے بعد تو بس ماں کی زندگی چلتی ہے۔ ماں کی ذمہ داریاں چلتی ہیں۔ ۔ خیر تم ابھی فورا دوائیں کھائو جو ڈاکٹر نے دی ہیں۔ اور خالی پیٹ نہ کھانا ایک تو تم ضدی ہو بیماری میں کھانے پینے سے بھی بھاگتئ ہو۔ اور
امی۔ آئی لو یو۔
اس نے پھر بات کاٹ دی۔۔ امی نے حیرت سے فون کو دیکھا۔ سنتھیا ایسے جزباتی اظہار کرنے والوں میں سے نہ تھی۔ شائد پہلی دفعہ کہا تھا اس نے یہ جملہ بھی۔ انکا ذہن بہت تیزی سے تانے بانے بننے لگا تھا ۔ وہ سوچ میں پڑیں پھر سنبھل کر بولیں۔
آئی لو یو ٹو بیٹا۔ اچھا چلو شاباش کچھ کھائو دوا پیو میں پھر گھنٹے ایک تک کال کروں گی۔ پریشان کردیا ہے تم نے مجھے بیٹا۔
آپ سو جائیں میں ٹھیک ہوں۔ وہاں تو بہت رات ہو رہی ہوگی۔
اس نے بے دردی سے چہرہ ہاتھ کی پشت سے پونچھا۔
ہاں یہاں ڈیڑھ بج رہا یے مگر بیٹا اب نیند تھوڑی آئے گی۔ تم چلو اٹھو شاباش دوا کھائو اور نیند آئے تو سو جانا میں اریزہ کو فون کرلوں گی۔
نن نہیں۔۔ اس نے فورا کہا پھر احساس ہوا تو بات بنائی
امی وہ اتنا پریشان رہی ہے میرے ساتھ ۔ اب شائد وہ بھی سونے لگی ہے۔ آپ مجھے ہی فون کر لیجئے گا میں ابھی سوئوں گی نہیں۔
اچھا چلو ٹھیک ہے اپناخیال رکھنا۔ خدا حافظ۔
انہوں نے بھئ ذیادہ بحث نہ کی۔ فون رکھ دیا۔ وہ دوبارہ لیٹ گئ۔ اس کا ذہن ماں کی کہی باتوں میں اٹک سا گیا تھا۔
ماں کے دل کو۔خبر ہو جاتی ہے۔۔۔
ماں کی زندگی۔۔۔
ماں بنو گئ تو پتہ لگے گا۔
اس نے کروٹ بدل لی۔۔ مگر سوچیں کروٹ بدلنے سے بدل تھوڑی جاتی ہیں۔اور وہ سوچ رہی تھی۔
ایک شادی شدہ جوڑا جو محبت کرتے ہیں ایک دوجے سے انکو اپنی اولاد کا کتنا انتظار ہوتا ہے کتنی محبت پھوٹتی ہے اس بچے کیلئے مگر محبت میں مبتلا جوڑے کو اپنی ہونے والی اولاد سے محبت نفرت سے قبل جو جذبہ محسوس ہوتا ہے وہ خوف کا ہوتا ہے۔ اسکو بھی خوف آیا تھا۔ کیا ردعمل ہوگا دنیا کا گھر والوں کا ایڈون کا ۔۔۔۔۔ پھر ایڈون کو کھودینے کا خوف پر وقت گزرتے اسکے اندرتبدیلی سی آرہی تھی۔ وہ خوف سے بتدریج محبت میں مبتلا ہوتی جا رہی تھی۔۔ماں کا دل بدلتا جا رہا تھا پر باپ کا دل کیوں نہیں بدلا ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اپنے کمرے میں آکر بستر پر گرا تھا۔آج جو کچھ ہوا تھا اس نے اسے اندر سے ہلا دیا تھا۔ کسی چیز کو بنا دیکھے محسوس کیئے اسکی موجودگی سے انکاری ہوجانا آسان ہے مگر۔
اس نے اپنے اپر کی جیب سے ایک چھوٹی سی تصویر نکالی۔ یہ سنتھیا کا الٹرا سائونڈ تھا۔ اس تصویر میں ڈاکٹر نے مٹر کے دانے جتنا جو گول سا دائرہ دکھایا تھا وہ اسکی اولاد تھا۔ اسکا ہونے والا بچہ۔۔ اس تصویر کو غور سے دیکھتے دیکھتے بھی اسکے دل میں کوئی الگ سا جزبہ پیدا نہ ہوسکا تھا۔ اسکی عمر ذمہ داریاں اٹھانے کی نہ تھی افئیر چلانے کی تھی۔ جتنی آسانی سے اس نے معاشرتی حدود و قیود سے آزادی حاصل کی تھی اتنی آسانی سے وہ اس سزا کو قبول نہیں کر پارہا تھا۔۔ ہاں یہ بچہ اسے اپنی سزا ہی محسوس ہوا تھا۔
تصویر دیکھتے فلم کی طرح اسکے ذہن میں اسپتال کے مناظر گھوم گئے تھے۔ سنتھیا جانے واقعی اس بچے سے محبت کرنے لگی تھی یا محض اسکو باندھ لینا چاہتی تھی جو ابارشن پر رضامند نہ تھئ۔ایک تیسرا بھی رخ تھا جس پر اسکا دھیان نہ گیا تھا۔
اس نے تصویر یونہی سائیڈ ٹیبل پر ڈالی۔ وہ اپنے ہلکے وزن سے ٹک نہ سکی نیچے گرگئ۔ اس نے کروٹ بدل لی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوپ جانے کہاں تھی۔ وہ دونوں نک سک سے تیار ہو چکی تھیں۔گوارا نے اسکا اناڑی پن محسوس کرکے خود اسکا میک اپ کر دیا تھا۔ گوارا نے لانگ اسکرٹ اور خوبصورت جھالر والا بلائوز پہنا تھا۔ اس نے بھی گوارا جیسا ہی لباس زیب تن کیا تھا بس رنگ کا فرق تھا۔ اچھے وقت کی کی گئ شاپنگ کام آگئ تھی۔ یون بن گاڑی لے آیا تھا ان دونوں کے انتظار میں بیٹھا لائونج میں مکھیاں مار رہا تھا۔
کتنا وقت لگائو گی دونوں۔ وہ بور ہو کر آوازیں دے رہا تھا۔
بس تیار ہوگئے۔گوارا اپنا پرس سنبھالتی آواز لگانے لگی۔
اریزہ نے بھی اپنا پرس تھاما اور خود پر طائرانہ نگاہ ڈالتی گوارا کے ساتھ باہر نکلی۔
کیوپتا۔( دلکش) ۔۔ واضح طور پر یون بن ٹھٹکا تھا۔ اسکے منہ سے بے ساختہ نکلا۔۔
گوارا اترا سی گئ۔ مگر اسکی نظروں کا تعاقب کیاتو یہ بے ساختہ تعریف اریزہ کو دیکھ کر کی گئ تھی۔۔۔ اریزہ جھینپ سی گئ۔ اتنے دن میں اتنی ہنگل سیکھ ہی لی تھی۔
تم پر تو مغربی لباس کافی جچتا ہے۔ تم ایویں ہی اپنے پرانے روائتی لباس کو ترجیح دیتی ہو ۔ ہے نا گوارا
اسکا انداز سادہ سا تھا۔ کھلے دل سے سراہتے ہوئے اس نے گوارا سے تائید چاہی تھی۔
بالکل۔ مگر مجھے یہ اپنے قومی روائتی لباس میں بھی اتنی ہی پیاری لگتی ہے۔ اور یہ اپنے قومی روائتی لباس کو شوق سے پہنتی ہے یہ بات اور اچھی لگتی ہے۔
گوارا نے پیار سے کہتے اسے ساتھ لگایا۔ اریزہ بلش سی ہوگئ۔ زندگی میں پہلی دفعہ اتنے تعریف سننے کو ملی تھی اسے سمجھ نہ آیا کیا کرے۔ اسکے چہرے پر پھیلتی سرخی کو ان دونوں نے تعجب سے دیکھا تھا پھر اکٹھے ہنس پڑے
یار یہ کتنی سادہ سی ہے بلش ہوگئ ہے اپنی تعریف سن کے۔۔
یون بن نے جان کے ہنگل میں کہا تھا۔
اریزہ بہت مختلف اور اچھی لڑکی ہے۔ زندگی میں پہلی بار میں نے ایک پرخلوص دوست پائئ ہے۔
گوارا نے کھلے دل سے کہا۔ یون بن نے مسکرا کر اسکو دیکھا
تھائی نیئے۔(شکر ہے) تمہیں اپنے جیسی لڑکی تو ملی۔ اب اس دوستی کو کھونا مت۔ میں تمہاری سہیلی بنے بنے تھک چکا ہوں ۔۔
اس نے ہنستے ہوئے کہا تو گوارا مکا دکھانے لگی۔
یہ ذیادتی ہے تم دونوں میرے سامنے اپنی زبان میں بولےجا رہے ہو جانے کیا کیا۔ یقینا میری برائی ہو رہی ہے ۔۔ یہ گوارا نے میرا تیز میک اپ کر دیا نا۔ میں ابھی منہ دھو کے آتی ہوں۔
ان دونوں کو اسکو ہی دیکھ دیکھ باتیں کرتے دیکھ کر اسے غلط فہمی ہونی ہی تھی۔ منہ بنا کر پلٹنے لگی تو گوارا نے فورا اسکے بازو میں ہاتھ ڈال کر روکا
ہم تعریف کر رہے ہیں پھابو۔( پاگل) خبر دار جو میری اتنی محنت برباد کی۔ اتنی پیاری لگ رہی ہو۔ ہے نا یون بن
اس نے تائید چاہی۔ یون بن نے مسکرا کر سر ہلایا۔ پھر اسکی جانب ذرا سا سرگوشیانہ انداز میں جھک کر بولا
بالکل۔ مگر۔۔۔۔۔ تم سے کم ۔۔۔۔۔
گوارا نے حیرت سے اسے دیکھا اسکا چہرہ غماز تھا کہ اس نے دل سے تعریف کی ہے۔
گوارا مسکرا دی۔
تم بھی بہت پیارے لگ رہے ہو۔
پھر اسکو ڈراپ کرکے ہم ڈیٹ پر چلیں۔
یون بن نے فورا موقع سے فائدہ اٹھانا چاہا۔
خیال برا نہیں۔ گوارا فورا مان گئ۔
ناٹ اگین ۔ اریزہ چڑ گئ۔ بھنا کر پیر پٹخ کر اندر جانے لگی
گوارا اور یون بن دونوں اسے منانے لپکے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیوٹیشن تنقیدی نگاہوں سے دیکھ رہی تھی۔ گنگشن ہنس دی
بہت اچھا میک اپ ہے اب مطمئن ہو جائو میں بھی مطمئن ہوں۔
وہ پھر برش لیکر اسکی تھوڑی پر پھیرنے کو تھی کہ اس نے ہاتھ تھام لیا۔
کوریا کے چوٹی کے سیلون کا اسٹاف اسکو تیار کرنے پر معمور تھا۔ گنگشن کےسامنے دیوار گیر آئینہ تھا۔ خود پر سرسری سی نگاہ ڈالتی اٹھی۔ اسکے لیئے خاص کر قد آدم آئینے بھی لگائے گئے تھے۔دو لڑکیاں فورا مستعد ہوئیں وہ ایک آئینے کے سامنے آن کھڑی ہوئی۔
اسکا روپ نکھر کر آیا تھا۔ پچھلی منگنی کی دفعہ بھی یہی لوگ تھے جن کے ماہرانہ ہاتھوں نے اسکو تیار کیا تھا اب بھی۔ نہ اس وقت اسے کوئی خوشی کی رمق محسوس ہوئی تھی نا اب۔ ہاں اب اتنا دکھ محسوس نہیں ہو رہا تھا۔ اسے یاد تھا پچھلی دفعہ تیارہو کر آئینہ دیکھتے وہ رو پڑی تھی۔ اتنا ذیادہ کہ اسکا میک اپ دوبارہ کرنا پڑگیا تھا۔ او ر اب۔
وہ آئینے سے ابھرتے بے تاثر چہرے والے عکس کو دیکھتی رہی۔
میں وقت کے ساتھ ڈھیٹ ہوتی جا رہی ہوں۔
اسکے منہ سے بلا ارادہ نکلا تھا
دے۔؟اسکی مددگار چونکی۔
آنیا۔ اس نے اپنے کندھے پر بکھرے گھنگھریالے کیئے گئے بال جھٹکے۔ بیچ ویوز کرلز نے ( سمندر کی لہروں جیسے گھنگھریالے ) اسکے چہرے کے نقوش کو نکھار بخشا تھا۔ وہ سر جھٹک کر دوسری جانب تیار ہوتی ہوپ کے پاس چلی آئی اسی ٹیم سے اس نے ہوپ کا بھی میک اپ کروایا تھا۔
اسکا میک اپ بھی آخری مراحل میں تھا۔اسکی کھنچی ہوئی آنکھوں کو بڑا دکھانے کیلئے آنکھوں کے کنارے پر سایہ ڈالنے کیلئے گہرے رنگوں کا استعمال کیا گیا تھا۔ جس سے اسکی آنکھیں بڑی بڑی لگنے لگی تھیں۔ وہ معمول سے کہیں ذیادہ مختلف اور اچھی لگ رہی تھی۔
تھیبا مجھے بالکل اندازہ نہیں تھا تم اتنی خوبصورت لگ سکتی ہو۔
گنگشن کی بے ساختہ تعریف بھی اسے خوش نہ کر سکی۔ بمشکل اپنے چہرے کے تاثرات بدل کر مسکرائی
شکریہ انی۔
آج تو تم ضرور کسی کی نظروں میں آئوگی۔ڈیٹ کی آفر تو پکا کوئی کرے گا سب کڑوی یادیں بھول کر بس کھلے دل سے قبول کرنا
وہ پیار سے اسکے کندھے پر ہاتھ رکھ کر بولی تھیں۔ ہوپ انکے انداز پر ہنس پڑی۔
انی آپ کا پیار اپنی جگہ مگر ہوپ کو جھوٹی ہوپ تو نہ دیں۔۔
دیکھ لینا۔ انی کو یقین تھا۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کم سن اسکی بےتابی پر مسکراہٹ لبوں میں دبائے محظوظ انداز میں دیکھ رہا تھا۔ لی گروپ کے اگلے مالک کی حیثیت سے اس سے خود آ آکر ملنے والے لوگوں کی ایک بڑی تعداد تھی۔ جسے فہمائشی مسکراہٹ سجائے بھگتنا اسکی مجبوری تھی۔ مگر بڑے بڑے صنعتکاروں اداکاروں اور چند ایک پارلیمان کے ارکان کی موجودگئ میں بھی اسے بس ایک فرد کی کمی شدت سے محسوس ہو رہی تھی۔ ایک جانب بار کا انتظام تھا۔ جہاں قیمتی سے قیمتی شراب مہمانوں کو پیش کی جا رہی تھی۔ ہلکی موسیقی میں بہت سے لوگ جوڑی بنائے رقص کر رہے تھے۔ اور وہ بے تابی سے مانوس چہرہ کھوج رہا تھا۔ گردن گھما گھما کر۔ کم سن کونے میں بار کے پاس ہی بیٹھا مشروب نوش کر رہا تھا۔ اٹھ کر اسے بازو سے کھینچ لایا۔
بیٹھ جائو تھک جائوگے۔ جس نے جب آنا ہوگا تب ہی آئے گا تم ٹہل ٹہل کر کسی کو بلا نہیں سکتے۔
منگنی کی تقریب شروع ہونے والی ہے ابھی تک نہیں آئی گوارا نا ہی یون بن
وہ جھلایا۔۔ کم سن مسکرا دیا۔
اتنا انتظار گوارا اور یون بن کا اسے یقینا نہیں تھا۔
لگتا ہے آنے والوں کو آنے کی جلدی نہیں۔ تمہاری یہ سب بےتابئ یکطرفہ تو نہیں؟
کم سن نے اسکی دکھتی رگ دبا دی تھی۔ اس نے شاکی نگاہوں سے دیکھا۔
ابھی کچھ کہنے ہی لگا تھا کہ نونا کی کال آگئ۔
دے۔ اس نے کم سن کو گھورتے ہوئے کال اٹھائ ۔ کم سن رخ موڑ کر مسکراتا ہوا گھونٹ بھرنے لگا۔
سر اٹھا کر سامنے دیکھو ایک زبردست سا سرپرائز ہے۔ تمہارے لیئے۔
نونا کی دھیمی مگر کھلکھلاتی سی آواز۔ اس نے سر اٹھایا ۔۔نونا اور جون من کے نام نیک خواہشات سے سجا بینر اور گلدستے تھامے دو لڑکیاں جوڑے کے آگے آگے چلتی آرہی تھی۔ جو دلکش لڑکی سب سے نمایاں مسکرا رہی تھی وہ جانی پہچانی تھی۔ بے حد مختلف مگر دلکش۔۔
وہ اٹھ کھڑا ہوا۔ گنگشن اور جون من ایک دوجے کا ہاتھ تھامے سہج سہج کر چلتے جب بیچ اسٹیج پر پہنچے تب ان دونوں لڑکیوں نے انکو گلدستے پیش کیئے اوپر سے ہلکے سے پٹاخے کے ساتھ رنگ برنگی پنیوں اور
پھولوں کی برسات ہوئئ۔
ایک بے حد رومان پرور ماحول میں جب دلہا اور دلہن کو ایک دوجے کے سوا کسی پر توجہ دینے کا موقع بھی نہیں ملتا نونا گردن گھما کر اسے دیکھ رہی تھیں چہرے پر بڑی شرارتی سی مسکراہٹ تھی۔ اس کی نگاہ ہوپ پر گئ تو وہ بھی اسے ہی دیکھ رہی تھی۔ شائد پہلی بار مسکرا کر۔۔۔
آگئ۔ کم سن کی دھیمی سی آواز ۔کم سن کی اسٹیج اورہایون کی جانب پشت تھی۔ وہ سنتے ہی چونک کر فورا سے پیشتر مڑگیا۔ گوارا کے سنگ ہال میں داخل ہوتی اریزہ بہت اشتیاق سے اسٹیج کی جانب دیکھتی کچھ بول بھئ رہی تھی۔ ساتھ یون بن بھئ تھا۔ مگر اسے شائد گوارا بھئ ٹھیک سے نظر نہ آئی۔ ہوپ کی مسکراہٹ واضح طور پر پھیکی پڑ گئی تھئ۔ ہایون کافی عجلت میں اسکی جانب بڑھا تھا۔ اسکا کسی نے ہاتھ تھام لیا۔کوئی پرانا ساتھی اس سے ملنے لگ گیا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گلدستے سنبھالتے جیسے ہی وہ ہال میں داخل ہوئے سب بتیاں دھیمی پڑ گئیں
کیا ہوا لائیٹ چلی گئ؟ یہاں بھی لوڈ شیڈنگ ہوتی ہے؟
اسے پاکستانی ہونے کے ناطے پہلا خیال یہی آیا۔
پاور ٹرپ ہوا ہوگا۔
گوارا نے اندازہ لگایا۔ تو یون بن نے اسکا سر گھمایا اسٹیج کی جانب۔۔ اوراطلاع دی۔
دلہا دلہن کے استقبال کیلئے بتیاں بجھائی گئ ہیں۔ ۔۔۔
فلڈ لائٹس کے گول چکر گنگشن نونا اور انکے دلہا کا حصار باندھے تھے۔ اوپر سے گرتی پھولوں کی پتیاں۔ مبہوت کردینے والا منظر تھا۔ بے ساختہ اسکے منہ سے وائو نکلا۔
پھر گلدستہ گوارا کے کندھے پر مار کر بولی
دلہا دلہن آگئے گوارا کی بچئ تم نے بکے بنوانے میں اتنا وقت لگوا دیا ہمیں دیرہوگئ۔
ہال میں نیم اندھیرا کرکے خاص جگمگایا گیا تھا اسٹیج کو۔ سب ادھر ہی متوجہ تھے۔ وہ لوگ بھی اسی جانب بڑھ آئے۔
دلہا دلہن ایک دوسرے کو انگوٹھی پہنا رہے تھے۔ ایک لڑکی نے آگے بڑھ کر ان دونوں کو مائک دیا۔ مختصر جملے۔ ساتھ نبھانے کا عزم کرکے دلہا نھ مسکرا کر بازو لمبا کرتے دلہن کو تکلف سے ساتھ لگایا۔ ۔ اسکے بعد دونوں نے مسکراتے ہوئے جھک کر سب کا شکریہ ادا کیا اور ایک دوسرے کا ہاتھ پکڑ کر اسٹیج سے نیچے اتر آئے۔ مہمانوں سے ملتے آمد پر شکریہ ادا کرتے اس جوڑے کی منگنی کی تقریب تمام ہوگئ تھی۔۔ ہلکی موسیقی دوبارہ چالو ہو گئ تھئ۔
ہاہ۔
اسکا منہ کھلا اور پھر حیرت کے مارے کھلا ہی رہ گیا۔اس نے موبائل میں وقت دیکھا۔ تقریب کا وقت تھا رات نو بجے۔ اس وقت سوا نو ہو رہے تھے۔ اس نے مایوسی سے نظر گھمائی۔ بڑا سا ہال۔ایک جانب ڈانس فلور تھا جو اس وقت تقریبا خالی تھا۔ کچھ اسٹیج کے قریب آن کھڑے ہوئے تھے۔ دلہا دلہن اس ہجوم میں غائب ہو چکے تھے۔ ایک ایک کے پاس خود جا جا کر جھک جھک کے سلام کرتے دلہا دلہن تو۔ دوسری جانب میزیں لگا کر بوفے کا انتظام تھا۔ قطارمیں لمبی لمبی کھانے سے سجی میزوں پر اکا دکا لوگ اپنی پلیٹ میں گنی چنی چیزیں رکھ رہے تھے۔ کوئی جلدی نہیں کوئی ہڑبونگ نہیں سب سوکھے منہ دلہا دلہن کے ساتھ گپوں میں لگے تھے جیسے یہاں کھانے ہی نہیں آئے ہوئے۔
بس؟ یہ کیا؟ سب ختم ؟۔۔۔۔اتنئ وقت کی پابندی۔ اتنی سادہ رسموں سے پاک تقریب۔ یہ کیسے نان مسلم ہیں۔
اسے دھچکا لگا۔
یہ کیا۔؟ اس نے دانت کچکچائے۔۔
ہم خالی اسٹیج دیکھنے آئے ہیں۔ اس نے برابر کھڑی گوارا کا بازو کھینچا۔
ایسی ہوتئ ہے منگنی بھلا اس سے ذیادہ رونق اور ہلا گلا میرا پہلا دودھ کا دانت ٹوٹنے پر ۔۔۔۔
بڑبڑ کرتے کھینچ کر ساتھ لگاتے ہی اسے ایکدم کچھ نامانوس سا احساس ہوا۔ اس نے جلدی میں جوبازو کھینچا وہ خاصا مضبوط تھا اور کوٹ میں ملبوس تھا۔ اس نے سٹپٹا کر نگاہ اٹھائی اپنے برابر کھڑے وجود کو دیکھا۔جو خوب لمبا سا چندی آنکھوں والا تھا۔ بہت حیرانی سے اس بے تکلفانہ مڈبھیڑ کو دیکھ رہا تھا۔
اوپس۔ سس۔
اس نے فورا بازو چھوڑا۔ سوری بولتے بولتے خیال آیا کہ ہنگل میں کہنا چاہیئے۔
چھے۔۔ سو۔
( سوری کو کیا کہتے ہنگل میں۔ اس نے ذہن کے گھوڑے دوڑائےبس چھے سو ہی یاد آیا۔ آگے کیا تھا؟ )
تھیبا۔۔ اس نے گردن جھکا کے کہا۔ مخاطب کی چندی آنکھیں تھوڑی سی کھل گئیں۔
آنیا۔۔۔۔ اس نے نفئ میں گردن ہلائی۔۔ آنیانگ۔۔دے۔
۔ آندے
۔ جھنچائے او۔
اس نے جلدی جلدی سب ہنگل لفظ بول ڈالے جو جو یاد آئے۔
کیہہ سیکی۔۔
چندی آنکھیں ابلنے کو تیار ہوئیں۔ اریزہ کو اسکے تاثرات دیکھ کر یاد آیا کہ یہ کوئی اچھا لفظ نہیں تھا۔۔ اس نے جلدی سے نفی میں سر ہلایا۔
آنیا ۔۔ ۔۔ اسے یاد آگیا۔سو اس بار قدرے اعتماد سے بولی۔ اور سر جھکانا بھول گئ۔
سارانگھیئے او۔۔۔۔
چندی آنکھوں والے کی آنکھوں میں تیرتی حیرت نے رنگ بدلا تھا۔آنکھیں مائل با شرارت ہوئی اور وہ ہنسی روکنے میں ناکام ہوتے ہوئے قہقہہ لگا کر ہنسا تھا۔ وہ حیرت سے اسے ہنستے دیکھ رہی تھی۔
اسکے قریب آتے دلہا دلہن اور ہایون نےبھی حیرت سے اسکا جملہ بھی سنا تھا اور علی کا ردعمل بھی دیکھا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم تو سمجھے ہم نےاپنی منگنی کی تقریب میں مزید دو دلوں کو ملا دیا ہے مگر افسوس یہ ایک غلط فہمی نکلی۔
گنگشن اریزہ کا پیش کیا بکے تھامے شرارت سے علی کو کہہ رہی تھئ۔ جوابا وہ بمشکل مسکرایا۔
ویسے ہم کورینز سوری تھینکس جتنی انگریزی سمجھ لیتے ہیں پھر بھئ مشورہ ہے بنیادی ہنگل سیکھ لو آگاشی۔
جون من نے ہلکے سے ہنس کر جتایا۔ وہ پزل سی کھڑی ہتھیلیاں مسل رہی تھی۔ اتنی ساری شرمندگی اسکے حصے میں آگئ تھئ
اریزہ۔ اریزہ نام ہے اسکا۔
نونا فورا بولیں۔
اریزہ تم مغربی لباس میں بہت جچ رہی ہو۔ مجھے لگا تھا تم آج کی تقریب میں بھی اپنا روائتی لباس ہی پہن کر آئو گی۔
نونا نے بہت پیار سے کہا تھا۔ وہ مسکرا دی۔
یہ گوارا کی ضد تھی۔ ویسے آپ بھی بہت اچھی لگ رہی ہیں۔
اس نے دل سے تعریف کی تھی۔ نونا اسکو بس جوابی تعریف سمجھیں۔سو دھیان نہ دیا۔
تم لوگوں نے کھانا کھایا ؟ ہایون اپنے مہمانوں کا خیال رکھنا
نونا کو اب مہمان نوازی کی فکر تھی۔ ہایون نے اثبات میں سرہلادیا
۔ دلہا دلہن کی پکاریں پڑ رہی تھیں۔ دونوں نے اجازت چاہی۔
علی نے بھئ اب رخصت چاہی ۔
اوکے اب مجھے بھی چلنا چاہیئے۔ مس اریزہ علی۔ علی نام ہے میرا۔ آپ سے مل کر خوشی ہوئی۔۔
علی نے اسکی مشکل سمجھ کر شستہ انگریزی میں بتایا۔
اریزہ کھسیا سی گئ۔
آئی ایم سوری۔ اسکے منہ سے ہائے ہیلو کی جگہ پھسلا اور وہ مزید سٹپٹا بھئ گئ۔علی اسکی گھبراہٹ سمجھ کر مسکرا دیا
دراصل اریزہ کو ہنگل نہیں آتی ہے ابھی اسے کوریا آئے ذیادہ وقت بھی نہیں ہوا۔
ہایون نے وضاحت دی۔
میں سمجھ سکتا ہوں۔ اور کیسا لگا کوریا اور کورینز ؟
اس نے اسکی شرمندگی کم کرنے کیلئے بات بڑھائی
اچھا ہے۔ خوبصورت ملک ہے ۔کورینز بھئ اچھے ہیں۔
اس نے نپا تلا ہی جواب دیا۔
مگر آپکو یہ تقریب پسند نہیں آئی۔
علی اسکی آنکھوں میں جھانک کر بولا تو وہ تھوڑا اعتماد بحال کرکے بولی۔
آنیا بس میں حیران ہو رہی تھی۔ ہمارے یہاں منگنی میں بھی لمبی تقریب چلتی ہے۔ رسمیں ہوتی ہیں۔ وغیرہ تویہ سب بہت سادہ تھا میرے لیئے۔
ہاں میں نے بھئ سنا ہے پاکستانی اور انڈین شادیوں میں بہت ہلہ گلہ ہوتا ہےمگر کبھی اتفاق نہیں ہوا کسی شادی کا حصہ بننے کا۔۔ وہاں کرسچن بھی یہ سب رسومات کرتے ہیں؟
علی کے سوال پر وہ سوچ میں پڑی۔ سنتھیا اسکی دوست تھی اور کبھی اس نے اسکے خاندان کی کسی شادی میں حصہ نہیں لیا تھا مگر ہاں سنتھیا کی منگنی کی تقریب کا حصہ بنی تھی کم و بیش ایک جیسا ہی ماحول تھا۔ ویسے ہی دیسی لوگ زرق برق لباس۔اور طعام کا اہتمام۔۔۔
ہاں۔ اس نے سوچ کر سر ہلایا تھا۔
آپ کیا کرتے ہیں؟
اس نے یونہی سوال کر لیا تھا۔
میں نے فنانس میں ماسٹرز کیا ہے۔ آج کل ایک نیم سرکاری ادارے میں پڑھاتا ہوں مختلف مضامین۔ وہیں سے عربی سیکھ رہا ہوں۔۔۔
فنانس میں ماسٹرز کے بعد ٹیچنگ؟ ۔۔ اریزہ حیران ہوئی تھی۔
دراصل۔۔ علی نے جانے کیا جواب دیا تھا۔ ان دونوں کو یقینا ایک دوسرے کے ساتھ بات چیت میں مگن ہوتے اندازہ نہیں ہوا تھا کہ ہایون ان دونوں کو چند لمحے باتیں کرتے دیکھ کر خاموشی سے ان کے درمیان سے ہٹ گیا تھا۔ہوپ کی اس سے توجہ ہٹ نہ سکی تھی۔ اس کو یوں خاموشی سے جگہ چھوڑتے دیکھ کر وہ اسکی جانب بڑھی تھی کہ کسی نے اسکو مخاطب کر لیا۔
آگاشی آپ ہوپ ہیں نا ؟
وہ کوئی ادھیڑ عمر چندی آنکھوں والا مرد تھا اس سے نہایت تمیز سے پوچھ رہا تھا۔
دے۔ وہ سر ہلا کر آگے بڑھنا چاہ۔رہی تھی۔
آپ کا انٹرویو دیکھا تھا میں نے بہت اچھا بولتی ہیں آپ۔ کیا کر رہی ہیں آپ آجکل؟
وہ مزید بات بڑھانے کے موڈ میں تھا۔ ہایون کا رخ ہال سے باہر جانے والے دروازے کی۔طرف تھا وہ بے چین سی ہوئی۔
کچھ خاص نہیں ایکسکیوز۔۔ وہ معزرت کرنا چاہ رہی تھی کہ اس شخص کے اگلے جملے پر۔ٹھٹھک گئ
وہ کہہ رہا تھا۔
آپ بہت خوبصورت ہیں۔ آپ میں اعتماد بھی ہے میری ایک ایڈ ایجنسی ہے اس میں آپ ماڈلنگ کرنا چاہیں گی ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اف مجھے افسوس ہو رہا ہے اتنی فلمی سچوایشن مجھ سے مس ہوگئ۔
گوارا اسکی زبانی ہی احوال سن کے ہنسے جا رہی تھی۔
پہلی ملاقات اور لڑکی کا اظہار محبت۔ ۔۔
شٹ اپ۔اریزہ چڑی گوارا اسکے انداز پر اور ذور سے ہنسی

بوفے اسٹائل تھا ایک کونے سے اس نے اپنی پلیٹ میں جو جو چیزیں بھرتی جا رہی تھی اسکو دیکھ کر اسے الجھن آنے لگی تھی۔ کیکڑے ، چھوٹی چھپکلیوں کی طرح کی مچھلیاں آنکھوں سمیت تلی ہوئی آکٹوپس ، کھانے میں ویج نان ویج سی فوڈ ائیٹمز تھے اور گوارا سی فوڈ کی شوقین۔ سو اسکا ارادہ یہاں سے آگے جانے کا نہ تھا۔
پہلی ملاقات۔ وہ سوچ میں پڑی تھئ کہ گوارا نے اسکا بازو ہلایا۔
اریزہ وہاں ویج آئٹمز ہیں۔ تم وہاں سے کچھ لے لو۔
گوارا کے ہلانے پر وہ چونکی پھر سرہلا کر اس جانب بڑھ گئ۔
ویجیٹیبل سوپ تھا اشتہا انگیز۔ اس نے وہ لے لیا۔ سبزیوں کا پلائو تھا جس پر مشرومز سجے تھے۔ وہ دھیرے دھیرے بڑھتی گئ۔دو تین طرح کی سلاد تھیں۔ مشروم اسٹیک وائٹ ساس پاستا اور سبزیوں کی بھجیا۔ تھوڑا تھوڑا لیکر وہ گوارا کی جانب پلٹی تو ذہن میں جھماکا ہوا۔
علی کی شکل جانی پہچانی کیوں لگی ؟ یہ وہی تو تھا جس نے میٹرو اسٹیشن میں اسکی مدد کی تھی۔ جبھی اسے دیکھا دیکھا لگا۔
میم آپ ادھر آئیے۔
ایک بیرا مئودب سا اسکے پاس آکر انگریزی میں بولا
کیوں ؟
اسکا فون بجنے لگا بیرے نے سہولت سے اسکے ہاتھ سے پلیٹ تھام لی۔ وہ حیران ہوتی اپنے کندھے سے لٹکتے چھوٹے سے پرس سے فون نکالنے لگی۔
کالر کا نام پڑھ کر وہ چونکی۔ بیرا اسکی پلیٹ پاس سے گزرتے دوسرے بیرے کو تھما چکا تھا جو لیکر آگے بڑھ گیا۔
ارے؟ میں کھانے جا رہی تھی۔۔ وہ ہکا بکا تھی گھور کر بیرے کو دیکھا وہ جوابا سر جھکا گیا۔ ۔ فون بجے جا رہا تھا اس نے اٹھالیا۔
بیرا اس سے تھوڑا فاصلے پر ہو کر اسکے فون سے فارغ ہو جانے کا انتظار کرنے لگا۔
کیسی ہو بیٹا ؟ سنتھیا کی امی بہت پیار سے پوچھ رہی تھیں۔
ٹھیک ہوں آپ کیسی ہیں؟ اس نے بھی جوابا خوش اخلاقی سے احوال پوچھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیرا اسے ایک فلورنیچے لایا تھا۔ بڑا سا ہال نیم تاریک تھا
دھیمی چلتی موسیقی سامنے ایک بڑی سی میز پر بس روشنی تھی۔اس روشنی میں دمکتا مانوس چہرہ وہ بلا جھجک اس جانب چلی آئی۔
ہایون اسکو آتے دیکھ کر اپنی جگہ سے کھڑا ہوگیا تھا۔ بیرے نے اسکے لیئے کرسی احتیاط سے کھینچی ۔ وہ حیرانی سے دیکھ رہی تھی۔
اب جائو تم۔ ہایون نے بیرے سے کہا وہ دھیرے سے جھک کے پلٹ گیا۔
یہ۔ اریزہ میز پر نظر دوڑاتی حیران کھڑی تھی
بیٹھو۔ وہ اسکی حیرانی پر مسکرایا۔
وہ متعجب سی اسے دیکھتی ٹک گئ۔
میز اسکے سب پسندیدہ کھانوں سے سجی تھی۔ بریانی مٹن کڑاہی نان چائینئز پلائو کھیر گول گپے دہی بھلے سموسہ۔۔ رس ملائی۔ وہ ابھئ دل بھر کے حیران بھی نہ ہو پائی تھی کہ
دوبیرے پھر انکے سر پر آن کھڑےہوئے تھے
ایک تولیہ ہینڈ واش کی بوتل ، منرل واٹر کی بوتل اور دوسرا ایک خوبصورت سی پیتل کی صراحی کی شکل کا کوئی برتن لیئے کھڑا تھا۔
یہ؟ اس نے حیرانی سے ہایون سے پوچھا
ہاتھ دھولو۔ ہایون مسکرایا۔
اس کا منہ بھی کھل گیا تھا۔
اس نے جھجکتے ہوئے ہینڈ واش ہاتھ میں لیا۔ شہزادیوں کی طرح اسکے ہاتھ اس دھلوائے گئے تھے۔ وہ یقینا یہ خواب دیکھ رہی تھی۔
مجھے تمہاری پسند کا ذیادہ پتہ تو ہے نہیں۔ یہ پلائو کڑاہی اور بریانی آرڈر دینے کے بعد ریستوران والوں سے کہا جو بھی خاص ہو مینیو میں بھجوا دیں۔ امید کرتا ہوں تمہیں پسند آئے گا۔
ہایون نے وضاحت کی۔
یہ بہت سارا کھانا ہے۔۔۔۔ ہایون اور اسکی کیا ضرورت تھی۔ وہ ناراض ہوئئ
ضرورت کیوں نہیں تھی۔ تم بھوکی رہتیں ؟
ہایون الٹا اس سے پوچھنے لگا۔
نہیں پر میں کچھ نہ کچھ کھا لیتی اتنا اہتمام۔
وہ متذبزب تھی۔ ہایون نے بات کاٹ دی
تم تو کورین کھانے کھاتی ہی نہیں ہو۔مجھے پتہ ہے یہ بات جبھی تمہاری پسند کے کھانے منگوائے ہیں اب شروع کرو۔۔
اسکا انداز لاپروا تھا۔ وہ اس سب اہتمام کو معمول کا حصہ قرار دینے پر تلا تھا۔
اریزہ کو اسکے خلوص پر شبہ نہ تھا سو مسکرا کر سر ہلا دیا۔ یوں دوستوں کو زیر بار کرنا اسکو پسند نہ تھا او ریہ بھی سچ تھا ہایون اگر یہ اہتمام نہ کرتا تو شائد وہ بھوکی رہتی۔
تمہارا سب سے پسندیدہ پکوان کونسا ہے ؟ وہ بات بدلنے کو پوچھ رہا تھا۔
یہ۔ کہتے ساتھ ہی
اس نے سب سے پہلے گول گپے کی جانب ہاتھ بڑھایا تھا
ہایون نے اسے کھٹے پانی میں ڈبو کر کھاتے غور سے دیکھا۔ بہت چٹپٹا تھا پانی۔ اسکو خوب مزا آیا مگر مرچوں سے آنکھیں سرخ ہو چلیں۔۔
اس میں ڈبو کر کھائو ۔۔ وہ اسے سکھا تے سکھاتے ایک اور گول گپا منہ میں بھر چکی تھی۔ چنے چٹنی بھرا بڑا سا گول گپا۔
ہایون نے جھجکتے ہوئے گول گپا کھانا چاہا وہ پٹاخ سے پانی میں گرا اسکے کوٹ تک پانی کے چھینٹے آئے۔ اسکی خدمت پر معمور بیروں نے بمشکل مسکراہٹ دبائی۔
گول گپا کئی گول گپوں میں تقسیم ہو چکا تھا۔ اس نے چمچ سے اٹھا کر کھایا تو رات میں تارے بھی دکھائی دیئے اور کائنات کے نئے بلیک ہول بھی
بری طرح کھانستے ہوئے اسے اچھو ہوچلا تھا
اریزہ نے جلدی سے رس ملائی ایک پیالے میں نکال کر اسکی جانب بڑھائی۔
ٹھنڈی میٹھئ رس ملائی منہ میں گھل کر مرچوں کا ذائقہ مندمل کر گئ منہ میں چین پڑا۔
تم مت کھائو گول گپے تمہارے بس کی بات نہیں۔
اریزہ نے چھیڑا تھا۔خود وہ گول گپے میں چنے اور چٹنی بھر رہی تھی۔
ہایون نے ایک نظر اسکو دیکھا پھر اپنے پاس رکھی رس ملائی کو۔ گول گپا اٹھایا اس میں چنے بھرے ایک رس ملائی توڑ کر بھری رس ملائی کے دودھ میں ڈبویا اور منہ میں رکھ لیا۔ اریزہ کا گول گپے سے بھرا منہ تھوڑا سا کھل سا گیا۔
گول گپے میں رس ملائی بھر کر کھانا ؟ اس ثقافتی جھٹکے نے اسکو ششدر کر دیا۔ ہایون نے مزے لیکر کھایا اور چٹخارا بھرا۔
ماشیچتا۔ ( مزےدار)
اریزہ نے بمشکل اپنا گول گپا نگلا۔
واقعی بہت مزے کا کھانا ہوتا ہے پاکستانی۔ تم لوگ کتنے گول گپے کھاتے ہو؟ ایک وقت میں
وہ گول گپے کو ایک وقت کا کھانا سمجھا تھا۔
درجن ایک تو اریزہ جیسی لڑکی بھی بنا ڈکار مارے کھا سکتی تھی ۔ اس نے جواب دینے کی بجائے کھٹا پانی پرے کیا اپنی رس ملائی کا پیالہ اٹھایا ۔گول گپے میں رس ملائی بھری اور منہ میں رکھ لیا۔ زندگی میں پہلی بار گول گپے کو رس ملائی میں ڈبو کر کھایا تھا اور اب سے آئیندہ وہ یہ دونوں چیزیں ملا کر کھانے والی تھی۔
یہ تو واقعی بہت مزے کا لگ رہا ہے۔
وہ کہے بنا نہ رہ سکی۔
کیا مطلب تم لوگ اسکو ملا کر نہیں کھاتے ؟ ہایون کو حیرت ہوئی
ہرگز نہیں اور کسی پاکستانی کےسامنے دوبارہ یہ کرتب کرنا بھی نا توہین ہے یہ گول گپے کی مگر۔۔
وہ ڈرامائی انداز میں کہتے کہتے رکی پھر منہ میں گول گپا رکھ کر چٹخارا لیکر بولی
مزے کی توہین ہے۔
ہایون اسکے انداز پر ہنس پڑا تھا۔
اور بتائو اور کونسی چیز تم ملا کر کھائو گے۔ اس نے اکسانے والے انداز میں کہا ہایون بھی دلچسپی سے پکوان کی جانب متوجہ ہوا۔
یہ پائرامڈ بریانی میں ملا کر کھانا کیسا لگے گا؟
پائرامڈ؟ وہ ہونق ہوئی۔
یہ تکونا پائرامڈ کی طرح کا ہے نا۔وہ اب سموسے کو دونوں ہاتھوں سے تھام کر دکھا رہا تھا۔
سموسہ کہتے ہیں اسے۔ اس نے بتایا پھر ایکدم پرجوش ہوئی۔
اس میں بریانی بھرتے ہیں۔ وہ اب سموسے کا پیٹ چاک کرنے لگی۔
دونوں کھا کم کھیل ذیادہ رہے تھے۔ ایک دوسرے کے ساتھ باتوں میں مگن اور خوش نظر آرہے تھے۔ ہال کنارے سیڑھیوں سے اترتے ہی ان پر نظر پڑی تھی اسکی۔ وہ ہایون کا پتہ کرتی ادھرچلی آئی تھئ مگر یہ نہیں پتہ تھا کہ ہایون یہاں اکیلا نہیں تھا۔اریزہ بھی ساتھ تھی۔ جہاں اوپر والی منزل پر رنگ و بو کا سیلاب تھا رونقیں تھی مہمان تھے بڑے بڑے لوگ تھے وہ یہاں تھااس منزل کی سب دلکشیوں سے دور اریزہ کے ساتھ خوش
کم از کم ہوپ کو تو وہ دونوں اکٹھے مطمئن اور مکمل لگے تھے۔ اس نے اپنے ہاتھ میں تھما کارڈ مسل ڈالا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گوارا گھر نہیں آئی تھی شائد آئے بھی نا۔ ہایون اسے اپارٹمنٹ تک چھوڑ کر گیا تھا۔ وہ جمائی لیتی اندر آئی تھی۔ بیڈروم میں ہوپ سورہی تھی۔ وہ احتیاط سے کپڑے اٹھاتی فریش ہونے باتھ روم گھس گئ۔ نہا کر نکلی تو کافی کی طلب محسوس ہوئی۔ اپنے لیئے کافی کا مگ بنا کر ٹیرس میں چلی آئی۔ خنک ہوا گرم کافی سیول کی روشنیاں اس نے بلاگ اپڈیٹ کرنا شروع کردیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہو آیا آپکے کہنے پر بھائی کی منگنی پر۔ اب خوش۔
اس نے گھر آتے ہوئے بس میں بیٹھ کر میسج لکھ کر بھیجا
اچھی بات ہے۔
فوری جواب آیاتھا۔
اب دوسری بات کب تک مانوگے؟
وہ ہار ماننے والے نہیں تھے۔
آج ایک لڑکی نے مجھے آئی لو یو کہا تو ہے۔۔ اسی سے کرلیتا ہوں شادی۔
اس نے لکھ کر بھیجا تھا جوابا لمحہ بھر کا ہی توقف ہوا ہوگا کال آگئ۔ انکے جزباتی پن پر اسے ہنسی آگئ تھی۔ فون اٹھاتے ہی بنا سلام دعا انہوں نے پوچھا۔
واقعی؟ کون ہے کیسی ہے ؟ ہاں کہا اسے؟
ایک ہی سانس میں وہ سارے سوال کر گئے۔
شادی میں ملی تھی ۔۔ اس نے جان کے بات ادھوری چھوڑی۔
آج؟ وہ حیران ہوئے۔
ہاں۔ آج۔ وہ پوری طرح انکے اتائولے پن سے حظ اٹھا رہا تھا
اوہ۔ وہ تھوڑا مایوس ہوئے۔مگر امید زندہ تھی ابھی
تمہیں پسند آئی کیسی لڑکی ہے؟
ہاں اچھی ہے پیاری ہے۔
اس نے مختصر ہی جواب دیا
پھر اس سے ملاقات کرو پرکھو۔ کیا پتہ یہی وہ لڑکی ہو جو۔۔
وہ کہہ رہے تھے اس نے انکو بریک لگائی۔
ملاقات کا کوئی چانس نہیں دوبارہ۔
کیوں نہیں؟ وہ حیران ہوئے
اس نے آئی لو یو بولا تو یقینا تم اسے پسند آئے ہو جبھی تو بولا نا ؟ یا تم جھوٹ بول رہے ہو۔
وہ پل میں جان گئے جوابا وہ ہنس دیا
جھوٹ نہیں بولتا میں۔ جب مسلم نہیں تھا تب بھی کبھی جھوٹ نہیں بولا اب تو نا ممکن ہے۔
پھر ۔ وہ مصر تھے۔اسے ہنسی مزاق چھوڑ کر حقیقت بتانی پڑی۔
اس نے واقعی آئی لو یو کہا مگر وہ ایک غلط فہمی تھی۔۔ اسکی ہنگل اچھی نہیں تو معزرت کی جگہ سارانگھیئے کہہ گئ۔
اوہ۔ انکا جوش جھاگ کی طرح بیٹھ گیا۔
کوئی چانس ہے ؟ انہوں نے ہار نہ مانی۔
میں غیر مسلموں کی منگنی کی تقریب میں گیا تھا وہ لڑکی بھی کرسچن تھی سو نو چانس ایٹ آل۔۔
اس نے قطیعت سے کہا تو وہ گہری سانس بھر کے بولے
چلو کم از کم کفر تو ٹوٹا۔۔ پڑ جائے پتھر میں جونک بھی کبھی نہ کبھی۔ ۔۔۔ جوابا وہ خاموش رہا تو وہ بھی بات بدل گیے
۔اچھا یہ بتائو کچھ کھایا ہے ؟
آنیا۔۔ وہاں نان ویج آپشن میں بھی پورک فلیور تھا۔ اب گھر جائوں گا تو کچھ بنا کے کھائوں گا۔
اس کو بھوک لگ رہی تھئ۔ عبدالہادی کو اندازہ ہوگیا تھا۔
تو پھر ایسا کرو۔اپنے گھر کے راستے سے ایک اسٹاپ پہلے اتر جائو یہاں آئو ہم نے آج گوشت بھونا ہے۔
انہوں نے دعوت دی تو اس نے تکلفا بھی انکار نہ۔کیا۔
دے۔
کال۔بند کرکے اس نے یونہی سیل فون دیکھا۔ وال پیپر پر اسکی اور رچل کی تصویر تھی۔
سارانگھیئے او۔
رچل ہمیشہ اسے پرجوش انداز میں کہا کرتی تھی۔ اور سچ تو یہ تھا اسکے سوا اور کسی کے منہ سے یہ جملہ سننے کی تمنا نہ رہی تھی۔
سارانگھیئے۔
اس نے زیر لب دہرایا۔

تبھی بلاگ اپڈیٹ آئی تھی۔۔ اس نے گرد ونواح میں نگاہ۔کی ابھی اسٹاپ آنے میں وقت تھا بلاگ پڑھا جا سکتا تھااس نے وہی کھول لیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زندگی کڑوےمیٹھے کھٹے پھیکے تھوڑے مرچیلے پکوان سے سجی میز کا نام ہے۔
آپکا پسندیدہ پکوان بھی کبھی آپکو ناپسندیدہ ذائقے سے نواز سکتاہے اب یہ آپ پر ہے مرچیں لگنے پر سی سی کریں یا کوئی میٹھا ذائقہ زبان پر رکھ کر اس تکلیف کو زائل کر دیں۔
آپکا ہر حال میں ساتھی پانی ہی ہوتا ہے جو ہر ذائقے کو مندمل کرکے نئے ذائقے چکھنے کیلئے آپکی زبان کو تیار کر دے۔
آج مجھے بھی میرے پسندیدہ پکوان گول گپے نے زبان کو تیکھے پن سے چھلنی کیا اورپتہ ہے اسی میز پر موجود رس ملائی نے میرے گول گپے کے ساتھ مل کر میری زبان کو مرہم بھی دے دیا۔
ساتھ ہی رس ملائی بھرے گول گپے کی تصویر تھی جسے چٹکی سے تھاما گیا ہوا تھا۔
تو حاصل بحث کیا ہوا۔ زندگی کی میز پر سب ذائقے ہیں فرق صرف اپنے پسندیدہ پکوان سے ذرا بھر کو نگاہ ہٹا کر کسی دوسرے ذائقے کو چکھنے پر خود کو آمادہ کرلینا ہی اصل جینا ہے۔۔
کھاتے پیتے جیو۔
۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پہلا کمنٹ۔
شرم نہیں آتی ہم ہاسٹل باسیوں کو مرغن کھانے دکھاتے؟
دوسرا کمنٹ
یہ ڈنر سوٹ میں جو دھندلا پکوان نظر آرہا اسکا کیا نام ہے کبھی پاکستان میں ایسا دکھائی نہ دیا۔
ہیں۔۔۔ اس نے آنکھیں کھول کر دیکھا۔ تصویر کو۔ذوم کیا تو میز کے پکوان کی تصویروں میں جو اس نے تقریبا سب ہی اپلوڈ کر دی تھیں پیچھے پس منظر میں آئوٹ آف فوکس بھی پورا ہایون نظر آرہا تھا۔
کمال کی نگاہ ہے۔ اس نے بے ساختہ داد دی
تیسرا کمنٹ
سموسے میں بریانی بھرنا زندگی جینا ہے تو میں پودینے کی چٹنی میں کھیر ڈال کر کھانا بہتر سمجھتا ہوں۔
سب نے خوب اس کی میز کا پوسٹ مارٹم کیا تھا۔۔ اسے ہنسی آئی۔
چوتھا کمنٹ
سب سے اچھا نیا ملا جلا ذائقہ کس کا بنا سچ بتانا ؟
اس نے دیانت داری سے ہی جواب دیا۔
رس ملائی بھرا گول گپا۔۔ یہ یقینا بہترین تجربہ تھا
پانچواں کمنٹ
یہی سب کھانا تھا تو کوریا گئے ہی کیوں ہو؟۔۔
یہ دہائی کسی دکھے دل سے نکلی تھی۔ اسے ہنسی آگئ۔
چھٹا کمنٹ۔
یہ جگ میں آپ ہو؟
ہیں۔ اسے کمنٹ سمجھ نہ آیا۔ غور کیا تصویر کو۔ذوم کیا تو پتہ چلا ہر احتیاط کے باوجود کہ اسکی اپنی کوئی تصویر نہ آنے پائے اس گول گپے کو چٹکی میں بھرنے والی تصویر میں میز پر رکھا جگ اسکا مکمل عکس منعکس کر رہا تھا۔ ہلکا سا دھندلا مگر موبائل اٹھائے ہاتھ اور اسکا چہرہ۔ اب جس نے اسے دیکھا ہوا ہو اس کیلئے پہچاننا آسان تھا ۔ دھندلی تصویر تھی اس نے تصویر ڈیلیٹ کرنے کی بجائے مختصر۔جواب لکھا۔۔
ہاں۔۔۔
اور ٹھنڈی ہوتی کافی کی جانب متوجہ ہوگئ۔۔
کل پکا سنتھیا سے ملنے جائوں گی۔ جانے کتنی بیمار ہوگئ ہے جو آنٹی تشویش ذدہ ہوگئیں۔ اس نے کہیں آنٹی کو بتا تو نہ دیا۔
سوچ اتنی کٹیلی تھی کہ وہ بے دھیانی میں گرم گھونٹ لے بیٹھی۔۔
سی کرکے کپ پیچھے کیا۔
احمق لڑکی۔۔
وہ بڑبڑاکررہ گئ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ختم شد
جاری ہے۔

Kesi lagi apko Salam Korea ki qist? Rate us below

Rating

سلام دوستو۔کیا آپ سب بھی کورین فین فکشن پڑھنے میں دلچسپی رکھتے ہیں؟
کیا خیال ہے اردو فین فکشن پڑھنا چاہیں گے؟
آج آپکو بتاتی ہوں پاکستانی فین فکشن کے بارے میں۔ نام ہے Desi Kimchi ..
دیسئ کمچی آٹھ لڑکیوں کی کہانی ہے جو کوریا میں تعلیم حاصل کرنے گئیں اور وہاں انہیں ہوا مزیدار تجربہ۔۔کوریا کی ثقافت اور بودوباش کا پاکستانی ماحول سے موازنہ اور کوریا کے سفر کی دلچسپ روداد
پڑھ کر بتائیے گا کیسا لگا۔ اگلی قسط کا لنک ہر قسط کے اختتام میں موجود یے۔۔

Desi kimchi seoul korea based urdu web travel novel by vaiza zaidi

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *