urdu poetry, urdu shayari, sad poetry in urdu love poetry in urdu jaun elia allama iqbal poetry poetry in urdu 2 lines urdu shayri sad poetry in urdu 2 lines ahmad faraz ghalib shayari attitude poetry in urdu sad quotes in urdu funny poetry in urdu romantic poetry in urdu allama iqbal shayari best poetry in urdu bewafa poetry sad shayari urdu islamic poetry in urdu barish poetry poetry in urdu attitude ghalib poetry allama iqbal poetry in urdu attitude quotes in urdu poetry in urdu text deep poetry in urdu sad poetry in urdu text love shayari urdu ghazal in urdu urdu poetry in urdu text mirza ghalib shayari love poetry in urdu romantic urdu shayari on life rekhta shayari jaun elia poetry iqbal shayari deep lines in urdu sad love poetry in urdu urdu poetry sms best shayari in urdu death poetry in urdu funny shayari in urdu dosti poetry in urdu father quotes in urdu birthday poetry in urdu poetry status eid poetry Hajoom e tanhai poetry, Vaiza zaidi poetry, jaun elia shayari, urdu poetry text copy, attitude poetry in urdu 2 lines text, urdu shayari in english, shero shayari urdu, munafiq poetry, mirza ghalib poetry, romantic shayari in urdu, allama iqbal ki shayari, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, poetry in urdu 2 lines attitude, john elia sad poetry, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, john elia shayari, 2 line urdu poetry copy paste, dukhi poetry, heart touching quotes in urdu, mohsin naqvi poetry, beautiful poetry in urdu, udas poetry, friendship poetry in urdu, muhabbat poetry, urdu sher, one line quotes in urdu, dosti shayari urdu, sad poetry status, narazgi poetry, judai poetry, ghalib shayari in urdu, faiz ahmad faiz shayari, barish poetry in urdu, urdu one line caption copy paste, wasi shah poetry, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, urdu poetry status, islamic poetry in urdu 2 lines, jon elia poetry, funny poetry in urdu for friends, attitude shayari in urdu, allama iqbal poetry in urdu for students, Zawwar haider poetry, mohabbat shayari urdu, jaun elia sad poetry, sad poetry sms, urdu poetry written, urdu novels,urdu novels, urdu poetry, urdu afsanay, urdu statuses, urdu shayari, sad poetry in urdu, love poetry in urdu, poetry in urdu 2 lines, urdu shayri, sad poetry in urdu 2 lines, ahmad faraz, romantic poetry in urdu, best poetry in urdu, bewafa poetry, sad shayari urdu, barish poetry, poetry in urdu text, deep poetry in urdu, sad poetry in urdu text, love shayari urdu, ghazal in urdu, urdu poetry in urdu text, love poetry in urdu romantic, urdu shayari on life, deep lines in urdu, sad love poetry in urdu, urdu poetry sms, best shayari in urdu, very sad poetry in urdu images, novels in urdu pdf, urdu books, bewafa poetry in urdu, best urdu novels, urdu poetry text copy, urdu shayari in english, shero shayari urdu, romantic shayari in urdu, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, 2 line urdu poetry copy paste, famous urdu novels, beautiful poetry in urdu, udas poetry, muhabbat poetry, urdu sher, barish poetry in urdu, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, ahmed faraz poetry, mohabbat shayari urdu, sad poetry sms, urdu poetry written, love poetry in urdu romantic 2 line, attitude poetry in urdu text, heart touching poetry in urdu, sad ghazal in urdu, 2 line urdu poetry romantic sms, ahmad faraz poetry, poetry about life in urdu, urdu words for poetry, urdu poetry copy paste, urdu poetry in english, ahmad faraz shayari, bewafa shayari urdu, love poetry in urdu 2 lines, urdu ghazal poetry, poetry in urdu 2 lines deep sad lines in urdu, faraz shayari, urdu words for shayari, urdu sad poetry sms in urdu writing, dard poetry, happy poetry in urdu, urdu love poetry for her, faraz poetry, ali zaryoun shayari, shayari in urdu words, very sad shayari urdu, ishq poetry in urdu, urdu shayari images, 2 lines poetry, new poetry in urdu, urdu poetry in hindi, urdu poetry lines, one line poetry in urdu, poetry on beauty in urdu, one line poetry in urdu text, muskurahat poetry, sad poetry in urdu 2 lines without images, mohabbat poetry in urdu, nice poetry in urdu, best love poetry in urdu, muhabbat poetry in urdu, best lines in urdu, deep love poetry in urdu, beautiful shayari in urdu, urdu sad poetry sms, Novel urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, islamic books urdu, udas naslain pdf, urdu poetry books, urdu novel online reading, jasoosi digest, novel novels in urdu, urdu audio books, top urdu novels, romance novel best novels in urdu, wasif ali wasif books pdf, urdu language books pdf, tahir javed mughal novels, urdu digest pdf, naseem hijazi books, best books to read in urdu, ashfaq ahmed books pdf, dastak novel, a hameed novels, psychology books in urdu, bano qudsia novels, pakeeza anchal romantic novel, pyasa sawan novel, free urdu novels, anchal digest novels, raqs bismil nove,l urdu poetry books pdf, new novel 2021 in urdu, urdu novels 2021, love story novel in urdu, urdu history books, raja gidh read online, jasoosi novel, urdu love novels list, pakistani novels in urdu, urdu historical novels, romance novel famous urdu novels list, romance novel urdu novels list urdu poetry, urdu shayari, sad poetry in urdu love poetry in urdu jaun elia allama iqbal poetry poetry in urdu 2 lines urdu shayri sad poetry in urdu 2 lines ahmad faraz ghalib shayari attitude poetry in urdu sad quotes in urdu funny poetry in urdu romantic poetry in urdu allama iqbal shayari best poetry in urdu bewafa poetry sad shayari urdu islamic poetry in urdu barish poetry poetry in urdu attitude ghalib poetry allama iqbal poetry in urdu attitude quotes in urdu poetry in urdu text deep poetry in urdu sad poetry in urdu text love shayari urdu ghazal in urdu urdu poetry in urdu text mirza ghalib shayari love poetry in urdu romantic urdu shayari on life rekhta shayari jaun elia poetry iqbal shayari deep lines in urdu sad love poetry in urdu urdu poetry sms best shayari in urdu death poetry in urdu funny shayari in urdu dosti poetry in urdu father quotes in urdu birthday poetry in urdu poetry status eid poetry Hajoom e tanhai poetry, Vaiza zaidi poetry, jaun elia shayari, urdu poetry text copy, attitude poetry in urdu 2 lines text, urdu shayari in english, shero shayari urdu, munafiq poetry, mirza ghalib poetry, romantic shayari in urdu, allama iqbal ki shayari, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, poetry in urdu 2 lines attitude, john elia sad poetry, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, john elia shayari, 2 line urdu poetry copy paste, dukhi poetry, heart touching quotes in urdu, mohsin naqvi poetry, beautiful poetry in urdu, udas poetry, friendship poetry in urdu, muhabbat poetry, urdu sher, one line quotes in urdu, dosti shayari urdu, sad poetry status, narazgi poetry, judai poetry, ghalib shayari in urdu, faiz ahmad faiz shayari, barish poetry in urdu, urdu one line caption copy paste, wasi shah poetry, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, urdu poetry status, islamic poetry in urdu 2 lines, jon elia poetry, funny poetry in urdu for friends, attitude shayari in urdu, allama iqbal poetry in urdu for students, Zawwar haider poetry, mohabbat shayari urdu, jaun elia sad poetry, sad poetry sms, urdu poetry written, urdu novels,urdu novels, urdu poetry, urdu afsanay, urdu statuses, urdu shayari, sad poetry in urdu, love poetry in urdu, poetry in urdu 2 lines, urdu shayri, sad poetry in urdu 2 lines, ahmad faraz, romantic poetry in urdu, best poetry in urdu, bewafa poetry, sad shayari urdu, barish poetry, poetry in urdu text, deep poetry in urdu, sad poetry in urdu text, love shayari urdu, ghazal in urdu, urdu poetry in urdu text, love poetry in urdu romantic, urdu shayari on life, deep lines in urdu, sad love poetry in urdu, urdu poetry sms, best shayari in urdu, very sad poetry in urdu images, novels in urdu pdf, urdu books, bewafa poetry in urdu, best urdu novels, urdu poetry text copy, urdu shayari in english, shero shayari urdu, romantic shayari in urdu, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, 2 line urdu poetry copy paste, famous urdu novels, beautiful poetry in urdu, udas poetry, muhabbat poetry, urdu sher, barish poetry in urdu, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, ahmed faraz poetry, mohabbat shayari urdu, sad poetry sms, urdu poetry written, love poetry in urdu romantic 2 line, attitude poetry in urdu text, heart touching poetry in urdu, sad ghazal in urdu, 2 line urdu poetry romantic sms, ahmad faraz poetry, poetry about life in urdu, urdu words for poetry, urdu poetry copy paste, urdu poetry in english, ahmad faraz shayari, bewafa shayari urdu, love poetry in urdu 2 lines, urdu ghazal poetry, poetry in urdu 2 lines deep sad lines in urdu, faraz shayari, urdu words for shayari, urdu sad poetry sms in urdu writing, dard poetry, happy poetry in urdu, urdu love poetry for her, faraz poetry, ali zaryoun shayari, shayari in urdu words, very sad shayari urdu, ishq poetry in urdu, urdu shayari images, 2 lines poetry, new poetry in urdu, urdu poetry in hindi, urdu poetry lines, one line poetry in urdu, poetry on beauty in urdu, one line poetry in urdu text, muskurahat poetry, sad poetry in urdu 2 lines without images, mohabbat poetry in urdu, nice poetry in urdu, best love poetry in urdu, muhabbat poetry in urdu, best lines in urdu, deep love poetry in urdu, beautiful shayari in urdu, urdu sad poetry sms, novel urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, islamic books urdu, udas naslain pdf, urdu poetry books, urdu novel online reading, jasoosi digest, novel novels in urdu, urdu audio books, top urdu novels, romance novel best novels in urdu, wasif ali wasif books pdf, urdu language books pdf, tahir javed mughal novels, urdu digest pdf, naseem hijazi books, best books to read in urdu, ashfaq ahmed books pdf, dastak novel, a hameed novels, psychology books in urdu, bano qudsia novels, pakeeza anchal romantic novel, pyasa sawan novel, free urdu novels, anchal digest novels, raqs bismil nove,l urdu poetry books pdf, new novel 2021 in urdu, urdu novels 2021, love story novel in urdu, urdu history books, raja gidh read online, jasoosi novel, urdu love novels list, pakistani novels in urdu, urdu historical novels, romance novel famous urdu novels list, romance novel urdu novels list urdu poetry, urdu shayari, sad poetry in urdu love poetry in urdu jaun elia allama iqbal poetry poetry in urdu 2 lines urdu shayri sad poetry in urdu 2 lines ahmad faraz ghalib shayari attitude poetry in urdu sad quotes in urdu funny poetry in urdu romantic poetry in urdu allama iqbal shayari best poetry in urdu bewafa poetry sad shayari urdu islamic poetry in urdu barish poetry poetry in urdu attitude ghalib poetry allama iqbal poetry in urdu attitude quotes in urdu poetry in urdu text deep poetry in urdu sad poetry in urdu text love shayari urdu ghazal in urdu urdu poetry in urdu text mirza ghalib shayari love poetry in urdu romantic urdu shayari on life rekhta shayari jaun elia poetry iqbal shayari deep lines in urdu sad love poetry in urdu urdu poetry sms best shayari in urdu death poetry in urdu funny shayari in urdu dosti poetry in urdu father quotes in urdu birthday poetry in urdu poetry status eid poetry Hajoom e tanhai poetry, Vaiza zaidi poetry, jaun elia shayari, urdu poetry text copy, attitude poetry in urdu 2 lines text, urdu shayari in english, shero shayari urdu, munafiq poetry, mirza ghalib poetry, romantic shayari in urdu, allama iqbal ki shayari, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, poetry in urdu 2 lines attitude, john elia sad poetry, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, john elia shayari, 2 line urdu poetry copy paste, dukhi poetry, heart touching quotes in urdu, mohsin naqvi poetry, beautiful poetry in urdu, udas poetry, friendship poetry in urdu, muhabbat poetry, urdu sher, one line quotes in urdu, dosti shayari urdu, sad poetry status, narazgi poetry, judai poetry, ghalib shayari in urdu, faiz ahmad faiz shayari, barish poetry in urdu, urdu one line caption copy paste, wasi shah poetry, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, urdu poetry status, islamic poetry in urdu 2 lines, jon elia poetry, funny poetry in urdu for friends, attitude shayari in urdu, allama iqbal poetry in urdu for students, Zawwar haider poetry, mohabbat shayari urdu, jaun elia sad poetry, sad poetry sms, urdu poetry written, urdu novels,urdu novels, urdu poetry, urdu afsanay, urdu statuses, urdu shayari, sad poetry in urdu, love poetry in urdu, poetry in urdu 2 lines, urdu shayri, sad poetry in urdu 2 lines, ahmad faraz, romantic poetry in urdu, best poetry in urdu, bewafa poetry, sad shayari urdu, barish poetry, poetry in urdu text, deep poetry in urdu, sad poetry in urdu text, love shayari urdu, ghazal in urdu, urdu poetry in urdu text, love poetry in urdu romantic, urdu shayari on life, deep lines in urdu, sad love poetry in urdu, urdu poetry sms, best shayari in urdu, very sad poetry in urdu images, novels in urdu pdf, urdu books, bewafa poetry in urdu, best urdu novels, urdu poetry text copy, urdu shayari in english, shero shayari urdu, romantic shayari in urdu, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, 2 line urdu poetry copy paste, famous urdu novels, beautiful poetry in urdu, udas poetry, muhabbat poetry, urdu sher, barish poetry in urdu, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, ahmed faraz poetry, mohabbat shayari urdu, sad poetry sms, urdu poetry written, love poetry in urdu romantic 2 line, attitude poetry in urdu text, heart touching poetry in urdu, sad ghazal in urdu, 2 line urdu poetry romantic sms, ahmad faraz poetry, poetry about life in urdu, urdu words for poetry, urdu poetry copy paste, urdu poetry in english, ahmad faraz shayari, bewafa shayari urdu, love poetry in urdu 2 lines, urdu ghazal poetry, poetry in urdu 2 lines deep sad lines in urdu, faraz shayari, urdu words for shayari, urdu sad poetry sms in urdu writing, dard poetry, happy poetry in urdu, urdu love poetry for her, faraz poetry, ali zaryoun shayari, shayari in urdu words, very sad shayari urdu, ishq poetry in urdu, urdu shayari images, 2 lines poetry, new poetry in urdu, urdu poetry in hindi, urdu poetry lines, one line poetry in urdu, poetry on beauty in urdu, one line poetry in urdu text, muskurahat poetry, sad poetry in urdu 2 lines without images, mohabbat poetry in urdu, nice poetry in urdu, best love poetry in urdu, muhabbat poetry in urdu, best lines in urdu, deep love poetry in urdu, beautiful shayari in urdu, urdu sad poetry sms, Novel urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, islamic books urdu, udas naslain pdf, urdu poetry books, urdu novel online reading, jasoosi digest, novel novels in urdu, urdu audio books, top urdu novels, romance novel best novels in urdu, wasif ali wasif books pdf, urdu language books pdf, tahir javed mughal novels, urdu digest pdf, naseem hijazi books, best books to read in urdu, ashfaq ahmed books pdf, dastak novel, a hameed novels, psychology books in urdu, bano qudsia novels, pakeeza anchal romantic novel, pyasa sawan novel, free urdu novels, anchal digest novels, raqs bismil nove,l urdu poetry books pdf, new novel 2021 in urdu, urdu novels 2021, love story novel in urdu, urdu history books, raja gidh read online, jasoosi novel, urdu love novels list, pakistani novels in urdu, urdu historical novels, romance novel famous urdu novels list, romance novel urdu novels list urdu poetry, urdu shayari, sad poetry in urdu love poetry in urdu jaun elia allama iqbal poetry poetry in urdu 2 lines urdu shayri sad poetry in urdu 2 lines ahmad faraz ghalib shayari attitude poetry in urdu sad quotes in urdu funny poetry in urdu romantic poetry in urdu allama iqbal shayari best poetry in urdu bewafa poetry sad shayari urdu islamic poetry in urdu barish poetry poetry in urdu attitude ghalib poetry allama iqbal poetry in urdu attitude quotes in urdu poetry in urdu text deep poetry in urdu sad poetry in urdu text love shayari urdu ghazal in urdu urdu poetry in urdu text mirza ghalib shayari love poetry in urdu romantic urdu shayari on life rekhta shayari jaun elia poetry iqbal shayari deep lines in urdu sad love poetry in urdu urdu poetry sms best shayari in urdu death poetry in urdu funny shayari in urdu dosti poetry in urdu father quotes in urdu birthday poetry in urdu poetry status eid poetry Hajoom e tanhai poetry, Vaiza zaidi poetry, jaun elia shayari, urdu poetry text copy, attitude poetry in urdu 2 lines text, urdu shayari in english, shero shayari urdu, munafiq poetry, mirza ghalib poetry, romantic shayari in urdu, allama iqbal ki shayari, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, poetry in urdu 2 lines attitude, john elia sad poetry, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, john elia shayari, 2 line urdu poetry copy paste, dukhi poetry, heart touching quotes in urdu, mohsin naqvi poetry, beautiful poetry in urdu, udas poetry, friendship poetry in urdu, muhabbat poetry, urdu sher, one line quotes in urdu, dosti shayari urdu, sad poetry status, narazgi poetry, judai poetry, ghalib shayari in urdu, faiz ahmad faiz shayari, barish poetry in urdu, urdu one line caption copy paste, wasi shah poetry, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, urdu poetry status, islamic poetry in urdu 2 lines, jon elia poetry, funny poetry in urdu for friends, attitude shayari in urdu, allama iqbal poetry in urdu for students, Zawwar haider poetry, mohabbat shayari urdu, jaun elia sad poetry, sad poetry sms, urdu poetry written, urdu novels,urdu novels, urdu poetry, urdu afsanay, urdu statuses, urdu shayari, sad poetry in urdu, love poetry in urdu, poetry in urdu 2 lines, urdu shayri, sad poetry in urdu 2 lines, ahmad faraz, romantic poetry in urdu, best poetry in urdu, bewafa poetry, sad shayari urdu, barish poetry, poetry in urdu text, deep poetry in urdu, sad poetry in urdu text, love shayari urdu, ghazal in urdu, urdu poetry in urdu text, love poetry in urdu romantic, urdu shayari on life, deep lines in urdu, sad love poetry in urdu, urdu poetry sms, best shayari in urdu, very sad poetry in urdu images, novels in urdu pdf, urdu books, bewafa poetry in urdu, best urdu novels, urdu poetry text copy, urdu shayari in english, shero shayari urdu, romantic shayari in urdu, heart touching poetry in urdu 2 lines sms, sad poetry sms in urdu 2 lines text messages, 2 line urdu poetry copy paste, famous urdu novels, beautiful poetry in urdu, udas poetry, muhabbat poetry, urdu sher, barish poetry in urdu, most romantic love poetry in urdu, khamoshi poetry, love poetry in urdu text, sad poetry sms in urdu 2 lines, sad poetry in urdu 2 lines about life, ahmed faraz poetry, mohabbat shayari urdu, sad poetry sms, urdu poetry written, love poetry in urdu romantic 2 line, attitude poetry in urdu text, heart touching poetry in urdu, sad ghazal in urdu, 2 line urdu poetry romantic sms, ahmad faraz poetry, poetry about life in urdu, urdu words for poetry, urdu poetry copy paste, urdu poetry in english, ahmad faraz shayari, bewafa shayari urdu, love poetry in urdu 2 lines, urdu ghazal poetry, poetry in urdu 2 lines deep sad lines in urdu, faraz shayari, urdu words for shayari, urdu sad poetry sms in urdu writing, dard poetry, happy poetry in urdu, urdu love poetry for her, faraz poetry, ali zaryoun shayari, shayari in urdu words, very sad shayari urdu, ishq poetry in urdu, urdu shayari images, 2 lines poetry, new poetry in urdu, urdu poetry in hindi, urdu poetry lines, one line poetry in urdu, poetry on beauty in urdu, one line poetry in urdu text, muskurahat poetry, sad poetry in urdu 2 lines without images, mohabbat poetry in urdu, nice poetry in urdu, best love poetry in urdu, muhabbat poetry in urdu, best lines in urdu, deep love poetry in urdu, beautiful shayari in urdu, urdu sad poetry sms, novel urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, islamic books urdu, udas naslain pdf, urdu poetry books, urdu novel online reading, jasoosi digest, novel novels in urdu, urdu audio books, top urdu novels, romance novel best novels in urdu, wasif ali wasif books pdf, urdu language books pdf, tahir javed mughal novels, urdu digest pdf, naseem hijazi books, best books to read in urdu, ashfaq ahmed books pdf, dastak novel, a hameed novels, psychology books in urdu, bano qudsia novels, pakeeza anchal romantic novel, pyasa sawan novel, free urdu novels, anchal digest novels, raqs bismil nove,l urdu poetry books pdf, new novel 2021 in urdu, urdu novels 2021, love story novel in urdu, urdu history books, raja gidh read online, jasoosi novel, urdu love novels list, pakistani novels in urdu, urdu historical novels, romance novel famous urdu novels list, romance novel urdu novels list kdrama urdu, Desi kimchi, Desi kdrama fans, Urdu kdrama, Urdu web, Kdrama maza, Korean masti, korean dramas, kdrama, k drama, best korean drama, korean drama 2020, korean drama 2021, kdrama 2021 best kdrama, korean series, kdramas to watch, korean drama website, kdrama website, netflix korean drama, asian drama, best korean drama 2020, top korean drama, new korean drama 2021, best korean drama 2021, best kdrama 2020, best kdrama to watch, best korean drama on netflix, best korean series, best kdrama 2021, kdrama netflix, k drama urdu, www korean drama, watch korean drama, best k dramas on netflix, netflix korean drama 2021, best kdrama on netflix, new korean drama, www kdrama, k drama 2021, korean series on netflix, netflix korean drama 2020, top 10 korean drama, top kdrama, top korean drama 2020, k dramas to watch, 2021 korean drama, korean drama series, best korean series on netflix, new kdrama 2021, 2020 kdrama, 2020 korean drama, 2021 kdrama, k drama netflix, best k drama to watch, romance kdrama, k drama 2020, new korean drama 2020, latest korean drama 2021, korean dramas to watch, top korean drama 2021, watch kdrama, korean tv series, highest rated korean drama, korean drama in hindi, korean drama shows, top kdrama 2021, new kdrama, watch asian drama, popular korean drama, kdrama online, latest korean drama, korean drama online, korean netflix series, korean tv shows, korean shows, must watch kdrama, korean shows on netflix, famous korean dramas, romance korean drama, top kdrama 2020, most popular korean drama, korean series 2021, must watch korean drama, new kdrama 2020, best romance kdrama, popular kdrama, good kdramas, korean drama in hindi dubbed, korean series 2020, kdramas 2020, best korean shows on netflix, korean drama 2021 netflix, top k dramas, top rated korean drama, watch kdrama online, korean romance, top korean series, netflix k drama, good korean dramas, latest kdrama 2021, most watched korean drama, top 10 kdrama, famous kdrama, all in korean drama, best k drama 2020, urdu adab, urdu digests, raja gidh, urdu novels list, raqs e bismil novel, novels in urdu pdf, urdu books, best urdu novels, famous urdu novels, free urdu digest, naseem hijazi, best urdu novels list, raja gidh pdf, urdu books library, new urdu novels, jangloos, list of urdu books, urdu story books, bano qudsia books, pdf urdu books, famous urdu novels list, best pakistani novels in urdu, urdu stories pdf, naseem hijazi novels, urdu novels online, udaas naslain, best urdu novels pdf, latest urdu novels, short novels in urdu,, romantic story urdu, urdu best books, best urdu books to read, pakeeza anchal online reading, ismat chughtai books, urdu digest novels, urdu books online, urdu literature books, pakeeza anchal, l online reading, pakeeza anchal novel online reading, urdu novel bank, urdu novel platform, yaar zinda sohbat baqi, desi story urdu,urdu web novel salam korea **Salam Korea: Aik aisa rishta jo aap ko kore aur pakistan ki saqafat se aashna karaye ga.** (Salam Korea: A relationship that will introduce you to the culture of Korea and Pakistan.)

Salam Korea

by Vaiza Zaidi

قسط 6

بارہ بجنے والے تھے۔۔

اس نے سوچا۔۔ 

پھر اپنا چھوٹا بیگ نکال کر اپنی سیول سے کی گئ شاپنگ دیکھنے لگی

اس نے خوبصورت سا بریسلٹ نکال لیا۔۔ یہ اسکو سب سے زیادہ پسند آیا تھا۔۔ اس نے سوچا پھر ٹاپس کا سیٹ بھی نکال لیا۔۔ دونوں ساتھ رکھ کر دیکھتی رہی۔۔

پھر اپنے بیگ سے دلاور کا دیا گیا گفٹ نکالا 

پرفیوم اس نے استعمال کے لیے باہر نکال کر رکھا پھر اس گفٹ کا ریپر احتیاط سے نکال کر پہلے ٹاپس کو انکے پلاسٹک ریپر میں ڈالا پھر گفٹ ریپر سے لپیٹ کر اوپر ربن باندھ دیا ۔۔

نیچے سنتبھیا سو چکی تھی سو آہستہ آہستہ قدم اٹھاتی سیڑھیاں اتر آئی دروازے کی ناب گھمائی کھولنے کیلیے چند لمحے سوچا پھر پلٹ کر تیزی سے سیڑھیاں چڑھ گئ۔ 

کیا کر رہی ہو سنتھیا ڈسٹرب ہو کر بڑ بڑائی۔۔ سوری اس نے اوپر سے جھانک کر کہا۔۔ سنتھیا جواب سے قبل دوبارہ سو چکی تھی۔۔

وہ اس بار احتیاط سے ہی اتری اور آہستہ سے دروازہ کھول کر ٹیرس میں آگئ۔۔ 

دس بارہ لڑکیاں خوب تیار شیار کھڑی تھیں۔۔   چھوٹی سی میز رکھی تھی جس پر کیک اور کھانے پینے کی چیزیں رکھی تھیں میز کے کنارے کھڑی کوئی سالگرہ کا گیت گا رہی تھیں 

جی ہائے موم بتیاں بجھا کر ہنسی ہوئی کیک کاٹنے لگی تھی کہ اس پر نظر پڑی تو اشارے سے قریب آنے کو کہا۔۔ اریزہ رات کے حساب سے ٹراوزر شرٹ میں ملبوس تھی یہاں سب کو دیکھ کر اسے غلطی کا احساس ہو ا مگر اب کیا ہو سکتا تھا سو مسکرا کر آگے بڑھی

اسکی کیا ضرورت تھی۔۔

 جی ہائے حیران ہوئی تھی۔۔

مگر حسب عادت خوشدلی سے کہہ کر شکریہ کے انداز میں جھک کر وصول کیا۔۔

ان سب نے کیک کٹتے ہی کیک پر ہلہ بول دہا سب ایک دوسرے کے اوپر کیک مل  بھئ رہی تھیں وہ ان میں مس فٹ تھی سو تھوڑی دیر دیکھ کر پلٹنے لگی کی جی ہائے نے آواز دی۔۔ 

کدھر جا رہی ہو آئو کیک تو کھا لو۔

اریزہ پلٹ آئی۔۔ اس نے صاف جگہ سے اسے ایک ٹکڑا نکال کر آگے بڑھایا۔۔ اریزہ کو لگا تھا وہ اسکے منہ پر مل دے گی سو زہنی طور پر تیار تھی جھجکتے ہوئے آگے بڑھی مگر اس نے بڑے آرام سے کھلایا اور اسکے ڈرے ڈرے انداز پر ہنس پڑی۔۔ 

اریزہ بھی ہنس دی۔۔ 

اس نے اس بار کیک مٹھی میں بھرا تھا اور پورا اریزہ کا چہرہ سن دیا تھا۔۔

اریزہ پہلے بھونچکا رہ گئ پھر بدلا لینے دوڑی سب لڑکیاں ہنستے ہنستے بے حال ہو رہی تھیں 

پھر رنگ نسل مزہب زبان ہر چیز میں الگ ہوتے ہوئے بھی اریزہ کو ان میں گھلنے ملنے میں وقت نہیں لگا تھا۔۔ 

کافی دیر کی ہلڑ بازی کے بعد سب رخصت ہونا شروع ہوئیں۔۔ اس نے ایک ایک سے کہا تھا کہ اسکی مدد کرادے چیزیں سمیٹنے میں مگر سب منہ چڑاتی بھاگ گئیں۔ اریزہ سے تو شائد اسے امید بھی نہ تھی جبھی سر جھٹک کر چیزیں خود ہی سمیٹنے لگی۔ اریزہ کو انکی گفتگو سمجھ تو نہ آئی تھی مگر اسے اکیلے لگا دیکھ کر مروتا  جی ہائے کے ساتھ چیزیں سمیٹنے میں مدد کروانے لگی۔۔ اسکو کافی تحفے ملے تھے ان دونوں نے احتیاط سے لا کر اسکے کمرے کی میز پر لا کر رکھے اریزہ میز کو دیکھ کر چونکی سیدھی ہوئی تو سامنے دیوار پر بیڈ کی دیوار سامنے الماری پر ۔۔

ہر جگہ ایک خوبصورت نوجوان پوز دے رہا تھا۔ 

اسے چونکتے دیکھ کر جی ہائےمسکرائی۔۔

بریو ہارٹ گروپ کا لیڈ سنگر۔۔ دوہیون 

میرا کرش۔۔ اس کی آنکھوں میں گہری چمک آگئ تھی

اسکی ہر فین میٹنگ سیول کی اٹینڈ کی ہے۔۔

یہ سب اسکے ہاتھ سے سایئنڈ پوسٹرز ہیں۔ 

میری زندگی کی سب سے بڑی خواہش تھی کہ اس سے بات کروں پتہ ہے اس نے مجھ سے ہاتھ ملایا اف۔۔۔  وہ جوش سے بیڈ سائڈ پر لگے پوشٹر کی طرف بڑھی۔۔

یہ اسکی لیٹسٹ البم کا پوسٹر ہے اس کے کنسرٹ میں گئ تھی سب سے آگے خوب شور مچا کر میں  نے اسے متوجہ کیا تھاتو  اس نے میرا نام لے کر شکریہ ادا کیا تھا۔۔ اور یہ سائن کرکے دیا تھا۔۔

وہ بچوں جیسی خوشی سے بتا رہی تھی۔۔اریزہ مسکرا دی۔۔ تو اسے خیال آیا۔۔

سوری کیا سوچتی ہوگی کیسی پاگل لڑکی ہے۔۔

مگر سارانگی ہئ۔۔ 

وہ آگے اپنی زبان میں کچھ کہتی چلی گئ۔۔ 

اچھا خیر۔۔ ان میں سے تمہارا گفٹ کدھر ہے۔۔ اس خیال آیا۔۔

اریزہ نے نام لکھا ہوا تھا پھر بھی اسکو اشارے سے بتایا اپنا گفٹ۔۔ وہ خوشی خوشی اسے کھولنے بیٹھ گئ۔۔

ایک بے حد پیارا سا بھورے رنگ کا میٹل بریسیٹ تھا جس میں بہت پیارے  گول گول سکے جن پر ایک جانب ہنگل میں دوسری جانب انگریزی میں عبارت تحریر تھی۔۔ 

 ساتھ چھوٹے چھوٹے سے نگوں والے ٹاپس تھے۔۔

یہ میں نے یہیں سے لیے تھے مجھے بہت پسند آئے تھے سوچا تمہیں بھی شائد پسند آجائیں۔۔

اریزہ کو سمجھ نہ آیا اسکے چہرے کے تاثرات سے کہ پسند آیا یا نہیں۔۔ 

یہ مجھے پسند نہیں آئے۔۔ وہ رکی۔

آئ جسٹ لوڈ اٹ تھینک یو سو مچ۔۔

وہ پورے دل سے بولی تو اریزہ بھی خوش ہوگئ

۔ واقعی۔۔ اس نے تصدیق چاہی 

واقعی۔۔ اس نے آنکھیں پھیلائیں پھر دونوں ہنس پڑیں۔۔

تم ہنستئ بہت پیاری لگتی ہو۔ جی ہائے کے کہنے پر اس کی آنکھیں تھوڑی اور بڑی ہوئیں۔پھر سنبھل کر بولی

شکریہ تم بھی بہت پیاری ہو۔خاص کر تمہارے بال۔ لمبے سیدھے سلکی۔ 

جی ہائے ہنس دی

تمہارے بھئ تو سیدھے ہی ہیں۔ 

اسکے کہنے پر وہ سر کھجا کے رہ گئ۔

 صبح استری ہوتی ہے ان پر جب ایسے ہوتے ہیں۔۔ 

یہ اعتراف کرنے کی ضرورت کیا تھی

تم کہاں سے ہو ؟ جی ہائے نے اسے چپ دیکھا تو بات بڑھانے کو بولی۔ 

پاکستان۔ اریزہ چونکی۔ 

انڈیا کا شہر ہے یہ؟ وہ برسبیل تذکرہ پوچھ رہی تھی۔ وہ بس دیکھ کر رہ گئ۔ 

نہیں۔ ہم انڈیا کا پڑوسی ملک ہیں۔   70 سال ہو چکے ہمیں اس سے الگ ہوئے وے۔ 

وہ جتا کر بولی جوابا جی ہائے کندھے اچکا گئ

 واٹ ایور۔ مجھے جغرافیہ میں دلچسپی نہیں۔۔۔ لیکن اتنا پتہ ہے  جنوبی ایشائی لوگوں کی آنکھیں کشادہ ہوتی ہیں۔ اور رنگ سانولے مگر تم نے میری معلومات میں اضافہ کردیا۔ گورے لوگ بھی ہوتے ہیں جنوبی ایشیا میں۔ مگر کم ناہونے کے برابر ہے نا۔ 

وہ فراٹے سے مخصوص سیول کے لہجے میں انگریزی بول رہی تھی۔ لفظ اٹک رہے ہوں جیسے منہ میں ۔ اور ش کا ذیادہ استعمال۔ اسے سمجھنے میں کئ پل لگے۔  

مجھے ویسے یہاں آنے سے قبل تحفظات تھے میں نے یہی سنا تھا کہ انگریزی بولنی نہیں آتی یہاں کے لوگوں کو۔ مگر تمہاری انگریزی بہت اچھی ہے۔ 

اسکا لہجہ کونسا رواں تھا۔ جی ہائے منتظر نظروں سے دیکھے جا رہی تھی جب اس نے وقت لیکر ذہن میں مکمل جملہ ترتیب دیا۔ 

ہاہ۔ یہ Myth ہے۔ کورینز کو انگریزی نہیں آتی بالکل بھی نہیں۔ ہم ہائی اسکول میں اتنی سیکھتے کہ پڑھ یا لکھ لیں بس۔ بولا ہم سے نہیں جاتا میں غیر معمولی کیس ہوں۔ 

وہ ہنسی۔ پھر اٹھ کر تحفے کھولنے لگی۔ 

مجھے گوارا زبردستی انگریزی زبان کے  کورس میں اپنے ساتھ لے گئ تھئ ۔ سو سیکھ لی مگر سوچتی تھی بے فائدہ کام کیا مگر آج فائدہ ہوا۔ تم سے بات ہوسکتی ہے۔ ویسے تم ہنگل سیکھ لو ورنہ یہاں رہنے میں مشکل ہوگی۔ 

وہ بے تکان بول رہی تھی اریزہ سر ہلا رہی تھی۔ 

اس نے ایک کاپی اٹھا کر سب کے نام اور دیئے گئے تحفے کو لکھنا شروع کردیا۔ 

مجھے احسان لینا نہیں پسند۔۔ لکھتے لکھتے وہ سر اٹھا کر بتانے لگی۔ 

میں اپنی سالگرہ پر تحائف دینے والوں کے نام اور تحفے باقائدہ لکھ کر رکھتی ہوں تاکہ ان سب کا احسان انکی سالگرہ پرچکا سکوں۔۔۔

اریزہ نے جوابا کچھ کہنے کیلئے منہ کھولا۔ مگر بیڈ پر پڑا اسکا فون بجنے لگا۔ اس نے ہاتھ بڑھا کر فون اٹھایا ۔کڑوا سا تاثر چہرے پر آیا پھر اس نے فون کاٹ کر واپس رکھ دیا۔

تمہاری سالگرہ کب ہے؟ وہ اب اس سے پوچھ رہی تھی۔

اریزہ کے چہرے پر سایہ سا دوڑ گیا

میں اپنی سالگرہ نہیں مناتی۔ 

وہ۔دھیرے سے بتاتی جانے کیلئے اٹھ کھڑی ہوئئ

کیوں؟ وہ حیران ہوئی۔ 

میں تو۔ وہ کچھ بولنے لگی تھی جب دوبارہ اسکا فون بج اٹھا۔ 

اس نے جھلا کر مڑ کر فون اٹھایا

دے۔ اس نے فون کان سے لگایا۔

تو؟ مجھے آپ سے مزید کچھ نہیں چاہیئے۔ مبارکباد بھئ نہیں۔ یہ زحمت کرنا بھی چھوڑ دیں ایک بار میں سمجھ  کیوں نہیں جاتے آپ؟ 

اجنبی زبان میں بولتے وہ ایکدم سے حلق کے بل چلانے لگئ تھی۔ 

اریزہ بھونچکا سی کھڑی دیکھتی رہی۔ 

میں چلتی ہوں۔ وہ کہہ کر رکی نہیں۔۔ جی ہائے نے شائد سنا بھی نہیں تھا۔ فون کان سے لگائے ہنگل میں بولے جا رہی تھی۔ 

میں مر گئ ہوں سمجھیں آپ۔ اورآپ مر گئے ہیں میرے لیئے۔۔ مجھے آپکی کسی چیز کی ضرورت نہیں ہے۔

وہ طیش سے کانپ اٹھی تھئ۔ دروازہ بند کرتے کرتے بھی اریزہ کو غصے میں اپنا فون ہی اچھال کر دور پھینکتی نظر آگئ۔ 

غصے میں اپنا اسمارٹ فون اچھال پھینکنا اسمارٹ کام نہیں ہے۔ 

اسکو تاسف ہوااسکی حرکت پر۔۔۔ بے چارہ فون۔۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سنتھیا بے خبر سوئے جا رہی تھی۔ وہ احتیاط سے نیم تاریک کمرے میں ٹٹول ٹٹول کر سیڑھیاں چڑھ کر اپنے بیڈ سائیڈ پر چلی آئی۔۔۔۔اسکے بیڈ کے آگے کھلی جگہ پر دو فلور کشن رکھے تھے جن پر بیٹھ کر بڑی سی گلاس ونڈو سے باہر کا نظارہ کیا جا سکتا تھا۔ برفباری کی وجہ سے  عمودی چھت تھئ وہ بھی شیشے کی بنی ہوئی۔ پورا آسمان سر پر الٹا تھا۔ وہ ایک فلو رکشن پر بیٹھ کر سر اٹھا کر آسمان دیکھنے لگی۔ 

ننھے ننھے چند ستارے بس۔ باقی گھپ اندھیرا۔ شائد چاند کی آخرئ تاریخیں تھیں۔ اس نے گھٹنوں کے گرد بازو لپیٹے اور تھوڑی رکھ کر سوچنے لگئ۔ اور وہ جو سوچتی تھی بلاگ پر لکھ ڈالتی تھی۔ 

کتنی عجیب بات ہے ایسے لوگ جو ہمارے گرد سانس لیتے جیتے ہیں۔ مرجاتے ہیں ۔۔ پھر کبھی نظر نہیں آتے جیسے کبھی وہ تھے ہی نہیں۔۔  ہم ان سے کبھی نہیں مل سکتے۔ قیامت تک نہیں۔ انکا شائد ہماری زندگی میں مختصر کردار ہی لکھا ہے آسمانوں کی جانب سے۔ ہم بس انکی یادوں کو زندہ رکھ سکتے ہیں جی کر۔ ہاں جی کر۔ ہم جی رہے ہیں تو مر جانے والے ہماری یادوں میں سہی زندہ تو ہیں۔ انکا ذکر زندہ ہے۔ ہم میں ۔۔۔ ہم سے۔ ہم بھی مر جائیں گے تو انکا نام لیوا بھئ کوئی نہ رہے گا۔۔۔۔ سو جینا تو پڑتا ہےکیونکہ ۔ مرنے والوں کے ساتھ مر جو نہیں گئے ہم۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ اپنے اپارٹمنٹ کے ٹیرس پر کھڑا سیول کی روشنیاں دیکھ رہا تھا

کافی کی چسکیاں لتے گہری سوچ میں گم تھا۔۔ کروں نہ کروں

اسے دو دن میں فیصلہ کرنا تھا۔۔

اس نے کافی کا گھونٹ بھرا  پھر ٹیرس پر رکھے کائوچ پر دراز ہو گیا

سارا دن کچھ نہ کرنا کتنا مشکل کام تھا ۔

اس نے موبائل کی لاک اسکرین روشن کی رچل کا خوبصورت چہرہ سامنے تھا۔

رچل۔۔ اس نے مخاطب کیا۔۔

تم میرے بغیر کیسے رہ رہی ہو؟

مجھے تو جینا بھول گیا ۔۔ لگتا ہے میں کسی کام کا نہیں رہا۔ میں صبح سے شام کرتا ہوں بس ۔

خدا کی عبادت کرنا چا ہوں یا تمہیں یاد  ۔ میں دونوں کام صحیح نہیں کر پا رہا

میں کیا کروں کیسے جیئوں؟

آہجوشی ھادی کہتے مجھے اپنے آپ کو مصروف کرنا چاہیئے 

مگر میں خود کو جتنا بھی مصروف کر لوں تمہاری یاد میرے دل سے نہیں جاتی۔۔ اسکی آنکھیں نم ہوئیں  پھر کتنے ہی آنسو چہرے پر پھسل آئے

اس نے موبائل انلاک کیا اور انٹرنیٹ آن کر لیا۔۔

کئی نوٹیفکیشن آئے۔۔ اس نے جلدی سے پہلا نوٹیفکیشن کھولا۔۔

وہ بے حد حیرت سے بلاگ پڑھ رہا تھا۔۔

یہ کیا اسکیلیے لکھتا تھا کیا بلاگ؟

وہ فیصلہ جو کر نہیں پا رہا تھا اب فورا کر لیا تھا۔۔

اس نے لکھنا شروع کیا

پہلے حسب عادت ہنگل میں لکھ ڈالا پھر خیال آیا۔ تو انگریزی میں لکھنے لگا۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پہلا کمنٹ۔۔ایڈمن کام چور ہے آج کام کرنا پڑا تو بار بار بلاگ لکھ رہی ہے ہا ہا۔

دوسرا:فالتو وقت ضائع نہ کرو جا کر کام کرو۔۔کپڑے دھل گئے؟

تیسرا:ایسا کیا کام کر لیاجو مرنے مرانے کی باتیں کرنے لگیں۔  کے ٹو سر کر لی یا آج زندگی مین پہلی بار رات کے برتن دھو لیے۔۔ صبح ماسی نہیں آئے گی کیا؟

اس نے بھنا کر گھورا۔۔ آیا بڑا میری ساس کہیں کا۔۔

چوتھا:کوئی کپڑے دھوتے دھوتے مر جائے تو اسکا ذکر اس بلاگ پر زندہ رہے گا ہم یاد کیا کریں گے ایک تھی ایڈمن کام کرتے موت پڑتئ تھئ۔۔ 

بد تمیز  لوگ۔۔ وہ بھنا گئ۔ ڈیلیٹ کر دیا کمنٹ

پانچواں : ہا ہا ہا ایڈمن بہت اہم کام کر رہی ہے کمنٹ ڈیلیٹ کر رہی ہے۔۔ 

وہ گہری سانس لے کر رہ گئ۔۔

چھٹا کمنٹ: یہ تم نے مجھے کہا ہے تو میں نے سن لیا شکریہ تم نے فیصلہ کرنے میں میری مدد کی 

تم نہیں جانتے تم نے تمہارے لکھے گئے ایک ایک لفظ نے مجھے کب کب کیسے کیسے مدد کی مگر میں تمہیں بتانا چاہتا ہوں تم بہت اچھا کام کرتے ہو یہ کام کرتے رہو ہمیشہ خوش رہو اچھے لڑکے۔۔ 

اریزہ پڑھ کر بے ساختہ مسکرا دی۔۔ 

پھر دوبارہ اپنی تحریر پڑھی 

اس میں تو کچھ بھی خاص نہیں ۔۔ اس نے سوچا

پھر کمنٹ کا ریپلائی کر دیا

مجھے نہیں لگتا میں نے کچھ بہت اچھا لکھا مگر میں نے جب بھی لکھا دل سے لکھا اور دل سے لکھے لفظ دل میں اتر جاتے ہیں آپ کے الفاظ میرے دل میں ترازو ہوئے ہیں میں بہت خوش ہوں دنیا میں کوئی ایک انسان ایسا ہے جو دل رکھتا ہے خدا آپکا دل بڑھائے شکریہ۔۔ 

اس نے ریپلائی کردیا۔ پھر موبائل کا وائی فائی بند کرتی بستر پر آلیٹی۔ آج واقعی تھکن بہت تھی جبھئ منٹوں میں بے خبر ہوگئ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ خاص طور سے وقت نکال کر اس ریستوران میں آیا تھا۔۔

دو تین ویٹریسز ادھر ادھر پھرتی نظر آرہی تھیں 

 وہ حسب عادت ایکسپریسو کا آرڈر دے کر بیٹھ گیا۔۔

تھوڑی دیر میں وہ آئی تھی۔۔ میز پر اسکا کپ رکھ کر تیزی میں مڑنے لگی 

بات سنیئے۔۔۔

اس نے عجلت سے پکارا

بہت معزرت اس اتوار میں کسی بہت ضروری کام میں پھنس گیا تھا اسلیئے آ نہیں سکا۔۔ 

ہوپ نے یوں دیکھا جیسے کہہ رہی ہو تو؟

میں کیا کروں

اس دن مجھے امید ہے آپ نےزیادہ انتظار نہیں کیا ہوگا۔۔

میں آپ کا انتظار کیوں کرنے لگی۔۔ اس نے بےنیازی سے کہا۔۔

اچھا۔۔ وہ مسکرا دیا۔۔

اچھی بات ہے میری وجہ سے آپکو دشواری نہیں ہوئی ۔۔

میں واقعی آپ سے  پور ٹریٹ بنوانا چاہتا ہوں مجھے دوبارہ آپکا وقت مل سکتا ہے؟

ہوپ نے بھنویں اچکا کر دیکھا۔۔

اور جواب دیے بغیر جانے لگی۔۔ پھر کچھ سوچ کر مڑی۔۔

میں کل ہنگن دریا کے پاس جائوں گی۔ 

ہیون سک پھر مسکرا دیا۔۔ ہوپ کے دل نے ایک دھڑکن مس کر دی تھی۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مجھے لگ رہا ایک عمر سے میں نے پیٹ بھر کر نہیں کھایا ۔۔

ہر بار پلیٹ بناتے ایسا ہی کچھ کہتی تھی اریزہ۔۔

سنتھیا سوائے اسکو تسلی دینے کے کیا کر سکتی تھی۔۔

یار یہ سوپ اس ہفتے دوسری بار بنا ہے نا؟

اریزہ نے سوپ مین چمچ چلایا۔۔

سنتھیا آج چکن اسٹیک شوق سے کھا رہی تھی سو بس سر ہلا دیا اسکی توجہ پوری کھانے کی طرف تھی۔۔

پالک نہیں ہے تو یہ آخر کیا ہے۔۔

اسے تجسس ہو رہا تھا۔۔

میں بھی یہاں بیٹھ جائوں ؟

جی ہائے مسکراتی ہوئی ان کے پاس چلی آئی۔۔

ہاں ضرور ۔۔ اریزہ نے پرخلوص انداز میں کہا۔۔ وہ شکریہ ادا کرتی اسکے پاس آ بیٹھی۔۔

تم سبزیاں بہت شوق سے کھاتی ہو ۔۔ اس نے دلچسپی سے اسکی پلیٹ پر نظر ڈالی۔۔

وہ شملہ مرچ مٹر سبز گوبی گاجر کی مکس سبزی پنیر کے ساتھ بنی ہوئی اور بوائلڈ رائس ساتھ ابلے انڈے اور سوپ لے کر بیٹھی تھی 

ہاں ۔۔ وہ سر ہلا کر رہ گئ اور کیا کہتی۔ پاکستانی طریقے کے مطابق سبزیاں گلی ہوئی نہیں تھیں زائقہ مگر اچھا تھا۔۔ سادے چاول کھانے سے تو بہتر تھا۔۔ 

سنتھیا اسٹیک اور چاول ساتھ ساسجز میں بنی میکرونی کھا رہی تھی

یہی کچھ جی ہائے بھی کھا رہی تھی۔۔

مجھے سی ویڈ سوپ پسند نہیں ویسے۔۔ اس نے چہرے پر آئی لٹ کان کے پیچھے کرتے ہویئے بات برائے بات کہا۔۔ سنتھیا نے اسکے ہاتھ کو غور سے دیکھا

کونسا سوپ۔۔اریزہ نے اسی وقت چمچ بھر کر منہ میں ڈالا تھا۔۔

 سنتھیا نے پوچھا تو اسکے حلق میں اٹک گیا۔۔

سی ویڈ سوپ۔۔ اس نے اریزہ کے بائول کی طرف اشارہ کیا۔۔

سی ویڈ۔۔؟ اریزہ نے بے چاری سی شکل بنائی۔۔ سنتھیا کو ہنسی روکنی محال ہو گئ۔۔ ہنستے ہنستے بمشکل نوالا نگلا۔۔

سی ویڈ یعنی سمندری گھاس۔۔ اریزہ نے کہتے ہوئے سوپ میں چمچ چلایا۔۔

یعنی کچھ بھی ۔۔۔  کچھ بھی یہاں کھانے کو مل سکتا۔۔

وہ بڑبڑا کر رہ گئ۔۔

کیا کہہ رہی ہو۔۔؟

جی ہائے کو سمجھ نہ آیا۔۔سوالیہ ہوئی

کچھ نہیں۔۔ بھوک تو لگ رہی تھی۔۔ سو چاول نگلنے لگی۔۔

اریزہ یہ بالکل ویسا ہی بریسلٹ پہنے ہے جیسا تم نے اس دن خریدا تھا۔۔ سنتھیا نے کہا تو جی ہائے کے بھی کان کھڑے ہوئے۔۔

یہ ویسا نہیں وہی پہنے ہے۔۔ اریزہ کا انداز سرسری تھا۔۔

کیا۔۔

وہ چیخی۔۔

تم نے یہ اسے کیوں دے دیا۔؟ اتنا مہنگا اتنے شوق سے خریدا تھا مجھے تو اس دن مانگنے پر نہیں دیا تھا میں پیسے بھی دے رہی تھی۔۔

وہ دانت کچکچا رہی تھی۔۔

جی۔ہائے تھوڑا الجھن سے دیکھ رہی تھی 

اسے اندازہ تو ہو گیا تھا اسکے بریسلیٹ کے بارے میں بات ہو رہی۔۔

اریزہ نے اسے آنکھوں ہئ آنکھون میں گھرکا۔۔ 

پھر مسکرا کر بولی۔۔ اسکو یہ کافی پسند آیا ہے تعریف کر رہی ہے اسکی۔۔ 

سنتھیا کے تیور کڑے تھے جی ہائے کو یقین تو نہیں آیا مگر مسکرا کر شکریہ ادا کرنے لگی۔۔

اتنے خلوص سے سالگرہ میں بلایا تھا خالی ہاتھ جاتی کیا۔؟

اس نے جان کر سالگرہ کا لفظ استعمال کیا۔۔

تو کچھ اور دے دیتی ۔۔ وہ خفا تھی

دینے لگی تھی مگر یہ مجھے بہت پسند آیا تھا بری نیت لگ جاتی کچھ اور دیتی تو۔۔ وہی چیز دوسرے کو دی جاتی جو خود آپ کو پسند ہو۔۔ ۔۔ویسے اسکی نازک کلائی مین سج رہا ہے۔۔

اس نے کہا تو سنتھیا سر جھٹک کر رہ گئ۔۔ جی ہائے نے کھانا ختم کیا اٹھتے ہوئے اسکی رہڑھ کی ہڈی پر ہلکے سے دو انگلیوں سے ہاتھ پھیر کر ٹوکا۔۔

یہ دیکھو۔۔ سیدھی ہو کر بیٹھو۔۔  ابھی تو نہیں مگر بڑھاپے میں بہت پچھتائوگی۔۔

اریزہ کرنٹ کھا کر سیدھی ہوئی۔۔ وہ مسکراتی چلی گئ۔۔

اسے کیا تکلیف ہے۔۔ سنتھیا چڑی۔۔ اریزہ مگر پھر کندھے سیدھے ہی کر کے بیٹھی رہی۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایڈون انہیں دیکھ کر سیدھا انکے پاس آیا تھا۔۔ سنتھیا اسے دیکھ کر رک گئ مگر اریزہ ہونہہ کر کے آگے بڑھ گئ۔۔

اسے کیا ہوا۔۔

وہ حیران ہوا۔۔

ناراض ہے میں بھی ہوں ویسے۔۔ اس نے منہ پھلایا۔۔

کیوں؟

اسکی حیرت عروج پر تھی۔۔ اریزہ سیدھی چلتی ہوئی فٹ بال کورٹ کی سیڑھیوں پر جا کر بیٹھ گئ۔۔

کچھ لڑکے فٹ بال۔کھیل رہے تھے اسے ہرگز ان مین دلچسپی نہیں تھی سو بیگ رکھ کر موبائل نکال کر بیٹھ گئی۔

تم لوگ کل اکیلے گھومتے پھرے پتہ بھی ہے ہم یہاں خود سے کہیں آ جا نہیں سکتے ہمیں بھی لے جاتے کیا بگڑ جاتا۔۔وہ بگڑ کر بولی

سوری یار۔۔ یون بن  نے ہم سے پوچھا تھا سیول دیکھنا ، ہمیں اندازہ نہیں تھا کیسی جگہ لے جائے گا ورنہ میں خود وہاں یہی سوچ رہا تھا تم لوگ ایکوریم دیکھ کر کافی انجوائے کرتیں خیر پھر چلیں گے کچھ کچھ اندازہ ہو گیا ہے یہاں کا میں تم لوگوں کو لے چلوں گا وعدہ۔۔

اس نے تفصیل سے بتایا تو سنتھیا کا موڈ بہتر ہوگیا۔۔

میں سنا ہے یہاں مصنوعی برفزار بھی بنا ہوا ہے۔۔ وہ اشتیاق سے بولی 

ہاں کل جہاں گئے تھے اسی کے قریب ایک مال کے ٹاپ فلور پر ہے مگر کل ہم کافی لیٹ ہوگئے تھے سو ادھر نہیں گئے ۔۔

اسے یاد آیا۔۔ 

یہ میں تم لوگوں کیلئے یہاں کی دو سمز خرید کر لایا ہوں رومنگ تو بہت مہنگی پڑے گی اس سم کو بس یہاں بات کرنے کیلیے اسے استعمال کرنا۔۔

موبائل بھی تو لانا تھا ٹیکسٹنگ کیلیے۔۔

سنتھیا ٹھنکی

 پیسے لگتے ہیں میڈم دو سموں والا ہے نا موبائل اسی میں ڈالو۔۔

ایڈون نے گھورا تو وہ منہ بنا کر بیگ مین ڈالنے لگی۔۔

میں ویسے دیکھ رہا تھا ایک دو جگہ ہلپر کی جگہ خالی تھی پارٹ ٹائم جاب کیلیے گیا بھی مگر یار سرے سے انگلش نہیں آتی ان لوگوں کو ہم ایک دوسرے سے پتہ نہیں کیا کہتے رہے وہ ہنسا

تو اپنے ان چینی دوستوں میں  سے کسی کو ساتھ لے کر جانا تھا

سنتھیا نے کہا تو اس نے تصحیح کی۔۔

چینی نہیں کورین۔۔ آئندہ لے کر جائوں گا۔۔

یہی سوچا ہے۔۔

چلو تمہیں آیسکریم کھلا لائوں۔۔ 

اس نے کہا تو سنتھیا فورا مڑ کر اریزہ کو پکارنے لگی۔۔ ایڈون نے بازو پکڑ لیا۔۔

میں تمہیں آفر کر رہا ہوں۔۔

ہم دونوں بس۔۔

اس نےسنتھیا کی آنکھوں مین جھانکا۔

اچھا ۔۔ اس نے کسمسا کر بازو چھڑایا۔۔

اریزہ ہم آتے ہیں تھوڑی دیر تک ۔۔ اس نے پکار کر کہا۔۔ اریزہ نے سر بھی نہیں اٹھایا۔۔ وہ دونوں ٹہلتے ہوئے آگے بڑھ گئے۔۔

ہیون  کٹ بیگ اٹھائے کھیلنے آ رہا تھا سیڑھیاں اترتے ہویئے اسکی نظر اس سے کچھ فاصلے پر بیٹھی اریزہ پر پڑی جو گردو پیش سے بے نیاز موبائل پر جھکی بیٹھی تھی۔۔ پتہ نہیں کسی سے بات کر رہی تھی کہ کیا کبھی مسکرا رہی تھی کبھی کچھ سوچنے والی شکل بناتی کبھی لکھ رہی کبھی مٹا رہی۔ ہلکے پیلے رنگ کا کرتا اور پیلے اور نارنجی رنگ کا پرنٹڈ کھلا پاجامہ پہنے بالوں کی ڈھیلی سی پونی بنائے وہ لاپروا انداز میں مگن بیٹھی تھی اس کا لانبا دوپٹہ  اسکے گرد پھیلا تھا ساتھ ہی سیڑھی پر بھی نیچے تک لہرا رہا تھا۔۔۔۔۔ 

سپر مین۔۔ اسے ان لڑکیوں کا تبصرہ یاد آیا تو مسکراہٹ دوڑ گئ چہرے پر۔ 

اسکو شائد نمایاں ہونے کا شوق ہے۔ 

 وہ سر جھٹک کر مسکرایا اسکا رخ میدان  کی جانب تھا۔۔ اسکی ٹیم کے لڑکوں نے گرمجوشی سے اسے خوش آمدید کیا۔ وہ مخصوص ٹیم کی شارٹس والے یونیفارم میں تھے۔  

اس نے اشارے سے انکو اپنے آنے کی اطلاع دی تھئ۔ وہ سب کھیل میں مگن تھے۔ وہ میدان میں آکر نچلی سیڑھی پر اپنا بیگ رکھ کراسٹریچنگ کرتے ہوئے میچ دیکھنے لگا۔ 

ایک کھلاڑی نے دوسرے گول کی تیاری کرتے کھلاڑی سے ڈاج دے کر بال چھینا پوری قوت سے لات ماری بال اڑتی ہوئی سیدھا اس سے چند سیڑھیاں اوپربیٹھئ اریزہ کی جانب آرہی تھی اسے ہوش نہیں تھا اسکے منہ پر لگنی تھی۔۔۔۔ وقت نہیں تھا وہ  اچھل کر دو سیڑھیاں اوپر ہو کر بال کے سامنے آگیا۔۔ بال سیدھا اسکے پیٹ میں لگی تھی وہ الٹ کر سیڑھی پر گرا تھا ایک لمحے کو تارے ناچ گئے تھے آنکھوں کے سامنے۔۔

بال اس سے ٹکرا کر نیچے لڑھکتی گئ۔ لات مارنے والا لڑکا بھونچکا دیکھ رہا تھا کہ لڑکی گئ اسے بال کھا کر گرتے دیکھا تو سب بھاگے چلے آئے۔۔

اریزہ اسکے گرنے پر چونکی اسکا سر ان سیڑھیوں پر تھا اسکے پیروں میں اس نے فورا پیر پیچھے کیے۔۔ 

آر یو اوکے۔۔ 

اس نے اسکی آنکھوں کے سامنے ہاتھ چلایا۔۔ اس کے حواس بحال ہونا شروع ہوئے۔۔ لڑکے بھاگ کر اسکے سر پر پہنچ چکے تھے۔۔ ایک نے اسے سہارا دے کر اٹھایا۔

وہ پیٹ پکڑتا دہرا ہوا۔۔ 

جائو پانی لے کر آئو۔۔ کیپٹن نے حکم دیا۔۔ تو اریزہ کو دھیان آیا۔۔ اس نے بیگ سے اپنی بوتل نکال کر اسے پکڑائ۔۔ 

بچا لیا اسے ابھی ورنہ منہ ٹوٹ جاتا اسکا۔

اسی لڑکے نے ہنگل میں کہا

تمہیں شکریہ ادا کرنا چاہیے اسکا۔۔۔ وہ اریزہ کو کہہ رہا تھا۔۔

اریزہ کو کچھ سمجھ نہ آیا تو اس بار اس نے انگریزی میں کہا۔۔ 

کیوں ؟ وہ حیران ہوئی۔۔

  گھونٹ گھونٹ پانی پیتا ہیون سک اسے ہی دیکھ رہا تھا 

کوئی بات نہیں ۔۔۔۔آنیا۔۔  جانے دو۔۔ 

ہیون سک نے ہنگل میں کہا تو وہ کندھے اچکا کر اسکا شانہ تھپتھپاتا مڑ گیا۔۔ 

 سب کو ایک ٹک اپنی جانب دیکھتا پا کر وہ تھوڑا گھبرا گئ۔۔ پلٹ کر اپنی چیزیں سمیٹنے لگی۔سب لڑکے ہیون  کا شانہ تھپتھپاتے واپس میدان میں کھیلنے بڑھ گئے۔۔

اریزہ مڑ کر جانے لگی تو اس نے آواز دے کر روکا

آری۔۔۔ زا شی

 وہ پلٹ کر دیکھنے لگی۔ وہ سیڑھیوں کا سہارا لیتا اٹھا اور لڑکھڑاتا ہوا اسکے پاس آیا۔۔ 

پیٹ میں ابھی بھی لہریں اٹھ رہی تھیں 

آپکی بوتل۔۔ اس نے بوتل پکڑائی۔۔ 

شکریہ۔۔ اس نے کہا تو وہ مسکرا دی

اسکا لانبا دوپٹہ اسکی ایڑھی سے الجھ رہا تھا۔۔

اسے اٹھا لو ورنہ الجھ کر گروگی۔۔

اس نے کہا تو اریزہ نے چونک کر اپنے پائوں دیکھے پھر دوپٹہ کھینچ کر شانوں پر برابر کیا۔۔ 

سر ہلا کر پلٹنے لگی اس نے پھر پکار لیا۔۔ 

اریزہ۔۔ 

وہ سوالیہ نگاہوں سے مڑ کر دیکھنے لگی۔

تم اب کوریا میں ہو تمہیں یہاں کسی سے ڈرنے کی ضرورت نہیں تم آرام سے جو مرضی آئے پہن سکتی ہو ۔۔ 

وہ نہ سمجھنے والے  انداز میں ٹکر ٹکر دیکھنے لگی۔۔

میرا مطلب اس دن تم کافی مختلف اور اچھی لگ رہی تھیں جینز اور ٹاپ میں تم وہ کیوں نہیں پہنتی ہو ؟ اب تم پاکستان میں نہیں ہو سو یہ روائتی اور اولڈ فیشن کپڑے پہننے کی ضرورت نہیں تمہیں۔۔ 

اس نے وضاحت کی۔۔ تو اریزہ کا منہ کھلا رہ گیا۔۔

روائتی اور اولڈ فیشن۔۔۔۔

 اس نے بیگ کو دوسرے کندھے پر منتقل کیا۔۔

یہ لیٹسٹ اور اسٹایلش ٹرینڈ ہے۔۔ جناب ۔۔ اور میں اچھی خاصی ٹرینڈی اور ماڈرن  لڑکی ہوں پاکستان کی۔۔۔۔ اس نے پوری انگریزی استعمال کر ڈالی۔اسے اچھا خاصا برا لگا تھا۔۔ 

میرا  اتنا مہنگا نیا سوٹ ثنا صفیناز کا  پہلی بار پہنا تھا کرکری کر دی میری۔۔ 

وہ اردو میں روہانسی ہو کر بڑ بڑائی

 ہیون سک کو اسکے انداز پر ہنسی آگئ۔۔

تم نے وہ نہیں سنا جب روم میں ہو تو ویسا کر و جیسے رومن کرتے۔۔  یا تمہیں ایسی آڈ ڈریسنگ کر کے مرکز نگاہ بننے کا شوق ہے۔۔ 

اس نے اسکے لہراتے دوپٹے کو چٹکی سے پکڑ کر اس کی آنکھوں میں جھانکا۔۔ 

اریزہ نے دوپٹہ کھینچ کر چھڑایا۔۔

جی نہیں ایسی بات نہیں  میرے پاس یہی کپڑے ہیں ۔۔ میں وہی کپڑے لائوں گی نا ساتھ جو پہنتی ہوں۔۔

اور۔ وہ آگے بھی کچھ کہنا چاہ رہی تھی مگر الفاظ کا ذخیرہ کم پڑ گیا۔۔ بار بار منہ کھولتی پھر منہ بند کرکے اسے دیکھنے لگی۔۔

ہیون سک اسکی الجھن سمجھ گیا۔۔

ٹیک یو رٹائم ایم ویٹنگ  

نہیں مجھے اور کچھ نہیں کہنا۔۔

وہ بڑبڑا کر رہ گئ۔

معزرت اگر تمہیں میری کوئی بات بری لگی ہو میں نے کسی غلط ارادے سے نہیں کہا تھا ۔۔۔۔۔ پاکستان کےبارے میں رپورٹ بنائی تھئ میں نے تو اندازہ ہے وہ قدامت پرست ملک ہے۔ وہاں پابندیاں ہیں خواتین پر وغیرہ۔ تو مجھے لگا ۔۔ اینی وے۔ اگر تم  اس لباس میں آرام دہ محسوس کرتی ہو تو اچھی بات ہے۔ وہ حسب عادت مسکرایا۔ اریزہ نے ناک چڑھائئ

آیا بڑامیرا ہمدرد۔مدر ٹریسا نہ ہو تو۔ دل میں بڑبڑائئ 

ویسے تم مختلف لگتی ہو ایسے کپڑوں میں مگر اچھی لگتی ہو۔۔ وہ کہہ کر سادگی سے مسکرا کرچل دیا۔۔ 

اتنے غیر متوقع کومپلیمنٹ پر وہ حیرت سے اسے دیکھنے لگی تھی۔ وہ سیڑھیاں اتر کر بے نیازی سے اپنا بیگ اٹھا رہا تھااسکی نظریں خود پر محسوس ہوئیں تو ایک بارپھر مسکرا کر اسے دیکھا اورمیدان کی جانب بڑھ گیا۔۔

یہ کیا مردوں کی مونا لیزا ہے؟ ہر وقت مسکراتا رہتا ہے۔ مانا چھوٹے چھوٹے ہموار سفید دانت ہیں مگر کونسا اسے کولگیٹ کا اشتہار مل گیا۔۔۔ 

چلو کوئی دنیا میں ایسا بھئ ہے جو ہنستا مسکراتا رہتا ہے۔ سب میری طرح منحوس نہیں۔ 

وہ آہ بھرتی سوچ رہی تھی۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ اسے تھوڑی دیر تو ڈیپارٹمنٹ مین ڈھونڈتی رہی پھر تھک کر ہاسٹل آگئ۔۔ کمرے میں آ کر بیگ وغیرہ رکھ کر زور دار انگڑائی لی تبھی ایک مانوس دھن سنائی دی۔

وہ آواز کا منبع تلاش کرتی باہر نکلی تو سامنے والے جی ہائے کے کمرے سے ہلکی موسیقی کی آواز آرہی تھی۔۔ 

اس کے جی میں جانے کیا آئی اس نے دروازہ کھٹکا دیا۔۔ 

کم ان ۔۔ جی ہائےنے اجازت دی تو وہ کمرے میں داخل ہو گئی

جی ہائے ایروبکس کر رہی تھی ہائے۔۔

اس کو دیکھ کر فورا رک گئ 

ہائی۔ تم کرو اپنا کام۔۔ اریزہ نے کہا تو وہ تولیا اٹھاتی اسکے پاس چلی آئی

کوئی بات نہیں بس میرا کام ہوگیا تمہیں کوئی کام تھا۔۔

اس نے پوچھا تو اریزہ نے کندھے اچکا دیے

نہیں بس وہ میں ایسے ہی یہاں سے گزر رہی تھی تو یہ گانا سن کر ادھر آگئ۔۔

جے ہی نے اشارے سے اسے بیٹھنے کو کہا تو وہ کرسی کھینچ کر وہیں ٹک گئ۔

تمہیں بھی پسند ہےدوہیون ؟

وہ حیران ہوئی

بس یہ گانا سنا تھا کچھ عرصہ پہلے کافی پسند آیا مجھے۔۔ 

تمہیں سمجھ آتی ہے ہنگل؟ اسکی حیرت دوچند ہوئی۔۔

نہیں یار وہ ہنس دی۔۔پھر ذہن میں جملہ ترتیب دے کر بولی

 بس دھن موسیقی اچھی لگی آواز بھی اچھی ہے میں ویسے یقیں رکھتی موسیقی کی اپنی الگ زبان ہوتی بلکہ موسیقی کی کوئی زبان نہیں ہوتی بس دل کے تار چھیڑ جائے۔۔

وائو۔۔ بہت شاعرانہ انداز ہے تمہارا۔۔  محبت کرتی ہو کسی سے۔۔ وہ چھیڑ کر بولی

ارے نہیں یار۔۔ اریزہ نے فورا نفی کی۔

حیرت ہے۔۔ ابھی تک سنگل ہو۔۔ 

وہ منہ پونچھتی اسکے لیئے ڈرنک نکالنے لگی۔۔

بنا چینی کے قہوہ بنا رکھا تھا اسکا میز پر۔۔ اریزہ کے تاثرات بدلے۔قہوے سے اسکی جان جاتی تھئ  مروتا یہ کڑوی دوائی پینے کا ہرگز موڈ نہیں تھا اسکا۔۔

یہ لو۔

نہیں شکریا میرا موڈ نہیں اس وقت۔۔

اس نے سہولت سے انکار کرنا چاہا۔۔

پیو۔۔ دوا سمجھ کر پی لو۔۔ جڑی بوٹیوں کا قہوہ ہے خون صاف کرتا۔۔ 

لو جی پکی کوئی کڑوی دوائی ہے۔ اریزہ پر لرزہ طاری ہوا

اس نے کپ اسکے دوبارہ انکار پر بھی واپس نہیں لیا الٹا ڈپٹ کر بولی۔۔

چارو نہ چار اسے تھامنا پڑا۔۔

اس کو کپ پکڑا کر اس نے اسکی پشت پر ہلکے مکا مارا

کندھے سیدھے کرو۔۔ 

اریزہ کھسیا کر سیدھی ہوئی 

تمہاری آج سے ہی ٹریننگ شروع کرتے ہیں کیا یاد کروگی کس مہربان استاد سے پالا پڑا ہے۔۔

اریزہ کے حلق میں قہوہ اٹک گیا۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اسکے کہنے پر اسے سویٹ شرٹ اور پینٹ پہن کر واپس آنا پڑا۔۔۔اب  دونوں جاگنگ کر رہی تھیں ۔۔تبھئ گوارا دروازہ کھولتی اندر داخل۔ہوئی۔۔  انکو دیکھ کر شاکڈ رہ گئ۔۔

ہائے گوارا ۔۔ تیز تیز جاگ کرتے جی ہائے کی اس پر نظر پڑی

اریزہ اور وہ کسی بات پر ہنس رہی تھیں اسے دیکھ کر ہنستے ہنستے ہی اریزہ نے بھی ہاتھ ہلا کر وش کیا۔۔

یہ کیا ہو رہا ہے؟ یہ لڑکی یہاں کیا کر رہی ہے۔۔

اسکے انداز میں شدید ناگواری تھی۔۔ اپنا بیگ رکھتی وہ جی ہائے کے سر پر آکھڑی ہوئی ان کے بیچ آکھڑے ہونے سے دونوں رک گئیں

تم نے روم میٹ چینج کرلی ہے کیا۔۔

نہیں یہ میرے ساتھ بس ورک آئوٹ کرنے آئی ہے۔۔ جی ہائے نے کہا تو وہ بد لحاظی سے اریزہ سے بولی۔ 

بس ہوگیا آج کیلئے اب تم۔جا سکتی ہو۔۔ 

اریزہ کو شدید بے عزتی کا احساس ہوا۔ 

وہ جلدی سے جانے لگی تو جی ہائے نے اسکا ہاتھ تھام لیا۔

کل پانچ بجے آنا مل کر کنٹینیو کریں گے۔۔ جتنا گوارا کا انداز برا تھا اتنے ہی اچھے طریقے سے جی ہائےنے کہا تو وہ بھی مسکرا کر سر اثبات  میں ہلاتی خدا حافظ کہہ کر چلی گئ۔۔

وے؟ گوارا چیخی

تم دونوں یہاں میرے سر پر کودوگی؟

تم ہوتی ہی کب ہو یہاں مجھے یقین ہے پانچ بجے تم اپنے بوائے فرینڈ کے ساتھ ہی ہوگی تمہیں کیا فرق پڑ رہا اسکے آنے سے۔۔

جی ہائے کا انداز خشک تھا

اور پلیز آئندہ میرے مہمانوں کے ساتھ 

احترام سے پیش آنا۔۔

 گوارا حیرت سے اسکو دیکھتئ رہ گئ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تم کہاں چلی گئیں تھیں؟

وہ کمرے میں آئی تو سنتھیا آرام سے پیر پسارے لیٹی تھی۔۔

میں تو ایڈون کے ساتھ تھی تم کہاں تھیں؟

اس نے الٹا سوال کیا۔۔

مطلب مجھے چھوڑ کر گھومتی پھر رہی تھیں میں پاگلوں کی طرح پورے ڈیپارٹمنٹ میں ڈھونڈتی پھری۔۔

بتا کے تو جاتیں۔۔

بتا کے تو گئی تھی ۔۔ سنتھییا اسکے غصے پر حیران ہوئی۔۔

کب؟ 

جب تم گرائونڈ میں بیٹھی فٹ بال دیکھ رہی تھیں

۔۔

سنتھیا اٹھ کر بیگ کھنگالنے لگی۔۔

میں نے سنا بھی نہیں اور تم۔۔

اسے ناجانے کیوں اتنا غصہ آرہا تھا۔۔

اچھا چھوڑو اس بات کو۔۔ یہ لو یہ یہاں کے کسی نیٹ ورک کا کنکشن ہے ایڈون لایا تھا ایک نمبر میں نے رکھ لیا ہے ایک تم رکھ لو۔۔اب ہم یہاں ایک دوسرے سے تو آرام سے بات کر سکیں گے۔۔

سنتھیا نے سم اسکی جانب بڑھائئ۔۔

اس نے ٹھنڈی سانس بھر کر سم لے لی۔۔ 

مجھے مس کال دو تاکہ نمبر سیو کروں تمہارا۔۔

اس نے سم ڈال لی تھی 

مجھے کیا پتہ تمہارا نمبر کیا ہے۔۔

وہ سابقہ چڑے ہوئے انداز میں ہی بولی۔۔ سنتھیا نے سر جھٹکا۔ اریزہ نے سم نکال کر اسکا ریپر بیڈ پر پھینکا خود سیڑھیاں چڑھ گئ۔۔ سنتھیا نےاسی ریپر میں سے نمبر نکال کر اسے کال ملا لی۔۔

کیا ہے وہ بیڈ پر گری۔

ڈال لی سم بڑی کوئیک سروس ہے۔۔ 

تو کیا دس سال بعد ڈالتئ۔۔ اریزہ بھنائی

کیوں اتنا چڑی ہو کس نے دل جلایا ہے۔۔

سنتھیا ہنس کر پوچھ رہی تھی

یار وہ گوارا کی بچی پتہ نہیں اپنے آپ کو کیا سمجھتی ہے۔۔ بتا رہی ہوں۔۔اسکو میں نے

وہ پھٹ پڑی سنتھیا نے کال کاٹ دی۔۔ 

تم ۔۔ اس نے بیڈ کے ساتھ لگی ریلنگ سے نیچے جھانکا۔۔

وہ آرام سے نیم دراز اوپر ہی دیکھ رہی تھی

تمہاری آواز موبائل سے زیادہ صاف آرہی ہے بتائو اب کیا کیا اس نے؟

  وہ محظوظ انداز سے پوچھ رہی تھی اریزہ کا غصہ بھی دھواں ہونے لگا۔۔ 

کچھ نہیں دفع کر و اسے۔۔ پھر کہیں باہر گھومنے کا پلان بنائیں؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ پورے پانچ بجے وہاں موجود تھا۔۔  آرام سے بنچ پر بیٹھ کر وہ دریا پر لوگوں کی سرگرمیاں دیکھنے لگا۔۔ کچھ فیری میں سیر کررہے تھے کچھ دریا کنارے ریت پر باربی کیو کر رہے تھے اسکا انہیں دیکھتے کافی وقت گزر گیا۔۔

ہوپ جان بوجھ کر دیر سے آیئ وہ ثابت نہیں کرنا چاہ رہی تھی کہ وہ اس دن بھی انتظار کرتی رہی تھی۔۔ 

وہ آج منتظر تھا تو بار بار نظر گھما کر دیکھ بھی رہا تھا کہ آئی کہ نہیں۔۔ وہ ایزل سیٹ کر رہی تھی جب وہ بھاگتا ہوا اسکے پاس آیا۔۔

میں آگیا۔۔ اس نے اتنی خوشی سے بتایا ہوپ بے ساختہ مسکرا دی۔۔

بیٹھو۔۔ اس نے بنچ کی جانب اشارہ کیا۔۔ 

ٹھیک ہے مگر ہم پہلے پیسے نہ طے کر لیں؟

آئی میین پورا پرٹریٹ بنانے میں کافی وقت لگے گا تو میں منہ مانگے دام دینے کو تیار ہوں۔

ہانچ سو وون کافی ہونگے۔۔

اس نے یونہی کہا۔۔

کیا؟ وہ چیخ پڑا ۔۔

اتنے کے تو تمہارے رنگ لگ جائیں گے۔۔ اس نے اسکی رنگوں کی کٹ کو دیکھا تو چپ رہ گیا۔ وہ نئئ کٹ خرید کر لائی تھی ابھی پیکینگ کھول رہی تھی۔۔

یہ پانچ سو وون کی ہی ہے۔۔ 

اس نے بھانپ لیا کیا دیکھ رہا ہے۔۔

تو اس میں تمہاری محنت بھی شامل ہوگی خیر میں ایڈوانس میں یہ دیتا ہوں اس نے ہزار وون نکال کر اسکے ہاتھ پر رکھے۔۔

باقی منحصر ہے مجھے اپنا پورٹریٹ کتنا پسند آتا ہے اسی حساب سے پے کروں گا۔۔

چلو دیر نہ کرو شروع ہو جائو۔۔ وہ آرام سے جا کر بنچ پر بیٹھ گیا۔۔

ہوپ چند لمحے دیکھتی رہی پھر پیسے اپنے کوٹ کی جیب میں ڈال کر ایزل پر جھک گئی۔۔

ہیون سک اسے دیکھتے دیکھتے سوچ میں ڈوب گیا۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ کچن میں کافی بنا رہا تھا انسٹنٹ کافی کا ساشے کوڑے دان مین پھینکنے جھکا تو اسے کچھ پیپر رول ہوئے پڑے نظر آئے وہ دھیان نہ دیتا مگراسے شک گزرا اس نے کھول کر دیکھا تو وہ وہی ایبسٹریکٹ آرٹ تھا جو انی ہوپ کو دکھا رہی تھیں 

کیا کر رہے ہو۔۔ 

انی پانی پینے آئیں تو اسے کوڑے دان پر جھکے دیکھ کر حیرت سے پوچھا۔۔

انی یہ آپ نے پھینکے ہیں ؟

 وہ پیپرز اٹھا کر پوچھ رہا تھا۔۔

ہاں ۔۔ انی نے ٹھنڈی سانس بھری۔۔ 

کیوں انی؟

کیونکہ یہ کسی کام کے نہیں۔۔ وہ فریج سے بوتل نکال کر پانی گلاس مین بھر رہی تھین۔۔

مگر آپ تو کہہ رہی تھیں اسکے ڈیزائن آپکے ڈاریکٹر کو کافی پسند آئے تھے۔۔ 

ہیون الجھن سے دیکھ رہا تھا۔۔ انی گھونٹ گھونٹ پانی پیتے ہوئے اسے غور سے دیکھ رہی تھین۔۔

مین نے جھوٹ بولا تھا۔۔ اسکا ایبسٹریکٹ آرٹ ہمارے کسی کام کا نہیں اور وہ پورٹریٹ بالکل اچھا نہیں بناتی ہے چہرے کا کٹ اور آنکھیں اسکی کمزوری ہیں سو  ڈاریکٹر نے اسکے تمام پرپوزل ریجیکٹ کر دیے تھے۔۔ چونکہ میں نے ہی اسے اپارٹمنٹ دلوایا ہے اسلیے مجھے اندازہ ہے اسکی فی الحال جاب صرف اسکا اپارٹمنٹ کا کرایہ ہی ادا کر سکتی ہے۔۔ سو میں نے اسکی مدد کرنے کیلیے اسے جاب آفر کی ہے۔۔ 

انی یہ لڑکی کہیں شمالی کورین مہاجر تو نہیں؟ اسے خیال آیا۔۔

کرچے۔۔ صحیح۔۔

وہ مسکرائیں۔۔ جن کورینز کو ہم نے چین میں پناہ دی تھی ان میں زیادہ تر خاندان تھے کم از کم دو تو ایک ہی خاندان کے تھے ہی یہ واحد لڑکی تھی جس کے کسی رشتے دار کو ہم ڈھونڈ نہیں سکے نہ جیلوں میں نہ ہی ویسے کوئی سراغ ملا۔وہ شائد ابھی بھی شمالی کوریا میں ہی ہیں خیر ۔ میں اب اکیلی لڑکی کو کسی ایسی ویسی جگہ اپارٹمنٹ نہیں دلا سکتی تھی اسلیے کافی مہنگا اپارٹمنٹ دلایا ہے وہ کچھ کہتی نہیں مگر مجھے اسکا خیال رکھنا چاہیئے ہے نا۔۔ وہ بوتل بند کر کے فریج میں رکھنے مڑیں۔۔ 

تو آپ اسے پے کریں گی۔۔

ظاہر ہے۔۔ انہوں نے کندھے اچکائے۔۔

پھر بھی آپ اس سے جو بھی بنوائیں کم از کم اسے پھینکیں نہیں۔۔ وہ ان پیپرز کو سیدھا کر رہا تھا۔۔ انی اچنبھے سے مڑیں۔۔

پھر کیا کروں؟

مجھے دے دیجیے گا۔۔ وہ مگن سا کہہ رہا تھا۔۔ انی اس بار پوری اسکی طرف گھوم گئیں تھیں۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک  گھنٹے میں اس نے اسکیچنگ مکمل کر لی تھی۔۔ سورج ڈھل رہا تھا سو باقی کام آئندہ کرنا تھا۔۔

وہ چیزین سمیٹنے لگی۔۔

 اپنا موبائل دو۔۔ 

ہیون سک نے ایکدم سے اسکے پاس آکر کہا وہ اس بری طرح چونکی کہ ہاتھ سے موبائل چھوٹ گیا۔۔ 

وہ اکڑون بیٹھی اپنا بیگ ٹھیک کر رہی تھی ہیون سک نے جھک کر اسکا موبائل اٹھا لیا۔۔ 

وہ بیگ اٹھا کر سیدھی ہو کر کھڑی ہوئی وہ اسکے موبائل میں اپنا نمبر سیو کر چکا تھا۔۔

میں نے اپنی یہاں کھینچی گئ سیلفیز بھیجی ہیں ان سے تمہیں مدد ملے گی کل تو میں یہاں نہیں آسکتا میری کلاس ہے پرسوں کا جب بھی تمہیں فارغ وقت ملے مجھے میسج کر دینا میں آجائوں گا۔۔ 

وہ خاموش رہی۔۔ پھر ملتے ہیں ۔۔ وہ کہتا ہاتھ ہلاتا چلا گیا۔۔ 

ہوپ کا دل نہ جانے کیوں اداس ہوگیا تھا۔۔ ۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جی ہائے

وہ اپنے ڈورم سے نکل کر نیچے جا رہی تھی جب اریزہ اسے پیچھے سے پکارتی چلی آئی

آنیانگ ۔۔۔۔ اس نے مسکرا کر وش کیا پھر خیال آیا تو انگریزی میں بولنا چاہا

آننیانگ واسے ہو۔۔ اریزہ نے اسکے ہی انداز میں کہا۔۔ تو وہ ہنس پڑی 

تم اچھی لرنر ہو جلد ہنگل سیکھ جائو گی۔۔ 

اس نے کندھے اچکا دیئے۔۔

پھر بولی۔۔ گوارا کو میرا روم میں آکر پریکٹس کرنا اچھا نہیں لگے گا میں پیر سے روز آئوں گی تم یہ نہ سمجھنا کہ میں دو دن پریکٹس نہیں کروں گی میں اپنے کمرے میں بنیادی کسرت کر لوں گی۔۔

اس نے رٹو طوطے کی طرح کہا تو جی ہائے شرمندہ سی ہوگئ

تمہیں گوارا کی فکر کر ے کی ضرورت نہیں ہے وہ روم میرا بھی ہے تم اسکی موجودگی میں بھی آسکتی ہو۔۔

نہیں نا ۔۔ بس میں اور تم ۔۔ وہ اٹکی پھر تھوڑا قریب آکر رازداری سے بولی۔۔ میں نہیں چاہتی کوئی مجھے دیکھے کسرت کرتے ۔۔میں چپکے سے وزن کم کرنا چاہتی ہوں 

جی ہائے نے سمجھ کر اثبات میں سر ہلا دیا وہ بھی مطمئن ہو کر خدا حافظ کہتی پلٹنے لگی تو جے ہی کو خیال آیا۔۔

سنو اریزہ۔۔ 

تم کو جمناسٹک دیکھنے میں دلچسپی ہے نا؟

ہم ایک لوکل تھیٹر میں چیریٹی شو کر رہے ہیں تم آئوگی؟ میرے دو پاس ہیں ایک گوارا کو دیا ہے ایک تمہیں دوں؟

ہمم کیوں نہیں اس نے خوشی خوشی حامی بھر لی۔۔

اس نے اسی وقت بیگ سے پاس نکال کر اسے دیا ۔۔ دو دن بعد ہے میری پرفارمنس شو کے شروع میں ہی آجائے گی سو لیٹ مت ہونا۔۔ 

بالکل۔۔ بھی نہیں  اریزہ نے مصمم ارادہ کیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تم نے دونوں مجھے دینے تھے میں اور یون بن  جاتے میں اکیلی کیا کروں گی۔۔ گوارا چیخ پڑی۔۔

تم مجھے پہلے بتاتیں کہ تمہیں دونوں پاس چاہیئے

جی ہائےنہا کر نکلی تھی سو اب تولیہ سے باک خشک کرتی مصروف انداز میں بولی۔۔

مجھے کیا پتہ تھا تم دوسرا کسی ایرے غیرے کو پکڑا دوگی

میرے علاوہ تو اور کوئی تمہاری دوست ہے نہیں تم نے ظاہر ہے مجھے ہی دینے تھے پاس۔۔ 

وہ ناراضگی سے بولی۔۔

پہلے نہیں تھی مگر اب ہے۔۔ اس نےتولیا ڈورم کی سیڑھیوں پر لٹکاتے ہوئے جتاتے انداز میں کہا۔۔ 

تم جا کر اس سے کہو کہ تم نے مجھے پاس دینے کا وعدہ کیا تھا تم بھول گئیں تھیں سو اب واپس دےدو۔۔

گوارا نے حل نکالا

میں ایسا نہیں کر سکتی۔ اسکا انداز قطعی تھا۔۔ 

تو یہ دوسرا بھی اسی کو جا کر دےدو میرے کسی کام کا نہیں یہ۔۔ اس نے غصے سے پاس اچھال دیا۔ اسے لگا تھا جی ہائے اسے منائے گی آکر مگر اس نے مزے سے اٹھا لیا پاس۔۔

ٹھیک ہے میں یہ بھی اسے دے دیتی ہوں۔۔۔ وہ کہتی واقعی باہر نکل گئی

گوارا نے حیرت سے اسے جاتے دیکھا پھر اسکی تولیا کا گولا بنا کر سامنے دیوار میں دے مارا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک پاس ہے تمہارے پاس ہم دونوں کیسے جا سکتی ہیں؟میں ایڈون سے کہوں گی چھوڑ آئے گا تمہیں ۔۔ مجھے ویسے بھی جمناسٹک میں انٹرسٹ نہیں۔۔

وہ سنتھیا کے کندھے سے جھول کر اسے منا رہی تھی 

ہم ٹکٹ لے لیں گے نا۔۔

ٹکٹ اور پاس میں فرق ہوتا ہے ایڈیٹ۔۔ ٹکٹ ایسے ہی کسی بھی سیٹ کا ہوگا پاس آگے کی سیٹوں کے ہوتے۔۔

تو ہم دو ٹکٹ لے لیں گے۔۔ اریزہ کے پاس اسکا بھی حل تھا

تو اگر ہم نے ٹکٹ ہی لینے تو کسی مووی کے لیتے ہیں فلم دیکھنے چلتے ہیں ۔۔ سنتھیا اچھلی وہ دونوں نیچے بیڈ پر مستیاں کر رہی تھیں ۔۔

کورین ؟ سمجھ آئے گی۔۔ اریزہ نے منہ بنایا۔۔

انگلش بھی لگتی ہوںگی ۔۔ سنتھیا نے خیال ظاہر کیا۔۔

مجھے جی ہائےکی پرفارمنس دیکھنی ہے نا۔۔  وہ بیڈ پر منہ بنا کر گر گئی۔۔ اسکے بچوں کی طرح ضد کر نے پر سنتھیا کو اس پر پیار آگیا۔۔ اس سے لپٹ گئ۔

اس نے خفا ہو کر منہ پھیر لیا۔۔ تبھی دروازے پر دستک ہوئی 

کم ان دونوں نے اٹھنے کی زحمت نہ کی

جی ہائے اندر چلی آئی۔۔

تم دونوں ایک دوسرے سے بہت پیار کرتی ہو۔۔

جی ہائےنے مسکرا کر کہا تو دونوں کھسیا کر سیدھی ہوئیں

ہاں بہت ہم بچپن کی سہیلیاں ہیں ۔۔ سنتھیا نے فخر سے اسے ساتھ لگایا۔۔ 

آئو بیٹھو۔۔ اریزہ نے اشارہ کیا۔۔ تو وہ کندھے اچکا کر بولی۔

نہیں میں بس باہر جا رہی ہوں تھوڑی چیزیں لینی ہیں یہ میں دوسرا پاس لائی تھی گوارا کاموڈ بدل گیا ہے وہ نہیں جا رہی یہ لو تم اپنی دوست کو بھی لے آنا۔۔ اس نے پاس پکڑایا تو اریزہ نے فورا جھپٹ لیا۔۔ 

اب تو چلو گی نا۔۔ 

سنتھیا نے منہ بنایا

گوارا کا چھوڑا ہوا پاس پر جائوں۔۔۔ اب صرف نخرا کر رہی تھی۔۔ 

اریزہ نے اسکو کندھا مارا تو ہنس دی۔۔ جی ہائے منتظر کھڑی تھی تو اریزہ اب انگریزی میں بولی 

ہم دونوں آئیں گے۔۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایڈون انھیں چھوڑنے آیا تھا گیٹ پر کہہ رہا ۔

سوچ لو بہت بور ہوگے ابھی بھی وقت ہے باہر کہیں گھومنے چلتے بلکہ ایکوریم دیکھنے چلتے ہیں۔۔

ہاں ٹھیک رہے گا۔۔ سنتھیا نے فورا خوش ہو کر کہا تو اریزہ نے اسکے بازو پر باریک سے چٹکی بھری

تو تڑپ کر رہ گئ منہ بنا کر بولی

نہیں آج کچھ بھی ہو جائے ہم بور ہو کر ہی رہیں گے میرا مطلب شو دیکھ کر ہی رہیں گے۔۔ اریزہ مسلسل گھور رہی تھی۔۔ 

چلو جب واپسی کا ارادہ ہو تو آدھا گھنٹہ پہلے بتا دینا میں قریب گھوم لیتا ہوں۔۔ اس نے ٹھنڈی سانس لی۔۔ سنتھیا نے اریزہ کو منہ بنا کر گھورا مگر اریزہ لفٹ کروانے کے موڈ میں نہیں تھی سو دونوں ہال کی طرف چل دیں۔۔

انکی سیٹس تیسری رو میں تھیں ہال بے حد بڑا اور بھرا تھا افتتاحیہ تقریر کے بعد مختلف خاکے پیش کیے گئے جی ہائےکے گروپ کی پرفارمنس آ کے نہ دے رہی تھی سب کچھ ہنگل زبان میں تھا کوئی ایک آدھ لفظ بھی انگریزی کا نہیں بول رہے تھے اگر بول بھی رہے تھے تو لہجہ اتنا الگ تھا کچھ سمجھ نہیں آرہا تھا کسی نجی سماجی تنظیم کی جانب سے یتیم بچوں کی امداد کیلیے فنڈ ریزنگ کی جا رہی تھی۔۔ تقریب کی منتظم ایک جوان  سی لڑکی تھی دبلی پتلی مگر بے حد گریس فل ٹھہر ٹھہر کر بولتی اسے سمجھ تو نہیں آرہا تھا مگر اسکا انداز اتنا اچھا تھا کہ سننے کو دل کر رہا تھا۔ 

اس نے نام بتایا تھا اپنا گنگشن ۔۔

اریزہ مکمل فدا ہوگئ 

سنتھیا یہ لڑکی کتنی حسیں ہے۔۔ 

سنتھیا نے کھا جانے والی نظروں سے دیکھا۔۔

اریزہ اپنی دھن میں بولے گئ

یار میں لڑکا ہوتی تو اس لڑکی کو دل دے بیٹھتی۔۔ کتنی پیاری ہے۔۔ نام کیا ہے۔۔ وہ سوچ میں پڑی 

نام۔۔ یاد آیا۔۔کنکشنی

گنگ شن۔۔ اسکی تصحیح کی گئ۔۔

ہاں وہی گنگشنی۔۔ اس نے لاپروائی سے کہا

یار اسکے بال کتنے اچھے ہیں سلکی ان لوگوں کے بال اتنے سلکی کیوں ہوتے۔۔

اریزہ نے پوچھا تو سنتھیا جل۔کر بولی۔۔ 

انکے بالوں کو چھوڑو اپنے بالوں کی فکر کرو میں نے سب نوچ کر تمہیں گنجا کر دینا ہے۔۔ 

کیوں ۔۔ اریزہ ڈر کر پیچھے ہوئی

کیا دکھانے لائی ہو پتہ نہیں زبان کیا بول رہے کیا کیا بول رہے کیوں بول رہے ککھ پلے نہیں پڑ رہا میں ایڈون کو بلا رہئ بس۔۔ 

اس نے دھمکی دے کر فورا موبایل اٹھا لیا۔۔ 

نہیں رکو بس تھوڑی دیر اور اگلے پانچ منٹ تک بھی جی ہائے کی پرفارمنس نہ آئئ تو پکا چلیں گے۔۔پلیز میری خاطر۔۔

اس نے معصوم سی شکل بنا کر منتیں کر کے منا لیا۔۔ مگر اگلے پانچ منٹ تک بھی لگ رہا تھا وہی لڑکی بولتی رہے گی۔۔

پلیز چپ کر جائو جی ہائے کے گروپ کو بھیج دو۔۔ اس نے مٹھیاں بنا کرلبوں پر رکھ لی تھیں ایسے ملتجی نظروں سے دیکھتے کہہ رہی تھی جیسے وہ سن ہی لے گی اسکی بات۔۔

بس اگلی جے حی کی ہی پرفارمنس ہے ۔۔ نونا نے انائونس کر دیا ہے۔۔

اچھا۔۔ اس نے کہتے ساتھ بتانے والے کو بائیں جانب مڑ کر دیکھا تو حق دق رہ گئ۔۔ وہ جب آئی تھیں ساتھ والی سیٹ خالی تھی اوروہ حسب عادت مگن بیٹھی تھی اتنا کہ پتہ بھی نہ چلا کب کون ساتھ آکر بیٹھ گیا۔۔

ہیون  اسے اتنا حیران دیکھ کر مسکرا دیا۔۔ اسے اندازہ تھا کہ وہ دونوں آپس میں گپوں میں جتنی مگن بیٹھی ہیں پتہ نہیں چلا ہوگا۔۔ 

ہمیں بھی فری پاس ملے ہیں ۔۔ اس نے مزید بتایا وہ کھسیا کر مسکرائی۔۔ اسکے ساتھ یون بن اور اسکے ساتھ گوارا بیٹھی تھی۔ یون بن  نے اسے دیکھ کر فورا وش کیا اس نے بھی مسکرا کر جواب دیا گوارا اسے ہی دیکھ رہی تھی اسکی اس پر نظر پڑی تو منہ بنا کر سامنے دیکھنے لگی۔۔

وہ سیدھی ہوگئ۔۔ واقعی اگلی پرفارمنس جی ہائےکی تھی۔ جب جب اس ہر روشنی کا گول دائرہ آتا یہ تینوں خوب شور مچاتے ۔۔ باقی وقت کی نسبت سنتھیا نے بھی اسکی پرفارمنس بہت محظوظ ہو کردیکھی

اسکی پرفارمنس کے بعد یہ سب اٹھ کھڑے ہوئے۔۔ سنتھیا نے ایڈون کو کال کر دی تھی۔۔ 

یہ دونوں ہال سے باہر آئیں تو رات کے ساڑھے آٹھ  بج رہے تھے ایڈون اور یون بن باہرکھڑے باتیں کر رہے تھے یہ دونوں بھی وہیں چلی آئیں

اریزہ تمہیں یون بن  ہاسٹل چھوڑ دے گا میں نے اس سے بات کر لی ہے۔۔  

صرف اریزہ ؟ سنتھیا حیران ہوئی

ہاں ہم دونوں زرا گنگم اسٹریٹ تک جا رہے ہیں ۔۔۔ایڈون کا انداز لا پروا تھا۔۔ اریزہ نے مسکراہٹ دبائی

مجھ سے پوچھا ہے کوئی؟میں تھک گئی ہوں۔۔ سنتھیا نخرے سے بولی 

میں پیدل نہیں لے جائوں گا۔۔ اڈون اسکی نقل اتار کر بولا

۔۔ پھر بھی وہ کچھ کہہ رہی تھی ایڈون اسکا ہاتھ پکڑ کراریزہ کو۔خدا حافظ کہتا لے گیا۔۔ 

ہاہ کپل فائٹ۔۔ یون بن  نے انہیں جھگڑتے جاتے دیکھ کر آہ بھری۔۔ 

تم سنگل ہو ۔۔ وہ گاڑی سے ٹیک لگائے کھڑا تھا

اریزہ بھی ٹک گئ۔۔

انلاک کر دوں گاڑی اندر بیٹھ جائو۔۔ 

اس نے کہا تو اریزہ نے سہولت سے منع کر دیا 

ٹھنڈی ہوا اچھی لگ رہی۔۔ اس نے اشارے سے بھی سمجھایا۔۔ 

یون بن  اسکے انداز پر مسکرا دیا۔۔ 

تم اچھی خاصی انگریزی بول۔لیتی ہو بس تھوڑا سا کانفیڈنس کم ہے تم میں۔۔ 

بڑی نئی بات بتائی۔ وہ اردو میں بولی یون بن  نے اسے دلچسپئ سے دیکھا۔۔

تم نے بتایا نہیں تمہا را کیا اسٹیٹس ہے سنگل ہو؟

میرا اسٹیٹس۔۔۔۔ وہ استہزایئیہ ہنسی۔۔ 

میرڈ اینڈ گیٹنگ ڈیورسڈ سون۔۔ وہ روانی میں انگریزی میں بول گئ۔۔ ایک یہ عادت یہاں آکر پڑی تھئ جو سوچو وہ بول دینا ظاہر ہے اردو میں بولنا نہ بولنا برابر تھا مگر پھر ایسا بھی ہوتا روانی میں جو سوچا وہ انگریزی میں بول ڈالا۔۔ 

وہاٹ؟

یون بن حیران ہوا۔۔

تم شادی شدہ ہو؟ کہاں ہے تمہارا شوہر پاکستان میں؟

وہ کہہ کر پھنس گئ۔۔

وہ۔۔ اس نے جملہ ترتیب دینا چاہا۔۔ ایک تو یہ۔۔ وہ اسے دیکھ کر رہ گئ۔۔ وہ اسکے سوچ کر جملہ ترتیب دینے کا انتظار کر رہا تھا یہ لوگ غلط انگریزی بولنے پر مزاق بھی نہیں اڑاتے تھے اور مسلہ بھی سمجھتے تھے کہ دوسری زبان میں بات کر رہا تو اسے وقت لگے گا جواب دینے میں۔۔ کافی سوچ کر بھی اسسے جواب نہ بن پڑا تو بس اتنا کہہ دیا۔۔

وہ کینڈا میں ہوتا ہے۔۔ 

تھیبا( عجیب ) وہ کینڈا میں تم کوریا میں۔۔ اس نے کندھے اچکائے۔۔ 

مزید بھی شائد بات ہوتی مگر سامنے سے ہیون  اور گوارا کو آتے دیکھ کر وہ انکی جانب متوجہ ہوگیا۔۔

اریزہ نے دل ہی دل میں خدا کا شکر ادا کیا۔۔

یہ یہاں کیا کر رہی ہے؟

گوارا نے بد لحاظی سے انگریزی میں پوچھا۔۔ اریزہ سنجیدہ سی ہو کر سیدھی کھڑی ہوگئ

اسکو ہاسٹل ڈراپ کرنا ہے۔۔ یون بن  نے ہنگل میں ہی کہا۔۔

ہم کیوں کریں ڈراپ یہ ہمارے ساتھ تو نہیں آئی جن کے ساتھ آئی ہے انکے ساتھ ہی جائے۔۔ گوارا نے پھر انگریزی میں کہہ کر گھورا۔۔ 

اگر تم تمیز سے بات نہیں کر سکتیں تو ہنگل میں کرو کیا مسلہ ہے تمہیں ڈراپ کرتے ہوئے اسے بھی اتار دیں  گے۔۔ یون بن  کو اسکی بد تمیزی پر غصہ آگیا۔۔ ہیون خاموشی سے انہیں دیکھ رہا تھا۔۔

میں اپارٹمنٹ جائوں گی ہاسٹل نہیں جا رہی میں۔ گوارا بھنائی

چلو تو ہم اسے ڈراپ کر کے تمہیں چھوڑ دیں گے۔۔ جون تائی قصدا لاپروائی سے کہہ کر گاڑی کا لاک کھولنے لگا۔۔

 مگر ہم ڈنر بھی کرنے کا پروگرام بنا رہے تھے باکل الگ راستہ ہو جائے گا پورے شہر کا چکر لگا کر ہم پہنچیں گے اس وقت ٹریفک بھی بہت ہوتا۔۔

گوارا ضدی بچے کی طرح پیر پٹخ کر بولی

تو؟ یون بن کو بھی غصہ آگیا۔۔

میں کہہ چکا ہوں اسے ڈراپ کر دوں گا اب میں پیچھے نہیں ہٹ سکتا۔۔

اسے ٹیکسی کرادو نا۔۔ 

اریزہ کا چہرہ سرخ ہو رہا تھا۔۔ وہ دونوں ہنگل میں بات کر رہے تھے مگر اسے صاف اندازہ ہو رہا تھا موضوع گفتگو وہی ہے اسے ایڈون پر شدید غصہ آرہا تھا۔۔۔اس نے ہتھیلیاں جوڑ کر مسلیں۔  اسکی مجبوری انجان ملک انجان شہر رات کا وقت 

ابھی پنڈی میں ہوتی تو ۔۔ اس نے زیر لب سوچا۔۔

یار اسے نہ راستے آتے نہ یہاں کی زبان آتی ۔۔ اکیلے جاتے گھبرا ئے گی جبھی ایڈون نے مجھے کہا تھا۔ سب سے بڑھ کر کمٹ کر چکا ہوں کیوں ضد کر رہی ہو۔۔ یون بن  زچ ہوگیا۔۔ 

کیا مطلب ۔۔کوئی چھوٹی بچی ہے جو اکیلے جاتے گھبرائے گی ۔۔ گوارا بگڑی

ہیون اس بار بول ہی پڑا۔۔

میں ڈراپ کر دیتا ہوں اریزہ کو۔۔ 

دونوں خاموش ہوگئے۔۔ 

اب تینوں اسے ہی دیکھ رہے تھے اریزہ جز بز سی ہوئی 

ایم سوری اریزہ ہمیں ضروری کہیں جانا ہے یہ ہیون تمہیں ڈراپ کر دے گا۔۔ فکر مت کرنا اسکی گاڑی میری گاڑی سے بڑی اور آرام دہ ہے۔ جون تائی بے حد شرمندہ تھا بار بار معزرت کرتا رہا۔۔ 

اٹس اوکے۔۔ وہ اور کیا کہتی۔ ۔گوارا البتہ معمعولی سی بھی مروت نبھانے کی رودار نہیں تھی تن فن کرتی گئ فرنٹ سیٹ پر بیٹھ کر دھاڑ سے دروازہ بند کیا۔۔

اریزہ تھوڑا ہٹ کئ کھڑی ہو گئ۔۔

ہیون جب انکی گاڑی نظروں سے اوجھل ہوگئ تو گہری سانس لے کر بولا۔۔ 

نونا  آجائیں تو چلتے ہیں۔۔

اندرگاڑی میں بیٹھوگئ یا ہوا کھانی ہے۔۔ ؟

اس نے کندھے اچکا دیئے۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ دونوں یونہی گاڑی سے ٹیک لگائے آتے جاتے لوگوں کو دیکھ رہے تھے۔۔ تبھی ایک پندرہ سولہ سال کا لڑکا اپنی چھوٹی بہن کو ان سے کچھ فاصلے پر کھڑے آیسکریم والے سے آئسکریم دلانے لایا۔۔ بچی بھائی کے بازو سے جھول۔رہی۔تھی سو نخرے دکھا رہی ایک۔آیسکریم نکلواتی دوسری آخر ایک پسند آگئ۔۔ تو اب بھائی ہی ریپر کھول کر دے۔۔ جانے اس منظر میں کیا تھا یہ منظر دھندلا گیا کھنچی ہوئی آنکھوں والی بچی کی جگہ بڑی بڑی آنکھوں والی بچی نے لے لی چپٹی ناک والے لڑکے کی جگہ کھڑی ناک والا لڑکا کھڑا بہن لے۔لاڈ اٹھا رہا تھا۔۔وہ ایک ٹک دیکھے گئ

یہ لو۔

ہیون نے آئسکریم اسکے سامنے بڑھائی۔۔ 

وہ چونک کر دیکھنے لگی

چھوٹے بچوں کو للچائی نظروں سے مت دیکھو خود بھی کھا لو۔۔ ہیون سک نے اسکی نم آنکھوں کو غور سے دیکھتے کہا تھا۔۔ 

اس نے یکدم تاثرات بدلے تھے

میں انہیں نہیں دیکھ رہی تھی۔ 

پھر کن کو دیکھ رہی تھیں پلکیں بھی نہیں جھپک رہی تھیں مجھے تو ڈر ہے ان بے چاروں  کی طبیعت خراب ہو جائے گئ  گھر جا کے۔۔ 

ایویں۔ اس نے گھورا۔ پھر انگریزی میں بولی

بولا نا میں انہیں نہیں دیکھ رہی تھی۔۔ 

پھر کیا آئیسکریم والا پسند آگیا ہے۔۔ تھوڑا عمر میں زیادہ نہیں۔ اس کا انداز سراسر چڑانے والا تھا

اریزہ نے آیسکریم اسکے ہاتھ سے لے لی۔۔ ہیون  اپنے لیے بھی لایا تھا سو دوبارہ اسکے ساتھ ہی ٹک گیا۔۔ 

 برا نہیں ویسے۔۔ اتنا ہی بڑا ہوگا سجاد بھی مجھ سے۔

۔ وہ بڑ بڑائی

ہوں ہیون چونکا۔۔ 

تو وہ کندھے اچکا گئ۔۔

زبان کو زنگ ہی لگ جائے گا میری ۔۔۔۔۔۔اسے فکر ہوئی۔۔ 

مگر بھوک بھی لگ رہی تھی وہ شوق سے کھا گئ۔۔ 

ہیون نے اسکی رفتار کو  دیکھا پھر خود بھی جلدی جلدی کھانے لگا۔۔۔۔ تبھی نونا چلی آئیں

بیا نیئے بیانیئے ۔۔۔

سوری سوری۔ کام نپٹاتے کافی وقت لگ گیا اب باقی کام اسسٹنٹ پر چھوڑ کر آئی ہوں میں نے کہا میں نے اپنے بھائی کے ساتھ ڈنر کرنا ہے سو بس اب میں اور نہیں رک سکتی۔۔ نونا  تیز تیز بولتی تیز تیز چلتی معزرت کررہی تھیں۔۔بلیک فرل والی لانگ اسکرٹ جالی دار آستینیوں والا بلائوز

یہ تو وہی میزبان ہیں۔۔ اریزہ حیران رہ گئ۔۔ اتنی دور سے وہ۔جتنی حسین لگ رہی تھیں قریب سے تو اور بھی تمکنت والی شخصیت تھیں۔۔ اسے دیکھ کر چونکیں اور سوالیہ نظروں سے ہیون  کو دیکھنے لگیں۔

یہ میری کلاس فیلو ہے اریزہ ۔۔ اریزہ یہ میری نونا  میری بہن ہیں گنگشن

اوہ اس نے انکے اندازمیں جھک کر سلام کیا ۔۔

آننیانگ

اسے بھی ڈراپ کرنا ہے ۔۔ اس نے ہنگل میں بتایا وہ سر ہلا گئیں 

نونا  فرنٹ سیٹ پر بیٹھیں تو وہ انکے پیچھے والی نشست پر براجمان ہو گئ۔۔ 

کس ملک سے تعلق ہے تمہاراآری زے۔۔ شا۔۔ 

جی۔۔ وہ اپنے نام پر ہی چونکی۔۔ 

جی پاکستان۔۔ ۔

اچھا ۔۔ انہوں سر ہلایا۔۔ اچھا ملک ہے خوبصورت۔ ہوگا تمہیں دیکھ کر لگتا۔۔

وہ کیا کہتی مسکرا کر رہ گئ۔۔

کدھر آتو گیا ریستوران۔۔ انہوں نے حیرت سے ہیون کو دیکھا۔۔

اسے پہلے ڈراپ کر دیں۔۔ 

کیوں یہ بھی کھا لے گی ہمارے ساتھ۔۔ نونا نے کہا پھر خیال آیا تو انگریزی میں بولیں

کیوں اریزہ بھوک لگی ہے نا تمہیں؟

جی جی۔۔ وہ اپنے دھیان سے چونکی۔۔

جی کا کیا مطلب ہوتا؟

انہوں نے ہیون  سے فورا پوچھا۔۔

اسکے فرشتوں کو خبر نہ تھی سو کندھے اچکا دیے۔۔

اس نے ایک تھری اسٹار ہوٹل کے باہر گاڑی روک دی 

آئو اریزہ۔۔مجھے تو بہت بھوک لگ رہی ہے آج میں بہت کھانے والی ہوں ۔۔۔ نونا  کہتے ہوئے گاڑی سے اتریں

آپ لوگ جائیے میں یہیں ٹھیک ہوں۔۔ وہ ہچکچائی

کیا مطلب؟ پارکنگ میں بیٹھی رہو گی؟

یہ تو ٹھیک نہیں رہے گا ۔۔ انی نے نفی میں سر ہلایا۔۔

چلو ہیون  پھر اسے پہلے ڈراپ کر دیتے ہیں میرا کیا ہے تھوڑی دیر اور بھوک برداشت کر لیتی ہوں۔ وہ باقاعدہ منہ لٹکا کر بولیں۔۔ ہیون اسکو سوالیہ نظروں سے دیکھ رہا تھا بتایو کیا کرنا۔۔

آپ کھا لیں پہلے۔۔ وہ اور کیا کہتی۔۔ 

انی نے جیسے خوش ہو کر اسکی طرف کا دروازہ کھولا۔۔ اسے نکلنا ہی پڑا۔

تمہیں چائینیز پسند ہے؟

انی اسکے ساتھ چلتی پوچھ رہی تھیں۔۔

ہاں۔۔ واقعی اسے پسند تھا۔۔ 

چلو اچھا ہو گیا۔۔ میں اور تم ہیون کو دکھا دکھا کر کھائیں گے۔۔

وہ چٹکی بجا کر بولیں

مجھے پسند نہیں مگر میں آپ سے زیادہ ہی کھا لیتا ہوں۔۔ ہیون  نے چڑایا۔۔ اندر آکر انی نے پورے ہال پر نظر دوڑائی پھر اپنی پسندیدہ کونے والی ٹیبل کی طرف بڑھیں 

جلدی کرو۔۔ کوئی اور نہ چھین لے۔۔ وہ اریزہ کا ہاتھ پکڑ کر جیسے دوڑیں۔۔

اریزہ حیران پریشان گھسٹتی گئ۔۔ ہیون نے مسکراہٹ دبائی۔۔ انی آج فل فارم میں تھیں۔۔

بیٹھ کر انہوں نے جیسے سکھ کا سانس لیا

اف۔۔ پتہ ہے ہیون  کے ساتھ جب جب آئی ہوں یہ بھاگتا ہی نہیں ہمیشہ ہمارے پہنچنے تک یہ ٹیبل فل ہو چکی ہوتی ہے۔۔

کتنی مرتبہ تو میں نے یہ خالی کروائی ہے آپکےلیے خاص طور سے درخواست کر کے اسکا کیا۔؟ ہیون مصنوعی ناراضگی سے بولا۔۔  انی نے لاپروائی سے کندھے اچکایے۔۔

اگر تم بھاگتے تو محنت نہ کرنی پڑتی نا بعد میں کیوں اریزہ

۔ وہ ہر بات میں اسے شامل کر رہی تھیں اریزہ مسکرا دی۔۔

اریزہ تم کیا کھائو گی۔۔ وہ اب مینیو کارڈ دیکھ رہی تھیں۔۔

کچھ بھی بس سبزیوں کا بنا ہو۔۔ اس کی پسند سادہ تھی۔۔

آہاں تم گوشت نہیں کھاتیں ؟ 

اریزہ بتانا چاہ رہی تھی کہ کھاتی ہوں مگر یہاں حلال نہیں ہوگا۔۔ مگر جملہ بن نہیں پایا۔۔ اس کے چہرے پر الجھن آگئ۔۔

جی۔۔ اس نے اس پر ہی اکتفا کیا۔۔

جی اسٹینڈ فار۔۔وہ اسے دلچسپی سے دیکھ رہی تھیں

کائنڈ آف یس ۔۔ اس نے وضاحت کی۔۔

اوکے۔۔ جی ۔۔ ساوئنڈز گڈ ازنٹ اٹ ہیونا

وہ بھائی سے تائید چاہ رہی تھیں۔۔ اس نے کیا کہنا تھا سر ہلا دیا۔۔

تبھی ویٹر کے قریب آنے پر انہوں نے اپنے لیے چاومن نوڈلز اور اریزہ کیلیے پیور سبزی پلائو منگوا لیا۔۔ ہیون نے چکن فرائڈ رائس منگوایا۔۔

کھانا لگنے تک وہ اس سے ادھر ادھر کی باتیں کرتی رہیں اسکی کافی جھجک دور ہوئی۔۔ وہ اب پہلے کی نسبت بے تکلفی سے بات کر رہی تھی۔۔

تمہیں کیسا لگا شو؟ وہ اس سے پوچھ رہی تھیں۔ 

اچھا لگا۔۔ مزا آیا مجھے۔ اس نے حقیقتا دل سے کہا تھا

نونا آپ جب کمپیئرنگ کر رہی تھیں تو یہ اتنے شوق سے آپکو سن رہی تھی حالانکہ اسے ہنگل سمجھ نہیں آتی۔ 

ہیون نے جان کے ہنگل میں انہیں بتایا۔ وہ مسکرا دیں۔ اریزہ خود کو خاصا احمق محسوس کر رہی۔تھی ان کے بیچ بیٹھی۔ 

 ہماری انجمن اکثر ایسے شو منعقد کراتی ہے میں ہیون کو اتنا بلاتی مگر یہ بس پک اینڈ ڈراپ کرنے آجاتا ہے ۔ میں رات کو ڈرائو نہیں کرتی نا۔ 

انہوں نے دوستانہ انداز میں بتایا۔ وہ پوچھنا چاہ رہی تھی کہ کیوں مگر موقع نہ ملا۔ وہ اگلی بات شروع کر چکی تھیں۔ 

اب ہم بریو ہارٹ کا کانسرٹ ارینج کر رہے ہیں۔ آنا تم بھی۔ ہیون کے ساتھ۔ آگے کا پاس دوں گی۔ 

انہوں نے لالچ دیا۔ اریزہ مسکرادی۔ 

آپ ہوسٹ کریں گئ اسے؟ اس نے یونہی پوچھا

شائد۔ وہ پریقین نہیں تھیں پھر بھی سوالیہ ہوئیں 

کیوں؟

آپ کا لہجہ اور انداز بہت اچھا تھا ہوسٹنگ کرتے ہوئے میں بہت شوق سے سن رہی تھی آپکو۔ حالانکہ مجھے ہنگل سمجھ نہیں آتی۔ 

اریزہ نے سادہ سے انداز میں کہا مگر گنگشن حیرت سے ہیون کو دیکھنے لگی جو محظوظ انداز میں جتانے والی نظروں سے دیکھ رہا تھا۔ 

شکریہ۔ اریزہ ۔ تم بھی ہنگل سیکھو نا آسان ہے۔ 

وہ پیار سے بولی تھیں اریزہ نے اثبات میں سر ہلا دیایونہی ادھر ادھر کی باتوں میں وقت کا پتہ نہ۔لگا 

کھانا لگنے پر انہوں نے پہلے اریزہ کے کھانا شروع کرنے کا انتظار کیا۔۔

پلائو کافی مزے کا تھا۔۔ وہ رغبت سے کھا رہی تھی۔

یہ دونوں اسکے بر عکس چاپ اسٹکس کا استعمال کر رہے تھے۔۔ 

وہ شملہ مرچ الگ کر رہی تھی۔۔

انی نے مسکرا کر اسکی حرکت کو دیکھا تو وہ شرمندہ ہو گئ۔۔

میں پلائو بناتی تو بہت کم شملہ مرچ ڈالتی ہوں۔۔ پھر بھی میری پلیٹ کا کنارہ ان سے بھرا ہوتا۔۔ امی ۔۔ میری ماں مجھے ڈانٹتی ہیں کھانا ضائع کرنے پر ۔۔ وہ مزے لے کر بتا رہی تھی۔۔ 

مگر پاپامجھے ڈانٹ سے بچانے کو میری پلیٹ کی سب شملہ مرچیں کھا لیتے۔۔ 

یہ چند جملے بولنے میں وہ کئی بار اٹکی کئی بار لفظ کم پڑے مگر دونوں اسے دلچسپی سے سنتے رہے۔۔ اسے بولتے ہویے مزا آیا۔۔

تم اپنے آہبوجی ۔۔ میرا مطلب پاپا سے کافی قریب ہو لگتا ہے۔۔

ہاں میں ان سے بہت پیار کرتی۔ہوں وہ بھی۔۔ اس کے چہرے پر بے تحاشہ خوشی تھی۔۔

انی بے حد پیار سے اسے دیکھ رہی تھیں۔ تو ایسے بھی باپ ہیں دنیا میں جو بیٹیوں پر جان چھڑکتے۔۔ وہ آہستہ سے ہنگل میں بڑ بڑائیں ہیون نے ایک نظر انہیں دیکھا وہ بظاہر مگن تھیں مگر انکے جملے اسکے دل میں ترازو ہو گئے۔۔۔

کھانا کھا کر نکلے تو دس بج رہے تھے۔۔رات گہری ہو چکی تھی سیول کی رات کی ٹھنڈی ہوا چلنے لگی تھی۔۔ ہیون  گاڑی نکالنے گیا تھا تو وہ دونوں ایسے ہی ریسٹورنٹ کے باہر چہل قدمی کرنے لگیں

اسکا ہوا سے دوپٹہ لہرا کر انی کے ہاتھ سے ٹکرایا تو وہ دلچسپی تھام کر ملائمت دیکھنے لگیں۔۔ اریزہ چونکی تو انکی کلائی دیکھتی رہ گئی کیا دودھ جیسا رنگ تھا کالی ڈائل والی رسٹ واچ دمک رہی تھی وہ بڑے غور سے کپڑے کا اندازہ کر رہی تھیں اس نے انکی الجھن دور کر ڈالی۔۔ 

یہ شیفون ہے۔۔ اس نے مسکرا کر بتایا۔۔

ایک تو سب اسکے دوپٹے سے متاثر تھے۔۔

یہ تمہارا روایتی لباس ہے نا۔۔ کافی آرام دہ ہے۔۔ ہم تو اپنا روائتی لباس عام زندگی میں استعمال نہیں کر سکتے اسی طرح بے تحاشہ کپڑا لگتا ۔۔

وہ ہنس دی۔۔

تم لوگوں کی فلمز میں میں نے دیکھا اسی کو پورا لپیٹا ہوا ہوتا ہے ہے نا۔۔ زیادہ نہیں بس ایک آدھ ہی دیکھی ہے  مووی بس میں نے

آپ نے پاکستانی فلمز دیکھیں ہیں ؟

اس حیرت ہوئی۔۔ اب کچھ اچھی بنی تو تھیں مگر وہ بھی سب پاکستانیوں نے نہ دیکھی تھیں یہ کوریا میں بیٹھ کر دیکھ رہی تھیں حیرانگی از حد حیرانگی۔۔

ہاں تھری ایڈیٹ دیکھی تھی۔۔ ابھی دنگل دیکھی۔۔

انہوں نے بتایا۔۔

اوہ۔۔ وہ پاکستانی فلمیں نہیں ہیں انڈین ہیں۔۔

وہ منہ بنا کر بولی۔۔

تو پاکستان انڈیا کا شہر نہیں؟وہ حیران ہوئیں۔۔

بالکل نہیں میرا پاکستان بالکل الگ ہے انڈیا سے ذیادہ خوبصورت اور اچھا ملک ہے صاف بھی۔۔وہ تنک کر بولی۔۔ 

انی اسکے انداز پر ہنس پڑیں۔۔ 

ہاں انڈیا تو بہت لائوڈ ملک ہے ہر وقت لڑائی کو تیار ہمارا جینا حرام کر رکھا ہے۔۔

شمالی کوریا کی طرح۔۔ انی مسکرا دیں

ہاں۔  اس نے سر ہلایا۔ 

آپ نہیں جانتی ہر وقت بارڈر پر جنگ رہتی ہمارے۔۔ سویلینز کو نشانہ بناتے رہتے۔۔ وہ انڈیا کے خلاف کافی دیر بول سکتی تھی۔۔

تم اپنے ملک کا بتائو کیسا ہے۔۔ انی نے اسے غصے میں دیکھا تو بات بدل دی۔۔

میرا ملک۔۔ وہ سوچ میں پڑی۔۔

لاہور ایک بار پھر دہشت گردی کی لپیٹ میں۔۔

وزیرستان میں پاک فوج کی کاروائی ایک میجر شہید۔۔

کراچی ایک بار پھر ڈوب گیا۔۔ کل شام سے ہونے والی تھوڑی دیر کی بارش پورے شہر کو دریا بنا گئ۔۔

ابھی تک نکاسی آب کا انتظام نہ کیا جا سکا۔۔

پشاور پر ڈینگی کا حملہ۔۔ اب تک مریضوں کی تعداد ہزار کے قریب ہو چکی اب تک آٹھ افراد زندگی کی بازی ہار چکے ہیں 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہاسٹل۔کے باہر اترتے ہوئے انی باقائد ہ اتر کر اس سے ملیں

بہت اچھا لگا تم سے مل۔کر۔۔ وہ فراخ دلی سے بولیں

مجھے بھی۔۔ اب تک سیول میں میں نے سب زیادہ آپ سے بات کی ہے اور مجھے بہت اچھا لگاآپ سے مل کر نونا

وہ تھوڑا حیران ہوئیں ہیون نے ڈرائیونگ سیٹ سے بیٹھے بیٹھے آواز لگائی

ان کا نام گنگشنی ہے۔۔ نونا یہ میری ۔۔ نونا  انکا نام نہیں بلکہ ہنگل میں لڑکے اپنی بہن کو کہتے ہیں۔۔

اوہ سوری۔۔ اریزہ خفت زدہ ہوئی۔۔ 

کوئی بات نہیں تم مجھ سے چھوٹی ہی ہوگی تم مجھے انی کہہ سکتی ہو مجھے اچھا ہی لگے گا۔۔ وہ پرخلوص مسکراہٹ سے بولیں تو اریزہ  نے خوش ہو کر گرم جوشی سے نہ صرف ہاتھ ملایا بلکہ حسب عادت گال سے گال ملا کر ملی۔۔ انی کیلیے یہ انداز کافی غیر متوقع تھا۔۔ کوریا میں اس طرح گلے ملنا پسند بھی نہیں کیا جاتا جھک کر دور سے الوداعیہ ملتے۔۔

مگر سچ یہ کہ انکےلیے یہ مختلف ضرور تھا مگر اریزہ کے چہرے پر بکھری پر خلوص مسکراہٹ دیکھ کر انہیں برا نہیں لگا تھا۔۔ وہ ہاتھ ہلاتی ہیون سک کو علیحدہ شکریہ کہتی اندر چلی گئی تھی۔۔

یہ کیا تھا۔۔ ہیون سک نے ہنس کر ان سے پوچھا۔۔ 

وہ کندھے اچکا گئیں

شائد اسکے ملک میں ایسے ہی ملتے ہوں۔ انہوں نے خیال ظاہر کیا۔۔ 

مجھ سے تو ہاتھ بھی ملا کر نہیں گئی۔۔ وہ حیران تھا۔۔ 

تم بڑھا لیتے ہاتھ۔ انی نے شرارتی انداز میں کہا تو وہ ہنس کر گاڑی اسٹارٹ کرنے لگا۔۔

ویسے آپ نے ناحق اپنی توانائی ضائع کی۔۔ وہ بھی شرارتی انداز میں بولا۔۔

میں اسکو اپنی لڑکی کی طرح نہیں دیکھتا ہماری تو دوستی بھی نہیں ہے آج یون بن  کے کہنے پر ڈراپ کیا ہے بس۔۔ 

انی کھلکھکلا کر ہنس دیں

میں واقعی یہی سمجھی تھی۔۔ آج تک تو کوئی لڑکی تمہارے ساتھ نہ دیکھی ۔۔ میں تو خوش ہوگئ تھی کہ میرا بھائی بھی نارمل ہے۔۔ ویسے باتونی ہے تمہارے جیسی۔۔ دوستی تو کرلو۔

یہ میرے ٹائپ کی نہیں ہے اس نے شانے اچکائے۔۔

اس کے زہن میں اس وقت شام کے دھندلکے میں سنہرا چہرہ لہرایا تھا۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   

وہ ایک بجے کے قریب پہنچی تھی ہاسٹل۔۔ہاسٹل سنسان ہو رہا تھا سب سو چکے تھے اس نے آہستہ سے آکر کمرے کا دروازہ کھولا تو لائٹ بند تھی۔۔ اریزہ اوپرشائد سو چکی تھی۔۔۔اس نے دروازہ بند کیا چند لمحے دروازے سے ہی ٹیک لگا کر کھڑی رہی اسکا دل ابھی بھی زور زور سے دھڑک رہا تھا سانسیں نا ہموار تھیں وہ دبے قدموں چلتی ہوئی آکر بیڈ پر گر سی گئ۔۔ اسکے زہن کے پردے پر کوئی منظر تازہ ہوا تھا اسکے چہرے پر دھیمی سی مسکان در آئی۔۔ اس نے تکیا کھینچ کر بانہوں میں دبوچا اور کروٹ لے لی۔۔ اسے مگر آج نیند نہیں آنے والی تھی۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میرا چہرہ گول نہیں ہے اور میری آنکھیں تو اتنی چھوٹی نہیں ۔۔میں اگر کم از کم دس کلو وزن بڑھا لوں تب شائد ایسا لگوں۔۔۔

ہیون کو بالکل اپنا اسکیچ پسند نہیں آیا 

۔۔۔

میں دوبارہ بنادیتی ہوں ۔۔ وہ شرمندہ ہوئی۔۔

ہم وہ جیسے مطمئن ہوگیا۔۔

یہ تصویر ضائع مت کرنا اسی پوز میں دوبارہ بنائو مگر اس بار میرے اسکیچ کو تھوڑی ڈائٹنگ کرا دینا

ہیون سک نے روانی میں کہا وہ بھی سر ہلا گئی پھر اسکے جملے پر غور کیا تو مڑ کر اسکئ شکل دیکھنے لگی۔۔

وہ مسکرا رہا تھا۔۔

وہ اسے دیکھتی رہ گئ۔۔

چند لمحے تو وہ مسکراتا رہا مگر وہ چونکی بھی نہیں تو اسکی آنکھوں کے سامنے چٹکی بجا دی۔۔

وہ یکدم ہوش میں آئ۔۔ سٹپٹا کر اس نے رخ پھیر لیا۔

مجھے یہاں بیٹھنا پڑے گا یا تم میری تصویروں سے کام چلا لوگی۔۔ ؟

کام چلا لوں گی۔۔ اس نے بہت آہستہ آواز میں کہا۔۔

گڈ۔۔ میرے لیے ٹک کر بیٹھنا کافی مشکل کام ہے۔

 آخری بار ٹک کر بچپن میں ٹوائلٹ سیٹ پر بیٹھا تھا تب مجھے severe constipation ( قبض ) تھی۔۔ وہ سادگی سے بتا رہا تھا۔۔ہوپ کو بے ساختہ ہنسی آگئ۔۔

ہیون مسکرا دیا۔۔ 

میں اتنی ماہر تو نہیں تمہیں پیسوں کا بھی مسلہ نہیں تم مجھ سے ہی کیوں بنوا رہے ہو اپنا پورٹریٹ؟ کسی پروفیشنل کو ہائر کیوں نہیں کرتے۔۔ اسکے زہن میں اچانک سوال آیا تھا سو یکدم پلٹ کر پوچھنے لگی۔۔

وہ گڑبڑایا

وہ میں

ہاں ٹھیک ہے میرے پاس پیسے ہیں مگر پرفیشنل جتنے لے گا اس سے آدھے میں تم سے بنوا لوں گا۔۔ اس ے سوجھ گیا تھا جواب ۔

۔ ویسے بھی تم اچھی خاصی تصویر بنا لیتی ہو بس یہ آنکھیں اور تھوڑی کا مسلہ ہے ابھی یہ میرے سے زیادہ آہبھوجی کی تصویر لگ رہی تم نئ تصویر میں یہ ٹھیک کر دو تو میرے بڑے بھائی جیسی تو لک تو آہی جائے گی۔۔

ہوپ کے تیزی سے سکیچ بناتے ہاتھ رکے۔۔ اسے کوئی خیال آیا تھا۔۔ 

کیا سوچنے لگ گئیں؟

میں ویسے اپنی تصویر کا پرنٹ آئوٹ بھی نکال کر لایا ہوں۔ اسے یاد آیا۔۔ اس نے اپنے اپر کی جیب میں ہاتھ ڈال کر رول کیا ہوا پرنٹ آئوٹ نکالا۔۔ 

یہ دیکھو اس نے ایزل کے برابر ہی بڑی تصویر نکال کر سیدھی کی۔۔ میں نے سوچا تم موبائل کی چھوٹی سی اسکرین سے دیکھ کر کیسے میرے فیچرز کا اندازہ کر سکوگی۔۔ 

بڑا سا ہیون کا مسکراتا ہوا چہرہ اسکی غلافی آنکھیں اسے بہت قریب سے دیکھ رہی تھیں اس نے بلا ارادہ پرنٹ آئو ٹ رول کر دیا۔۔ ہیون نے حیرت سے اسکی حرکت کو دیکھا تو اسے بھی احساس ہوا۔۔ گڑبڑا کر بولی

میں اسے رکھ لیتی ہوں گھر جا کر آرام سے اسے دیکھ کر بنائوں گی۔۔ 

گوما وویو۔۔ اس نے تھوڑا سا جھک کر شکریہ ادا کیا۔

مرضی ہے۔۔ اس نے بھی شانے اچکا دیے۔۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سنتھیا۔۔ اسے چوتھی بار اٹھانے آئی تھی ۔۔وہ کسمسا کر رہ گئ۔۔

کیا ہوا ہے یونی نہیں جانا۔۔؟ وہ تنگ آگئ۔۔

نہیں۔۔ اس نے پھر کروٹ بدل لی۔

اچھا ناشتہ تو کر لو۔۔ اس نے زچ ہو کر کہا وہ ٹس سے مس نہ ہوئی۔۔ دفع ہو اسے اس کے حال پر چھوڑ کر وہ خود ہی تیار ہونے چل دی

وہ کلاس میں حسب عادت سب سے اگلی رو میں ہی جا کے بیٹھی۔۔ اسے اکیلا بیٹھے دیکھ کر شاہزیب پیچھے سے اٹھ کر اسکے پاس آیا۔۔ 

سنتھیا نہیں آئی۔۔؟

نہیں شائد اسکی طبیعت ٹھیک نہیں۔۔ 

سالک نے جتاتی نظروں سے شاہزیب کو دیکھا۔۔ 

ایڈون بھی نہیں آیا۔۔ اس نے یونہی پوچھا۔۔

وہ سر جھٹک کر بولا۔۔ 

آج اسکی بھی طبیعت خراب ہوگئ ہے۔۔ 

دونوں نے کھا لیا ہوگا باہر کچھ الٹا سیدھا۔۔ 

اریزہ نے سادگی سے کہا۔۔ شاہزیب نے غور سے اسکی شکل دیکھی وہ سادہ سے انداز میں بول رہی تھی۔۔

وہ مسکراہٹ دبا گیا۔۔ 

اریزہ نے الجھن سے اسکے انداز کو دیکھا۔مگر وہ پلٹ کر اپنی سیٹ پر چلا گیا۔۔

کلاس کےبعد وہ واپس ہاسٹل آرہی تھی جب اسے جی ہائے اور گوارا رستے میں ملیں

شاپنگ پر جا رہے چلو گی؟

جی ہائے نے  پوچھا تو سوچ میں پڑگئ۔۔ 

اب اسے کیوں ٹانگ رہی ہو ساتھ۔۔ گوارا نے بیزاری سے کہا۔۔جی ہائے نظرانداز کر گئ۔۔ 

ہاں مجھے بھی کچھ لینا ہے میں بس دو منٹ میں آئی۔۔

 ہم یہیں انتظار کر رہے ہیں۔ اس نے کہا تو وہ تیز تیز قدم اٹھاتی ڈورم کی طرف بڑھ گئ۔

۔ سنتھیا  تم نے کچھ لینا ہے؟ وہ بولتی ہوئی کمرے میں آئی تو کمرہ خالی تھا۔۔ 

یہ کہاں گئ۔۔ صبح تو اتنی طبیعت خراب تھی۔۔ اس نے حیرت سے خالی کمرے کو دیکھا۔۔ پھر اپنا بیگ رکھ کر کلچ نکال لیا پیسے کم لگے تو الماری سے مزید نکال کر رکھے اور الماری لاک کر دی۔۔ 

پانچ منٹ لگے ہونگے اسے مگر گوارا سخت چڑ چکی تھی۔۔ جی ہائے کے سر پر ٹہل ٹہل کر بڑ بڑا رہی تھی۔۔ وہ لاپروائی سے موبائل میں لگی رہی۔۔ 

آگئ بس کرو بڑبڑانا۔۔ اس نے دور سے آتے دیکھا تو بیگ اٹھا کر کھڑی ہوگئ۔۔ گوارا نے سخت چڑ کر اسے دیکھا۔۔ پتہ نہیں کیا جادو کیا ہے اس نے اس پر۔۔

وہ ٹھیک ٹھاک جیلس ہو رہی تھی۔۔

تینوں کیب کے زریعے مارکیٹ آئی تھیں 

جی ہائے اور گوارا گارمنٹس کی شاپ میں گھس گئیں وہ جیولری کارنر کی طرف بڑھ گئ۔۔ 

اسے ایک بے حد نازک سے صلیب پسند آئی چھوٹی سی چین جو بس گردن کے گرد ہی پوری آتی اس میں ہنسلی کی ہڈی کے درمیانی جوڑ پر آٹکتی۔ اس نے اپنی گردن پر لگا کر دیکھا اور مطمئن ہو گئ۔۔ 

ساتھ ہی اسے حسب عادت بریسلیٹ پسند آگئے 

وہ نازک سا بریسلیٹ تھا جس میں چھوٹے چھوٹے سنہری گھنگھرو تھے  اس نے کلائی میں ڈالا اسکی گوری کلائی میں دمک اٹھا۔۔ اسے ایک اور کلائی یاد آئی جو اس سے بھی زیادہ گوری تھی۔۔ اف یہ لوگ کتنے گورے ہوتے

۔ اس نے بریسلیٹ رکھ دیا 

کیا ہوا میم پسند نہیں آیا یہی چیز سلور میں بھی ہے۔۔ 

سیلز گرل نے اسے ویسا ہی سلور بریسلٹ دکھایا

۔ واہ یہ بھی بہت پیارا ہے۔۔ اس نے اسے بھی ہاتھ میں اٹھا لیا اور سنہرا بھی۔

۔ کونسا لوں؟ وہ کنفیوز ہوگی

آپ کو دونوں پسند آرہے تو دونوں لے لیں آپکو ڈسکائونٹ بھی مل جائے گا۔۔ اس نے بھانپ لی تھی اسکی پسندیدگی سو لالچ دےدیا۔۔ 

اریزہ نے ایک لمحے کو سوچا پھر دونوں خرید لیے۔  اس نے چین اور بریسلٹ علیحدہ علیحدہ گفٹ میں پیک کروایا۔۔  وہ فارغ ہو کر جی ہائے کے پاس چلی آئی۔۔ وہ ایک ٹاپ ٹرائی کرکے دیکھ رہی تھی۔۔ بلیک سمپل سا ایک شولڈر والا ٹاپ تھا جس کے ایک کندھے پر نازک سی سنہری کڑھائی کا پھول بنا ہوا تھا۔۔ 

کیسی لگ رہی ہوں؟ جے ہی نے آئنے میں اسکا عکس ابھرتا دیکھ کر پوچھا تھا

اس نے اشارے سے کہا پرفیکٹ۔۔ وہ مطمئن ہو گئی۔۔

گوارا اسے پہلے بتا چکی تھئ اس وقت بھی منہ بنا کر رہ گئ۔۔ 

شاپنگ کر کے وہ لوگ سپر اسٹور گھس گئیں

اس نے سپر اسٹور سے بس کھانے پینے کی ہی چیزیں لیں خشک کین فوڈ پھلوں کے ٹن، چیز لینے لگی تو جی ہائے نے ٹوک دیا۔۔

روز چیز سینڈوچ کھاتی ہو یہ اچھی بات نہیں ۔۔ وہ جھینپ گئ اور اسے رکھ کر جیم اٹھا لیا۔۔ 

دو تین گھنٹے گھوم پھر کر وہ واپس آئی تب بھی سنتھیا نہیں آئی تھی۔۔ اس نے آرام سے ساری شاپنگ ٹھکانے لگائی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ تمہارے لیئے لیا تھا میں نے۔ گوارا نے اپنے شاپنگ بیگ سے ٹاپ نکال کر اسکے بیڈ پر رکھا۔

جی ہائے چونکی۔ 

کیوں؟ 

ایویں ۔ وہ کندھے اچکا کر اپنے بیڈ پر بیٹھ کر اپنی شاپنگ نکال نکال کے دیکھنے لگی۔ جی ہائے نے ٹاپ کا ٹیگ اٹھا کر دیکھا۔

یہ سب سے مہنگا ٹاپ ہے ہماری شاپنگ کا تم نے میرے لیئے لیا ؟ پیسے کہاں سے آئے۔ 

جی ہائے کے تیور کڑے ہوئے۔ 

کیوں میں تمہیں گفٹ نہیں دے سکتی۔ سالگرہ گزری ہے ابھی تمہاری۔سوری مجھے گائوں جانا تھا اس دن آ نہ سکی۔ 

وہ جان کے اسکی جانب سے رخ موڑ کر فراٹے سے بولتی گئ

تم نے مجھے اریزہ کے ہاتھوں گفٹ بھجوا دیا تھا سالگرہ کا۔ 

جی ہائے تفتیش کے موڈ میں تھئ۔ 

ہاں تو کیا بلا وجہ تحفہ نہیں دیا جا سکتا تمہیں۔ وہ سٹپٹا کر اٹھ گئ۔۔ 

اس آدمی نے تمہیں پیسے دیئے ہیں مجھے تحفہ دلانے کے ہے نا۔ 

اس نے غصے سے آکر اسکا بازو پکڑ کر اپنی جانب رخ کیا

ہاں۔ اب جائو باہر کوڑے میں پھینک آئو۔ محبتیں جھٹکنا کوئی تم سے سیکھے۔سگا باپ ہے جسے تم آہجوشی کہتی ہو۔ تمہاری ماں اور تمہارے باپ کی کبھی نہیں بنی۔ وہ مزہب نہ بھی بدلتے تو ان کا اکٹھے رہنا مشکل تھا۔ تم صرف اپنے باپ سے ہی کیوں ناراض ہو۔ 

گوارا کو شائد پہلی بار یوں کھل کے کہنے کا موقع ملا تھا۔

کیونکہ میرے ماں باپ سب اختلافات کے باوجود اکٹھے رہتے آئے ہیں الگ انکو انکے فیصلے نے کیا۔ نا کرتے وہ یہ فیصلہ تو ۔۔۔ 

جی ہائے بولی مگر گوارا نے بات کاٹ دی۔

تو؟ اکٹھے نہیں تو کیا وہ محبت کرتے ہیں تم سےاگر محبت کا موازنہ کرو تو تمہاری ماں اپنے نئے شوہر اور بچوں میں مگن تمہاری سالگرہ بھول چکی ہے۔ 

اس نے تلخی سے اسے آئینہ دکھایا۔ جی ہائے چپ سی رہ گئ

آہجوشی نے منت کی تھی میری کہ تمہارے لیئے تحفہ لوں مگر تمہیں بتائوں نا کہ انہوں نے پیسے دیئے ہیں۔ مگر اب تمہیں پتہ لگ گیا جائو باہر پھینک آئو بلکہ اپنی اس نئی سہیلی کو دے دو جاکر بے چاری روایتئ کپڑے پہنتی ہے۔لیکنپ

 یہ مت بھولنا کہ تمہارا باپ تمہارے ہر برے رویئے کے باوجود بھولتا نہیں ہے تمہاری سالگرہ تمہاری ماں کی۔طرح۔ 

وہ جتاکر کہتی  ہوئی باتھ روم میں گھس گئ۔ زور سے دروازہ بند کیا۔ جی ہائے نے ٹاپ کو مروڑ کر بیڈ پر گولا سا بنا کر دے مارا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دستک پر حسب عادت اس نے اند رآنے کا کہہ دیا تھا

 جی ہائے دروازہ کھٹکاتی چلی آئی۔۔ 

یہ میں تمہارے لیے لائی ہوں

اس نے ایک بیگ پکڑایا۔۔ 

یہ کیا ہے اس نے حیرانی سے وصولا۔۔ 

بے حد خوبصورت ٹی پنک سلیو لیس گھٹنون تک کی فراک تھی۔۔ 

کیسا لگا۔۔وہ اشتیاق سے پوچھ رہی تھئ

بہت پیارا ہے۔ اس نے دل سے کہا۔ 

تبھئ سنتھیا ہنستی مسکراتی چلی آئی۔۔

کیا ہو رہا ہے ؟ اس نے آتے ہی ٹاپ پر جھپٹا مارا۔۔ساتھ لگا کر آئنے میں دیکھنے لگی۔۔ 

جی ہائے لائی ہے میرے لیے۔۔ اریزہ نے بڑے شوق سے بتایا۔۔

بڑی بات ہے۔۔ وہ ٹاپ اپنے ساتھ لگا کر دیکھ رہی تھی۔۔

میں چلتی ہوں ۔۔ جے حی اس کو دیکھ کر رہ گئ۔۔

یہ میں لے لیتی ہوں۔۔ سنتھیا نے جے حی کے نکلتے ہی اسے کہا۔۔

کس خوشی میں؟

اریزہ کمر پر ہاتھ رکھ کر دوبدو ہوئی۔۔

تم سلیو لیس کہاں پہنتی ہو۔۔ میرے پاس اسی کلر کی ٹائٹس بھی ہیں۔۔

مین پہنتی نہیں ہوں مگر پہن سکتی ہوں ۔۔ یہ گفٹ ہے میرے لیے لائی ہے وہ لائو دو ادھر ۔۔ اس نے بنا لحاظ چھین لیا۔

ہونہہ۔۔ ویسے تم مجھے کیا گفٹ دے رہی ہو۔۔ 

کل برتھڈے ہے میری۔۔ اسے یاد آیا۔۔ 

اچھا۔۔ اریزہ حیران ہوئی۔۔

کل۔ہے؟ مجھے تو لگا تھا ابھی دو دن ہیں۔۔ میں نے تو تمہارے لیے لایا بریسلٹ بھی جے حی کو دے دیا ۔۔ وہ معصوم سی شکل بنا کر بولی

کیا۔۔ اسلیئے تم مجھے وہ بریسلیٹ نہیں دے رہی تھیں

اس پر تو جیسے پہاڑ ٹوٹ پڑا۔۔

 اور تم نے میرا بریسلیٹ اسے دے دیا۔۔  کمینی۔۔

وہ اسے مارنے لپکی اریزہ ہنستی بھاگ کر بیڈ پر کودی مگر ستنتھیا تیز تھی بھاگ کر بیڈ پر چڑھی اور اریزہ کو موقع دیے بغیر دھنا دھن تکیے سے اسکی ٹھکائی شروع کردی۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تم واقعی اسے دے آئیں۔

گوارا کا بس نہیں تھا کہ اسکا سر پھاڑ دے۔ 

خود ہی تو کہا تھا جی ہائے بے نیازی سے کندھے اچکا کر بولی

مجھے اتنا پسند آیا تھا میرے منہ پر مار دیتیں۔ 

وہ روہانسی ہوئئ

تمہیں دےدیتی تاکہ تم ہر دوسرے دن چڑھا کر میرے سامنے پھرتی مجھے یاد دلاتیں کہ وہ مںحوس تحفہ کسکا دیا ہوا ہے۔ اریزہ تو ہو سکتا کبھی پہنے بھی نا وہ ڈریس۔ 

جی ہائے کی منطق پر گوارا نے آنکھیں پھاڑیں

اخیر دماغ پایا ہے تم نے۔۔ میں تمہاری سطح تک نہیں پہنچ سکتی۔۔ وہ سر دھن رہی تھی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ٹھیک بارہ بجے اسکا فون بجا تھا۔۔ 

اس نے فون اٹھانے کی بجائے گردن اٹھا کر اوپر دیکھا اریزہ اوپر ریلنگ سے جھکی اسے فون اٹھانے کا اشارہ کر رہی تھی۔۔ 

اس نے ہنس کر کان سے لگایا

ہیپی برتھ ڈے ٹو یو۔۔ سنتھیا سالگرہ مبارک ہو۔۔

پھر کچھ عجیب سا گانا بھی گایا۔۔

اس کے کان سن ہو گئے۔۔ فورا فون کان سے ہٹا کر اسے گھورا۔۔ اسکی ویسے بھی اچھی خاصی تیز آواز تھی اب تو واقعی چیخ رہی تھی۔۔

تمہارا یہ گفٹ ہے کہ میری سالگرہ پر مجھے بہرا کر دو۔۔

سنتھیا نے کہا تو وہ کھلکھلا کر ہنس دی ہاتھ میں پکڑا گفٹ اسکے سچ مچ منہ پر دے مارا۔۔ 

وہ بروقت جھکائی دے کر کیچ کر گئ۔۔ 

فون بند ہوچکا تھا اب دونوں براہ راست بات کر سکتی تھیں۔۔

کتنی انوکھی وش کی ہے میں نے تین زبانوں میں 

سالگرہ مبارک۔۔ کہا ہے۔۔ اس نے مزید بتایا۔۔

تیسری کونسی۔۔ اسے وہ غیرمانوس الفاظ پر مشتمل گانا یاد آیا۔۔ 

ہنگل۔۔ سینگئ چوکھا ہمبندا ۔۔۔ سالگرہ مبارک ہو اور آگے کا جملہ پتہ ہے جی ہائے سے دو دن میں سیکھا ۔۔ اسکا مطلب آگے سے بنتا تم پیدا کیوں ہوئے۔۔ وہ ہنسی۔۔

سنتھیا جو گفٹ کی پیکنگ کھول کھول کر تھک رہی تھیں کھولنا چھوڑ اسے گھورنے لگی۔۔

کسی کو اسکی سالگرہ پر یہ کہا جاتا ہے۔۔؟

اس نے کندھے اچکا دیے۔۔

یہ لوگ تو ایسے ہی  کہہ دیتے ہیں 

ویسے بارہ بجنے میں دو منٹ ہیں اس نے موبائل چیک کیا۔۔

عین بارہ بجے کا کوئی اور انتظار کر رہا ہوگا۔۔ اور میرا دل تھا میں سب سے پہلے تمہیں وش کروں۔۔

وہ ریلنگ پر تھوڑی ٹکا کر بولی تو سنتھیا کا دل ہی آگیا جیسے اس پر۔۔ 

گفٹ کھولو۔۔ نا۔۔ 

اسکے ہاتھ رکےتو فورا اریزہ نے ٹوکا۔۔ 

تبھی اسکا فون بج اٹھا۔۔

اس نے فورا لپک کر فون اٹھایا۔۔

ہیپی برتھ ڈے ٹو یو۔ ہیپی برتھ ڈے ڈیئر سنتھیا ہیپی برتھ ڈے ٹو یو۔۔ 

ایڈون لہک لہک کر گا رہا تھا پیچھے یون بن گٹا ر بجا رہا تھا۔۔ 

مے یو ہیو مینی مور مے یو ہیو مینی مور ہیپی برتھ ڈے سنتھیا ہیپی برتھ ڈے ٹووو یووووووو۔۔۔ 

سنتھیا کی آنکھیں بھرنے لگیں۔۔

یون بن  اور کم سن بھی پیچھے سے وش کر رہے تھے ایڈون نے انکی جانب فون کا اسپیکر کر دیا۔۔ تھینک یو سو سو مچ ۔۔تھینکس کم سن اینڈ یون بن تھینکس آلوٹ۔۔ 

اس نے شکریہ ادا کیا۔ یہ میری سب سے بہترین سالگرہ کی وش تھی ایڈون۔۔ اسکی خوشی سے آواز بھرا رہی تھی۔۔ اریزہ کچھ دیر انتظار کرتی رہی مگر اسکی کال بند نہیں ہو رہی تھی آواز دھیمی ہوتی گئی تو وہ ریلنگ سے ہٹ گئی۔۔ اسکا گفٹ ابھی بھی کھل نہیں پایا تھا۔۔ 

اس نے بور ہو کر لیپ ٹاپ اٹھا لیا۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دوست سنگل رہنے چاہیئیں ۔ جو سنگل نہیں رہتے وہ دوست بھی نہیں رہتے۔۔ ہم ایسا کیوں کرتے سب سے زیادہ جلدی ہم دوست بناتے اور سب سے زیادہ جلدی دوستوں کو ہی چھوڑ دیتے۔۔ نئے رشتے پرانے ساتھ سے اہم تو نہیں ہو جاتے مگر پرانے ساتھی کو ہم فار گرانٹڈ لے لیتے۔۔ ایسا نہیں کرنا چاہیئے۔۔ بے غرض دوست قیمتی اور شاذ ہوتا اسے کسی قیمت پر کھونا نہیں چاہیئے۔۔ کیونکہ بریک اپ کے بعد آپکو دوستوں کی ہی ضرورت پڑتی ۔

اس نے پوسٹ کر دیا۔۔

کافی بکواس ہی پوسٹ ہے وہ فورا ڈیلیٹ کرنے لگی تھی مگر کچھ کمنٹ آگئے تھے۔۔

۔۔۔۔

پہلا: ہر ایک دوست کمینہ ہوتا ہے

دوسرا: بچی آج ہے کل نہیں دوست نے کہاں دفع ہونا پھر بائک مانگنے آجانا ہے سو بچی جب تک ہے انجوائے کرو۔۔

تیسرا: اسکا حل یہی ہے خود بھی سنگل نہ رہو دونوں دوست ایک دوسرے کو منہ نہ لگائو۔۔ 

چوتھا۔۔ ایسے دوست کو دفع کر ایڈمن

پانچواں۔ دوست دوست نہ رہا۔۔ پیار پیار نہ رہا۔۔ 

ایی ۔۔ آج تو سارے ہی بے کار کمنٹس ہیں۔۔ 

اس نے صارم کو میسج کر دیا

مرگئے؟ کب ہے جنازہ؟

میرے ارمانوں کا؟ دفن بھی ہوگئے دل کے قبرستان میں۔ 

آگے سے حسب توقع جواب آیا تھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آج کا بلاگ اسے سوچ میں ڈال گیا تھا۔۔

سون وو

اسے اچانک اسکے ساتھ گزرے پل یاد آئے۔۔ بچپن سے وہ دونوں ساتھ تھے اکٹھے رہتے تھے ہائی اسکول شروع کیا تو ایک ہی کمرہ شیر کرتے تھے۔۔ لانڈری تک اسکی وہی کر دیتا تھا۔۔ اس نے پلٹ کر کبھی شکریہ تک نہ کہا۔۔ اسکو دھکے دے کر اپنے گھر سے نکالنا یاد آیا تو دل جیسے لمحہ بھر کو رک سا گیا۔۔

آئی مس یو  ۔۔ اس نے زیر لب کہا۔۔ پچھلے سال بھر میں شائد ہی اس نے رچل کے علاوہ کسی کو یاد کیا ہو۔۔ آج یقینا کوئی نئی بات تھی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آج انکی کوئی خاص کلاس نہیں تھی جو کلاس لی۔۔  اسے ہیون نے سکپ کر دیا تھا۔۔ کلاس سے باہر نکلتے کم سن یون بن  کو اس نے آواز دے کر روکا تھا۔۔

ہیون  کہاں ہے۔۔ اس نے جون تائی سے پوچھا۔

پتہ نہیں صبح سے نہیں دیکھا۔۔ 

آج آئے گا یا نہیں؟ وہ تھوڑا مایوس ہوئی۔۔ 

دونوں نے کندھے اچکا دیئے۔۔ 

سنتھیا اور ایڈون غائب تھے حسب معمول۔۔ وہ لنڈوری پھر رہی تھی۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سالک اور شاہزیب کیفے جا رہے تھے جب انہیں ہیون ملا۔۔

اریزہ کدھر ہے؟

پتہ نہیں۔۔ دونوں نے کندھے اچکائے۔۔

آج آئی ہے یونیورسٹی۔۔ 

صبح نظر تو آئی تھی سنتھیا کے ساتھ ۔۔ ابھی دونوں شائد کیفے میں ہوں۔۔ شاہزیب نے کہا تو اس نے نفی میں سر ہلا دیا۔۔ وہاں نہیں ہیں وہیں سے آرہا۔ اس نے کہا پھر انکا کندھا تھپتھپاتا اگے بڑھ گیا۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔    

اسے ہلکی ہلکی بھوک لگ رہی تھی سوچا کیفے سے کچھ لے کر کھا لے۔۔ 

دو سینڈوچز لے کر مڑ رہی تھی کہ شاہزیب نے آواز دی۔۔ 

اریزہ۔۔

وہ۔ چونک کر مڑی۔۔

تمہیں ہیون پوچھ رہا تھا۔۔۔ 

کہاں ہے وہ ؟اس نے فورا پوچھا۔۔

شائد تمہیں ڈیپارٹمنٹ میں ڈھونڈنے گیا ہے۔۔ سالک نے اندازہ لگایا۔۔ 

وہ سر ہلا کر انہیں اشارے سے خدا حافظ کہتی باہر نکل آئی۔۔ اسکا رخ ڈیپارٹمنٹ کی جانب تھا۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہیون ۔ ہیونا

وہ ڈیپارٹمنٹ کی سیڑھیاں چڑھ رہا تھا جب کم سن نے اسے پکارا۔۔

وہ دونوں سیڑھیوں کے ہی آخری اسٹیپ کے پاس ریلنگ سے ٹکے باتیں کر رہے تھے۔۔

وہ متوجہ ہوا۔۔

تمہیں اریزہ ڈھونڈ رہی ہے ۔۔

کہاں ہے وہ؟

 جمنازیم کی طرف جاتے دیکھا ہے اسے۔۔ وہ سر ہلاتا الٹے پیروں پلٹ گیا۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سامنے سے ہانپتی کانپتی اریزہ آرہی تھی۔۔

کم سن اور یون بن اسکی حالت دیکھ کر ہنس دیئے۔۔

واٹ۔۔ اسے برا لگا۔۔ قریب آکر پوچھ ہی لیا۔۔ 

کیا حالت بنائی وی؟

بھوکی ہوں پیاسی ہوں اوپر سے اتنا چل کر آئی۔۔  اسکی سانس پھول رہی تھی۔۔

یہ لو۔۔ وہ دونوں چپس کھا رہے تھے وہی اسے بھی آفر کر دیا۔۔ اس نے شکریہ کے ساتھ دو تین اٹھا لیے۔۔

ہیون تمہارے پیچھے جمنازیم گیا ہے۔۔ 

کیا۔۔ چپس اسکے حلق میں اٹک گئے۔۔

یعنی دو ڈیپارٹمنٹ دور۔ اس میں اب چلنے کی ہمت نہیں تھی۔۔ وہ وہییں سیڑھیوں کے پہلے اسٹیپ پر ان کے قدموں کے قریب ٹک گئ۔۔بیگ سے پانی نکال کر پینےلگی۔۔ اسکے وہاں بیٹھتے ہی دونوں دو سیڑھیاں اتر کر نیچے آگئے تھے۔۔۔

اسے اچھا لگاانکا تمیز کا مظاہرہ۔۔ 

تم نہیں حصہ لے رہیں یونیورسٹی کی سالانہ تقریبات میں ۔۔ کم سن نے پوچھا۔۔ 

نہیں۔۔ اب تو میرا دل کرتا غائب ہوجائوں نظر ہی نہ آئوں کسی کو فالتو میں خود کو کچھ سمجھنے لگی تھی میں ۔۔ اچھی غرور کی سزا ملی ہے مجھے۔۔ 

وہ بڑبڑائے گئ۔۔ دونوں اسے نہ سمجھنے والے انداز میں دیکھ رہے تھے۔۔ 

کیا کہہ رہی ہو؟ یون بن نے پوچھا تو وہ ہوش میں آئی جیسے۔۔

میں بول رہی تھی۔۔ وہ ابھی بھی اردو میں بولی پھر خیال آیا تو انگریزی میں پوچھا۔۔

ہاں تم نے کچھ کہا تو ہے مگر اپنی زبان میں انگلش میں بتائو تاکہ سمجھ آئے۔۔

اسکی کمی تھی اریزہ اب پاگلوں کی طرح بول بول کر سوچنا شروع کر دیا تم نے مر جائو تم۔ اسے خود پر شدید غصہ آگیا۔۔ اس نے بلا لحاظ زور دار چپت مار کی خود کو۔جزبات میں تھوڑازور سے مار لی۔۔ سر سہلانے لگی۔۔ 

یہ کیا کر رہی ہو؟ وہ دونوں اسے حیرت سے دیکھ رہے تھے۔۔ 

نتھنگ جسٹ فکسنگ مائی مائنڈ۔۔ اس نے لاپروائی سے کہا۔۔ 

وہ دونوں کھل کر ہنسے۔۔ 

مجھے لگا تھا ایسا ایک ہی پیس ہے دنیا مگر نہیں ایک اور بھی ہے۔۔ کم سن نےبغور اریزہ کو دیکھتے  ہنگل میں کہا 

اس بار اریزہ الجھن سے پوچھ رہی تھی۔۔ 

انگلش میں بتائو کیا کہا؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہاائش۔۔ ایسے تو ہر وقت پردہ لہراتی نظر آتی ہے آج کام ہے تو غائب ہوئی وی ہے۔۔ اس نے چڑ کر سوچا۔۔ 

سامنے سے ایڈون اور سنتھیا ہاتھ تھامے خوش باش آرہیے تھے۔۔ 

اریزہ کدھر ہے؟

اس نے سر کے اشارے سے سلام کرکے پوچھا۔ 

پتہ نہیں کیوں؟

سنتھیا نے کندھے اچکائے۔۔

فارگیٹ اٹ۔۔ وہ سر جھٹکتا آگے بڑھ گیا۔۔

آئی تو تھی صبح۔۔ سنتھیا نے ایڈون سے کہا پھر اپنا ہاتھ چھڑا کر اسے بیگ سے فون نکال کر کال ملا لی۔۔ 

کدھر ہو۔۔

باسکٹ بال کورٹ کے پاس۔۔

اریزہ نے مصروف انداز میں جواب دیا وہ کڑنچ کڑنچ چپس کھا رہی تھی۔۔

وہاں کیا کر رہی ہو۔۔ 

سنتھیا نے پوچھا تو وہ اطمینان سے بولی۔۔

سویمنگ کر رہی ۔۔ 

اچھا سنو چار بجے گیٹ پر آجانا ہم نے ایک انڈین ریسٹورنٹ دیکھا ہے یہاں وہاں دیسی کھانا کھائیں گے برتھ ڈے ٹریٹ ہے میری طرف سے۔۔ 

اچھا۔۔ اس نے وقت دیکھا ابھی گھنٹہ تھا۔۔ 

ٹھیک ہے آجائون گی۔۔ اس نے فون رکھا اور چپس ختم کرنے لگی۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ ہاتھ جھاڑتی اٹھی کانوں میں ایم پی تھری پلیر کی ہینڈفری ٹھونسی اور دھیرے دھیرے سیڑھیاں چڑھنے لگی۔۔

اسے چلتے کاسنی پردہ لہراتا نظر آیا۔۔ اس نے سر جھٹکا آگے بڑھنے کو تھا کہ خیال آیا پلٹ کر دیکھا تو وہ اریزہ ہی تھی باسکٹ بال کے کورٹ کی سیڑھیاں چڑھ کر سیدھا اسکی جانب مڑی تھی مگر نظریں ہاتھ میں پکڑی کسی چیز پر تھیں۔۔ وہ وہیں رک کر اسکے قریب آنے کا انتظار کرنے لگا۔۔ دفعتا اسکی نظردائیں جانب  پڑی۔ جمنازیم کی اوپر سے نیچے آتی سیڑھیوں سے اترتے کچھ اسکیٹرز اسکیٹ بورڈ پر کرتب کر رہے تھے۔۔  زمیں سے اڑتے فضا میں کئی فٹ اچھلتے اسکیٹ بورڈ ہاتھ میں لے لیتے پھر زمیں پر آنے سے پہلے اسے اسکیٹ بورڈ کر گرا کر اس پر آرام سے اتر آتے کوئی دس بارہ سیڑھیاں تھیں جن کے بعد کئی فٹ چوڑی سڑک تھی پھر نیچے باسکٹ بال کورٹ کو جانے والے راستے کی چوڑی سیڑھیاں تھیں۔

احمق ابھی منہ ٹوٹے گا انکا زرا سا بیلنس خراب ہوا تو۔۔  کونسی منحوس گھڑی جو اسکے منہ سے نکلا ۔۔ اسکے دیکھتے دیکھتے ایک اسکیٹر جو سیدھا نیچے آرہا تھا اسکیٹ سے اسکا توازن بگڑا خود تو قلابازی کھاکر سیڑھی پرکود گیا اسکیٹ اسکے ہاتھ سے چھوٹ کر سیدھا سیڑھیوں کی جانب ۔۔ 

وہ مگن آرہی تھی سیڑھیاں اسکے قریب تھیں اسکیٹ اسکے لگتی تو زرا سا بھی توازن خراب ہوتا اس نے لڑھکتے نیچے جانا تھا چند لمحے تھے اسکے پاس وہ دوڑا اریزہ کے قریب جا کر اچھل کر اسکیٹ پکڑی خود پورا اسٹریچ ہوا تھا سو سیدھا قدموں پر زمیں پر نہ آسکا باہنی جانب سے کھڑے قد سے زمیں پر گرا۔۔

اریزہ اسکے قریب گرنے سے چونکی  کانوں سے ہینڈ فری نکال تو ہیون اسکے قدموں  گرا تڑپ رہا تھا۔۔

ہیون ۔وہ اسکی جانب بڑھی۔۔

میں تمہیں ڈھونڈ رہی تھی۔۔ وہ کراہ رہا تھا یہ اسے خوشی خوشی بتا رہی تھی۔۔ سارے لڑکے اسکے پاس بھاگے بھاگے آئے

گرنے والا اسکیٹر تک سنبھل کر آگیا تھا۔۔

زیادہ چوٹ تو نہیں آئی۔۔ دولڑکوں نے اسے سہارا دیا۔۔ ایک اسکا بازو بھی سہلا رہا تھا۔۔ 

تمہیں اسکا شکریہ ادا کرنا چاہیئے بچا لیا اس نے تمہیں۔۔

وہاٹ وہ حیران ہوئی۔۔ 

یو مسٹ تھینک ہم۔۔ اب کے وہ انگریزی میں بولا۔۔ 

وائی؟ اسے سمجھ نہ آیا۔۔

چھوڑو۔۔ رہنے دو شکریہ۔۔ ہیون نے اٹھتے ہوئے ان لڑکوں سے کہا وہ اسکا کندھا تھپتھپاتے اسکیٹ لے کر چلے گئے۔۔ ہیون سک اپنے کپڑے جھاڑ رہا تھا

یہ یہ کیوں کہہ رہے تھے کہ مجھے تمہارا شکریہ ادا کرنا چاہیئے۔۔؟ وہ ابھی بھی وہیں آٹکی تھی۔۔

اسے چھوڑو۔۔ تمہارے پاس آج پانی نہیں ہے۔۔ ؟ ہیون نے پوچھا تو اس نے بیگ کی طرف ہاتھ بڑھایا۔۔ پھر یاد آیا۔۔

نہیں ابھی پیا ہے خالی ہو گئ بوتل۔۔

فارگیٹ اٹ۔۔

ہیون سک نے اپنے کندھے سے بیگ اتار کر دو کین برآمد کیے ایک اسے پکڑا دیا ایک خود کھولنے لگا۔۔

تھینکس۔۔ اس نے آرام سے لے لیا۔۔ 

تم مجھے کیوں ڈھونڈ رہی تھیں۔۔

اس نے ایک دو گھونٹ لے کر پوچھا اریزہ کا کین ابھی تک کھلا بھی نہیں تھا۔۔ اریزہ مضبوطی سے پکڑے تھی۔۔ اس نے ہاتھ بڑھا کر کین کی ناب میں انگلی پھنسا کر جھٹکا دیا ٹھسس کی آواز کیساتھ کین فورا کھل گیا۔۔ 

اریزہ کھسیائی۔۔ پھر جلدی سے بولی۔۔

مجھے کام تھا تم سے۔۔

مجھے بھی۔۔ وہ بیگ سے کچھ نکال رہا تھا اریزہ نے بھی اسی وقت بیگ سے کچھ نکالا۔۔ دونوں نے اکٹھے ایک دوسرے کے سامنے گفٹ بڑھائے۔۔ 

یہ کیا ہے۔۔ دونوں اکٹھے بولے۔۔

گفٹ۔۔

یہ بھی دونوں اکٹھے بولے تھے۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ دونوں وہیں پہلی سیڑھی پر ٹک گئے۔۔

اس نے بیگ سے سینڈوچ نکال کر ہیون کو دیا اس نےپہلے تو انکار کرنا چاہا مگر بھوک لگ رہی تھی سو لے کر کھانے لگا۔۔ اریزہ گفٹ کھولنے لگی۔۔

انتہائی خوبصورت پرنٹڈ گلابی اور سفید اسکارف تھا اس نے فورا پھیلا کر اپنے ساتھ لگایا۔۔

یہ بہت خوبصورت ہے ۔۔ انی کی پسند اچھی ہے۔۔ 

میری جانب سے بہت شکریہ ادا کرنا۔ 

ہیون نے ہلکے سے سر ہلا دیا منہ میں سینڈوچ بھرے ابھی وہ بولنے کے قابل نہیں تھا۔۔ اریزہ نے دلچسپی سے اسکا بھرا منہ دیکھا۔۔ 

ایک اور بھی ہے میرے پاس دوں۔۔ ؟

اس نے پوچھا تو تھا مگر پھر جواب کا انتظار کیے بغیر اسے نکال کر تھما دیا۔۔ 

گوما وویو۔۔ اس نے دوسرے کا بھی ریپر اتارنا شروع کر دیا۔۔ 

وہ کچھ بولنے لگی تھی پھر رک گئ۔۔ ہیون نے ابروکے اشارے سے پوچھا 

تو اس نے کچھ نہیں کہہ کر اسکارف تہہ کرکے بیگ مین ڈالا اور اٹھ کھڑی ہوئی۔۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سی یو کہہ کر وہ تیز تیز قدم بڑھاتی چلی گئ تو اس نے اسکا دیا گفٹ احتیاط سے بیگ میں رکھا۔۔ اپنا بازو سیدھا کیا تو کراہ نکل گئ۔۔ مگر وہ کھینچ  کر سارے مسلز ریلیکس کرتا رہا۔۔ پھر اٹھ کھڑا ہوا ۔۔ 

وہ اریزہ کے پیچھے پیچھے چلتا گیٹ تک آیا تھا۔ وہ ایڈون وغیرہ کی طرف بڑھ گئ یہ اپنی کار کی طرف سالک اور شاہزیب نہیں تھے البتہ کم سن اور یون بن  تھے۔

یون بن نے اسے گاڑی کی طرف جاتے دیکھا تو آواز دے ڈالی۔۔

ہایوناآجائو ہم باہر جا رہے ہیں۔۔ اس نے لمحہ بھر سوچا پھر انکے پاس چلا آیا۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سالک اور شاہزیب کو بھی بلا لینا تھا۔۔ 

اس نے سنتھیا کو کان میں کہا۔۔ وہ اس وقت ایک انڈین ریسٹورنٹ میں موجود تھے 

کیک میز کے بیچ میں لا کر رکھا جا چکا تھا۔ ایڈون کم سن یون بن  اور ہیون سک سامنے بیٹھے تھے موم بتی جلا رہے تھے تو اسے ان دونوں کی کمی محسوس ہوئی۔۔ 

انکی ایڈون سے کل لڑائی ہوئی ہے سالک روم شفٹ کر رہا اب۔ اس نے آہستہ سےکہا تو اریزہ حیران رہ گئ۔۔ 

ایڈون کی بھئ کسی سے لڑائی ہو سکتی ہے؟

میں نے تو اسے معمولی غصے میں نہیں دیکھا۔۔

بعد میں بتائوں گی۔۔ سنتھیا نے ہاتھ دبا کر اسے چپ کرا دیا۔۔

ان لوگوں نے خوب شغل لگا کر گیت گا کر کیک کٹوایا۔۔ 

چلو کھانا آرڈر کرو آج سنتھیا کی پسند کا کھائیں گے۔۔ ایڈون نے کہا تو سنتھیا نے مینیو کارڈ تھام لیا۔۔

چکن بریانی چکن ملائی بوٹی اور تکے۔۔ 

اس نے اپنی پسند بتائی تو ہیون کو خیال آیا۔۔

اریزہ تو گوشت نہیں کھاتی کچھ ویجیٹیرین بھی آرڈر کر دو۔۔

اب یہ تو کھا لو۔۔ انڈین ریسٹورنٹ ہے یہ تو۔۔ ایڈون جیسے چڑ کر بولا۔۔

ہاں مگر حلال گوشت تو نہیں ہوگا یہاں۔۔ سنتھیا کو بھی خیال آیا۔۔ سنتھیا اردو میں ہی بولی تھی۔۔ اریزہ کچھ کہنے لگی تھی کہ ایڈون بڑ بڑایا۔۔

ہر جگہ اپنی ڈیڑھ اینٹ کی مسجد بنا لیا کرو تم لوگ یہ بھی انسان ہی ہیں جانور تو نہیں ہم بھی تو کھا رہے ہیں۔۔

تم لوگوں کو شائد مزہب نے پابند نہیں کیا مگر ہم پر بنا حلال ہوا جانور کھانا حرام ہے۔۔ اریزہ کا لہجہ ہرگز برا نہیں تھا اس نے سادگی سے کہا تھا ۔۔

مگر ایڈون بری طرح چڑ گیا۔۔

اتنا ہی جانوروں کا درد ہے تو کھاتے کیوں ہو؟ خدا نے تو سب جانور جاندار بنائے اگر کھانے سے منع نہیں کیا تو جیسے مرضی کاٹ کر کھائو یہ کیا۔۔

ایڈون بس۔۔ تم اس بارے میں نہیں جانتے ہو تو چھوڑ دو اس بات کو میں مزہب پر بحث نہیں کرنا چاہتی۔۔ اریزہ کو غصہ آرہا تھا مگر تحمل سے بولی۔۔ 

ایڈون چھوڑو بحث ہم۔۔ سنتھیا نے کہنا چاہا مگر ایڈون بھڑک گیا۔۔ 

ہاں تم لوگوں کا مزہب ہی صحیح باقی سب غلط تم لوگوں نے جنت بھر دینی ہمیں تو اللہ نے دوزخ میں ڈالنے کیلیئے پیدا کیا ہے نا۔۔ بڑا غرور ہے مسلمان ہونے پر شکر ہے ہم عیسائی ہیں کم از کم انتہا پسند تو نہیں تم لوگوں کی طرح۔۔۔ 

بس کرو ایڈون۔۔ وہ میز ہر ہاتھ مار کر چلائی۔۔ 

سچائی ہے کڑوی تو لگے گی۔۔ ایڈون کا انداز نہ بدلا۔۔ 

تم لوگوں میں یہ جو غرورہے نا یہی فساد کی جڑ ہے اپنے مزہب کے علاوہ دوسرے کو انسان تک نہیں سمجھتے۔۔۔ 

ہم سب یہاں کھانے بیٹھ گئے یہ اجنبی ملک کے باسی تک ہمارے ساتھ آگئےمگر یہ سوکالڈ مسلمان کا ایمان یہاں کھانے سے برباد ہو جائے گا۔۔ وہ اسے بولنے کا موقع نہیں دے رہا تھا

تمہیں جس چیز کا پتہ نہیں ہے اس۔ 

اریزہ نے کہنا چاہا

غلط کہہ رہا ہوں؟ تم لوگوں کے نزدیک ہم گندے ہیں نا۔ اپنی بات کر لو۔ میں کرسچن ہوں نا جبھئ تو تم نے اس دن 

چپ کرجائو ایڈون۔ 

اریزہ اسکے بنا سوچے بولے چلے جانے پر تلملا کر اٹھ کھڑی ہوئی

ایک۔لفظ مت کہنا اب۔ اسکے کہنے پر ایڈون ہونٹ بھینچ گیا

کیا ہو رہا ہے کس بات پر لڑ رہے ہو تم لوگ۔۔ یون بن بھئ دونوں کو آپے سے باہر ہوتے دیکھ کر اٹھ کھڑا ہوا۔۔

کچھ نہیں۔۔ دونوں ایک دوسرے کو گھور رہے تھے سنتھیا روہانسی ہوگئ۔۔ بیٹھو اریزہ ۔۔ میں سبزی بھی آرڈر کر رہی ہوں ایڈون ایک لفظ اب مت بولنا۔۔ 

کوئی ضرورت نہیں۔ اریزہ کے تیور کڑے تھے

مجھے ویسے بھی ابھی بھوک نہیں ہے ۔۔ اریزہ کا چہرہ سرخ ہو چکا تھا۔۔ ہیون  نے اسکی شکل غور سے دیکھی پھر اٹھ کھڑا ہوا۔  

میں اور اریزہ ابھی سینڈوچ کھا کر ہی آئے ہیں ۔۔ ہم باہر گھوم لیتے ہیں تم لوگ کھائو آرام سے ہمیں واقعی ابھی بھوک نہیں۔۔

ہیون کو مناسب یہی لگا کہ اریزہ کو باہر لے جائے۔۔ 

چلو اریزہ۔۔ 

مگر سنتبھیا نے روکنا چاہا تو ایڈون نے اسکا ہاتھ پکڑ لیا۔۔ اریزہ اور ہیون سک اٹھ کر باہر چلے گئے تو ایڈون زہر خند لہجے میں بولا۔

تم اسکی حمایت میں بول رہی ہو نامزہب پر بات آئی نا اسکو ایک لمحہ بھی نہیں لگے گا تمہیں نجس سمجھ کر چھوڑ دینے میں 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ختم شد 

جاری ہے

kesi lagi apko Salam Korea ki Qist? Rate us

Rating

By Syeda Vaiza Zaidi

Vaiza Zaidi is a female writer who writes Urdu web novels online. She is one of the most popular and prolific writers in the Urdu literature scene. She has written over 50 novels in different genres, such as romance, thriller, comedy, and social issues. She has a large fan following who admire her for her creativity, style, and humor. She is also an active blogger who shares her views on various topics related to Urdu culture, literature, and society. She is an inspiring role model for many young and aspiring Urdu writers.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *