urdu poetry, urdu shayari, sad poetry in urdu love poetry in urdu jaun elia allama iqbal poetry poetry in urdu 2 lines urdu shayri sad poetry in urdu 2 lines ahmad faraz ghalib shayari attitude poetry in urdu sad quotes in urdu funny poetry in urdu romantic poetry in urdu allama iqbal shayari best poetry in urdu bewafa poetry sad shayari urdu islamic poetry in urdu barish poetry poetry in urdu attitude ghalib poetry allama iqbal poetry in urdu attitude quotes in urdu poetry in urdu text deep poetry in urdu sad poetry in urdu text love shayari urdu ghazal in urdu urdu poetry in urdu text mirza ghalib shayari love poetry in urdu romantic urdu shayari on life rekhta shayari jaun elia poetry iqbal shayari deep lines in urdu sad love poetry in urdu urdu poetry sms best shayari in urdu death poetry in urdu funny shayari in urdu dosti poetry in urdu father quotes in urdu birthday poetry in urdu poetry status eid poetry Hajoom e tanhai poetry, Vaiza zaidi poetry, jaun elia shayari, urdu poetry text copy, attitude poetry in urdu 2 lines text, urdu shayari in english, shero shayari urdu, munafiq poetry, mirza ghalib poetry, romantic shayari in urdu, allama iqbal ki shayari, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, poetry in urdu 2 lines attitude, john elia sad poetry, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, john elia shayari, 2 line urdu poetry copy paste, dukhi poetry, heart touching quotes in urdu, mohsin naqvi poetry, beautiful poetry in urdu, udas poetry, friendship poetry in urdu, muhabbat poetry, urdu sher, one line quotes in urdu, dosti shayari urdu, sad poetry status, narazgi poetry, judai poetry, ghalib shayari in urdu, faiz ahmad faiz shayari, barish poetry in urdu, urdu one line caption copy paste, wasi shah poetry, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, urdu poetry status, islamic poetry in urdu 2 lines, jon elia poetry, funny poetry in urdu for friends, attitude shayari in urdu, allama iqbal poetry in urdu for students, Zawwar haider poetry, mohabbat shayari urdu, jaun elia sad poetry, sad poetry sms, urdu poetry written, urdu novels,urdu novels, urdu poetry, urdu afsanay, urdu statuses, urdu shayari, sad poetry in urdu, love poetry in urdu, poetry in urdu 2 lines, urdu shayri, sad poetry in urdu 2 lines, ahmad faraz, romantic poetry in urdu, best poetry in urdu, bewafa poetry, sad shayari urdu, barish poetry, poetry in urdu text, deep poetry in urdu, sad poetry in urdu text, love shayari urdu, ghazal in urdu, urdu poetry in urdu text, love poetry in urdu romantic, urdu shayari on life, deep lines in urdu, sad love poetry in urdu, urdu poetry sms, best shayari in urdu, very sad poetry in urdu images, novels in urdu pdf, urdu books, bewafa poetry in urdu, best urdu novels, urdu poetry text copy, urdu shayari in english, shero shayari urdu, romantic shayari in urdu, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, 2 line urdu poetry copy paste, famous urdu novels, beautiful poetry in urdu, udas poetry, muhabbat poetry, urdu sher, barish poetry in urdu, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, ahmed faraz poetry, mohabbat shayari urdu, sad poetry sms, urdu poetry written, love poetry in urdu romantic 2 line, attitude poetry in urdu text, heart touching poetry in urdu, sad ghazal in urdu, 2 line urdu poetry romantic sms, ahmad faraz poetry, poetry about life in urdu, urdu words for poetry, urdu poetry copy paste, urdu poetry in english, ahmad faraz shayari, bewafa shayari urdu, love poetry in urdu 2 lines, urdu ghazal poetry, poetry in urdu 2 lines deep sad lines in urdu, faraz shayari, urdu words for shayari, urdu sad poetry sms in urdu writing, dard poetry, happy poetry in urdu, urdu love poetry for her, faraz poetry, ali zaryoun shayari, shayari in urdu words, very sad shayari urdu, ishq poetry in urdu, urdu shayari images, 2 lines poetry, new poetry in urdu, urdu poetry in hindi, urdu poetry lines, one line poetry in urdu, poetry on beauty in urdu, one line poetry in urdu text, muskurahat poetry, sad poetry in urdu 2 lines without images, mohabbat poetry in urdu, nice poetry in urdu, best love poetry in urdu, muhabbat poetry in urdu, best lines in urdu, deep love poetry in urdu, beautiful shayari in urdu, urdu sad poetry sms, Novel urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, islamic books urdu, udas naslain pdf, urdu poetry books, urdu novel online reading, jasoosi digest, novel novels in urdu, urdu audio books, top urdu novels, romance novel best novels in urdu, wasif ali wasif books pdf, urdu language books pdf, tahir javed mughal novels, urdu digest pdf, naseem hijazi books, best books to read in urdu, ashfaq ahmed books pdf, dastak novel, a hameed novels, psychology books in urdu, bano qudsia novels, pakeeza anchal romantic novel, pyasa sawan novel, free urdu novels, anchal digest novels, raqs bismil nove,l urdu poetry books pdf, new novel 2021 in urdu, urdu novels 2021, love story novel in urdu, urdu history books, raja gidh read online, jasoosi novel, urdu love novels list, pakistani novels in urdu, urdu historical novels, romance novel famous urdu novels list, romance novel urdu novels list urdu poetry, urdu shayari, sad poetry in urdu love poetry in urdu jaun elia allama iqbal poetry poetry in urdu 2 lines urdu shayri sad poetry in urdu 2 lines ahmad faraz ghalib shayari attitude poetry in urdu sad quotes in urdu funny poetry in urdu romantic poetry in urdu allama iqbal shayari best poetry in urdu bewafa poetry sad shayari urdu islamic poetry in urdu barish poetry poetry in urdu attitude ghalib poetry allama iqbal poetry in urdu attitude quotes in urdu poetry in urdu text deep poetry in urdu sad poetry in urdu text love shayari urdu ghazal in urdu urdu poetry in urdu text mirza ghalib shayari love poetry in urdu romantic urdu shayari on life rekhta shayari jaun elia poetry iqbal shayari deep lines in urdu sad love poetry in urdu urdu poetry sms best shayari in urdu death poetry in urdu funny shayari in urdu dosti poetry in urdu father quotes in urdu birthday poetry in urdu poetry status eid poetry Hajoom e tanhai poetry, Vaiza zaidi poetry, jaun elia shayari, urdu poetry text copy, attitude poetry in urdu 2 lines text, urdu shayari in english, shero shayari urdu, munafiq poetry, mirza ghalib poetry, romantic shayari in urdu, allama iqbal ki shayari, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, poetry in urdu 2 lines attitude, john elia sad poetry, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, john elia shayari, 2 line urdu poetry copy paste, dukhi poetry, heart touching quotes in urdu, mohsin naqvi poetry, beautiful poetry in urdu, udas poetry, friendship poetry in urdu, muhabbat poetry, urdu sher, one line quotes in urdu, dosti shayari urdu, sad poetry status, narazgi poetry, judai poetry, ghalib shayari in urdu, faiz ahmad faiz shayari, barish poetry in urdu, urdu one line caption copy paste, wasi shah poetry, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, urdu poetry status, islamic poetry in urdu 2 lines, jon elia poetry, funny poetry in urdu for friends, attitude shayari in urdu, allama iqbal poetry in urdu for students, Zawwar haider poetry, mohabbat shayari urdu, jaun elia sad poetry, sad poetry sms, urdu poetry written, urdu novels,urdu novels, urdu poetry, urdu afsanay, urdu statuses, urdu shayari, sad poetry in urdu, love poetry in urdu, poetry in urdu 2 lines, urdu shayri, sad poetry in urdu 2 lines, ahmad faraz, romantic poetry in urdu, best poetry in urdu, bewafa poetry, sad shayari urdu, barish poetry, poetry in urdu text, deep poetry in urdu, sad poetry in urdu text, love shayari urdu, ghazal in urdu, urdu poetry in urdu text, love poetry in urdu romantic, urdu shayari on life, deep lines in urdu, sad love poetry in urdu, urdu poetry sms, best shayari in urdu, very sad poetry in urdu images, novels in urdu pdf, urdu books, bewafa poetry in urdu, best urdu novels, urdu poetry text copy, urdu shayari in english, shero shayari urdu, romantic shayari in urdu, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, 2 line urdu poetry copy paste, famous urdu novels, beautiful poetry in urdu, udas poetry, muhabbat poetry, urdu sher, barish poetry in urdu, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, ahmed faraz poetry, mohabbat shayari urdu, sad poetry sms, urdu poetry written, love poetry in urdu romantic 2 line, attitude poetry in urdu text, heart touching poetry in urdu, sad ghazal in urdu, 2 line urdu poetry romantic sms, ahmad faraz poetry, poetry about life in urdu, urdu words for poetry, urdu poetry copy paste, urdu poetry in english, ahmad faraz shayari, bewafa shayari urdu, love poetry in urdu 2 lines, urdu ghazal poetry, poetry in urdu 2 lines deep sad lines in urdu, faraz shayari, urdu words for shayari, urdu sad poetry sms in urdu writing, dard poetry, happy poetry in urdu, urdu love poetry for her, faraz poetry, ali zaryoun shayari, shayari in urdu words, very sad shayari urdu, ishq poetry in urdu, urdu shayari images, 2 lines poetry, new poetry in urdu, urdu poetry in hindi, urdu poetry lines, one line poetry in urdu, poetry on beauty in urdu, one line poetry in urdu text, muskurahat poetry, sad poetry in urdu 2 lines without images, mohabbat poetry in urdu, nice poetry in urdu, best love poetry in urdu, muhabbat poetry in urdu, best lines in urdu, deep love poetry in urdu, beautiful shayari in urdu, urdu sad poetry sms, novel urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, islamic books urdu, udas naslain pdf, urdu poetry books, urdu novel online reading, jasoosi digest, novel novels in urdu, urdu audio books, top urdu novels, romance novel best novels in urdu, wasif ali wasif books pdf, urdu language books pdf, tahir javed mughal novels, urdu digest pdf, naseem hijazi books, best books to read in urdu, ashfaq ahmed books pdf, dastak novel, a hameed novels, psychology books in urdu, bano qudsia novels, pakeeza anchal romantic novel, pyasa sawan novel, free urdu novels, anchal digest novels, raqs bismil nove,l urdu poetry books pdf, new novel 2021 in urdu, urdu novels 2021, love story novel in urdu, urdu history books, raja gidh read online, jasoosi novel, urdu love novels list, pakistani novels in urdu, urdu historical novels, romance novel famous urdu novels list, romance novel urdu novels list urdu poetry, urdu shayari, sad poetry in urdu love poetry in urdu jaun elia allama iqbal poetry poetry in urdu 2 lines urdu shayri sad poetry in urdu 2 lines ahmad faraz ghalib shayari attitude poetry in urdu sad quotes in urdu funny poetry in urdu romantic poetry in urdu allama iqbal shayari best poetry in urdu bewafa poetry sad shayari urdu islamic poetry in urdu barish poetry poetry in urdu attitude ghalib poetry allama iqbal poetry in urdu attitude quotes in urdu poetry in urdu text deep poetry in urdu sad poetry in urdu text love shayari urdu ghazal in urdu urdu poetry in urdu text mirza ghalib shayari love poetry in urdu romantic urdu shayari on life rekhta shayari jaun elia poetry iqbal shayari deep lines in urdu sad love poetry in urdu urdu poetry sms best shayari in urdu death poetry in urdu funny shayari in urdu dosti poetry in urdu father quotes in urdu birthday poetry in urdu poetry status eid poetry Hajoom e tanhai poetry, Vaiza zaidi poetry, jaun elia shayari, urdu poetry text copy, attitude poetry in urdu 2 lines text, urdu shayari in english, shero shayari urdu, munafiq poetry, mirza ghalib poetry, romantic shayari in urdu, allama iqbal ki shayari, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, poetry in urdu 2 lines attitude, john elia sad poetry, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, john elia shayari, 2 line urdu poetry copy paste, dukhi poetry, heart touching quotes in urdu, mohsin naqvi poetry, beautiful poetry in urdu, udas poetry, friendship poetry in urdu, muhabbat poetry, urdu sher, one line quotes in urdu, dosti shayari urdu, sad poetry status, narazgi poetry, judai poetry, ghalib shayari in urdu, faiz ahmad faiz shayari, barish poetry in urdu, urdu one line caption copy paste, wasi shah poetry, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, urdu poetry status, islamic poetry in urdu 2 lines, jon elia poetry, funny poetry in urdu for friends, attitude shayari in urdu, allama iqbal poetry in urdu for students, Zawwar haider poetry, mohabbat shayari urdu, jaun elia sad poetry, sad poetry sms, urdu poetry written, urdu novels,urdu novels, urdu poetry, urdu afsanay, urdu statuses, urdu shayari, sad poetry in urdu, love poetry in urdu, poetry in urdu 2 lines, urdu shayri, sad poetry in urdu 2 lines, ahmad faraz, romantic poetry in urdu, best poetry in urdu, bewafa poetry, sad shayari urdu, barish poetry, poetry in urdu text, deep poetry in urdu, sad poetry in urdu text, love shayari urdu, ghazal in urdu, urdu poetry in urdu text, love poetry in urdu romantic, urdu shayari on life, deep lines in urdu, sad love poetry in urdu, urdu poetry sms, best shayari in urdu, very sad poetry in urdu images, novels in urdu pdf, urdu books, bewafa poetry in urdu, best urdu novels, urdu poetry text copy, urdu shayari in english, shero shayari urdu, romantic shayari in urdu, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, 2 line urdu poetry copy paste, famous urdu novels, beautiful poetry in urdu, udas poetry, muhabbat poetry, urdu sher, barish poetry in urdu, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, ahmed faraz poetry, mohabbat shayari urdu, sad poetry sms, urdu poetry written, love poetry in urdu romantic 2 line, attitude poetry in urdu text, heart touching poetry in urdu, sad ghazal in urdu, 2 line urdu poetry romantic sms, ahmad faraz poetry, poetry about life in urdu, urdu words for poetry, urdu poetry copy paste, urdu poetry in english, ahmad faraz shayari, bewafa shayari urdu, love poetry in urdu 2 lines, urdu ghazal poetry, poetry in urdu 2 lines deep sad lines in urdu, faraz shayari, urdu words for shayari, urdu sad poetry sms in urdu writing, dard poetry, happy poetry in urdu, urdu love poetry for her, faraz poetry, ali zaryoun shayari, shayari in urdu words, very sad shayari urdu, ishq poetry in urdu, urdu shayari images, 2 lines poetry, new poetry in urdu, urdu poetry in hindi, urdu poetry lines, one line poetry in urdu, poetry on beauty in urdu, one line poetry in urdu text, muskurahat poetry, sad poetry in urdu 2 lines without images, mohabbat poetry in urdu, nice poetry in urdu, best love poetry in urdu, muhabbat poetry in urdu, best lines in urdu, deep love poetry in urdu, beautiful shayari in urdu, urdu sad poetry sms, Novel urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, islamic books urdu, udas naslain pdf, urdu poetry books, urdu novel online reading, jasoosi digest, novel novels in urdu, urdu audio books, top urdu novels, romance novel best novels in urdu, wasif ali wasif books pdf, urdu language books pdf, tahir javed mughal novels, urdu digest pdf, naseem hijazi books, best books to read in urdu, ashfaq ahmed books pdf, dastak novel, a hameed novels, psychology books in urdu, bano qudsia novels, pakeeza anchal romantic novel, pyasa sawan novel, free urdu novels, anchal digest novels, raqs bismil nove,l urdu poetry books pdf, new novel 2021 in urdu, urdu novels 2021, love story novel in urdu, urdu history books, raja gidh read online, jasoosi novel, urdu love novels list, pakistani novels in urdu, urdu historical novels, romance novel famous urdu novels list, romance novel urdu novels list urdu poetry, urdu shayari, sad poetry in urdu love poetry in urdu jaun elia allama iqbal poetry poetry in urdu 2 lines urdu shayri sad poetry in urdu 2 lines ahmad faraz ghalib shayari attitude poetry in urdu sad quotes in urdu funny poetry in urdu romantic poetry in urdu allama iqbal shayari best poetry in urdu bewafa poetry sad shayari urdu islamic poetry in urdu barish poetry poetry in urdu attitude ghalib poetry allama iqbal poetry in urdu attitude quotes in urdu poetry in urdu text deep poetry in urdu sad poetry in urdu text love shayari urdu ghazal in urdu urdu poetry in urdu text mirza ghalib shayari love poetry in urdu romantic urdu shayari on life rekhta shayari jaun elia poetry iqbal shayari deep lines in urdu sad love poetry in urdu urdu poetry sms best shayari in urdu death poetry in urdu funny shayari in urdu dosti poetry in urdu father quotes in urdu birthday poetry in urdu poetry status eid poetry Hajoom e tanhai poetry, Vaiza zaidi poetry, jaun elia shayari, urdu poetry text copy, attitude poetry in urdu 2 lines text, urdu shayari in english, shero shayari urdu, munafiq poetry, mirza ghalib poetry, romantic shayari in urdu, allama iqbal ki shayari, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, poetry in urdu 2 lines attitude, john elia sad poetry, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, john elia shayari, 2 line urdu poetry copy paste, dukhi poetry, heart touching quotes in urdu, mohsin naqvi poetry, beautiful poetry in urdu, udas poetry, friendship poetry in urdu, muhabbat poetry, urdu sher, one line quotes in urdu, dosti shayari urdu, sad poetry status, narazgi poetry, judai poetry, ghalib shayari in urdu, faiz ahmad faiz shayari, barish poetry in urdu, urdu one line caption copy paste, wasi shah poetry, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, urdu poetry status, islamic poetry in urdu 2 lines, jon elia poetry, funny poetry in urdu for friends, attitude shayari in urdu, allama iqbal poetry in urdu for students, Zawwar haider poetry, mohabbat shayari urdu, jaun elia sad poetry, sad poetry sms, urdu poetry written, urdu novels,urdu novels, urdu poetry, urdu afsanay, urdu statuses, urdu shayari, sad poetry in urdu, love poetry in urdu, poetry in urdu 2 lines, urdu shayri, sad poetry in urdu 2 lines, ahmad faraz, romantic poetry in urdu, best poetry in urdu, bewafa poetry, sad shayari urdu, barish poetry, poetry in urdu text, deep poetry in urdu, sad poetry in urdu text, love shayari urdu, ghazal in urdu, urdu poetry in urdu text, love poetry in urdu romantic, urdu shayari on life, deep lines in urdu, sad love poetry in urdu, urdu poetry sms, best shayari in urdu, very sad poetry in urdu images, novels in urdu pdf, urdu books, bewafa poetry in urdu, best urdu novels, urdu poetry text copy, urdu shayari in english, shero shayari urdu, romantic shayari in urdu, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, 2 line urdu poetry copy paste, famous urdu novels, beautiful poetry in urdu, udas poetry, muhabbat poetry, urdu sher, barish poetry in urdu, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, ahmed faraz poetry, mohabbat shayari urdu, sad poetry sms, urdu poetry written, love poetry in urdu romantic 2 line, attitude poetry in urdu text, heart touching poetry in urdu, sad ghazal in urdu, 2 line urdu poetry romantic sms, ahmad faraz poetry, poetry about life in urdu, urdu words for poetry, urdu poetry copy paste, urdu poetry in english, ahmad faraz shayari, bewafa shayari urdu, love poetry in urdu 2 lines, urdu ghazal poetry, poetry in urdu 2 lines deep sad lines in urdu, faraz shayari, urdu words for shayari, urdu sad poetry sms in urdu writing, dard poetry, happy poetry in urdu, urdu love poetry for her, faraz poetry, ali zaryoun shayari, shayari in urdu words, very sad shayari urdu, ishq poetry in urdu, urdu shayari images, 2 lines poetry, new poetry in urdu, urdu poetry in hindi, urdu poetry lines, one line poetry in urdu, poetry on beauty in urdu, one line poetry in urdu text, muskurahat poetry, sad poetry in urdu 2 lines without images, mohabbat poetry in urdu, nice poetry in urdu, best love poetry in urdu, muhabbat poetry in urdu, best lines in urdu, deep love poetry in urdu, beautiful shayari in urdu, urdu sad poetry sms, novel urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, islamic books urdu, udas naslain pdf, urdu poetry books, urdu novel online reading, jasoosi digest, novel novels in urdu, urdu audio books, top urdu novels, romance novel best novels in urdu, wasif ali wasif books pdf, urdu language books pdf, tahir javed mughal novels, urdu digest pdf, naseem hijazi books, best books to read in urdu, ashfaq ahmed books pdf, dastak novel, a hameed novels, psychology books in urdu, bano qudsia novels, pakeeza anchal romantic novel, pyasa sawan novel, free urdu novels, anchal digest novels, raqs bismil nove,l urdu poetry books pdf, new novel 2021 in urdu, urdu novels 2021, love story novel in urdu, urdu history books, raja gidh read online, jasoosi novel, urdu love novels list, pakistani novels in urdu, urdu historical novels, romance novel famous urdu novels list, romance novel urdu novels list kdrama urdu, Desi kimchi, Desi kdrama fans, Urdu kdrama, Urdu web, Kdrama maza, Korean masti, korean dramas, kdrama, k drama, best korean drama, korean drama 2020, korean drama 2021, kdrama 2021 best kdrama, korean series, kdramas to watch, korean drama website, kdrama website, netflix korean drama, asian drama, best korean drama 2020, top korean drama, new korean drama 2021, best korean drama 2021, best kdrama 2020, best kdrama to watch, best korean drama on netflix, best korean series, best kdrama 2021, kdrama netflix, k drama urdu, www korean drama, watch korean drama, best k dramas on netflix, netflix korean drama 2021, best kdrama on netflix, new korean drama, www kdrama, k drama 2021, korean series on netflix, netflix korean drama 2020, top 10 korean drama, top kdrama, top korean drama 2020, k dramas to watch, 2021 korean drama, korean drama series, best korean series on netflix, new kdrama 2021, 2020 kdrama, 2020 korean drama, 2021 kdrama, k drama netflix, best k drama to watch, romance kdrama, k drama 2020, new korean drama 2020, latest korean drama 2021, korean dramas to watch, top korean drama 2021, watch kdrama, korean tv series, highest rated korean drama, korean drama in hindi, korean drama shows, top kdrama 2021, new kdrama, watch asian drama, popular korean drama, kdrama online, latest korean drama, korean drama online, korean netflix series, korean tv shows, korean shows, must watch kdrama, korean shows on netflix, famous korean dramas, romance korean drama, top kdrama 2020, most popular korean drama, korean series 2021, must watch korean drama, new kdrama 2020, best romance kdrama, popular kdrama, good kdramas, korean drama in hindi dubbed, korean series 2020, kdramas 2020, best korean shows on netflix, korean drama 2021 netflix, top k dramas, top rated korean drama, watch kdrama online, korean romance, top korean series, netflix k drama, good korean dramas, latest kdrama 2021, most watched korean drama, top 10 kdrama, famous kdrama, all in korean drama, best k drama 2020, urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, pakeeza anchal, l online reading, pakeeza anchal novel online reading, urdu novel bank, urdu novel platform, yaar zinda sohbat baqi, desi story urdu,urdu web novel salam korea **Salam Korea: Aik aisa rishta jo aap ko kore aur pakistan ki saqafat se aashna karaye ga.** (Salam Korea: A relationship that will introduce you to the culture of Korea and Pakistan.)

salam korea
by vaiza zaidi
قسط 33

ڈرائیور کچھ نہ سمجھتے ہوئے اسکے پیچھے بھاگا ۔ اس نے تیزی سے جا کر سنتھیا کے کمرے کا دروازہ کھٹکایا . چند دستکوں پر بھی نہ کھلا تو اس نے زور لگا کر کھول دیا تھا۔ کمرے میں تالا نہیں لگا تھا مگر کوئی تھا بھی نہیں۔
کیا ہوا آپ جانتے ہیں کون ہے سنتھیا ؟
ڈرائور نے حیرت سے پوچھا تھا۔اسکے پاس جواب دینے کا وقت نہیں تھا۔ اس نے فورا فون نکال کر کال ملانی چاہی۔ مگر کس کو کال ملائے؟ سنتھیا کا تو نمبر اسکے پاس تھا بھی نہیں۔ ۔ سر جھٹک کر وہ خود ہی ڈھونڈنے کا ارادہ کرتا گوشی وون سے نکلا
میں آپکو لے چلتا ہوں جہاں جانا۔
ڈرائیور اسکے پیچھے بھاگا آیا تھا۔ تیزی سے ڈرائئونگ سیٹ کی طرف بڑھتے ہوئے اس نے کہا تھا۔ کم سن سر ہلاتا ٹیکسی کی جانب بڑھا جب اسے شائبہ سا گزرا ۔ کن اکھیوں سے نظر آتا وجود۔ وہ آیکدم سے رکا۔ اس نے گردن گھما کر دیکھا ۔ داخلی گلی سے خراماں خراماں چل کر آتی سنتھیا سامنے ہی کھڑی تھی۔ ہاتھ میں کافی کا مگ تھامے۔ اسے دیکھتا پا کرشائد یونہی ٹھٹھک کر رکی تھی۔
ہائیش۔
اس کی جیسے جان میں جان آئی تھی۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری طبیعت ٹھیک نہیں تھی۔ سوچا کافی پی لوں تو بہتر محسوس کروں گی۔ یہیں کنوینیئنس اسٹور تک گئ تھی بس۔
گارڈن کے باہر سنگی کیاری سے ٹکے کافی کا گھونٹ بھرتی وہ مضبوط انداز میں بتا رہی تھی۔ کم سن نے گہری سانس لی۔
میں معزرت خواہ ہوں۔ یقینا زبان الگ ہونے کی وجہ سے کوئی غلط فہمی ہوگئ ہوگی۔ میں بنیاد پرست مسیحی ہوں حرام موت مرنے کا سوچ بھی نہیں سکتی۔
اس نے ہنس کر کہا تھا۔ کم سن نے بغور اسکی شکل دیکھی ۔ اتنی بغور کہ وہ تھوڑا جز بز سی ہوگئی۔
چلتا ہوں میں۔ تمہارا بوائے فرینڈ بے ہوش پڑا ہے اپنے کمرے میں۔اسے ہی چھوڑنے آیا تھا میں۔
وہ اٹھ کھڑا ہوا۔
کیا ہوا اسے؟
وہ گھبرا کے بولی تھی۔
پی کے ٹن ہے۔
اس کا انداز تسلی دلانے والا تھا۔ سنتھیا کچھ کہتے کہتے ہونٹ بھینچ گئ۔
تمہارا نمبر میرے پاس نہیں تھا کہ میں کال کرکے پوچھ لیتا معاملہ۔
کم سن نے کہا تو جوابا اس نے بس سر ہلادیا۔وہ چند لمحے اسے دیکھتا رہا۔ پھر والٹ سے اپنا کارڈ نکال کر اسکی جانب بڑھا دیا۔ بڑھاتے ہوئے اس نے حسب عادت اپنا دائیں بازو کی کلائی چھو لی تھی۔
میرا نمبر رکھ لو۔ کبھی ضرورت پڑ سکتی ہے۔کام آئے گا۔
اب وہ اتنی بھئ بد تمیز نہیں تھی۔ ہاتھ بڑھا کر کارڈ لے لیا۔ سیدھا ہاتھ بڑھا کر کارڈ لے لیا۔ کورین ثقافت میں یہ خاصی معیوب حرکت تھی۔ ہمیشہ کورین کسی کو کوئی چیز دیتے یا لیتے وقت اپنا دایاں ہاتھ کلائی سے چھو لیتے ہیں۔یا دونوں ہاتھ بڑھاتے ہیں۔
سنتھیا جیسے اسکا کارڈ حفظ کر رہی تھی۔
وہ مزید بھئ کچھ پوچھنا چاہتا تھا مگر پھر ہمت نہ ہوئی۔
کرم۔
اس نے اتنا آہستہ سے کہہ کر رخصت چاہی کہ خود بھی بمشکل آواز آئی ۔ دو قدم ہی بڑھائے ہوں گے کہ سنتھیا نے پکار لیا۔
کم سن۔۔
اپنے نام کا اتنا مختلف تلفظ اسکے چہرے پر مسکراہٹ لے آیا تھا۔ اس نے دباتے ہوئے مڑ کر دیکھا۔
یہ تمہاری کمپنی ہے؟ کوئی جاب ہے ایسی جو میں کر سکتی ہوں اس میں؟
اس نے سیدھا سوال کیا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ سیدھا اپنے کمرے میں آکر اپنے بستر پر گرا تھا۔
چت لیٹے وہ چند گھنٹوں قبل والے منظر میں ہی اٹکا تھا۔
لوگوں میں سے رستہ بناتے وہ جب اریزہ تک پہنچا تھا تو حقیقتا اسے یوں بے دم سا دیکھ کر ایک لمحے کو اسکے حواس گل ہو گئے تھے۔
اریزہ۔ وہ بے تابی سے پکارتا گھٹنوں کے بل جھکا تھا۔ اسکے گرد لڑکے لڑکیوں نے گھیرا سا بنا دیا تھا تاکہ کوئی آگے نہ آسکے۔ رضاکاروں کے اسے اسٹریچر پر لٹا کر اٹھانے تک وہ اسے پکارتا رہا تھا۔ اور اس نے لمحہ بھر کیلئے آنکھ کھول کر دیکھا تھا۔ ہاتھ بڑھایا تھا۔ اسکی انگلیاں زخمی تھیں مگر اس نے اسکی جیکٹ مٹھی میں پکڑ لی تھی۔ اور کچھ کہنا بھی چاہا تھا۔
اس نے کروٹ لی تو جیکٹ کی جیب میں رکھی انگوٹھی کا کیس کمر میں چبھا تھا۔ اس نے سی کرکے ایکدم سے اٹھ کر بیٹھتے ہوئے جیب سے کیس نکالا۔
جانے اسکی قسمت کے ستارے گردش میں کیوں تھے۔ اس نے کیس سائیڈ ٹیبل پر رکھ دیا۔ تبھی اسکی نگاہ سائیڈ ٹیبل پر رکھے گلابی لفافے پر پڑی۔ اس نے اٹھا کر کھولا۔ بے حد خوبصورت ہلکے گلابی پھولوں کا گلدستہ بنا ہوا تھا جس پر ایک کوریائی نظم لکھی تھی۔
تم جو چاہو سمندر کی گہرائی ماپنا
تو تم چاند بنو کہ
لہروں میں تلاطم بپا کرسکو
جو تم دنیاپر حکومت کی آرزو کرو
تو یک جنبش سے موسم بدل سکو
یہ میری آرزو ہے
تمہاری ہر خواہش کا کئی گنا تمہیں ملے
مگر تم نے فقط ستاروں کی چاہ کی ہے۔
تو جان لو
یہ تو تمہارے قسمت میں پہلے سے ہی
لکھے ہیں
مبارک ہو میرے بھائی جو چاہا ملا تمہیں۔ سدا خوش رہو
مجھے پتہ ہے تمہیں کوئی لڑکی انکار کر ہی نہیں سکتی ہے۔
یہ کارڈ نونا نے اسکے لیئے لکھا ہوگا۔اسکے چہرے پر پھیکی سی مسکراہٹ آئی تھی۔۔ کارڈ دیکھتے وہ دھیرے سے بڑبڑایا۔۔
کتنئ خوش فہمی ہے آپکو میرے بارے میں۔ کیا کہوں
اس نے آج پہلی بار میرا ہاتھ تھاما تھا۔ میرا نام بھی لیا تھا۔ مگر۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوپ نے کہا تھا وہ گھر نہیں آئے گی آج جبھی رات کو تمہاری وجہ سے میں واپس آئی ورنہ میرا قطعی ارادہ نہیں تھاواپس آنے کا۔ یون بن تو کہہ رہا تھا کہ میں سامان لیکر ہی چلوں صبح وہ بجائے یہاں آنے کے مجھے سیدھا بس اڈے لے جاتا۔
گوارا اسکے سامنے ٹوسٹ اور ہاف فرائی انڈہ رکھتے کہہ رہی تھی۔ اسکی تین انگلیاں کچلی گئ تھیں شائد کسی کے پائوں کے نیچے آکر ۔ بینڈیج تو اس نے نہیں اتاری تھی مگر ہاتھ پھوڑے کی طرح دکھ رہا تھا۔ سو وہ الٹے ہاتھ سے ہی ٹوسٹ کا نوالہ بنانے کی کوشش کر رہی تھی۔
شکریہ یار تم سراپا پیار ہو۔
اریزہ کے انگریزی میں مکھن لگانے پر وہ ہنس دی۔
پھر ٹوسٹ کا نوالہ بنا کر اسکے منہ میں ڈالا۔
مجھے فکر ہو رہی ہے تمہاری۔ ایسا کرتی ہوں ٹکٹ کینسل کرا دیتی ہوں آج ڈاکٹر کے پاس چلتے ہیں۔ پراپر چیک اپ کرائو کوئی فریکچر نہ ہوگیا ہو۔
گوارا سچ مچ فکر مند ہو رہی تھی۔
ارے بچی تھوڑی ہوں میں۔ جائو تم میں خود چلی جائوں گی ڈاکٹر کے پاس فکر نہ کرو۔
اریزہ کو اسکا خلوص شرمندہ کر رہا تھا۔
ہاں بچی نہیں ہو جبھی اندھیرے سے ڈرتی ہو اکیلے رہنے سے ڈرتی ہو۔ مجھے حیرت ہے ویسے کیا واقعی کبھی پاکستان میں اکیلی نہیں رہی ہو گھر میں۔میرا مطلب ہے والدین ہر وقت تو ساتھ نہیں ہوتے نا۔
وہ اپنے ماحول کے مطابق کہہ رہی تھی۔
پاکستان میں ایسا نہیں ہوتا۔
اسکا جواب مختصر تھا۔ گوارا کندھے اچکا کر رہ گئ۔
اس نے بے دلی سے ناشتہ ختم کیا تھا۔
جائو فریش ہو لو جاتے ہوئے اچھی سی تصویر بنا کر لیکر جائوں گی تمہاری تاکہ سفر اچھا گزرے میرا۔
گوارا نے جیسے اسے پچکارا۔وہ یونہی سستی سے اٹھ کر نہانے گھس گئ۔ اپنے بیگ کو سمیٹ کر وہ بیڈ پر دھپ سےبیٹھی پھر ایکدم اٹھی۔ وہ شائد اریزہ کا موبائل تھا۔
اس نے ایک نظر بند دروازے پر ڈالی پھر اسکا موبائل اٹھا لیا۔ لاک نہیں تھا۔ وہ سہولت سے آلتی پالتی مار کر بیٹھ گئ
اریزہ آئم سوری مگر ہیون کا مسلئہ بھی اہم ہے مجھے ہی تم دونوں کی مدد کرنی پڑے گی۔
وہ سہولت سے اسکے موبائل کی گیلری کھول کر دیکھنے لگی۔سنتھیا اور اریزہ کی تصویروں کا ایک انبار تھا۔بہت اسکرال کرکے نیچے جا کے اسے وہ مطلوبہ تصویریں ملی تھیں۔ لال جوڑا۔ دلہن کا اوتار۔ ساتھ وہ استحقاق سے بیٹھا شخص جو ٹھیک ٹھاک تیار تھا۔دلہن کی ٹکر کا ہی۔ پھر خیال آیا تو اپنا موبائل اٹھا کر تصویر کی تصویر کھینچ لی۔
تبھئ ہیون کالنگ لکھا نظر آیا۔ وہ گڑبڑا سی گئ
اسکا موبائل وابریٹ کر رہا تھا اس نے گڑبڑاہٹ میں نو کرکے رکھنا چاہا مگر کال موصول ہوگئ
اسلام وعلیکم صبح بخیر۔
ہیون کی پرجوش سی آواز۔ وہ ٹھس سی ہو کر رہ گئ۔
آننیانگ۔ بمشکل منہ سے نکلا تھا
گوارا۔ ؟ وہ فورا آواز پہچان گیا
دے۔ اس نے سوچ کے جواب دیا تھا
اریزہ کہاں ہے؟
وہ جہاں بھئ ہے تم کہاں ہو؟ کیا کر رہے ہو؟
وہ چڑھ دوڑی۔
کیا ہوا گھر میں ہوں تیار ہو رہا ہوں ۔۔ وہ حیران ہوا اسکے انداز پر صبح صبح بلاوجہ
بس تیاریاں ہی ختم نہیں ہو رہیں تمہاری۔جانے کس انتظار میں ہو۔ ایک ذرا سا زبان نہیں ہلائی جا رہی ہے تم سے۔
وہ بھنائی۔
تم اگر کورین ڈرامے دیکھنے کے عادی ہوتےتو تمہاری احساس ہوتا سائیڈ ہیرو والی سب غلطیاں دہرارہے ہو تم۔
گوارا کو اتنا غصہ آرہا تھا کہ دل کر رہا تھا فون سے نکل کر کان کھینچ لے اسکے
ہیون اسکی بات پر الجھن ذدہ انداز میں فون دیکھنے لگا۔
مطلب۔ وہ واقعی نہیں سمجھا تھا
مطلب سادہ سا ہے۔ مواقع بھی اسی کو ملتے ہیں جسکو ان مواقعوں سے فائدہ اٹھانا آتاہو۔ ذرا گنو کتنے مواقع اب تک گنوا چکے ہو ۔ سادہ سا سارانگھیئے کہنے میں اتنا ہچکچا کیوں رہے ہو۔ اریزہ جتنی بھی مختلف لڑکی سہی سر تو نہیں پھاڑ دے گی نا تمہارا آئی لو یو کہنے پر۔ کل بہترین موقع تھا کہتے اسے آئی لو یو مگر نہیں جانے کس کے انتظار میں ہو تم ۔کل کلاں کو کسی اور نے تم سے ذیادہ ہمت دکھا دی تو بیٹھے رہنا سر پر ہاتھ رکھ کر روتے۔
گوارا نے بنا لحاظ ٹھیک ٹھاک سنا دی۔
کل کیسے کہتا ۔۔ وہ چڑ کر کہتے یکدم رکا۔ خیال آیا تو پوچھنےلگا
کل اریزہ نے بتایا تمہیں۔
ہاں گر گئ تھی وہ اسکا ہاتھ زخمی ہوگیاہے۔ تم کہاں تھے اس وقت ویسے؟ چوٹ لگنے کیسے دی اسے ؟
گوارا نے کٹہرے میں لا کھڑا کیا تھا اسے۔
اب کیسی ہے وہ؟
وہ احتیاط سے بات کر رہا تھا۔
ہاتھ سوجا ہوا ہے میں اسے کہہ رہی تھی ایکسرے کروائے اور ڈریسنگ بھی دوبارہ کروانی ہوگی اسے۔ کہا تو ہے اس نے آج جائے گی۔ تم لے جائونا اسے۔
وہ جتانے والے انداز میں بولی۔
ہوں اور ہوپ کیسی ہے؟
ہیون نے پوچھا تو وہ الٹا اسے پوچھنے لگی
پتہ نہیں رات گھر نہیں آئی تم کیوں پوچھ رہے ہواسکو کیا ہونا؟
ایسے ہی ۔۔ کل وہ بھی آئی تھی کانسرٹ میں۔
وہ ٹال گیا۔
اچھا اور اس ہوپ نے تمہارے منہ پر آکر ٹیپ چپکا دی ہوگی کہ۔خبردار آج اریزہ کو پرپوز نہ کرنا ہیں۔
وہ بھی جوابا تیز ہو کر بولی تو ہیون قہقہہ لگا کر ہنس پڑا
تم بھی نا۔۔۔اچھا اریزہ کو بتا دینا میں آرہا ہوں تیار رہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اتنی اداس سی شکل بنا کر اسے دروازے تک چھوڑنے آئی تھی کہ گوارا دیکھ کر رہ گئ
تم میرے ساتھ ہی چلو مجھے پتہ ہے اس ہوپ کے ساتھ رہناکتنا ہوپ لیس ہے۔
گوارا نے کہہ ہی دیا۔ وہ ہنس دی۔
یار میں جاب کرتی ہوں اب اور اب اکیڈمی جوائن کر رہی ہوں ہنگل سیکھوں گی تھوڑا پڑھائی پر دھیان دوں گئ مجھے یہاں سے اب ڈگری لیکر ہی جانا ہے۔ چھٹیوں کا وقت نہیں میرے پاس۔۔۔
اس کا ارادہ مصمم تھا۔ گوارا نے مسکرا کر سر ہلا دیا
اچھا سنو وہ ہیون کی کال آئی تھی کہہ رہا تھا تیار رہنا وہ آرہا ہے یاد سے ڈاکٹر کے پاس جانا ہے تمہیں۔
وہ جاتے جاتے کچھ یاد آنے پر پلٹی۔
تمہیں فون آیا تھا؟ وہ حیران ہوئی
نہیں تمہارا فون بج رہا تھا میں نے اٹھا لیا۔ نام ہیون لکھا آرہا تھا انگلش میں تھا تو میں نے پڑھ کر اٹھا لیا۔تم لوگ فون بک میں اپنی زبان میں نام سیو نہیں کرتے؟
گوارا حیران تھی۔ اریزہ نفی میں سر ہلا کر رہ گئ۔
اچھا یار میں نکلتی ہوں یوں بن اب کیا اوپر آئے گا پارکنگ میں ہی رکنے کو کہا ہے میں نے۔ اور تمہیں نیچے تک آنے کی ضرورت نہیں بہت سردی ہے آج۔
اسے گلے لگا کر پیار کرتے ہوئے گوارا نے محبت سے کہا تھا۔
میں بہت یاد کروں گی تمہیں۔ اریزہ نے اسکے کندھے پر تھوڑی رکھ کر دل سے کہا تھا
میں بھی۔ گوارا بھی سچ مچ اداس ہو رہی تھی
فون کرنا پہنچ کر۔
اسے دروازے سے رخصت کرتے کرتے اس نے یاد دہانی کرائی۔ جوابا گوارا مسکرا کر سر ہلاتے لفٹ کی جانب بڑھ گئ۔ دروازہ بند کرکے اندر آئی تو یکدم ویرانی کا سا احساس ہوا تھا ۔۔
یہ کوریا ہے۔یہاں جن بھوت نہیں ہو سکتے۔
تھوک نگل کر اس نے خود کو یقین دلایا۔ پھر اپارٹمنٹ کی ایک ایک بتی جلادی۔
ٹئ وی بھی آن کر دیا۔
اکیلے کمرے میں رہنا اس نے کس مشکل سے شروع کیا تھا کجا اکیلے گھر میں۔
کچن میں برتن دھونے لگ گئ سب سمیٹا۔۔۔ ایویں ہی بار بار اسے وہم ہو رہا تھا کوئی چل پھر رہا ہےیا اچانک کوئی بھیانک سی شکل والا پیچھے سے آکر کھڑا ہوجائے گا۔
اس نے زو رزور سے آیت الکرسی پڑھ کر خود پر پھونکی۔ اب تھوڑا محفوظ محفوظ محسوس ہورہا تھا۔ مگر یہ احساس وقتی رہا۔
تبھی ٹی وی پر کوئی پر اسرار سی موسیقی چلنے لگی۔
بس اسکی کمی تھی۔
وہ دانت کچکچاتی ٹی وی کے پاس آئی۔
کسی ڈرائونی فلم کا اشتہار تھا ایکدم ہی چیخ اور بھیانک سی شکل ٹی وی پر چھائئ۔۔ اس نے جھٹ چینل بدلا۔
اسکی اپنی آواز گم۔وہیں دھپ سے صوفے پر گر سی گئ۔اب سوجو کا اشتہار چلنے لگا۔
صبح صبح کون ڈرائونی فلم کا اشتہار لگاتا ہے۔ جاہل کورین۔۔
اسکا بس چلتا تو ٹی وی میں سے نکل کر صبح صبح منحوس شکل دکھانے والے کی شکل منحوس کر دیتی مار مار کر۔
مجھے ڈر نہیں لگ رہا ۔۔ سب ٹھیک ہے
اس نے بول کر خود کو تسلی کرانی چاہی۔
تبھی اطلاعی گھنٹی بج اٹھئ۔۔
اسکا دل اچھل کر حلق میں آگیا۔
کاش گوارا واپس آگئ ہو۔
یہ امید کرتے ہوئے اسے اس امید کے بودا ہونے کا احساس تھا۔
اطلاعی گھنٹی دوبارہ بجی۔
وہ ہمت کرکے اٹھ ہی گئ۔۔ پہلے کیمرے سے باہر دیکھا تو اطمینان کی لہر سی دوڑ گئ۔
اسلام و علیکم۔
صبح کی طرح تروتازہ مسکراہٹ تازہ دم سا خوشبوئوں میں بسا ہیون ہاتھ میں ایک بڑا سا شاپر لیئےکھڑا تھا۔
وعلیکم السلام۔ وہ خوش دلی سے کہتی ایک جانب ہوگئ۔
مجھے لگا تھا تم تیار ہو کر میرا انتظار کر رہی ہوگی۔
اسے سویٹ پینٹ اور اپر میں ملبوس ملگجے سے حلیے میں کھڑا دیکھ کراندر آتے ہوئے وہ ٹوکے بنا نہ رہ سکا۔
وہ شرمندہ سی ہو کر دروازہ بند کرنے لگی۔
بس پانچ منٹ لگیں گے۔ کافی پیوگے؟
اس نے تسلی دینی چاہی۔
نہیں ابھی پی کر ہی آرہا ہوں۔
وہ سہولت سے صوفے پر بیٹھ کرٹی وی دیکھنے لگا۔
وہ اطمینان سے کمرے میں آکر کپڑے لیکر باتھ روم میں گھس گئ۔
جینز ہائی نیک اور اپر پہن کر وہ اپنے گیلے بال ڈرائر کر رہی تھی جب ہیون نے دروازے پر دستک دی۔۔

گیارہ بجے کلاس ہے تمہاری کتنا وقت لوگی اور؟
اسکے کہنے پر وہ چونکی۔
کونسی کلاس؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کامن سینس ہوتا ہے زخم کو صاف کرنا ۔
وہ خفگئ سے کہہ رہا تھا۔ گوارا کے کچن کی کیبنٹس کھول کھول کر دیکھتے اسے مطلوبہ چیز نظر آہی گئ۔
فرسٹ ایڈ باکس۔
اریزہ تھوڑی ہتھیلی پر جمائے کہنی میز پر ٹکائے ایک ٹک گھور رہی تھی۔
تم کتنے لمبے ہو۔ اس کیبنٹ تک میرا ہاتھ پہنچتا تک نہیں۔ گوارا کو بھی پنجوں کے بل کھڑا ہونا پڑتا ہے اسکو کھولنے کیلئے اور تم ۔۔
وہ سچ مچ یہی سوچ رہی تھی۔ سو کہہ دیا۔ ہیون ہنس دیا۔
میں اسے تعریف کے طور پرلیتا ہوں۔ بس قد ہی اچھا ہئ میرا ہے چلو کم از کم کچھ تو اچھا ہے۔
وہ بے چاری سی شکل بناتا اسکے مقابل آن بیٹھا۔ اسکا ہاتھ تھام کر احتیاط سے بینڈیج اتارنے لگا۔
نہیں تمہارے خد وخال بھی اچھے ہیں بالوں کا رنگ بھی سب سے اچھی بات ہے کہ تم دھیمے مزاج کے ہو ہر وقت مسکراتے رہتے ہو مجھے غصہ ور لوگ۔
اپنی تعریفوں پر ہیون نے یونہی سر اٹھا کر اسے دیکھا اسکے چہرے پر شرارتی سی مسکراہٹ در آئی۔ اریزہ ایکدم گڑبڑا کر چپ ہوئی۔
او رکیا کیا اچھا ہے مجھ میں؟۔ وہ اسکا زخم محلول سے صاف کرتے پوچھ رہا تھا۔
آہ۔ جواب تو کیا دینا تھا لگا تھا آگ ہی لگ گئ ہے ہاتھ میں اس نے تڑپ کر ہاتھ کھینچنا چاہا مگر ہیون کی گرفت مضبوط تھئ۔
بیان۔۔ اس نے فورا معزرت کی وہ ہلکے ہلکے سے پھونکیں بھی مار رہا تھا۔
زخم صاف کرنا ضروری ہے۔ سوری۔
اس نے کہتے ہوئے اسکی شکل دیکھی۔ آنکھوں میں موٹے موٹے آنسو بھرے وہ ضبط کرنے کی کوشش کر رہی تھی۔
اس نے جلدی سے آئنٹمنٹ کا لیپ کیا۔ اسکی انگلیاں چھپ سی گئیں سفید مادے میں۔
کل ڈاکٹر نے تمہاری انگلیاں دیکھی تو تھیں فریکچر نہیں ہے مگر پھر بھی اکیڈمی سے واپسی پر ہم ڈاکٹر کے پاس چلیں گے۔ ایکسرے کروالینا چاہیئے تسلی کیلئے۔
وہ مزید کہہ رہا تھا۔
اکیڈمی؟ اریزہ نے سوالیہ انداز میں دہرایا
تم نے فارم فل کر لیا ہے نا ؟ پرسوں کہا تو تھا کل چلیں گے اکیڈمئ؟
ہیون کے پوچھنے پر وہ گڑ بڑا گئ۔
نہیں وہ۔ تم نے کل کا کہا تھا نا کل تو ہم کانسرٹ گئے تھے۔
اریزہ اور غلطئ مان لے اپنی کبھی۔
کل مطلب اگلا کاروباری دن اتوار کو اکیڈمی بھوتوں سے ملاقات کیلئے جانا تھا ؟
ہیون کی بات پر وہ سر کھجانے لگی۔
ہم لوگ ایسے موقع پر طنز میں کہتے کہ اتوار کو صفائی کرنے جانا تھا کیا۔
وہ ہنسی ہیون مسکرایا تک نہیں تو خجل سی ہو کر اٹھنا پڑا۔ خالی فارم لا کر اسکے سامنے رکھا۔ہیون اسے تاسف سے دیکھ کر رہ گیا۔
زندگئ میں کبھی میں نے کوئی فارم فل نہیں کیا ہمیشہ صارم فل کرتا ہے چاہے اسکول کا ہو کالج کا یا یونیورسٹی کا اور تو اور۔
اسکی لن ترانی سنتے وہ پوری توجہ سے فارم بھرنے لگا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
باہر دھوپ نکلی ہوئی تھی پھر بھی اسے سردی محسوس ہو رہی تھی۔ گرم لانگ کوٹ کے نیچے اس نے موٹا سویٹر بھی پہن لیا تھا گلے میں مفلر ڈالا ہوا تھا پھر بھئ ناک سرخ اور ٹھنڈی ہوتی محسوس ہو رہی تھی اسے۔
اتنی سردی ہے نہیں ویسے۔
اسکے قدم سے قدم ملا کر چلتے ہوئے ہیون اسکا مزاق اڑا رہا تھا۔اوور کوٹ اس وقت تھوڑا گرم لگ رہا تھا مگر اتنا بھی نہیں۔
میرے لیئے ہے۔اس نے شان سے گردن اٹھا کر کہا تھا۔
تیز دھوپ نکلی ہوئی تھی۔ مگرخنکی لگ رہی تھی
ہم پیدل جائیں گے؟ اس نے یونہی پوچھا تھا
ہاں دو گلی۔چھوڑ کر ہی۔ہے۔ ہیون نے اطمینان دلایا۔
یہ وہی گلی ہے نا جس کے بارے میں تم خوفناک کہانی سنا رہے تھے۔
اس نے پہچان لی۔ ہیون محظوظ سے انداز میں سر ہلانے لگا
پتہ ہے ہمارے گھر کے قریب بھی ایک گلی کے بارے میں مشہور تھا کہ رات کو وہاں چڑیل پھرتی ہے۔ صارم کو بڑا شوق ہوتا تھا اسے دیکھنے کا۔ اکثر رات کو جب ہم واک کرنے جاتے مجھے اتنا ستاتا تھا ہر بار جس گلی میں مڑتے اسی کے بارے میں کہتا تھا کہ یہ ہے وہ گلی۔ اف بہت ڈرایا ہے اس نے مجھے۔ ایک بار تو رو پڑی تھی میں۔ بس جس دن رو پڑی اسکے بعد اس نے مجھے تنگ نہیں کیا۔
تمہیں ڈرنا نہیں چاہیئے یہ جن بھوت سب بکواس ہے۔ ایویں لوگ کہانیاں بناتے تھے وقت گزاری کیلئے۔
ہیون نے یونہی کہا تھا مگر اریزہ کو ایمان تھا انکے ہونے پر
کوئی نہیں ہوتے ہیں۔ ابھئ میں اکیلی تھی نا اپارٹمنٹ میں تو اتنا ڈر بھئ لگا مجھے بلا وجہ آہٹیں ہو رہی تھیں۔
اس نے جھر جھری سی لی۔
تم ڈر رہی تھیں کیوں؟ ہیون رک کر پوچھنے لگا
ویسے تو میں نے آیت الکرسی پڑھ لی تھی اگر کوئی چیز تھی بھی تو بھاگ گئ ہوگی مگر میں کبھی اکیلی رہی نہیں ہوں نا تو بلا وجہ وہم ہو رہا تھا شائد۔
اسے خود پر غصہ بھی آرہا تھا۔
گوارا تو چلی گئ ہوگئ ہوپ بھی سارا دن تو گھرمیں نہیں رہا کرے گی تو تم ڈرتی رہو گی؟
ہیون بہت سنجیدگی سے پوچھ رہا تھا
میں جاب پر بھی تو جائوں گی۔
وہ کندھے اچکا گئی۔
ہم ویسے یہاں رک کیوں گئے۔
اس نے یونہی ادھر ادھر دیکھا تو وہ اہم شاہراہ پر آچکے تھے۔ سامنے مارکیٹ تھی کچھ دفتر فوڈ پوائنٹ بھئ ۔۔
ہیون نے اشارہ دکھایا۔ ابھی ٹریفک رواں تھا پیدل چلنے والوں کا اشارہ بند تھآ۔وہ اتنا مگن ساتھ چلتی آئی تھی کہ کب سڑک آگئ اسے پتہ نہ لگا۔ اشارہ کھل گیا تھا
ہیون اسکے ساتھ اندر اسکول تک آیا تھا۔ دفتر میں فارم جمع کروا کر اسکی کلاس کی سلپ کارڈ سب کچھ لا کر اسکے ہاتھ میں تھمایا۔
گوماویو۔
اسکے انداز میں لاپروائئ تھی۔
یہ تمہارا بیگ۔ ہیون نے اسکو بیگ تھمایا۔
گرے اور بلیک امتزاج کا جدید فیشن کے مطابق خوبصورت سا کالج بیگ جس میں کئی کتابیں بھی تھیں۔وہ یہی سمجھی تھی کہ ہیون کا اپنا بیگ ہے۔
یہ۔ وہ جھجکی۔۔
میں اس سب کا بل بنا کر اکٹھے وصول لوں گا۔ فی الحال کلاس شروع ہونے والی ہے تمہاری۔
اس نے ذرا ڈپٹ کر کر کہا تو وہ چپ کر گئ۔۔
کرم۔ وہ کہہ کر جانے لگا مگر وہ اپنی جگہ ہی کھڑی تھی۔ نئئ جگہ اجنبئ شکلیں۔وہ یقینا جھجک رہی تھئ۔ وہ کچھ سوچ کر پلٹ آیا پھر ریسیپشن سے معلومات لیکر اسکو کلاس تک بٹھا کر گیا تھا۔
جب فارغ ہو جانا تو مجھے پیغام بھیج دینا میں آجائوں گا۔
اسکے کہنے پر وہ ہچکچا سی گئ۔
تم مت آنا۔ میں خود واپس چلی جائوں گی گھر۔
اسکی بات پر ہیون ایسے مسکرایا جیسے کسی بچے کی بات پر مسکراتے ہیں۔
ویسے تو واکنگ ڈسٹنس ہے مگر کیا تمہیں راستہ آتا ہے۔ ابھی میرے ساتھ آتے ہوئے تم نے اردگرد دیکھا تھا؟
اسکی بات پر زور و شور سے سر ہلاتے ہلاتے وہ رکی تھی۔ ہیون کھل کر ہنسا۔
کرم۔۔ وہ اجازت طلب کرتا چلا گیا۔ وہ اپنا سر تھام کر رہ گئ۔
کچھ ذیادہ ہی پیراسائیٹ بنتی جا رہی ہوں میں۔ اس نے دانت کچکچائے۔
آننیانگ واسے او۔
جماعت میں داخل ہوتے ہوئے انکے استاد نے خوش دلی سے سلام جھاڑا تھا۔ وہ ایکدم چوکنا سی ہو کر بیٹھی۔ سامنے دیکھا اور آنکھیں پھیل سی گئیں۔استاد محترم نے بھی طائرانہ نگاہ جماعت پر ڈالتے ہوئے اسکی موجودگی کو نوٹس کیا اور خوشدلی سے مسکرا دیئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کلاس فل ہیٹڈ تھئ۔ جہاں کلاس ختم ہونے پر سب طلبا ء جان چھٹی سو لاکھوں پائے کی مصداق باہر بھاگے تھے وہاں وہ آرام سے ایک کرسی پر بیٹھ کر دوسری پر پائوں رکھ کر سکون سے بیٹھ کر موبائل استعمال کرنے لگی۔وہ اسکو ہی دیکھ رہا تھا سب طلباء اٹھ اٹھ کر نکل گئے اسکا اطمینان قابل دید تھا۔ لانگ کوٹ جینز جوتے گلے میں مفلر وہ ملفوف تھی آج بھئ۔
وہ مسکرا کر سر جھٹکتا اسکے پاس ہی چلا آیا
ہیلو۔
اسکے قریب آکر کہنے پر وہ گڑبڑا کر سیدھی ہوئی
ہا۔۔ ہیلو۔
بہر حال وہ اب اسکا استاد تھا وہ مزے سے ٹانگ پر ٹانگ رکھے نیم دراز بیٹھئ تھی۔
کیسی ہو۔
وہ اطمینان سے اسکے قریب کرسی پر ٹک گیا
ٹھیک ہوں آپ کیسے ہو۔ اسے اسکے یوں قریب آ بیٹھنےپر حیرت ہوئی تھی مگر مسکرا کر ہی جواب دیا
آپ کی دو تین کلاسز مس ہو چکی ہیں ہنگل کی آج میری چوتھی کلاس تھی۔ آپ تو پیچھے رہ جائیں گی اس طرح۔
اس نے کہا تو وہ لاپروا سے انداز میں بولی
عام بول چال میں بالکل کوری نہیں ہوں میں آجکا لیکچر بھی سمجھ آیا ہے مجھے اور ہم جب یہاں آئے تھے سمسٹر کئ آغاز میں تو ہماری ابتدائی ہنگل کی کلاسز یونی میں ہوتی تھیں تھوڑی بہت آتی ہی ہے مجھے۔
علی مسکرا دیا
کھانے کا آرڈر کرتے ہوئے کیا جملہ بولنا چاہیے اگر آپ ویجیٹیرین ہوں؟
سادہ سوال۔ ساری ہنگل کے ترمرے سے آنکھوں کے سامنے ناچنے لگے۔۔ پہلا سبق نیا ٹیچر پکا گائودی سمجھے گا۔ اریزہ اپنے زنگ لگے دماغ کو رگڑ لو یہی وقت ہے۔ اس نے اپنے ذہن کے گھوڑے دوڑائے۔
ہیم سونگ چھےاو۔ ۔۔
اس نے چٹکی بجا کر جتانے والے انداز میں کہا۔
علی بے ساختہ ہنستا چلا گیا۔
اریزہ نے خاصئ حیرت سے اسکے ردعمل کو دیکھا۔۔۔
اگر یہ غلط ہے بھی تو آپکو مزاق اڑانے کی بجائے تصحیح کر دینا چاہیئے ۔۔
وہ خفا ہوگئ تھی۔ بیگ اٹھا کر ڈیسک سے اپنی ابتدائی ہنگل کی کتاب سمیٹنے لگی۔
خفا خفا سی منہ پھلائے۔ علی کو اپنی ہنسی کو بریک لگانی پڑی۔
ہیم پیگا چوسے او۔
یہ ہے درست جملہ۔ مطلب سور کا گوشت نکال کے دو۔
علی کا مقصد اسکو خفا کرنا نہیں تھا سو فورا تصحیح بھی کردی۔
اس نے سر ہلادیا۔ اور موبائل اٹھا کے دیکھنے لگی
میسج آیا تھا اسے۔
ویٹ۔
اسے اپنے ٹیچر کا مستقل ٹکٹکی جما کے دیکھنا سمجھ نہیں آرہا تھا۔۔
بھوک بھی لگ رہی تھی اور گھر بھی جانا تھا۔وہ اٹھ کھڑی ہوئئ
گھر جا رہی ہو ؟اسکئ ٹیچر کو آج بہت فکر ہو رہی تھی اسکی۔
جی۔وہ کہتے ہوئے کرسی پر بیٹھ گئ۔علی کی مسکراہٹ گہری ہوگئ۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ گیلری سے باہر جھانک رہی تھی۔ نرم گرم دھوپ بیچ دوپہر گیارہ سے تین کلاسز تھیں۔ سو اس وقت وہ دھوپ سینک سکتی تھی۔ اوور کوٹ اس نے گرمی لگنے پر اتار کر ریلنگ پر ٹانگ دیا۔ مگر ہائی نیک پہن رکھی تھی۔ اب اندر اسے پسینے آرہے تھے
تمہیں سردی بہت لگتی ہے عادت نہیں ہوئی ابھی؟
اس نے گرم گرم کافی اور چیز سینڈوچ کا شاپر اسے لا تھمایا۔
دے۔۔ وہ بس اتنا ہی کہہ سکی۔ عجیب لگ رہا تھا کہاں وہ اسکا استاد اور اب اس سے کافی اور چیز سینڈوچ کی ٹریٹ لینا۔
شاپر میں دو سینڈوچز تھے یقینا ایک وہ اپنے لیئے لایا تھا۔ اس نے ایک سینڈوچ نکال کر شاپر واپس کردیا۔
چیز سینڈوچ کھا کھا کے نفرت سی ہی ہونے لگی تھی۔ مگر بھوک بھئ لگ رہی تھی۔ اس نے کافی تیزی سے ختم کیا تھا۔
ہیون نہیں آیا ابھئ تک؟
علی نے پوچھا تو اس نے نفی میں سر ہلادیا۔
آتا ہوگا۔ بہت ذمہ دار لڑکا ہے۔تمہارا انتخاب اچھا ہے۔
اسکی بات پر اس نے ترچھی سی نگاہ ڈالی تو علی نے وضاحت دینے والے انداز میں کہا۔
اچھا لڑکا ہے ہیون۔۔۔ سچ کہوں بہت اچھا ہے۔
علی یقینا رشتہ کرانے والی عورتوں کی طرح دوبارہ تعریفوں کے پل باندھنے لگا ہے ۔ سمجھ کیا رہا ہے یہ۔
اس نے ناک چڑھائئ۔۔
ہیون مجھ سے جونئر ہوتا تھا۔ ہمیشہ سے توجہ کا۔مرکز رہا وہ ۔ ہمارے اسکول کا امیر ترین اور نہایت اچھے مزاج کا متحمل لڑکا۔ایک بار میرا جھگڑا ہوا تھا اسکے دوست سے اپنے دوست کو۔بچانے یہ بیچ میں آگیا تھا پے در پے کئی مکے کھا لیئے اس نے مجھ سے مگر تب بھی پلٹ کر ہاتھ نہیں اٹھایا بس مجھے روکتا رہا۔ بعد میں سب لڑکوں نے مجھے اتنا ڈرایا کہ یقینا اب اسکے ابا مجھے آسکول بدلنے پر مجبور کر دیں گے۔
وہ اسکے برعکس ہلکے پھلکے انداز میں قصہ سناتا چلا گیا
ہیون کا ذکروہ بھی اسکی تعریف اسے سننا اچھا لگا تھا
وہ بھی کافی دلچسپی سے سنتئ گئ
پھر؟ اس کے رکنے پر اریزہ نے فورا پوچھا۔ علی نے اپنی طرف سے بات مکمل کردی تھی مگر اسکے اشتیاق پر ذرا سا ہنس کر مزید بتانے لگا
اگلے دن ہیون آیا نہیں اسکول میں نے بھی سوچا جو ہوگا دیکھا جائے گا۔ دو تین دن بعد آیا چہرے کی سوجن کم ہوچکی تھی اس نے پوری کلاس کو ٹریٹ دی اور میرے لیئے الگ لنچ باکس لیکر آیا۔ سچی بات اسے دیکھ کر مجھے شرمندگی ہوئی بس پھر میں نے معزرت کی اور اسکے لائے رائس کیک کھا لئے۔
علی نے کندھے اچکائے۔ سنہری دھوپ میں اسکی بے تحاشا گوری رنگت چمک رہی تھی۔ پاکستان میں ہوتا تو فئیر اینڈ لولی کی ماڈل ہوتا۔ اریزہ کو سوچ کے ہنسی آگئ۔
کیا ہوا؟ علی نے دلچسپی سے اسکو ہنستے دیکھ کر پوچھا۔
کچھ نہیں۔ اس نے ٹالنا چاہا۔ مگر اسکے اصرار پر۔بتا دیا
جوابا اس نے خوب اونچا قہقہہ لگایا
پھر تو مجھے فورا پاکستان جانا چاہییے میرا مستقبل کافی روشن ہوگا پاکستان میں۔
علی محظوظ ہوا تھا۔ اریزہ سر کھجا کے رہ گئ۔ یقینا اسکی حس مزاح کافی اچھی تھی۔
ویسے پاکستان میں مسلمان ذیادہ ہیں ہے نا؟ مجھے امریکہ۔میں جتنے بھئ پاکستانی ملے سب مسلمان تھے۔ عیسائی کافی کم ہیں وہاں ۔۔
وہ کافی باتونی تھا یا اس کے ساتھ ہیون کی سہیلی ہونے کی وجہ سے اعزازی توجہ بخشی۔جا رہی تھی۔
ہاں کم ہیں مگر میری پکی سہیلی بھی عیسائی ہے۔ ہم ہمیشہ ساتھ رہتے آئے ہیں میری بہن جیسی ہے وہ۔
بولتے بولتے اسے دور سڑک پار کرتاہیون آتا دکھائی دیا۔
اچھا میں چلتی ہوں۔۔ اس نے کافی کا آخری گھونٹ بھرتے ہوئے بیگ کندھے پر سیدھا کیا۔عجلت میں ٹیک کئیر کہتی سیڑھیوں کی جانب بڑھ گئ۔ ہیون کی۔نگاہ ٹیرس پر کھڑے علی پر پڑی تو ہاتھ ہلانے لگا۔علی نے بھی خوشدلی سے ہاتھ ہلادیا
اریزہ تیز قدم اٹھاتی اسکے پاس پہنچ چکی تھی۔ شائد اسے گھرک رہی تھی کیونکہ ہیون مسکراتے ہوئے کان پکڑ رہا تھا۔مکمل منظر علی نے مسکرا کر سر جھٹکا تو یونہی ریلنگ پر ٹکے اس کوٹ پر نظر پڑی۔
ویٹ۔ہیلو۔ اس نے چونک کر آواز دے کر انہیں پکارنا چاہا مگر دونوں یونہی باتیں کرتے مڑنے لگے۔فاصلہ اتنا ذیادہ نہ تھا مگر دونوں شائد ایک دوسرے کے سوا کسی اور جانب متوجہ ہونا نہیں چاہتے تھے۔
علی نے کوٹ احتیاط سے اٹھا لیا۔ اب اسے کل ہی واپس لیا جا سکتا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چوٹ جتنئ بھی گہری ہو ذیادہ دوا لگانے سے زخم جلدی نہیں بھرتے۔
ڈاکٹر نے مسکرا کر کہا تھا۔ اس نے سوالیہ نگاہوں سے ہیون کو دیکھا وہ خفت سے سر کھجانے لگا۔ڈاکٹر نے اسکا ہاتھ نرمی سے صاف کرکے کچھ دوائیں لکھ دی تھیں ۔ ایکسرے کروا کر دکھانے کی بھی تاکید کی تھی۔
معانقہ کرکے ہیون اور وہ اکٹھے ہی باہر نکلے تھے۔ اسکا ایکسرے بالکل ٹھیک تھا۔ انگلیاں بس باہر سے ہی زخمی ہوئی تھیں۔ ہڈی محفوظ تھی۔ زخم صاف کروانے کی تاکید ہی اسے دوبارہ ملی۔
اسپتال سے نکلتے شام ہو چکی تھی۔ ہیون کا سارا دن یقینا اسکے ساتھ برباد ہوا تھا۔اسے شرمندگی سی ہورہی تھی۔ ہیون نے اس سے رات کے کھانے کا پوچھا مگر اس نے سہولت سے منع کردیا۔ وہ اب اسے گاڑی میں گھر چھوڑنے جا رہا تھا۔ مکمل طور پر سڑک پر متوجہ ہیون کو دیکھتے اسے پھر شرمندگی محسوس ہو رہی تھی۔
میں نے آج تمہیں بہت زحمت دی ہے ۔ آئی ایم سوری
اس نے کہہ ہی دیا۔
ہیون نے اسے باقائدہ گردن موڑ کر دیکھا۔
شکریہ۔
اسے بھئ احساس ہوا الفاظ غلط استعمال ہو گئے ہیں۔
مجھے بالکل زحمت نہیں محسوس ہوئی۔
اسکا جواب مختصر تھا۔
اریزہ میں تم سے بات کرنا چاہتا ہوں۔ کیا تم کل ڈنر پر چلو گی میرے ساتھ۔
بلا تمہید اس نے سوال کیا تھا۔
آج کیلئے تو وہ سہولت سے منع کر گئ تھی جبھی شائد۔
کیا بات کرنی ہے کرو۔
اس نے تجسس چھپاتے ہوئے کہا تھا۔
کل آٹھ بجے۔ ٹھیک۔۔
ا س نے گاڑی اسکی عمارت کے کمپائونڈ میں روکی تھی۔
ہوں ٹھیک ہے۔ بائے۔
وہ کیا کہتی سر ہلاتی اتر گئ۔ دوسری جانب سےگاڑی کا دروازہ کھول کر ہیون بھی اتر آیا۔ وہ سوالیہ نگاہوں سے دیکھنے لگی۔
ہوپ اگر نہ واپس آئی ہوئی تو تم ڈروگی۔
اس نے جیسے وضاحت کی۔ وہ یقینا اسکے ساتھ اپارٹمنٹ تک آنے والا تھا۔ ایک اور احسان۔
میں ہوپ سے پوچھ لیتی ہوں وہ آگئ ہوتو۔۔
اس نے کہتے ہوئے بیگ سے فون نکالا نکالتے ہوئے احساس ہوا کبھی اسکے او رہوپ کے درمیان اتنے تعلقات نہیں رہے کہ نمبر کا تبادلہ کرتیں دونوں۔
وہ شش و پنج میں پڑ گئ۔
ہیون نے سمجھ کر خود ہوپ کو فون ملا لیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم پاگل تو نہیں ہو گئ ہو؟
ایڈون نے ایکدم سے پیچھے سے آکر اسکوبازو سے پکڑ کر کھینچتے ہوئے بھینچی ہوئی آواز میں کہا تھا۔
وہ کنوینیئس اسٹور سے ناشتہ خریدنے آئی تھی پیمنٹ کرکے باہر نکلی ہی تھی کہ اس افتاد نے حقیقتا اسے سہما دیا ۔ اسکا ایک لمحے کو تو لگا دل ہی بند ہو گیا ہے۔
ایڈون کو اسکی حالت دیکھ کر تھوڑا خیال ہوا تو بازو چھوڑ کر دانت کچکچاتے ہوئے بولا
تم نے ماموں ممانی کو بتا دیا ؟ کوئی اندازہ ہے تمہیں کتنا بڑا بھونچال آچکا ہے وہاں؟ صبح سے تین فون آچکے ہیں انکے مجھے۔
تو تمہیں احساس ہوا پھر کہ میں لاوارث نہیں ہوں۔ مجھے پوچھنے والے لوگ ہیں جنکو مجھ سے سچ مچ محبت ہے جنکو میری زندگی کی پروا ہے ۔
وہ چٹخ کر بولی
تمہاری پروا مجھے بھی ہے جبھی یہاں تمہارے ساتھ خواری کاٹ رہا ہوں احمق لڑکی۔ ۔ ایڈون نے بمشکل اپنے لہجے پر قابو پایا۔گہری سانس لیکر چند لمحے ادھر ادھر دیکھ کر خود کو پرسکون کرنے لگا۔ سنتھیا ایک ٹک اسے دیکھ رہی تھی۔ وہ سچ مچ پریشان بلکہ کمزور تھکا تھکا بھی لگا۔ اسکا دل نرم سا پڑا۔۔
دیکھو ۔۔ اس نے کچھ سوچ کر اسکا ہاتھ تھاما۔
تم۔۔ کہتے ہوئے اسکے ہاتھ میں تھامے شاپر پر نگاہ پڑی تو کہنے کا ارادہ ملتوی کیا۔ کنوینئیس اسٹور کے باہر لگی میز کرسی گھسیٹ کر اسے بٹھایا اسکے ہاتھ سے شاپر لیکر ڈبل روٹی مکھن دودھ نکال کر میز پر سجائے۔
پہلے ناشتہ کرلیتے ہیں۔
اس کے کہنے پر سنتھیا بنا کوئی اعتراض کیئے خاموشی سے نشست سنبھالنے لگی۔ ایڈون کی آنکھیں سرخ ہو رہی تھیں چہرہ بھی تپا ہوا لگ رہا تھا۔جیسے بخار ہو۔اس نے توس نکال کرڈسپوز ایبل چمچ سے مکھن لگا کر اسکی جانب بڑھایا۔
تم کل دھت تھے نشے میں۔
اس نے جانے پوچھا تھا یا بتایا تھا۔
اس نے توس کی جانب ہاتھ نہیں بڑھایا تو ایڈون نے اسکا ہاتھ تھام کر توس پکڑایا۔
ہاں۔ یون بن کے ساتھ کلب گیا تھا وہاں تھوڑی پی لی تھی۔ وہی مجھے چھوڑ گیا ہوگا۔
اس نے وضاحت کی۔
کم سن آیا تھا چھوڑنے۔
اس نے توس کھانا شروع کیا۔ ایڈون نے سر جھٹکا۔
ہاں کم سن۔
وہ مکمل طور پر کھانے میں مگن تھا اور اسکی جانب دیکھنے سے دانستہ احتراظ کر رہا تھا۔وہ اس پر نگاہ جمائے تھی۔ رات کا منظر اسکی نگاہوں میں تازہ تھا۔ کم سن کے اطمینان دلانے کے باوجود وہ ایڈون کو دیکھنے آئی تھی۔ بیڈ پر اوندھاترچھا گرا تھا۔ کمبل ڈالنا تو دور اسکے جوتے بھئ نہیں اتارے تھے کسی نے۔ موبائل زمین پر شائد اسکی جیب سے پھسل کر گرا تھا۔ اس نے آگے بڑھ کر اسکے جوتے اتارے اسکی ٹانگیں احتیاط سے بیڈ پر کیں سر کے نیچے تکیہ رکھا کمبل کھول کر اڑھایا۔ موبائل تکیے کے پاس رکھا۔ اور
ایڈون کا ناشتہ ختم ہو چکا تھا۔ اس نے بھی سلائس ختم کر لیا تھاخاموشی سے واپسی کا راستہ اختیار کرتے ہوئے وہ بنا تمہید بولا تھا۔
صبح صبح ماموں کا فون آیا تھا مجھے۔ انہوں نے مجھے جو کہا وہ الگ داستان ہے۔ میں نے ایک لفظ بھی نہیں کہا مجھے وہ غلط نہیں لگے۔ کوئی بھی ہوتا انکی جگہ اسکا یہی ردعمل ہوتا۔بہر حال وہ بھی میرے فیصلے کے حق میں ہیں۔ پہلی فرصت میں ابارشن کروانے کا کہا ہے انہوں نے۔ تم اب بنا کوئی بہانہ بنائے بنا کسی قسم کا مسلئہ کھڑا کیئے خاموشی سے اب وہ ہونے دو جو ہم سب کیلئے اس وقت بہتر ہے۔
چند جملے تھے۔ راستے پر محیط ہو گئے تھے۔ وہ بالکل چپ سی ہو گئ تھی۔ ایڈون جانے مزید کیا کہتا آیا یا شائد چپ ہی رہا تھا اسے یاد نہیں تھا۔ ایڈون کو بھی اندازہ تھا کہ اس وقت وہ یقینا مائوف سے ذہن کے ساتھ چل رہی ہے ۔ جبھی اسکو گوشی وون تک چھوڑنے آیا ۔سامان رکھا۔ اسکو کمرے میں بیڈ پر بٹھا کراسکے سامنے دوزانو بیٹھ کر دونوں ہاتھوں کے پیالے میں اسکا چہرہ تھام کر بولا۔
میں بہت برا سہی مگر یہ حقیقت ہے تمہارے لیئے برا نہیں ہوں کبھی برا سوچ نہیں سکتا تمہارے لیئے کبھی بھی نہیں۔ کل تمہیں جو کچھ کہا وہ سب غصے میں کہہ گیاتھا۔ اسے بھلا دینا میں اب بھی تمہارے ساتھ ہی اپنی زندگی گزارنا چاہتا ہوں۔ آئی لو یو سنتھیا۔
اس نے کہتے ہوئے اٹھ کر اسکی پیشانی چوم لی تھی۔ پھر ایکدم سیدھا ہوا۔
میں ابھی جا رہا ہوں تم آرام کر لو کھانا میں شام کو لیتا آئوں گا اکٹھے کھائیں گے۔ٹھیک ہے؟
ٹھیک ہے۔
اس نے سرموق حرکت نہیں کی تھی جبھی اس نے بات دہرا کر پوچھا جوابا وہ تکیہ سیدھا کرتی بستر پر لیٹ گئ۔ ایڈون چند لمحے اسکے جواب کا انتظار کرتا رہا پھر اس پر کمبل ڈالتا ہوا کمرے کا دروازہ بند کرتا نکل گیا۔رات کے مناظر من و عن تازہ ہوئے تھے ذہن میں۔ سنتھیا کی آنکھیں جلنے لگی تھیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سنتھیا یہ کیا کردیا ۔۔
وہ سنتھیا کا اعتراف سن کر ہکا بکا سی رہ گئ تھیں۔
پھر لعن طعن کا طویل سلسلہ تھا۔ انکے کوسنے سنتے وہ چڑ گئ۔
ممی بس کریں میں مر جائوں اس سے آپکو کوئی فرق نہیں پڑے گا؟ بس عزت کی فکر ہے آپکو۔
وہ چلا اٹھئ تھی۔
مر جاتیں تم صبر کر لیتے۔ تمہیں اندازہ بھی ہے کہ تم نے ہمیں کہیں منہ دکھانے لائق نہیں چھوڑا ہے اوپر سے تم واپس آنا چاہ رہی ہو کیا بتائیں گے ہم سب کو کیا کہیں گے پڑھنے بھیجا تھا اور۔۔
سارا سر پر ہاتھ رکھ کر رو پڑی تھیں۔
پہلی بار سنتھیا کا دل سکڑا
ممی میں مانتی ہوں مجھ سے بہت بڑی غلطی ہوئی ہے مگر ممی کیا بچوں سے غلطیاں نہیں ہوتیں؟ انکو معاف نہیں کیا جا سکتا؟
وہ فون تھامے بلک رہی تھی
معاف کریں؟ ہماری کیا مجال ہے سنتھیامگر تم جیتی جاگتی سانس لیتی غلطی کیسے دنیا سے چھپائوگی؟ تم نہیں جانتی ہو زندگی تباہ ہو جائے گی تمہاری میری بچی۔
ماں تھیں بلک اٹھی تھیں اولاد کیلئے ہی۔ ۔۔ ایڈون ۔۔ وہ کیا کہتا ہے؟
ممی ایڈون بہت سنگدل ہے وہ ابارٹ کروادینا چاہتا ہے اسے۔
وہ جانتی تھی کس مشکل سے اس نے یہ الفاظ ادا کیئے تھے۔اسکی آواز ساتھ چھوڑ رہی تھی۔ سارا ماں تھیں یقینا اسکا درد سمجھ سکتی تھیں۔
ہو سکتا ہے ابھی؟
وہ ایکدم چونکیں۔
بولو سنتھیا ہو سکتا ہے ابھی؟
انکے لہجے کی امید سنتھیا سمجھ گئ وہ یہ آخری بازی بھی ہار گئ ہے۔
ممی۔۔ سنتھیا کے منہ سے آواز بھی نہ نکل پائی۔
کروائو فورا پھرابارشن۔ پیسے چاہیئئیں ہم فورا مزید بھجواتے ہیں ۔فکر نہ کرو تم اور دیر نہ کرو میری بچی بہت مشکل ہو جائے گی ورنہ اس بچے کو اس دنیا
میں۔۔
بس کریں ممی۔ کیوں کیوں میں ایک جان لینے کا گناہ اپنے سر لوں۔ کیا حرج ہے اگر ہم اسکو دنیا میں آنے دیں ایسا کیا گناہ کیا اس معصوم نے جو سب اسکی زندگی کے دشمن بن گئے ہیں۔
وہ پھٹ پڑی۔
گناہ اس نے نہیں تم نے کیا ہے او ریہی ہوتا ہے ماں باپ کے گناہوں کی سزا انکی اولاد بھگتتی ہے اولاد کے کرنے ماں باپ کو بھگتنے پڑتے۔۔ اب بھگتو تم بھی جیسے ہم ناکردہ گناہ کی سزا بھگت رہے ہیں۔
سارا چٹخ کر بولیں۔ سنتھیا ایکدم آنسو پونچھ کر اٹل سے انداز میں بولی۔
ٹھیک ہے پھر میرا فیصلہ بھی سن لیں۔ اگر اس بچے کو کچھ ہوا تو میں اپنی جان بھی دے دوں گی۔
ٹھیک ہے دے دو جان صبر کر لیں گے ہم کہہ دیں گے مر گئ ۔۔۔۔۔ مر گئ ہو تم ہمارے لیئے سنتھیا ایسی اولاد ہونے سے بہتر تھا ہم بے اولاد رہتے۔ تمکو احساس تک نہیں ہو رہا تم نے ہمارے ساتھ کیا کرڈالا ہے۔
سارا بلک بلک کر کہہ رہی تھیں۔اس نے لعن طعن ڈانٹ ڈپٹ سب برداشت کرنے کا حوصلہ کرکے ماں کو سچائی بتائی تھی۔ یہ سوچ کر کہ شائد ایک ماں ہی ایک ماں کے جزبات سمجھ سکے مگر انکا ردعمل اسکی توقع سے ذیادہ شدید تھا۔
اگر اس بچے کا دنیا میں آنا نہیں لکھا تو صرف ایک ہی صورت ہوگی کہ اسکو دنیا میں لانے والی ہی نہیں رہی۔ آپ صبر کر لیں مجھ پر۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ حقیقتا خود کشی کے ارادے سے ہی نکلی تھی۔ کنوینیئس اسٹور میں چیزیں کھنگالتے آخراسے مطلوبہ چیز مل ہی گئ۔ وہ ایک تیز دھار کی چھری خرید کر نکلی ہی تھی جب اسے چرچ کی صلیب نظر آئی تھی۔ اونچی سی صلیب چرچ کا مینار اسکا دل ایکدم کھنچا تھا۔ اسکو اس علاقے کی ذیادہ پہچان نہ تھی مگر اونچی سی صلیب نیون سائن کی طرح چمک رہی تھی کرسمس قریب تھا سو اس پر برقی قمقمے دور سے بہار دکھا رہے تھے۔ وہ بے اختیار کھنچی گئ۔ اس چرچ تک کونسی گلی جاتی ہے کونسا راستہ وہ اندازے سے بڑھتی گئ دو دفعہ غلط مڑی ایک دفعہ راہ گیر سے پوچھا۔ چرچ کے گیٹ تک پہنچ کر اسے لگا تھا جیسے ہفت اقلیم کی دولت مل گئ ہے۔ چرچ میں کورس ہنگل میں کوئی نغمہ گنگنا رہے تھے کرسمس کہ تقریبات کیلئے تیاری ہو رہی تھی کچھ لوگ اگلی نشستوں پر بھی بیٹھے تھے وہ سب سے آخری رو کی قریبی نشست پر جا بیٹھی تھی۔
کوئی لمبی چوڑی تمہید نہیں باندھی تھی اس نے
آپ جانتے ہیں نا میرے ساتھ کیا ہو رہا ہے؟ مجھ سے بھول ہوئی ہے مجھے بے شک معاف نہ کریں جو چاہے سزا دے لیں مگر مجھے مزید ایک گناہ کبیرہ کرنے سے بچا لیں۔ اس بچے کی زندگی آپکی ضمانت میں دیتی ہوں بچا لیں اسے۔ کچھ نہ ہونے دیجئے گا اسے۔
پلیز۔آپ تو جانتے ہیں نا؟؟؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی خیال آنے پر وہ ایکدم اٹھ بیٹھی۔ اپنے چہرے پر پھسل آنے والے آنسو صاف کرتی وہ اپنے کارڈیگن کی جیبیں ٹٹولنے لگی۔ کنوئنئس اسٹور کی رسیدیں کچھ ریز گاری۔ اور۔ وہ کارڈ۔۔۔ اس نے کارڈ کو مٹھئ میں بھرلیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوپ کا فون آس پاس ہی کہیں بجا تھا۔اس نے چونک کے دیکھا تو وہ کمپائونڈ میں اندر جاتے جاتے رکی تھی۔
وہ رہی میں چلتی ہوں بائے۔
وہ تیزی سے کہتی بھاگ کے ہوپ کی جانب بڑھی تھی۔۔ ہیون نے جواب دینے کیلئے منہ کھولا ہی تھا مگر وہ بھاگ چکی تھی۔ اس نے کال کاٹ کے موبائل جیب میں رکھ لیا اور گہری سانس لیتا واپس مڑ گیا۔
ہوپ موبائل میں مسڈ کال دیکھ رہی تھی۔ شائد کال بیک کرنے لگی تھی اس نے جا لیا۔ پھولی سانس سے بتایا۔
ہیون تھا۔ میں نے کال۔کروائی تھی کہ پوچھ سکوں کتنی دیر ہے۔
لفٹ ابھی آکر رکی تھی۔ ہوپ کو بتا کر وہ تیزی سے لفٹ کی۔جانب لپکی ۔
ہوپ کچھ سمجھتے کچھ نہ سمجھتے اسکی پیروی کرنے لگی۔
جلدی آئو۔ اسے سست قدم اٹھاتے وہ تھوڑا تپ کر بولی
ہوپ ہیون کو کال ملا رہی تھی۔ خاصی ناگواری سے اسے گھورا تھا۔ جبکہ وہ لفٹ کا بٹن دبائے کینہ توز نگاہوں سے گھور رہی تھی۔
کیا جلدی ہے؟
وہ تیورئ چڑھا کر کہتی لفٹ میں داخل ہوئی تھی۔ اس نے جھٹ اپنے فلور کا بٹن دبایا۔
بیل جا رہی تھی ہیون نے دو تین بیلوں کے بعد فون کاٹ دیا تھا۔
ہوپ نے دزدیدہ نگاہوں سے اریزہ کو دیکھا وہ بالکل بھی اسکی جانب متوجہ نہیں تھی بلکہ بے چینی سے لفٹ کے پینل میں فلور گن رہی تھی انکے فلور پر دروازہ کھلتے ہی وہ بجلی کی تیزی سے نکلی تھی۔
بھاگ کرپاسورڈ لگا کر دروازہ کھولا حسب عادت ہاتھ مار کر بند بھی کردیا۔ اپنی جھونک میں آتی ہوپ کے منہ پر دروازہ بند ہوا تھا۔۔
کیہہ سیکی۔
بے ساختہ اسکے منہ سے گالی نکلی تھی۔ دوبارہ پاسورڈ لگا کر اندر داخل ہوئی تو پورا اپارٹمنٹ جگمگا رہا تھا اس نے سوئچ بورڈ کی سب لائٹس جلا دی تھیں۔کمرے کی بھی جل رہی تھی۔
ہوپ متجسس سی اندر داخل ہوئی تو کمرہ خالی تھا باتھ روم کا دروازہ بند تھا ۔
اسکی اتنی تیزی کی وجہ اب اسے سمجھ آگئ تھئ۔ وہ تھکی تھکی سی بیڈ پر گر گئ۔ آج کا دن بہت لمبا تھا اسکے لیئے۔اس وقت بالکل بھی ہمت نہ تھی اٹھ کر کھانا وانا کھانے کی بھی۔ وہیں گول مول سی ہو کر پڑ گئ سو بھئ گئ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس نے بھر بھر کر چھپاکے منہ پر مارے تھے۔ اس وقت اسکی حالت کافی بری ہو گئی تھی۔ باقائدہ پیٹ میں درد شروع ہو گیا تھا۔ گہری سانس لیکر دروازے کا سہارہ لیتی باہر آئی تھی۔ ہوپ بیڈ پر آڑی۔ترچھی پڑی بے خبر سو رہی تھی۔ چہرے پر تھکن نمایاں تھی۔ اتنی نمایاں کہ وہ بلا ارادہ رک کر دیکھنے لگی۔ اسکے نقوش کافی کھنچے کھنچے تھے۔شائد اسکے بے تحاشا دبلا ہونے کی وجہ سے۔ اس نے ایک جانب تہہ ہوا کمبل اسے پھیلا کر اوڑھایا۔ اور خود باہر نکل آئی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے پاس چار پیسے آجائیں گے تو کیا تکلیف پہنچے گی۔ وہ چڑی۔ ایک ہاتھ سے فون کان میں لگائے دوسرے ہاتھ سے وہ کٹے ہوئے آلو دھو رہی تھی۔
کیا فائدہ ان چار پیسوں کا مجھے وہ والا آئی پیڈ تو بھیجا نہیں ۔ خرید کر تو بھیجنا دور وہی والا بھجوا دو۔
وہ الٹی سیدھی ہانک رہا تھا
تم اچھی طرح جانتے ہو وہ امانت ہے اور میں اسے واپس بھی کرنے والی ہوں۔
گھی گرم ہو چکا تھا اس نے بھر کر آلو اس میں ڈالے۔
ہاں وہ اتنا امیر کبیر فنکار انتظار میں بیٹھا ہوگا نا ابھی تک اس نے نیا خرید لیا ہوگا احمق۔
صارم نے اسکی عقل کا ماتم کیا
تم بھی خرید لو نا کس نے روکا۔
وہ بے نیازی سے بولی۔ ایک ہاتھ سے آلو تلتے دوسرے ہاتھ سے فون کان سے لگائے وہ مصروف تھی۔
اچھا یہ بتائو کس نے ایڈمیشن کے پیسے دیئےہیں ؟ صارم سنجیدہ ہوا
ہیون نے۔ اس نے تل جانے والے چپس پلیٹ میں نکالے۔ ایک وقت میں ہی کڑاہی بھر کر بنا لیئے تھے چولہا بند کرتے ہوئے وہ پلیٹ اٹھاکر فریج کھولنے بڑھی
وہ ہی فارم فل کرواکے مجھے اکیڈمی چھوڑنے بھی گیا ساتھ کورس کی بکس سے بھرا بیگ بھی دیا مجھے ہا ہا ۔ بہت کیئرنگ ہے۔
یہ کس خوشی میں اتنا مہربان ہے تم پر؟ صارم کا انداز
ایک ہاتھ میں موبائل تھا دوسرے میں پلیٹ فریج کھولنے کو ہاتھ بڑھاتے وہ ٹھٹھک کر رہ گئ۔
مطلب؟
اس نے مڑ کر پلیٹ میز پر ٹکائی۔
مطلب صاف ہے یہ کیوں اتنا مہربان ہے تم پر؟ ہر وقت تمہارے ساتھ رہتا ہے ہر کام اپنے ذمے لے رکھا ہے؟ کیوں؟ متھے نہ لگ جائے تمہارے یہ۔
صارم کا انداز تفتیشئ تھا۔
اسکے انداز پر وہ چڑ گئ۔
بس پاکستانی ذہنیت آگئ بیچ میں۔ یہ کوریا ہے یہاں لڑکے لڑکیاں ہئوا نہیں ایک دوسرے کیلئے۔ سب دوست کو دوست سمجھتے لڑکا یا لڑکی نہیں۔ یہ پاکستان میں ہی ہوتا ہےلڑکی نے ہنس کے بات کرلی سیدھا پرپوز کرنے لگتے لڑکے۔ ہیون کے ذہن میں بھئ ایسی کوئی بات نہ ہوگی اسکو یہاں کوئی کمی ہے ایک سے ایک حسین لڑکی ہے یہاں۔ وہ سچ مچ ایک پرخلوص اچھا انسان ہے باقی دوستوں کے ساتھ بھی اتنا ہی کرتا ہے وہ۔میں کوئی خاص نہیں ہوں اسکے لیئے۔
اس نے خاصے غصے سے فریج کھول کر کیچ اپ نکالا تھا دھاڑ سے دروازہ بند کیا منہ پھلاتے آکر میز پر بیٹھی۔
اوہو تو ایسی بات ہے۔ تو اس پر تمہیں دکھ کیوں ہو رہا ؟ صارم نے مسکراہٹ دباتے ٹوکا۔
منہ تک چپس لے جاتے اریزہ کا ہاتھ رکا۔ چند ثانیئے چپ رہی پھر جھاڑ دیا۔
بکواس ۔ سو جائو دماغ خراب ہوگیاہے تمہارا۔
اس کے چڑنے پر صارم قہقہہ لگا کر ہنسا۔
ہا ہا ہا۔ تپتی کتنا ہو تم مزاق کر رہا تھا یار۔ تم ویسے ہو لکی یہاں مجھے اپنا ذاتی ملازم بنا رکھا تھا وہاں بھی نخرے اٹھانے والے مل گئے ہیں۔ کبھی اپنے بل پر بھی کچھ کر لیا کرو لڑکی۔
ہاں کوریا میں تو میرا بھوت رہ رہا ہے نا اکیلے۔ یا روز تم آتے ہو مجھے چھوڑنے لے جانے خود ہی کر رہی ہوں نا جاب بھی میں۔تمہاری تو۔
وہ بری طرح چڑ گئ تھی۔ صارم ہنسے گیا۔ پھر پینترا بدل کر بولا۔
اچھا اچھا بس چپس بن گئے نا اب کھائو اور موٹی ہو جائو۔اور جو تصویر بھیجی نا اسکو کم از کم دیکھ لو۔ میرا بچپن کا دوست ہے سگا پھپو کا بیٹا ہے یقین کرو تمہارے لیئے بہترین ہے پیارا بھئ ہے۔ ایک اور پلس۔
بے زاری سے چپس ٹونگتے وہ سر ہلاتی گئ۔
بس اس سے کہو دو سال انتظار کرے اس سے پہلے تو میں چھٹیوں میں بھی نہیں آئوں گی کوئی بھروسہ ہے تم لوگوں کا واپس ہی نہ آنے دو۔
شٹ اپ۔ صارم بھنایا۔
دیکھو۔ بنا دیکھے سوچے پرکھے جھٹ انکار کرنا بند کرو۔ خالہ پریشان ہیں بہت ہر وقت تمہاری۔۔
اوہ پلیز۔ اس نے فورا بات کاٹ دی
میں تنگ آگئ ہوں امی پریشان ہیں تو میں شادی کر لوں واہ ۔ اتنی دور تو آچکی ہوں اب بھی پریشان ہیں تو کیا کروں مر جائوں؟ پریشانی ہی ختم ہو جائے انکی۔
چٹخ کر بولی تو صارم کو بھئ غصہ آگیا
بکواس بند کرو۔ سوچ کر بولا کرو اتنے محبت کرنے والے لوگ ہیں زندگی میں اسکا شکر ۔۔۔
اسکا یقینا بھاشن جھاڑنے کا پروگرام تھا اس نے موقع نہیں دیا بات کاٹ دی۔
کھانا کھا رہی ہوں میں اور جواب ایڈوانس دے چکی اب دوبارہ ا س پر بات کرنے کیلئے فون نہ کرنا بائے۔
اس نے کہہ کر صارم کا جواب سنے بغیر کال بند کر دی۔
صبح کا ناشتہ کیا ہوا تھا اس وقت زوروں سے بھوک لگ رہی تھی۔ جلدی جلدی چپس کھاتے مکمل پلیٹ کی جانب متوجہ تھی ۔ کچھ خیال آیا تو واٹس ایپ کھول کر تصویر بھی نکال لی۔
اچھا خاصا خوش شکل جوان تھا۔
سجاد کے ساتھ شادی سے پہلے اگر یہ رشتہ آیا ہوتا تو یقینا اس نے بنا سوچے سمجھے ہاں کرنی تھی مگر ابھی اسکو یہ تصویر دیکھ کر نہ خوشی ہوئی نا غصہ آیا بس چند لمحے دیکھنے کے بعد اس نے ایپ بند کردی۔
یونہی سر اٹھایا تو سامنے ہوپ کھڑی تھی۔ اچھل کر پیچھے ہوئئ۔
ہائے اللہ ڈرا دیا مجھے۔
اسکے کہنے پر ہوپ نے سرد سی نگاہ ڈال کر گھونٹ گھونٹ پانی پینا شروع کردیا۔ اسکی گرم پانی کی بوتل جو تھرماس جیسی تھی میز پر ہی رکھی رہتی تھی۔
کھائو گئ؟ اس نے ازراہ مروت اسکی جانب پلیٹ بڑھائی۔ گرم بھاپ اڑاتے چپس کیچ اپ۔ ہوپ نے غیر ارادہ طو رپر ہاتھ بڑھادیا۔
اسکے اپنے پیٹ میں چوہے دوڑ رہے تھے۔ کھانا کھائے بنا ہی آکر سو گئ تھی اس وقت چپس نعمت غیر مترقبہ لگے تھے۔ اس نے ایک دو کھائے تو احساس ہوا بھوک کافی زو رکی لگی ہوئی ہے۔
ریمن بھی بنا دوں؟
اسکی بھوک کا احساس کرکے اریزہ نے پوچھا جوابا وہ شرمندہ سی ہو کر ہاتھ واپس کھینچ گئ۔
نہیں میں خود بنا لیتی ہوں۔۔۔ وہ فورا کچن کیبنٹ کی جانب بڑھی پھر خیال آیا تو مڑ کر اس سے پوچھنے لگی۔
تم بھئ کھائو گی؟
اریزہ چپس کھارہی تھی اسکے پوچھنے پر حقیقتا ہاتھ سے چپس چھوٹا تھا۔
نہیں ۔ پھر خیال آیا تو
نو ۔۔ آں۔ آنی۔
اس نے اچھی خاصی حیرت سے سر نفی میں ہلایا تھا۔ہوپ گھور کر رہ گئ ۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سیول کی روشنیاں مدھم پڑ چکی تھیں۔ شہر میں سونے کا وقت ہو چکا تھا۔صبح کے چار بجے سخت سردی اور وہ دونوں اپارٹمنٹ کے ٹیرس پر کھڑی کافی کی چسکیاں لے رہی تھیں۔
مگر ایک دوسرے سے قطعی مختلف حلیئے میں۔
ہوپ نے ایک نظر اسکو دیکھا۔ گھٹنوں تک والے گوارا کے دیئے رضائی نما جیکٹ میں مفلر لپیٹے خوب گرم والے موٹے گھر میں پہننے والے وولن سوکس اور سلیپر میں وہ سرخ ہوتی ناک کے ساتھ کافی کا مگ تھامے اسکی گرمائش لیتے بھی جھر جھری سی لے رہی تھی۔
خود ہوپ نے گھر کا مخصوص سویٹ سوٹ اور اپر پن رکھا تھا۔
تم بہت کمزور ہو۔
تم بہت مضبوط لڑکی ہو۔
دونوں اکٹھے بولی تھیں انگریزی میں۔ پھر ہنس دیں۔
تم لوگوں کو سردی کیوں نہیں لگتی مائنس میں ہے درجہ حرارت اور تم کتنے اطمینان سے کھڑی ہو۔
اریزہ نے کہا تو وہ ہنس پڑی۔
اوروں کا تو نہیں پتہ مگر شمالی کوریا میں میں بچپن سے برفباری کے دوران امدادی ٹرکوں سے اپنے وزن سے ذیادہ بڑے تھیلے اٹھا کر لانے کی عادی تھی۔ گرم کپڑے ہم سب بہن بھائیوں کے حساب سے کم ہوتے تھے۔ ایک کوٹ ہوتا تھا جو آہمونی نے اپنا پرانا مجھے دیا تھا۔ تب مجھے بڑا ہوتا تھا اور جب وہ چھوٹا ہوا تو اپنا قد بڑھ جانے پر خود پر بہت غصہ آیا تھا مجھے۔
وہ پرسکون سے انداز میں چسکیاں لیتے بتا رہی تھی۔ اریزہ کانپنا بھول۔کر اتنی متاسف سی دیکھ رہی تھی اسے کہ اسے ہنسی آگئ۔ شرارت سے بولی
اس بات کو دس پندرہ سال ہو چکے ہیں۔ اتنا دکھی مت ہو۔
تمہاری آہمونی ابھی بھی کوریا میں ہیں؟ اور بہن بھائی ؟
اس نے دلگیری سے پوچھا تھا۔
پتہ نہیں گنگشن نونا کوشش تو کر رہی ہیں پتہ کروانے کی مگر انکا کوئی اتا پتہ نہیں کہ شمالی کوریا میں ہیں چین میں یہاں یا مر کھپ گئے۔
وہ بےدردی سے بولی۔
بس انکی اطلاع کا انتظار کر رہی ہوں جی کر۔ اگر زندہ ہوئے تو انکو بلانے کا خرچہ اٹھانے کیلئے پیسہ پیسہ جوڑ رہی ہوں۔ اور اگر۔
وہ جملہ ادھورا چھوڑ کر چپ ہوگئ۔
اور اگر؟ اریزہ اسکی جانب مکمل مڑ کر پوچھنے لگی۔
ہوپ نے اسکو ہمہ تن گوش دیکھا تو مسکرا دی۔
اور اگر وہ مر چکے ہوئے تو ایک فلور اوراوپر چڑھوں گئ۔
اس نے اشارے سے اوپر دکھایا۔ انکا فلور آخری تھا اس سے اوپر بس چھت تھی اریزہ اسکی انگلی کے اشارے پر احمقوں کی طرح سر اٹھا کر دیکھنے لگی۔
ہیں کیوں؟ وہ واقعی نہیں سمجھی تھی۔ ہوپ نے ہاتھ سے اچھت سےلیکر نیچے گرائونڈ فلور تک اشارہ کیا۔
اور وہاں سے نیچے۔
ہوپ مسکرائی۔
اریزہ کی گردن اسکے ہاتھ کے ساتھ گھومی تھی۔ یونہی جھک کر نیچے دیکھا تو کمپائونڈ اور لان کی جلتی دیو ہیکل روشنیاں اسے قمقموں سی لگیں۔ اتنی اونچائی اسکی روح تھرا گئ۔
اللہ نہ کرے۔ وہ بے ساختہ بولی۔
اسکی بات نہ سمجھتے ہوپ نے بھنئوں اچکا کر اسے دیکھا جیسے مطلب پوچھ رہی ہوں۔
میرا مطلب ہے خد انہ کرے انکو کچھ ہو اور تم خبردار خودکشی کا سوچنا بھی مت گناہ ہے۔اللہ سے اچھی امید رکھو دیکھنا وہ سب ٹھیک ہوں گے اور تم ایکدن ان سب سے ملوگی بھی انشا اللہ۔ خاص کر اپنی آہمونی سے
اس نےمسکرا کر پورے خلوص سے دعا دی تھی۔
میں کوئی چھوٹی بچی نہیں ہوں جسے تم بہلا سکو۔ حقیقت صرف یہ ہے کہ مجھے اندازہ ہے ان میں سے شائد ہی کوئی ایک آدھ زندہ بچا ہو تم نے کورین بیگار کیمپ نہیں دیکھے جبھی۔
اسکے پرخلوص جملوں پر ہوپ کا ردعمل بالکل غیر متوقع تھا۔ سپاٹ سے انداز میں جتا کر بولی۔ اسکی مسکراہٹ دھیمی پڑ گئ۔
تمہارے گھر سے فون تھا۔
ہوپ کو بھی شائد احساس ہوا تھا اپنے قنوطی پن میں وہ خاصی بدلحاظ ہو چلی ہے سو بات بدل دی۔
ہاں۔ اریزہ کا انداز دھیما پڑ گیا تھا
کون کون ہے تمہارے گھر میں؟
ہوپ جانے کیوں دلچسپی لے رہی تھی شائد اپنی کج روی کا ازالہ کرر ہی تھئ۔
وہ سوچ میں پڑی ایسے اکیلے پریشان انسان کے آگے کیا اپنے گھر کا ذکر کرے۔
ماں زندہ ہے تمہاری؟
اسے شش و پنج میں دیکھ کر اس نے اگلا سوال داغ دیا
ہاں۔ وہ جھٹ سے بولی۔ جتنا ناراض سہی مگر ماں کے ذکر نے جزباتی کردیا تھا
میرے گھر میں ماں ہے باپ ہے ایک بھائی ہے ابھی اسی سے بات کر رہی تھی میں۔
کبھئ باپ سے بات کرتی ہو کبھی بھائی سے ماں سے بات کرتے ایک دفعہ نہیں دیکھا میں نے تمہیں۔
ہوپ کا سوال دو ٹوک تھا وہ۔جواب طلب نظروں سے دیکھ رہی تھی۔
وہ میں ناراض ہوں ان سے اور وہ مجھ سے۔نا وہ مجھ سے بات کرنے پر اصرار کرتی ہیں نہ میں۔بھائی اور پاپا سے خیریت پوچھ لیتی ہوں میں بس۔
اس نے سچ ہی بتادیا۔ ہوپ ہنوز اسے گھورتی رہی
کیوں؟
بس ۔ وہ ٹالنا چاہتئ تھی۔
ماں سے کیوں ناراض ہو؟ ماں سے بھی کوئی ناراض ہوتا ہے؟ ابھی میسر ہیں تو قدر نہیں تمہیں؟ انکے بنا زندگی کا تصور بھی کر سکتی ہو تم؟فالتو انا کے زعم میں نہ رہو تم۔ تمہیں اندازہ نہیں ہے ماں کے بغیر زندگی کیسی ہوتی ہے۔
وہ ڈانٹ رہی تھی اسے۔ کیا؟ اریزہ حیران ہو کر دیکھنے لگی۔پھر قدرے برا مان کر بولی
کوئی وجہ ہی ہے جس سے اپنی ماں سے ناراض ہوں۔تم نہیں جانتیں انہوں نے میرے ساتھ کیا کیا ہے۔ اور۔۔
نہیں جانتی۔۔۔ مگر تمہیں بتائوں۔۔۔ ہوپ سکون سے بولی
میری ماں نے مجھے بارہ سال کی عمر میں ایک ساٹھ سالہ چینی شخص کو بیچا تھا چند یو آن کے بدلے تاکہ میری چھوٹی بہنوں کو کھانا اور دوا دے سکے۔ اوراگلے آٹھ سال میں نے اس شخص سے پٹتے اسکی خدمت کرتے گزارے میں نے دو وقت کے کھانے کے بدلے۔
اپنی ماں سے مجھے آج تک اتنا سا شکوہ تک نہ ہوسکا۔
وہ انگلی کی پورانگوٹھے سے چھوتی ذرہ برابر کا اشارہ کررہی تھی۔ اریزہ آنکھیں پھاڑ کر دیکھتی رہ گئ۔
میری ماں کی جگہ خود کو رکھ کر سوچوں تو اس نے میرے حق میں بہتر کیا تھا اسکی باقی دو بیٹیاں جانے بچیں ئا نہیں مگر میں بچ گئ اس ایک فیصلے کی وجہ سے۔ ماں سے ذیادہ کون اولاد کا بہتر سوچ سکتا؟
وہ مسکرائی۔ اسکی مسکراہٹ دیکھ کر اریزہ کا دل چاہا اسے کہے مسکرایا نہ کرے۔ وہ دکھی لگتی ہے دیکھنے میں مگر مسکراتے دیکھو تو ٹوٹی ہوئئ بھی لگتی ہے۔
پھر؟ کیا ہوا میرا مطلب تمہارا شوہروہ کہاں ہے؟
اریزہ نے پوچھا تو وہ مگ ہونٹوں سے لگا کر بچی کھچئ کافی بھی حلق میں انڈیلنے لگی۔ اندر تک سب جلتا گیا تھا حالانکہ کافی اب اتنی گرم نہیں رہی تھی۔
مر گیا۔ شرابی تھا بی پی کا مسلئہ تھا ذیابیطس بھی تھی اس نے آٹھ سال کھینچ لیئے جی کر اسی پر حیرت ہے مجھے۔
وہ تمسخرانہ انداز میں بولی۔ اریزہ جز بز سی ہوئی۔جانے اسے تعزیت کرنی چاہیئے یا مبارکباد دینی چاہیئے۔ اسکی کشمکش چہرے پر واضح تھی۔ ہوپ بغور دیکھنے لگی اسے۔آج تک اسے زندگی میں ایسا کوئی انسان نہیں ملا تھا جو اسکی باتیں سنتے اس حد تک اسکے دکھ کو محسوس کرنے لگا ہو کہ جیسے یہ سب اسکے اپنے ساتھ بیتا ہو۔
تم اتنا دکھی مت ہو اس کو مرے ہوئے بھی سات آٹھ سال ہو رہے ہیں۔
وہ مزاق اڑا رہی تھی۔ اریزہ گہری سانس بھر کے رہ گئ۔
کیوپتا۔ ( کیوٹ) تم بہت ہی پیمپرڈ ہو۔ دوسروں کے دکھ تم محسوس کرنے لگو گی تو خوش رہنا بھول جائوگئ۔ دنیا بہت بری ہے بہت برا کرتی ہے یہ انسانوں کے ساتھ۔
ہوپ کا انداز ہنوز تھا۔ شرارت بھرے آنکھوں میں ہنس رہی تھئ۔ ۔اریزہ کو غصہ ہی آگیا۔ عجیب لڑکی ہے۔ کوئی کل سیدھی نہیں۔
ابھی تمہاری ایج اتنی نہیں۔ وہ مزید بھی کچھ کہنے لگی تھی کہ اریزہ نے چڑ کر بات کاٹ دی
اچھا بس۔ مانا بہت تجربہ ہے تمہارا مگر اب ایسی بھی اماں نہیں ہو تم۔
اٹھائیس سال۔
ہوپ نے اسکی بات کاٹ دی
اٹھائیس سال کی ہوں میں تم سے پانچ سات سال بڑی ۔ اب تو بنتا ہے نا میرا رعب جھاڑنا؟
وہ اب باقائدہ اسکی آنکھوں میں جھانک کر بولی۔ اریزہ چپ ہی رہ گئ۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دونوں بچیاں تیار ہو چکی تھیں۔ عبدالھادی نے دونوں کے بیگ بھی لا کر اسے تھمائے۔
بہت شکریہ تمہارا۔ ہمیں بالکل مخالف سمت جانا ہے جبھی تمہیں زحمت دے رہے ہیں۔
وہ مشکور و شرمندہ سے لہجے میں بولے تھے۔
کوئی بات نہیں۔۔
علی شرمندہ سا ہوا۔ عبدالہادی کی بیگم انکے ساتھ ہی تیار کھڑی تھیں وہ بھئ معزرت کرنے لگیں۔
تمہیں زحمت ہوگی مگر بچیوں کو وقت سے پہلے اسکول چھوڑنا بھی مناسب نہیں لگا ہمیں۔ تم ناشتہ واشتہ کر لو۔سب تیار ہے۔
آپ بے فکرہو کر جائیں ۔ اس نے اطمینان دلایا دونوں ایک بار پھر شکریہ ادا کرتے رخصت ہوئے۔ اس نے گہری سانس لی۔ دونوں بچیاں بٹر بٹر اسکی شکل تک رہی تھیں۔
ٹی وی آن کردوں؟ اس نے پوچھا تو دونوں نے اکٹھے گردن ہلائی۔ انکو ٹی وی لگا کر لائونج میں بٹھا کر وہ کچن میں چلا آیا۔ اہتمام سے ناشتہ سجا تھا میز پر جالی سے ڈھکا۔ اس نے کافی میکر میں کافی بننے رکھی اور خود اطمینان سے بیٹھ کر ناشتہ کرنے لگا۔ کافی میکر کا بزر بجا تو اٹھ کر کافی نکالنے لگا کہ پیچھے سے لگا کوئی بہت تیزی سے گزرا ہے۔ اس نے چونک کر مڑ کر دیکھا تو دونوں بچیاں سکون سے کارپٹ پر بیٹھی ٹی وی دیکھ رہی تھیں۔اسکی جانب پشت تھی۔ اس نے کندھے اچکائے اور واپس ناشتہ کرنے بیٹھ گیا۔ کافی کا گھونٹ بھرا تبھی اسے عبدالھادی کے کمرے میں آہٹ سی محسوس ہوئی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ الماری کا سیف کھول کراس میں سے چیزیں نکال رہی تھی۔ سیونگ سرٹیفکیٹس ، کیش بنک اسٹیٹمنٹس جیولری۔ اس نے دیکھ دیکھ کر چن چن کر چیزیں نکال کر اپنے بیگ میں ڈالیں اور واپس سب چیزیں انکی جگہ پر رکھ کر سیف لاک کرکےمڑی تو ایکدم بھونچکا سی رہ گئ۔
کم چاگیا۔ دل پر ہاتھ رکھ کر وہ دو قدم پیچھےہوئی
تم یہاں کیا کر رہے ہو؟
فورا ہی وہ اپنے حواس میں آکر غصے سے بولی۔
تم کیا کررہی ہو؟
علی نے اسی کا سوال دہرادیا۔
تم کون ہوتے ہو پوچھنے والے؟ اور تم کر کیا رہے ہو یہاں؟ گھر کے فرد کے سوا کسی کو اہل خانہ کے کمرے تک رسائئ نہیں ہونی چاہیئے بنیادی اخلاقیات ہیں یہ۔
وہ چبا چبا کر بولی تھی۔
علی اسکا لال بھبھوکا چہرہ دیکھ کر گہری سانس لیکر بولا۔
کیا لے جارہی ہو ؟ آہجوشی کو بتایاہے؟
یہ میرا گھر ہے میرے باپ کا میرا جو مرضی ہو لیکر جائوں گئ تمہیں کیا نکلو یہاں سے ۔
وہ بدلحاظی کی حدوں کو پار کر رہی تھی۔ آگے بڑھ کر باقائدہ دھکا دے دیا۔ علی بنا مزاحمت کیے باہر نکل آیا۔ وہ کینہ توز نگاہوں سے دیکھتی اسکے ساتھ باہر نکلی دروازہ بند کرکے بیگ کندھے پر۔درست کرتی جانے لگی کہ علی نے اسکا بیگ ہی پکڑ کر روکا ۔
آہجوشی کو کیا بتائوں گا اگر کوئی چیز کم ہوئی تو؟
میں نے اپنے سرٹیفیکیٹس اٹھائے ہیں اور اپنا زیور لیا ہے۔۔
جی ہائے ٹھٹھک کر رکی۔پھر بولی
بتائوں کیا آہجوشی کو؟
علی کا سوال ہنوز تھا۔ دونوں بچیاں ٹی وی بھول بھال کر انکی جانب متوجہ ہوچکی تھیں
شٹ ۔ وہ زیر لب بڑبڑائی تھئ۔جو مرضی آئے۔کہہ دینا۔
وہ کہہ کر بیگ چھڑاتی آگے بڑھی۔
ٹھیک ہےمیں انکو کہوں گا انکی بیٹی آئی تھی اور وہ اپنا حق وصول کرکے گئ ہے۔
جی ہائےایکدم سے جاتے جاتے رکی ہونٹ کچلے۔
وہ خوش ہوں گے سن کر۔ علی نے اضافہ کیا۔
اس نے پلٹ کر علی کو گھورا پھر لائونج میں کھڑی بہنوں کو دونوں بچیاں اسکو تک رہی تھیں۔
اس نے کندھے سے بیگ اتار کر وہیں الٹ دیا۔
علی کیلئے اسکا ردعمل غیر متوقع تھا۔ بیگ الٹ کر وہ رکی نہیں تیزی سے باہر نکلتی چلی گئ۔
ارے رکو سنو۔
وہ فوری بھاگا تھا اسکے پیچھے۔ وہ تیز تیز قدم اٹھاتی سیدھا ٹیکسی کی۔جانب بڑھی شائد اس نے ٹیکسی کو۔انتظار کا کہہ رکھا تھا۔ وہ پکارتا بھاگ کر ٹیکسی کے قریب پہنچا مگر وہ رکی نہیں۔دھاڑ سے دروازہ بند کیا اور اسکے کھڑکی بجانے کے باوجود رخ موڑ کر ڈرائور کو گاڑی آگے بڑھانے کا بھی کہہ دیا۔
لمحہ بھر کی تاخیر کیئے بنا گاڑی چل پڑی تھی۔
وہ ہرگز اسے چڑانا نہیں چاہ رہا تھا مگر اسکی اپنی کیا حیثیت رہ جاتئ اگلے اپنا پورا گھر اسکے اوپر کھلا چھوڑ گئے تھے۔ وہ پلٹ کر اندر آیا تو بچیاں اسکی بکھیری چیزوں کو چھیڑ رہی تھی۔ گھڑی لاکٹ چین بریسلٹ اور سیونگ سرٹیفیکیٹس ۔ فاطمہ نے لاکٹ گلے میں ڈال لیا تھا اب اسے دکھا رہئ تھی۔ وہ احتیاط سے اسکے گلے سے لاکٹ اتارنے لگا۔ ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بچیوں کو اسکول گیٹ پر چھوڑ کر وہ اپنی اکیڈمی چلا آیا تھا۔ گتے کا شاپنگ بیگ اٹھائے وہ اندر داخل ہو رہا تھا جب اسکی۔نظر سامنے سے خراماں خراماں چل کر آتے اس جوڑے پر پڑی تھی۔ جانے کونسا قصہ چھڑا تھا۔ لڑکی گھٹنوں تک کا خوب پھولا ہوا جیکٹ پہنے زور و شور سے کچھ بول رہی تھی۔ ساتھ وہ لانبا سا لڑکا ہلکی سی مسکراہٹ سجائے ہمہ تن گوش تھا۔
وہ ان سے سلام دعا کرنے کی خاطر رک گیا۔
لڑکی نے بولتے بولتے رک کر اس لڑکے کو شائد واپس جانے کو کہا تھا۔ وہ سر ہلاتا رک گیا۔ ہاتھ ہلا کر خدا حافظ کہتی وہ آگے آتی گئ۔ وہ لڑکا مڑا نہیں بلکہ وہیں کھڑا اسے جاتے دیکھتا رہا۔
اسکی نظر سامنے پڑی تو علی اسے ہی دیکھ رہا تھا۔ بلیک ہائئ نیک اور کوٹ پہنے وہ مسکرارہا تھا۔ اسکے چہرے پر خفت ذدہ سی مسکراہٹ در آئی۔پیراشوٹ جیکٹ کا۔ہڈ سر پر ٹکائے اندر مفلر لانگ شوز وہ خجل سی ہوئی۔ دھوپ نکلی ہوئی تھی ارد گرد جتنی بھی چندی آنکھوں والی مخلوق تھی ان میں وہ حقیقتا سب سے الگ اور مختلف لگ رہی تھئ ضرورت سے ذیادہ ملفوف۔ سر کو دیکھ کر وہ قریب آکر بڑے ادب سے کوریائئ انداز میں سر ہلا کر بولی۔
بیاننگ۔۔۔
جانے اسکا لہجہ ایسا تھا یا اس نے واقعی سٹپٹا کر دو لفظوں کو ملا دیا تھا۔۔
علی خاصئ زور سے ہنسا تھا۔وہ سر کھجا کے رہ گئ۔
اسکی ہنگل سر کے سامنے ضرور اسے شرمندہ کرواتی تھئ۔
ہیون جو اسے اکیڈمی تک پہنچتے دیکھ کر پلٹ رہا تھا تھا اس قہقہے کی گونج اس کو واپس مڑ کر دیکھنے پر مجبور کرگئ تھی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ختم شد

جاری ہے۔

Kesi lagi apko salam korea ki yeh qist? Rate us below

Rating
“>> » Home » Urdu Novels » Salam Korea » Salam Korea Episode 33

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *